میرے چاروں طرف افق ہے جو ایک پردہء سیمیں کی طرح فضائے بسیط میں پھیلا ہوا ہے،واقعات مستقبل کے افق سے نمودار ہو کر ماضی کے افق میں چلے جاتے ہیں،لیکن گم نہیں ہوتے،موقع محل،اسے واپس تحت الشعور سے شعور میں لے آتا ہے، شعور انسانی افق ہے،جس سے جھانک کر وہ مستقبل کےآئینہ ادراک میں دیکھتا ہے ۔
دوستو ! اُفق کے پار سب دیکھتے ہیں ۔ لیکن توجہ نہیں دیتے۔ آپ کی توجہ مبذول کروانے کے لئے "اُفق کے پار" یا میرے دیگر بلاگ کے،جملہ حقوق محفوظ نہیں ۔ پوسٹ ہونے کے بعد یہ آپ کے ہوئے ، آپ انہیں کہیں بھی کاپی پیسٹ کر سکتے ہیں ، کسی اجازت کی ضرورت نہیں !( مہاجرزادہ)

فیس بک کے دیوانے

اتوار، 30 اگست، 2015

سفرِ زیست

بہت آسان ہے کہنا 
 محبت ہم بھی کرتے ہیں 
 محبت ہم نے کی تھی
جب آتش جواں تھا تب
 جذبے بھی زوروں پر
 اخلاص بھی بے شک
 ہر دن روشن تھا
 ہر شب چراغاں تھی
 پھر یوں ہوا کہ تب
 اک آندھی چلی زوروں
خاک اور پتے
 خس و خاشاک اڑتے تھے
دکھائی کچھ نہ دیتا تھا
 سجهائی کچھ نہ دیتا تھا
 شک کے بادل گہرے تھے
 جفا کا شور بلا کا تھا
 محبت کے سبھی رشتے
 مروت کے سبھی ناطے
 نفرت میں بدلے تھے
 لہجے زہریلے تھے
رویے نیلے تھے
 وقت وہ بھی گزر ہی جاتا ہے
 جس کے لمحوں میں صدیاں ہوتی ہیں
خوشیاں لوٹ بھی آتی ہیں
 لیکن جو بال آتے ہیں
 شیشہء دل میں
وہ کبھی نہیں جاتے 
 وہ کہیں نہیں جاتے 

گردشِ زر

ایک قصبے کے ہوٹل میں ایک سیاح داخل ہوا اور ہوٹل کےمالک سے ہوٹل کا بہترین کمرہ دکھانے کو کہا..

ہوٹل کے مالک نے اسے بہترین کمرے کی چابی دی اورکمرہ دیکھنے کی اجازت دے دی.


سیاح ایک سو ڈالر کا نوٹ بطور ایڈوانس کاؤنٹر پر رکھ کر کمرہ دیکھنے چلا گیا.


اسی وقت قصبے کا قصاب ہوٹل کے مالک سے گوشت کی رقم لینے آیا.


ہوٹل کے مالک نے وہی سو ڈالر کا نوٹ کاؤنٹر سے اٹھا کر قصاب کو دے دیا کیونکہ اسے یقین تھا کہ سیاح کو کمرہ پسند آ جائے گا.


قصاب نے فورا ہی وہ نوٹ اپنے جانور سپلائی کرنے والے کو دے دیا. 


جانور سپلائی والا ایک ڈاکٹر کا مقروض تھا جس سے وہ علاج کروا رہا تھا اس نے وہ سو ڈالر کا نوٹ اسی ڈاکٹر کو دے دیا.
وہ ڈاکٹر کافی دنوں سے اسی ہوٹل کے ایک کمرے میں مقیم تھا لہذا اس نے وہ سو ڈالر کا نوٹ ہوٹل کے مالک کو ادا کر دیا.


وہ سو ڈالر کا نوٹ کاؤنٹر پر ہی پڑا تھا کہ کمرہ پسند کرنے کے لئے سیڑھیاں چڑھ کر جانے والا گاہک واپس آگیا
اور اس نے مالک کو بتایا کہ اُسے کمرہ نہیں پسند آیا.


یہ کہہ کر اس نے کاؤنٹر پر سے اپنا سو ڈالر کا نوٹ اٹھایا اور چلا گیا !!!


اکنامک کی اس کہانی میں نہ کسی نے کچھ کمایا نہ ہی کسی نے کچھ خرچ کیا لیکن جس قصبے میں سیاح وہ نوٹ لے گیا تھا

اس قصبے کے کتنے ہی لوگ قرض سے فارغ ہو گئے.




حاصل مطالعہ ...
پیسے کو گھماؤ نہ کہ اس پر سانپ بن کر بیٹھ جاؤ کہ
اسی میں عوام الناس کی فلاح هے ...!!

ہفتہ، 29 اگست، 2015

ﺁﺋﯽ ﻟﻮ ﯾﻮ ﺁﻝ

ﻣﺴﺰ ﺗﮭﺎﻣﺴﻦ ﺍﻣﺮﯾﮑﮧ ﮐﮯ ﺍﯾﮏ ﭼﮭﻮﭨﮯ ﺳﮯ ﺷﮩﺮ ﮔﺎﺭﻟﯿﻨﮉ ﻣﯿﮟ ﭘﺮﺍﺋﻤﺮﯼ ﺍﺳﮑﻮﻝ ﮐﻼﺱ 5 ﮐﯽ ﭨﯿﭽﺮ ﺗﮭﯿﮟ۔
ﺍﻥ ﮐﯽ ﺍﯾﮏ ﻋﺎﺩﺕ ﺗﮭﯽ ﮐﮧ ﻭﮦ ﮐﻼﺱ ﺷﺮﻭﻉ ﮐﺮﻧﮯ ﺳﮯ ﭘﮩﻠﮯ ﮨﻤﯿﺸﮧ 
" ﺁﺋﯽ ﻟﻮ ﯾﻮ ﺁﻝ " ﺑﻮﻻ ﮐﺮﺗﯿﮟ۔
ﻣﮕﺮ ﻭﮦ ﺟﺎﻧﺘﯽ ﺗﮭﯿﮟ ﮐﮧ ﻭﮦ ﺳﭻ ﻧﮩﯿﮟ ﮐﮩﺘﯿﮟ۔ ﻭﮦ ﮐﻼﺱ ﮐﮯ ﺗﻤﺎﻡ ﺑﭽﻮﮞ ﺳﮯ ﯾﮑﺴﺎﮞ ﭘﯿﺎﺭ ﻧﮩﯿﮟ ﮐﺮﺗﯽ ﺗﮭﯿﮟ۔

ﮐﻼﺱ ﻣﯿﮟ ﺍﯾﮏ ﺍﯾﺴﺎ ﺑﭽﮧ ﺗﮭﺎ ﺟﻮ ﻣﺴﺰ ﺗﮭﺎﻣﺴﻦ ﮐﻮ ﺍﯾﮏ ﺁﮞﮑﮫ ﻧﮧ ﺑﮭﺎﺗﺎ۔ ﺍﺱ ﮐﺎ ﻧﺎﻡ ﺟﯿﮉﯼ ﺗﮭﺎ۔ ﺟﯿﮉﯼ ﻣﯿﻠﯽ ﮐﭽﯿﻠﯽ ﺣﺎﻟﺖ ﻣﯿﮟ ﺍﺳﮑﻮﻝ ﺁﺟﺎﯾﺎ ﮐﺮﺗﺎ۔ ﺍﺱ ﮐﮯ ﺑﺎﻝ ﺑﮕﮍﮮ ﮨﻮﺋﮯ ﮨﻮﺗﮯ، ﺟﻮﺗﻮﮞ ﮐﮯ ﺗﺴﻤﮯ ﮐﮭﻠﮯ ﮨﻮﺋﮯ، ﻗﻤﯿﺾ ﮐﮯ ﮐﺎﻟﺮ ﭘﺮ ﻣﯿﻞ ﮐﺎ ﻧﺸﺎﻥ۔ ۔ ۔ ﻟﯿﮑﭽﺮ ﮐﮯ ﺩﻭﺭﺍﻥ ﺑﮭﯽ ﺍﺱ ﮐﺎ ﺩﮬﯿﺎﻥ ﮐﮩﯿﮟ ﺍﻭﺭ ﮨﻮﺗﺎ۔
ﻣﺴﺰ ﺗﮭﺎﻣﺴﻦ ﮐﮯ ﮈﺍﻧﭩﻨﮯ ﭘﺮ ﻭﮦ ﭼﻮﻧﮏ ﮐﺮ ﺍﻧﮩﯿﮟ ﺩﯾﮑﮭﻨﮯ ﺗﻮ ﻟﮓ ﺟﺎﺗﺎ ﻣﮕﺮ ﺍﺱ ﮐﯽ ﺧﺎﻟﯽ ﺧﻮﻟﯽ ﻧﻈﺮﻭﮞ ﺳﮯ ﺍﻧﮩﯿﮟ ﺻﺎﻑ ﭘﺘﮧ ﻟﮕﺘﺎ ﺭﮨﺘﺎ ﮐﮧ ﺟﯿﮉﯼ ﺟﺴﻤﺎﻧﯽ ﻃﻮﺭ ﭘﺮ ﮐﻼﺱ ﻣﯿﮟ ﻣﻮﺟﻮﺩ ﮨﻮﻧﮯ ﮐﮯ ﺑﺎﻭﺟﻮﺩ ﺑﮭﯽ ﺩﻣﺎﻏﯽ ﻃﻮﺭ ﭘﺮ ﻏﺎﺋﺐ ﮨﮯ۔
ﺭﻓﺘﮧ ﺭﻓﺘﮧ ﻣﺴﺰ ﺗﮭﺎﻣﺴﻦ ﮐﻮ ﺟﯿﮉﯼ ﺳﮯ ﻧﻔﺮﺕ ﺳﯽ ﮨﻮﻧﮯ ﻟﮕﯽ۔ ﮐﻼﺱ ﻣﯿﮟ ﺩﺍﺧﻞ ﮨﻮﺗﮯ ﮨﯽ ﺟﯿﮉﯼ ﻣﺴﺰ ﺗﮭﺎﻣﺴﻦ ﮐﯽ ﺳﺨﺖ ﺗﻨﻘﯿﺪ ﮐﺎ ﻧﺸﺎﻧﮧ ﺑﻨﻨﮯ ﻟﮕﺘﺎ۔ ﮨﺮ ﺑﺮﯼ ﻣﺜﺎﻝ ﺟﯿﮉﯼ ﮐﮯ ﻧﺎﻡ ﺳﮯ ﻣﻨﺴﻮﺏ ﮐﯽ ﺟﺎﺗﯽ۔ ﺑﭽﮯ ﺍﺱ ﭘﺮ ﮐﮭﻠﮑﮭﻼ ﮐﺮ ﮨﻨﺴﺘﮯ ﺍﻭﺭ ﻣﺴﺰ ﺗﮭﺎﻣﺴﻦ ﺍﺱ ﮐﯽ ﺗﺬﻟﯿﻞ ﮐﺮ ﮐﮧ ﺗﺴﮑﯿﻦ ﺣﺎﺻﻞ ﮐﺮﺗﯿﮟ۔ ﺟﯿﮉﯼ ﻧﮯ ﺍﻟﺒﺘﮧ ﮐﺴﯽ ﺑﺎﺕ ﮐﺎ ﮐﺒﮭﯽ ﮐﻮﺋﯽ ﺟﻮﺍﺏ ﻧﮩﯿﮟ ﺩﯾﺎ ﺗﮭﺎ۔

ﻣﺴﺰ ﺗﮭﺎﻣﺴﻦ ﮐﻮ ﻭﮦ ﺍﯾﮏ ﺑﮯ ﺟﺎﻥ ﭘﺘﮭﺮ ﮐﯽ ﻃﺮﺡ ﻟﮕﺘﺎ ﺟﺲ ﮐﮯ ﺍﻧﺪﺭ ﺍﺣﺴﺎﺱ ﻧﺎﻡ ﮐﯽ ﮐﻮﺋﯽ ﭼﯿﺰ ﻧﮩﯿﮟ ﺗﮭﯽ۔ ﮨﺮ ﮈﺍﻧﭧ، ﻃﻨﺰ ﺍﻭﺭ ﺳﺰﺍ ﮐﮯ ﺟﻮﺍﺏ ﻣﯿﮟ ﻭﮦ ﺑﺲ ﺍﭘﻨﯽ ﺟﺬﺑﺎﺕ ﺳﮯ ﻋﺎﺭﯼ ﻧﻈﺮﻭﮞ ﺳﮯ ﺍﻧﮩﯿﮟ ﺩﯾﮑﮭﺎ ﮐﺮﺗﺎ ﺍﻭﺭ ﺳﺮ ﺟﮭﮑﺎ ﻟﯿﺎ ﮐﺮﺗﺎ۔ ﻣﺴﺰ ﺗﮭﺎﻣﺴﻦ ﮐﻮ ﺍﺏ ﺍﺱ ﺳﮯ ﺷﺪﯾﺪ ﭼﮍ ﮨﻮ ﭼﮑﯽ ﺗﮭﯽ۔ ﭘﮩﻼ ﺳﯿﻤﺴﭩﺮ ﺧﺘﻢ ﮨﻮﺍ ﺍﻭﺭ ﺭﭘﻮﺭﭨﯿﮟ ﺑﻨﺎﻧﮯ ﮐﺎ ﻣﺮﺣﻠﮧ ﺁﯾﺎ ﺗﻮ ﻣﺴﺰ ﺗﮭﺎﻣﺴﻦ ﻧﮯ ﺟﯿﮉﯼ ﮐﯽ ﭘﺮﻭﮔﺮﯾﺲ ﺭﭘﻮﺭﭦ ﻣﯿﮟ ﺍﺱ ﮐﯽ ﺗﻤﺎﻡ ﺑﺮﺍﺋﯿﺎﮞ ﻟکھ ﻣﺎﺭﯾﮟ۔ ﭘﺮﻭﮔﺮﯾﺲ ﺭﭘﻮﺭﭦ ﻭﺍﻟﺪﯾﻦ ﮐﻮ ﺩﮐﮭﺎﻧﮯ ﺳﮯ ﭘﮩﻠﮯ ﮨﯿﮉ ﻣﺴﭩﺮﯾﺲ ﮐﮯ ﭘﺎﺱ ﺟﺎﯾﺎ ﮐﺮﺗﯽ ﺗﮭﯽ۔ ﺍﻧﮩﻮﮞ ﻧﮯ ﺟﺐ ﺟﯿﮉﯼ ﮐﯽ ﺭﭘﻮﺭﭦ ﺩﯾﮑﮭﯽ ﺗﻮ ﻣﺴﺰ ﺗﮭﺎﻣﺴﻦ ﮐﻮ ﺑﻼ ﻟﯿﺎ۔
" ﻣﺴﺰ ﺗﮭﺎﻣﺴﻦ ﭘﺮﻭﮔﺮﯾﺲ ﺭﭘﻮﺭﭦ ﻣﯿﮟ ﮐچھ ﺗﻮ ﭘﺮﻭﮔﺮﯾﺲ ﺑﮭﯽ ﻧﻈﺮﺁﻧﯽ ﭼﺎﮨﯿﮯ۔ ﺁﭖ ﻧﮯ ﺗﻮ ﺟﻮ ﮐﭽﮫ ﻟﮑﮭﺎ ﮨﮯ ﺍﺱ ﺳﮯ ﺟﯿﮉﯼ ﮐﮯ ﻭﺍﻟﺪﯾﻦ ﺍﺱ ﺳﮯ ﺑﺎﻟﮑﻞ ﮨﯽ ﻧﺎ ﺍﻣﯿﺪ ﮨﻮ ﺟﺎﺋﯿﻨﮕﮯ۔ "
" ﻣﯿﮞﻤﻌﺬﺭﺕ ﺧﻮﺍﮦ ﮨﻮﮞ ﻣﮕﺮ ﺟﯿﮉﯼ ﺍﯾﮏ ﺑﺎﻟﮑﻞ ﮨﯽ ﺑﺪﺗﻤﯿﺰ ﺍﻭﺭ ﻧﮑﻤﺎ ﺑﭽﮧ ﮨﮯ۔ ﻣﺠﮭﮯ ﻧﮩﯿﮟ ﻟﮕﺘﺎ ﮐﮧ ﻣﯿﮟ ﺍﺱ ﮐﯽ ﭘﺮﻭﮔﺮﯾﺲ ﮐﮯ ﺑﺎﺭﮮ ﻣﯿﮟ ﮐﭽﮫ ﻟﮑﮫ ﺳﮑﺘﯽ ﮨﻮﮞ۔ "
ﻣﺴﺰ ﺗﮭﺎﻣﺴﻦ ﻧﻔﺮﺕ ﺍﻧﮕﯿﺰ ﻟﮩﺠﮯ ﻣﯿﮟ ﺑﻮﻝ ﮐﺮ ﻭﮨﺎﮞ ﺳﮯ ﺍُٹھ ﺁﺋﯿﮟ۔

ﮨﯿﮉ ﻣﺴﭩﺮﯾﺲ ﻧﮯ ﺍﯾﮏ ﻋﺠﯿﺐ ﺣﺮﮐﺖ ﮐﯽ۔ ﺍﻧﮩﻮﮞ ﻧﮯ ﭼﭙﮍﺍﺳﯽ ﮐﮯ ﮨﺎﺗﮫ ﻣﺴﺰ ﺗﮭﺎﻣﺴﻦ ﮐﯽ ﮈﯾﺴﮏ ﭘﺮ ﺟﯿﮉﯼ ﮐﯽ ﮔﺰﺷﺘﮧ ﺳﺎﻟﻮﮞ ﮐﯽ ﭘﺮﻭﮔﺮﯾﺲ ﺭﭘﻮﺭﭨﺲ ﺭﮐﮭﻮﺍ ﺩﯾﮟ۔ ﻣﺴﺰ ﺗﮭﺎﻣﺴﻦ ﮐﻼﺱ ﻣﯿﮟ ﺩﺍﺧﻞ ﮨﻮﺋﯿﮟ ﺗﻮ ﺭﭘﻮﺭﭨﺲ ﭘﺮ ﻧﻈﺮ ﭘﮍﯼ۔ ﺍﻟﭧ ﭘﻠﭧ ﮐﺮ ﺩﯾﮑﮭﺎ ﺗﻮ ﭘﺘﮧ ﻟﮕﺎ ﮐﮧ ﯾﮧ ﺟﯿﮉﯼ ﮐﯽ ﺭﭘﻮﺭﭨﺲ ﮨﯿﮟ۔
" ﭘﭽﮭﻠﯽ ﮐﻼﺳﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺑﮭﯽ ﺍﺱ ﻧﮯ ﯾﻘﯿﻨﺎً ﯾﮩﯽ ﮔﻞ ﮐﮭﻼﺋﮯ ﮨﻮﻧﮕﮯ۔ "
ﺍﻧﮩﻮﮞ ﻧﮯ ﺳﻮﭼﺎ ﺍﻭﺭ ﮐﻼﺱ 3 ﮐﯽ ﺭﭘﻮﺭﭦ ﮐﮭﻮﻟﯽ۔ ﺭﭘﻮﺭﭦ ﻣﯿﮟ ﺭﯾﻤﺎﺭﮐﺲ ﭘﮍﮪ ﮐﺮ ﺍﻥ ﮐﯽ ﺣﯿﺮﺕ ﮐﯽ ﮐﻮﺋﯽ ﺍﻧﺘﮩﺎ ﻧﮧ ﺭﮨﯽ ﺟﺐ ﺍﻧﮩﻮﮞ ﻧﮯ ﺩﯾﮑﮭﺎ ﮐﮧ ﺭﭘﻮﺭﭦ ﺍﺱ ﮐﯽ ﺗﻌﺮﯾﻔﻮﮞ ﺳﮯ ﺑﮭﺮﯼ ﭘﮍﯼ ﮨﮯ۔
" ﺟﯿﮉﯼ ﺟﯿﺴﺎ ﺫﮨﯿﻦ ﺑﭽﮧ ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﺁﺝ ﺗﮏ ﻧﮩﯿﮟ ﺩﯾﮑﮭﺎ۔ "
" ﺍﻧﺘﮩﺎﺋﯽ ﺣﺴﺎﺱ ﺑﭽﮧ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﺍﭘﻨﮯ ﺩﻭﺳﺘﻮﮞ ﺍﻭﺭ ﭨﯿﭽﺮ ﺳﮯ ﺑﮯ ﺣﺪ ﻟﮕﺎﺅ ﺭﮐﮭﺘﺎ ﮨﮯ۔ "

ﺁﺧﺮﯼ ﺳﯿﻤﺴﭩﺮ ﻣﯿﮟ ﺑﮭﯽ ﺟﯿﮉﯼ ﻧﮯ ﭘﮩﻠﯽ ﭘﻮﺯﯾﺸﻦ ﺣﺎﺻﻞ ﮐﺮ ﻟﯽ ﮨﮯ۔
 ﻣﺴﺰ ﺗﮭﺎﻣﺴﻦ ﻧﮯ ﻏﯿﺮ ﯾﻘﯿﻨﯽ ﮐﯽ ﺣﺎﻟﺖ ﻣﯿﮟ ﮐﻼﺱ 4 ﮐﯽ ﺭﭘﻮﺭﭦ ﮐﮭﻮﻟﯽ۔
" ﺟﯿﮉﯼ ﻧﮯ ﺍﭘﻨﯽ ﻣﺎﮞ ﮐﯽ ﺑﯿﻤﺎﺭﯼ ﮐﺎ ﺑﮯ ﺣﺪ ﺍﺛﺮ ﻟﯿﺎ ﮨﮯ ۔ ۔ﺍﺱ ﮐﯽ ﺗﻮﺟﮧ ﭘﮍﮬﺎﺋﯽ ﺳﮯ ﮨﭧ ﺭﮨﯽ ﮨﮯ۔ "
" ﺟﯿﮉﯼ ﮐﯽ ﻣﺎﮞ ﮐﻮ ﺁﺧﺮﯼ ﺍﺳﭩﯿﺞ ﮐﺎ ﮐﯿﻨﺴﺮ ﺗﺸﺨﯿﺺ ﮨﻮﺍ ﮨﮯ ۔ ۔ ﮔﮭﺮ ﭘﺮ ﺍﺱ ﮐﺎ ﺍﻭﺭ ﮐﻮﺋﯽ ﺧﯿﺎﻝ ﺭﮐﮭﻨﮯﻭﺍﻻ ﻧﮩﯿﮟ ﺟﺲ ﮐﺎ ﮔﮩﺮﺍ ﺍﺛﺮ ﺍﺱ ﮐﯽ ﭘﮍﮬﺎﺋﯽ ﭘﺮ ﭘﮍﺍ ﮨﮯ۔ "
"ﺟﯿﮉﯼ ﮐﯽ ﻣﺎﮞ ﻣﺮ ﭼﮑﯽ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﺍﺱ ﮐﮯ ﺳﺎﺗﮫ ﮨﯽ ﺟﯿﮉﯼ ﮐﯽ ﺯﻧﺪﮔﯽ ﮐﯽ ﺭﻣﻖ ﺑﮭﯽ ۔ ۔ ﺍﺳﮯ ﺑﭽﺎﻧﺎ ﭘﮍﮮ ﮔﺎ ﺍﺱ ﺳﮯ ﭘﮩﻠﮯ ﮐﮯ ﺑﮩﺖ ﺩﯾﺮ ﮨﻮ ﺟﺎﺋﮯ۔ "
ﻣﺴﺰ ﺗﮭﺎﻣﺴﻦ ﭘﺮ ﻟﺮﺯﮦ ﻃﺎﺭﯼ ﮨﻮﮔﯿﺎ۔ ﮐﺎﻧﭙﺘﮯ ﮨﺎﺗﮭﻮﮞ ﺳﮯ ﺍﻧﮩﻮﮞ ﻧﮯ ﭘﺮﻭﮔﺮﯾﺲ ﺭﭘﻮﺭﭦ ﺑﻨﺪ ﮐﯽ۔ ﺁﻧﺴﻮ ﺍﻥ ﮐﯽ ﺁﻧﮑﮭﻮﮞ ﺳﮯ ﺍﯾﮏ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ﺍﯾﮏ ﮔﺮﻧﮯ ﻟﮕﮯ۔ﺍﮔﻠﮯ ﺩﻥ ﺟﺐ ﻣﺴﺰ ﺗﮭﺎﻣﺴﻦ ﮐﻼﺱ ﻣﯿﮟ ﺩﺍﺧﻞ ﮨﻮﺋﯿﮟ ﺗﻮ ﺍﻧﮩﻮﮞ ﻧﮯ ﺍﭘﻨﯽ ﻋﺎﺩﺕ ﻣﺴﺘﻤﺮﮦ ﮐﮯ ﻣﻄﺎﺑﻖ ﺍﭘﻨﺎ ﺭﻭﺍﯾﺘﯽ ﺟﻤﻠﮧ
" ﺁﺋﯽ ﻟﻮ ﯾﻮ ﺁﻝ " ﺩﮨﺮﺍﯾﺎ ۔
ﻣﮕﺮ ﻭﮦ ﺟﺎﻧﺘﯽ ﺗﮭﯿﮟ ﮐﮧ ﻭﮦ ﺁﺝ ﺑﮭﯽ ﺟﮭﻮﭦ ﺑﻮﻝ ﺭﮨﯽ ﮨﯿﮟ۔ ﮐﯿﻮﻧﮑﮧ ﺍﺳﯽ ﮐﻼﺱ ﻣﯿﮟ ﺑﯿﭩﮭﮯ ﺍﯾﮏ ﺑﮯ ﺗﺮﺗﯿﺐ ﺑﺎﻟﻮﮞ ﻭﺍﻟﮯ ﺑﭽﮯ ﺟﯿﮉﯼ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﺟﻮ ﻣﺤﺒﺖ ﻭﮦ ﺁﺝ ﺍﭘﻨﮯ ﺩﻝ ﻣﯿﮟ ﻣﺤﺴﻮﺱ ﮐﺮ ﺭﮨﯽ ﺗﮭﯿﮟ ﻭﮦ ﮐﻼﺱ ﻣﯿﮟ ﺑﯿﭩﮭﮯ ﺍﻭﺭ ﮐﺴﯽ ﺑﭽﮯ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﮨﻮ ﮨﯽ ﻧﮩﯿﮟ ﺳﮑﺘﯽ ﺗﮭﯽ۔ ﻟﯿﮑﭽﺮ ﮐﮯ ﺩﻭﺭﺍﻥ ﺍﻧﮩﻮﮞ ﻧﮯ ﺣﺴﺐِ ﻣﻌﻤﻮﻝ ﺍﯾﮏ ﺳﻮﺍﻝ ﺟﯿﮉﯼ ﭘﺮ ﺩﺍﻏﺎ ﺍﻭﺭ ﮨﻤﯿﺸﮧ ﮨﯽ ﮐﯽ ﻃﺮﺡ ﺟﯿﮉﯼ ﻧﮯ ﺳﺮ ﺟﮭﮑﺎ ﻟﯿﺎ۔ ﺟﺐ ﮐﭽﮫ ﺩﯾﺮ ﺗﮏ ﻣﺴﺰ ﺗﮭﺎﻣﺴﻦ ﮐﯽ ﻃﺮﻑ ﺳﮯ ﮐﻮﺋﯿﮉﺍﻧﭧ ﭘﮭﭩﮑﺎﺭ ﺍﻭﺭ ﮨﻢ ﺟﻤﺎﻋﺖ ﺳﺎﺗﮭﯿﻮﮞ ﮐﯽ ﺟﺎﻧﺐ ﺳﮯ ﮨﻨﺴﯽ ﮐﯽ ﺁﻭﺍﺯ ﺍﺱ ﮐﮯ ﮐﺎﻧﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﻧﮧ ﭘﮍﯼ ﺗﻮ ﺍﺱ ﻧﮯ ﺍﭼﮭﻨﺒﮯ ﻣﯿﮟ ﺳﺮ ﺍﭨﮭﺎ ﮐﺮ ﺍﻥ ﮐﯽ ﻃﺮﻑ ﺩﯾﮑﮭﺎ۔ ﺧﻼﻑِ ﺗﻮﻗﻊ ﺍﻥ ﮐﮯ ﻣﺎﺗﮭﮯ ﭘﺮ ﺁﺝ ﺑﻞ ﻧﮧ ﺗﮭﮯ، ﻭﮦ ﻣﺴﮑﺮﺍ ﺭﮨﯽ ﺗﮭﯿﮟ۔ ﺍﻧﮩﻮﮞ ﻧﮯ ﺟﯿﮉﯼ ﮐﻮ ﺍﭘﻨﮯ ﭘﺎﺱ ﺑﻠﻮﺍﯾﺎ ﺍﻭﺭ ﺍﺳﮯ ﺳﻮﺍﻝ ﮐﺎ ﺟﻮﺍﺏ ﺑﺘﺎ ﮐﺮ ﺯﺑﺮﺩﺳﺘﯽ ﺩﮨﺮﺍﻧﮯ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﮐﮩﺎ۔

ﺟﯿﮉﯼ ﺗﯿﻦ ﭼﺎﺭ ﺩﻓﻌﮧ ﮐﮯ ﺍﺻﺮﺍﺭ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ﺁﺧﺮ ﺑﻮﻝ ﮨﯽ ﭘﮍﺍ۔ ﺍﺱ ﮐﮯ ﺟﻮﺍﺏ ﺩﯾﺘﮯ ﮨﯽ ﻣﺴﺰ ﺗﮭﺎﻣﺴﻦ ﻧﮯ ﻧﮧ ﺻﺮﻑ ﺧﻮﺩ پرﺟﻮش اﻧﺪﺍﺯ ﻣﯿﮟ ﺗﺎﻟﯿﺎﮞ ﺑﺠﺎﺋﯿﮟ ﺑﻠﮑﮧ ﺑﺎﻗﯽ ﺳﺐ ﺳﮯ ﺑﮭﯽ ﺑﺠﻮﺍﺋﯿﮟ۔
ﭘﮭﺮ ﺗﻮ ﯾﮧ ﺭﻭﺯ ﮐﺎ ﻣﻌﻤﻮﻝ ﺑﻦ ﮔﯿﺎﻣﺴﺰ ﺗﮭﺎﻣﺴﻦ ﮨﺮ ﺳﻮﺍﻝ ﮐﺎ ﺟﻮﺍﺏ ﺍﺳﮯ ﺧﻮﺩ ﺑﺘﺎﺗﯿﮟ ﺍﻭﺭ ﭘﮭﺮ ﺍﺱ ﮐﯽ ﺧﻮﺏ ﭘﺬﯾﺮﺍﺋﯽ ﮐﺮﺗﯿﮟ۔ ﮨﺮ ﺍﭼﮭﯽ ﻣﺜﺎﻝ ﺟﯿﮉﯼ ﺳﮯ ﻣﻨﺴﻮﺏ ﮐﯽ ﺟﺎﻧﮯ ﻟﮕﯽ۔ ﺭﻓﺘﮧ ﺭﻓﺘﮧ ﭘﺮﺍﻧﺎ ﺟﯿﮉﯼ ﺳﮑﻮﺕ ﮐﯽ ﻗﺒﺮ ﭘﮭﺎﮌ ﮐﺮ ﺑﺎﮨﺮ ﺁﮔﯿﺎ۔ ﺍﺏ ﻣﺴﺰ ﺗﮭﺎﻣﺴﻦ ﮐﻮ ﺳﻮﺍﻝ ﮐﮯ ﺳﺎﺗﮫ ﺟﻮﺍﺏ ﺑﺘﺎﻧﮯ ﮐﯽ ﺿﺮﻭﺭﺕ ﻧﮧ ﭘﮍﺗﯽ۔ ﻭﮦ ﺭﻭﺯ ﺑﻼ ﻧﻘﺺ ﺟﻮﺍﺑﺎﺕ ﺩﮮ ﮐﺮ ﺳﺐ ﮐﻮ ﻣﺘﺎﺛﺮ ﮐﺮﺗﺎ ﺍﻭﺭ ﻧﺘﮯ ﻧﺌﮯ ﺳﻮﺍﻻﺕ ﭘﻮچھ ﮐﺮ ﺳﺐ ﮐﻮ ﺣﯿﺮﺍﻥ ﺑﮭﯽ۔ ﺍﺱ ﮐﮯ ﺑﺎﻝ ﺍﺏ ﮐﺴﯽ ﺣﺪ ﺗﮏ ﺳﻨﻮﺭﮮ ﮨﻮﺋﮯ ﮨﻮﺗﮯ، ﮐﭙﮍﮮ ﺑﮭﯽ ﮐﺎﻓﯽ ﺣﺪ ﺗﮏ ﺻﺎگ ہوﺗﮯ ﺟﻨﮩﯿﮟ ﺷﺎﯾﺪ ﻭﮦ ﺧﻮﺩ ﺩﮬﻮﻧﮯ ﻟﮕﺎ ﺗﮭﺎ۔ ﺩﯾﮑﮭﺘﮯ ﮨﯽ ﺩﯾﮑﮭﺘﮯ ﺳﺎﻝ ﺧﺘﻢ ﮨﻮﮔﯿﺎ ﺍﻭﺭ ﺟﯿﮉﯼ ﻧﮯ ﺩﻭﺳﺮﯼ ﭘﻮﺯﯾﺸﻦ ﺣﺎﺻﻞ ﮐﺮﻟﯽ۔
ﺍﻟﻮﺩﺍﻋﯽ ﺗﻘﺮﯾﺐ ﻣﯿﮟ ﺳﺐ ﺑﭽﮯ ﻣﺴﺰ ﺗﮭﺎﻣﺴﻦ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﺧﻮﺑﺼﻮﺭﺕ ﺗﺤﻔﮯ ﺗﺤﺎﺋﻒ ﻟﮯ ﮐﺮ ﺁﺋﮯ ﺍﻭﺭ ﻣﺴﺰ ﺗﮭﺎﻣﺴﻦ ﮐﮯ ﭨﯿﺒﻞ ﭘﺮ ﮈﮬﯿﺮ ﮐﺮﻧﮯ ﻟﮕﮯ۔ ﺍﻥ ﺧﻮﺑﺼﻮﺭﺗﯽ ﺳﮯ ﭘﯿﮏ ﮨﻮﺋﮯ ﺗﺤﺎﺋﻒ ﻣﯿﮟ ﺍﯾﮏ ﭘﺮﺍﻧﮯ ﺍﺧﺒﺎﺭ ﻣﯿﮟ ﺑﺪ ﺳﻠﯿﻘﮧ ﻃﺮﺯ ﭘﺮ ﭘﯿﮏ ﮨﻮﺍ ﺍﯾﮏ ﺗﺤﻔﮧ ﺑﮭﯽ ﭘﮍﺍ ﺗﮭﺎ۔ ﺑﭽﮯ ﺍﺳﮯ ﺩیکھ ﮐﺮ ﮨﻨﺲ ﭘﮍﮮ۔ ﮐﺴﯽ ﮐﻮ ﺟﺎﻧﻨﮯ ﻣﯿﮟ ﺩﯾﺮ ﻧﮧ ﻟگی کہ ﺗﺤﻔﮯ ﮐﮯ ﻧﺎﻡ ﭘﺮ ﯾﮧ ﭼﯿﺰ ﺟﯿﮉﯼ ﻻﯾﺎ ﮨﻮﮔﺎ۔ ﻣﺴﺰ ﺗﮭﺎﻣﺴﻦ ﻧﮯ ﺗﺤﺎﺋﻒ ﮐﮯ ﺍﺱ ﭼﮭﻮﭨﮯ ﺳﮯ ﭘﮩﺎﮌ ﻣﯿﮟ ﺳﮯ ﻟﭙﮏ ﮐﺮ ﺍﺳﮯ ﻧﮑﺎﻻ۔ ﮐﮭﻮﻝ ﮐﺮ ﺩﯾﮑﮭﺎ ﺗﻮ ﺍﺱ ﮐﮯ ﺍﻧﺪﺭ ﺍﯾﮏ ﻟﯿﮉﯾﺰ ﭘﺮﻓﯿﻮﻡ ﮐﯽ ﺁﺩﮬﯽ ﺍﺳﺘﻌﻤﺎﻝ ﺷﺪﮦ ﺷﯿﺸﯽ ﺍﻭﺭ ﺍﯾﮏ ﮨﺎتھ ﻣﯿﮟ ﭘﮩﻨﻨﮯ ﻭﺍﻻ ﺍﯾﮏ ﺑﻮﺳﯿﺪﮦ ﺳﺎ ﮐﮍﺍ ﺗﮭﺎ ﺟﺲ ﮐﮯ ﺯﯾﺎﺩﮦ ﺗﺮ ﻣﻮﺗﯽ ﺟﮭﮍ ﭼﮑﮯ ﺗﮭﮯ۔
ﻣﺴﺰ ﺗﮭﺎﻣﺴﻦ ﻧﮯ ﺧﺎﻣﻮﺷﯽ ﮐﮯ ﺳﺎتھ ﺍﺱ ﭘﺮﻓﯿﻮﻡ ﮐﻮ ﺧﻮﺩ ﭘﺮ ﭼﮭﮍﮐﺎ ﺍﻭﺭ ﮨﺎتھ ﻣﯿﮟ ﮐﮍﺍ ﭘﮩﻦ ﻟﯿﺎ۔ ﺑﭽﮯ ﯾﮧ ﻣﻨﻈﺮ ﺩﯾﮑﮫ ﮐﺮ ﺣﯿﺮﺍﻥ ﺭﮦ ﮔﺌﮯ۔ ۔ﺧﻮﺩ ﺟﯿﮉﯼ ﺑﮭﯽ۔ ﺁﺧﺮ ﺟﯿﮉﯼ ﺳﮯ ﺭﮨﺎ ﻧﮧ ﮔﯿﺎ ﺍﻭﺭ ﻣﺴﺰ ﺗﮭﺎﻣﺴﻦ ﮐﮯ ﻗﺮﯾﺐ ﺁ ﮐﺮ ﮐﮭﮍﺍ ﮨﻮ ﮔﯿﺎ-
ﮐچھ ﺩﯾﺮ ﺑﻌﺪ ﺍﺱ ﻧﮯ ﺍﭨﮏ ﺍﭨﮏ ﮐﺮ ﻣﺴﺰ ﺗﮭﺎﻣﺴﻦ ﮐﻮ ﺑﺘﺎﯾﺎ ﮐﮧ
" ﺁﺝ ﺁﭖ ﺳﮯ ﺑﺎﻟﮑﻞ ﻣﯿﺮﯼ ﻣﺎﮞ ﺟﯿﺴﯽ ﺧﻮﺷﺒﻮ ﺁ ﺭﮨﯽ ﮨﮯ۔ "

ﻭﻗﺖ ﭘﺮ ﻟﮕﺎ ﮐﺮ ﺍﮌﻧﮯ ﻟﮕﺎ۔ ﺩﻥ ﮨﻔﺘﻮﮞ، ﮨﻔﺘﮯ ﻣﮩﯿﻨﻮﮞ ﺍﻭﺭ ﻣﮩﯿﻨﮯ ﺳﺎﻝ ﻣﯿﮟ ﺑﺪﻟﺘﮯ ﺑﮭﻼ ﮐﮩﺎﮞ ﺩﯾﺮ ﻟﮕﺘﯽ ﮨﮯ؟
ﻣﮕﺮ ﮨﺮ ﺳﺎﻝ ﮐﮯ ﺍﺧﺘﺘﺎﻡ ﭘﺮ ﻣﺴﺰ ﺗﮭﺎﻣﺴﻦ ﮐﻮ ﺟﯿﮉﯼ ﮐﯽ ﻃﺮﻑ ﺳﮯ ﺍﯾﮏ ﺧﻂ ﺑﺎﻗﺎﻋﺪﮔﯽ ﮐﮯ ﺳﺎﺗﮫ ﻣﻮﺻﻮﻝ ﮨﻮﺗﺎ ﺟﺲ ﻣﯿﮟ ﻟﮑﮭﺎ ﮨﻮﺗﺎ ﮐﮧ
" ﻣﯿﮟ ﺍﺱ ﺳﺎﻝ ﺑﮩﺖ ﺳﺎﺭﮮ ﻧﺌﮯ ﭨﯿﭽﺮﺯ ﺳﮯ ﻣﻼ۔ ۔ ﻣﮕﺮ ﺁﭖ ﺟﯿﺴﺎ ﮐﻮﺋﯽ ﻧﮩﯿﮟ ﺗﮭﺎ۔ "
ﭘﮭﺮ ﺟﯿﮉﯼ ﮐﺎ ﺍﺳﮑﻮل ﺨﺘﻢ ﮨﻮﮔﯿﺎ ﺍﻭﺭ ﺧﻄﻮﻁ ﮐﺎ ﺳﻠﺴﻠﮧ ﺑﮭﯽ۔ ﮐﺌﯽ ﺳﺎﻝ ﻣﺰﯾﺪ ﮔﺰﺭﮮ ﺍﻭﺭ ﻣﺴﺰ ﺗﮭﺎﻣﺴﻦ ﺭﯾﭩﺎﺋﺮ ﮨﻮ ﮔﺌﯿﮟ۔

ﺍﯾﮏ ﺩﻥ ﺍﻧﮩﯿﮟ ﺍﭘﻨﯽ ﮈﺍﮎ ﻣﯿﮟ ﺟﯿﮉﯼ ﮐﺎ ﺧﻂ ﻣﻼ ﺟﺲ ﻣﯿﮟ ﻟﮑﮭﺎ ﺗﮭﺎ ": ﺍﺱ ﻣﮩﯿﻨﮯ ﮐﮯ ﺁﺧﺮ ﻣﯿﮟ ﻣﯿﺮﯼ ﺷﺎﺩﯼ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﻣﯿﮟ ﺁﭖ ﮐﯽ ﻣﻮﺟﻮﺩﮔﯽ ﮐﮯ ﺳﻮﺍ ﺷﺎﺩﯼ ﮐﺎ ﻧﮩﯿﮟ ﺳﻮﭺ ﺳﮑﺘﺎ۔ ﺍﯾﮏ ﺍﻭﺭ ﺑﺎﺕ۔۔ ﻣﯿﮟ ﺯﻧﺪﮔﯽ ﻣﯿﮟ ﺑﮩﺖ ﺳﺎﺭﮮ ﻟﻮﮔﻮﮞ ﺳﮯ ﻣﻞ ﭼﮑﺎ ﮨﻮﮞ۔ ۔ ﺁﭖ ﺟﯿﺴﺎ ﮐﻮﺋﯽ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﮯ - ﮈﺍﮐﮍ ﺟﯿﮉﯼ ﺍﻟﻔﺮﯾﮉ "
ﺳﺎتھ ﮨﯽ ﭨﯿﮑﺴﺎﺱ ﮐﺎ ﺭﯾﮍﻥ ﭨﮑﭧ ﺑﮭﯽ ﻟﻔﺎﻓﮯ ﻣﯿﮟ ﻣﻮﺟﻮﺩ ﺗﮭﺎ۔ ﻣﺴﺰ ﺗﮭﺎﻣﺴﻦ ﺧﻮﺩ ﮐﻮ ﮨﺮ ﮔﺰ ﻧﮧ ﺭﻭﮎ ﺳﮑﺘﯽ ﺗﮭﯿﮟ۔ ﺍﻧﮩﻮﮞ ﻧﮯ ﺍﭘﻨﮯ ﺷﻮﮨﺮ ﺳﮯ ﺍﺟﺎﺯﺕ ﻟﯽ ﺍﻭﺭ ﭨﯿﮑﺴﺎﺱ ﺭﻭﺍﻧﮧ ﮨﻮ ﮔﺌﯿﮟ۔ ﺷﺎﺩﯼ ﻣﯿﮟ ﮐﭽﮫ ﺩﻥ ﺑﺎﻗﯽ ﺗﮭﮯ ﺍﻭﺭ ﻭﮦ ﺟﯿﮉﯼ ﮐﻮ ﺷﺎﺩﯼ ﮐﮯ ﺩﻥ ﮨﯽ ﺳﺮﭘﺮﺍﺋﺰ ﺩﯾﻨﺎ ﭼﺎﮨﺘﯽ ﺗﮭﯿﮟ ﺍسﻠﯿﮯ ﺍﯾﮏ ﮨﻮﭨﻞ ﻣﯿﮟ ﺭﮎ ﮔﺌﯿﮟ۔ ﻋﯿﻦ ﺷﺎﺩﯼ ﮐﮯ ﺩﻥ ﺟﺐ ﻭﮦ ﭼﺮﭺ ﭘﮩﻨﭽﯿﮟ ﺗﻮ ﺗﮭﻮﮌﯼ ﻟﯿﭧ ﮨﻮ ﭼﮑﯽ ﺗﮭﯿﮟ۔ ﺍﻧﮩﯿﮟ ﻟﮕﺎ ﺗﻘﺮﯾﺐ ﺧﺘﻢ ﮨﻮ ﭼﮑﯽ ﮨﻮﮔﯽ۔ ﻣﮕﺮ ﯾﮧ ﺩیکھ ﮐﺮ ﺍﻥ ﮐﯽ ﺣﯿﺮﺕ ﮐﯽ ﺍﻧﺘﮩﺎ ﻧﮧ ﺭﮨﯽ ﮐﮧ ﺷﮩﺮ ﮐﮯ ﺑﮍﮮ ﺑﮍﮮ ﮈﺍﮐﮍ، ﺑﺰﻧﺲ ﻣﯿﻦ ﺍﻭﺭ ﯾﮩﺎﮞ ﺗﮏ ﮐﮯ ﭼﺮﭺ ﮐﺎ ﭘﺎﺩﺭﯼ ﺑﮭﯽ ﺍﮐﺘﺎﯾﺎ ﮨﻮﺍ ﮐﮭﮍﺍ ﺗﮭﺎ ﻣﮕﺮ ﺟﯿﮉﯼ ﺭﺳﻮﻣﺎﺕ ﮐﯽ ﺍﺩﺍﺋﯿﮕﯽ ﮐﮯ ﺑﺠﺎﺋﮯ ﮔﯿﭧ ﮐﯽ ﻃﺮﻑ ﭨﮑﭩﮑﯽ ﻟﮕﺎﺋﮯ ﺍﻥ ﮐﯽ ﺁﻣﺪ ﮐﺎ ﻣﻨﺘﻈﺮ ﺗﮭﺎ۔
ﺍﻥ ﮐﮯ ﭘﮩﻨﭽﺘﮯ ﮨﯽ ﺟﯿﮉﯼ ﻧﮯ ﺍﻥ ﮐﺎ ﮨﺎتھ ﭘﮑﮍﺍ ﺟﺲ ﻣﯿﮟ ﺍﻧﮩﻮﮞ ﻧﮯ ﺍﺏ ﺗﮏ ﻭﮦ ﺑﻮﺳﯿﺪﮦ ﺳﺎ ﮐﮍﺍ ﭘﮩﻨﺎ ﮨﻮﺍ ﺗﮭﺎ ﺍﻭﺭ ﺍﻧﮩﯿﮟ ﺳﯿﺪﮬﺎ ﺍﺳﭩﯿﺞ ﭘﺮ ﻟﮯ ﮔﯿﺎ۔ ﻣﺎﺋﯿﮏ ﮨﺎتھ ﻣﯿﮟ ﭘﮑﮍ ﮐﺮ ﺍﺱ ﻧﮯ ﮐچھ ﯾﻮﮞ ﺍﻋﻼﻥ ﮐﯿﺎ

" ﺩﻭﺳﺘﻮ ﺁﭖ ﺳﺐ ﮨﻤﯿﺸﮧ ﻣجھ ﺳﮯ ﻣﯿﺮﯼ ﻣﺎﮞ ﮐﮯ ﺑﺎﺭﮮ ﻣﯿﮟ ﭘﻮﭼﮭﺎ ﮐﺮﺗﮯ ﺗﮭﮯ ﺍﻭﺭ ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﺳﺐ ﺳﮯ ﻭﻋﺪﮦ ﮐﯿﺎ ﺗﮭﺎ ﮐﮧ ﺟﻠﺪ ﺁﭖ ﺳﺐ ﮐﻮ ﺍﻥ ﺳﮯ ﻣﻠﻮﺍﺅﻧﮕﺎ۔ ۔ ۔ ﯾﮧ ﻣﯿﺮﯼ ﻣﺎﮞ ﮨﯿﮟ -----"!!

ﻋﺰﯾﺰ ﺩﻭﺳﺘﻮ ﺍﺱ ﺧﻮﺑﺼﻮﺭﺕ ﮐﮩﺎﻧﯽ ﮐﻮ ﺻﺮﻑ ﺍﺳﺘﺎﺩ ﺍﻭﺭ ﺷﺎﮔﺮﺩ ﮐﮯ ﺭﺷﺘﮯ ﺳﮯ ﻣﻨﺴﻮﺏ ﮐﺮ ﮐﮧ ﮨﯽ ﻣﺖ ﺳﻮﭼﯿﮯ ﮔﺎ۔ ﺍﭘﻨﮯ ﺁﺱ ﭘﺎﺱ ﺩﯾﮑﮭﯿﮯ، ﺟﯿﮉﯼ ﺟﯿﺴﮯ ﮐﺌﯽ ﭘﮭﻮﻝ ﻣﺮﺟﮭﺎ ﺭﮨﮯ ﮨﯿﮟ ﺟﻨﮩﯿﮟ ﺁﭖ ﮐﯽ ﺫﺭﺍ ﺳﯽ ﺗﻮﺟﮧ، ﻣﺤﺒﺖ ﺍﻭﺭ ﺷﻔﻘﺖ ﻧﺌﯽ ﺯﻧﺪﮔﯽ ﺩﮮ ﺳﮑﺘﯽ ﻫﮯ-

سرو چشم و قلب

ایک دوست نے بتایا:


جب پہلی بار عقل میرے پاس آئی تو میں نے دریافت کیا کہ " تو کون ہے"
اس نے جواب دیا:
"عقل"
میں نے پوچھا کہاں رہتی ہو؟؟
جواب ملا
"سر میں"
اس کے بعد شرم میرے پاس آئی۔ میں نے پوچھا
"تو کون ہے"
اس نے جواب دیا
"شرم"
میں نے پوچھا تو کہاں رہتی ہے؟؟ اس نے جواب دیا:
"زیر چشم"
شرم کے بعد محبت آئی۔ میں اس سے بھی سوال کیا کہ "تو کون ہے؟"
اس نے جواب دیا
"مجھے محبت کہتے ہیں"
میں نے پوچھا تو کہاں رہتی ہے؟؟
اس نے جواب دیا
"دل میں رہتی ہوں"
پھر تقدیر آئی۔
میں نے اس سے یہی سوال کیا کہ "تو کون ہے؟؟"
جواب ملا "مجھے تقدیر کہتے ہیں"
میں نے پوچھا "تو کہاں رہتی ہے"
جواب دیا
"میں تو سر میں رہتی ہوں"
میں نے حیرت سےکہا۔ لیکن سر میں تو عقل کا قیام ہے۔ تقدیر نے جواب دیا
"لیکن جب میں آتی ہوں تو عقل رخصت ہو جاتی ہے"
اس کے ہٹتے ہی عشق آ گیا۔ میں پریشان ہو کر دریافت کیا
"تو کون ہے"
آشفتہ سری میں جواب ملا
"میں عشق ہوں"
میں نے اکتا کر سوال کیا "جناب کا قیام کہاں ہے؟
جواب دیا
"آنکھوں میں"
میں نے حیرت سے کہا۔ لیکن وہ تو شرم کا مقام ہے۔ کہنے لگا
"بجا ارشاد۔ لیکن جب میں آتا ہوں تو شرم رخصت ہو جاتی ہے"
سب سے آخر میں طمع آئی۔
میں نے پوچھا۔ جناب کی تعریف؟؟
"کہنے لگی۔ میں طمع ہوں۔"
آپ کا قیام؟؟
جواب دیا "دل میں"
لیکن وہاں تو محبت رہتی ہے۔
ہنس کر بولی:
"لیکن جب میں آتی ہوں تو وہ رخصت ہو جاتی ہے" ...... !!


جمعہ، 28 اگست، 2015

بکرا بمقابلہ گدھا

عید قربان کی آمد آمد تھی. دونوں دوست ایک بینک کے ملازم تھے. قربانی کیلیے بکرا خریدنا تھا. بینک سے پینٹ کوٹ پہنے ٹائی لگائے وہ مویشیوں کی منڈی پہنچ گئے. گاڑی پارک کی اور منڈی کا جائزہ لیا کہ کہاں سے شروع کیا جائے. 
سڑک کے دونوں اطراف تقریباً ایک کلو میٹر سے زیادہ علاقے میں جانور ہی جانور تھے.
جہاں گاڑی لگائی تھی وہیں سے پوچھنا شروع کیا. جو بکرا کچھ آنکھوں کو اچھا لگے اس کے دام پچاس ہزار کی حد کو عبور کر رہے ہوتے تھے. دن کی چائے پر دونوں نے اپنی حد تیس ہزار مقرر کی تھی. اس لیے پھر ان بکروں پر نظر ڈالنی شروع کی جو دیکھنے میں تھوڑے کم خوبصورت اور جسامت میں دبلے ہوں.
انتہائی کوشش کے باوجود کوئی بکرا پینتیس ہزار سے کم نہ ملا. ابھی منڈی کی بائیں طرف والی قطار آدھی ہوئی تھی. بینک سے آدھے وقت میں چھٹی بھی لے لی تھی، جس کی وجہ سے اس کام کو آج نمٹانا بھی واجب ہو رہا تھا.
بھوک اور تھکان مٹانے کیلیے ایک ریڑھی سے بھنے ہوئے مکئی کے سٹے لے کر کھانے شروع کر دیے. ہر قدم کے بعد ایک نئے بکرے کا دام پوچھ رہے تھے.
ایک بکرے کا دام پوچھا تو مالک نے اٹھارہ ہزار بولا. 
چونک کر رکے، بکرے کا معائنہ کیا، بکرا بالکل ٹھیک تھا. دام بھی مناسب تھے...
پھر بھی کہا کہ مزید کمی ہو سکتی ہے؟ بو لا نہیں. کچھ ادھر ادھر کی باتیں کرنے کے بعد وہ بکرا لینے پر راضی ہو گئے. 
اب بکرے کے مالک نے کہا کہ وہ بکرا نہیں بیچے گا.... پوچھا کیوں؟
 تو اس نے کہا کہ میں گاؤں سے آیا ہوں، مجھے گدھا خریدنا ہے... 
بس اس گدھے کیلیے بکرا بیچ رہا ہوں...... 
یہاں منڈی میں ایک شخص گدھا بیچ رہا ہے لیکن وہ بکرے کے بدلے مجھے گدھا نہیں دے رہا.... 
اگر تم مجھے اس سے گدھا خرید دو تو یہ بکرا مجھ سے لے لو... 
انھوں نے کچھ سوچا پھر گدھے والے کا ٹھکانہ پوچھا.... 
اس کے پاس گئے تو پتا چلا کہ وہ گدھا سولہ ہزار میں بیچ رہا ہے...
بات کچھ سمجھ آرہی تھی... 
سولہ ہزار کا گدھا اور دو ہزار ساتھ دیے جائیں تو قربانی کیلیے ہٹا کٹا بکرا اٹھارہ ہزار میں مل سکتا ہے.. 
انھوں نے سولہ ہزار گدھے والے کو دیے، رسی تھامی اور بکرے والے کی طرف چل دیے...... 
تھوڑا آگے جا کر ان کے پیروں تلے سے زمین نکل گئی کیونکہ وہاں اب وہ بکرے والا نہیں تھا، پیچھے مڑے تو گدھے والا بھی غائب. دونوں بینک کے ملازم منڈی میں گدھا تھامے کھڑے تھے، لوگ ان کو گھور رہے تھے، وہ شرم سے پانی پانی ہو رہے تھے....... 
ب کیا ہو سکتا تھا... 
گدھا گھر لے جایا جا سکتا تھا نہ کوئی خریدار تھا. وہاں ہی چھوڑنا پڑا اور سولہ ہزار کو چونا لگوا کر گھر آئے..

دھوکے کے بہت سے طریقے ہیں... 
مجھے امید ہے کہ آپ لوگوں کے ہاتھ میں اس عید پر گدھا نہیں ہوگا.. پھر بھی بتانا فرض ہے.. 
اگر منڈی میں قیمت پچاس ہزار چل رہی ہے تواٹھارہ میں لیا بکرا، بکرا نہیں ہوگا.


وہ بے بی کون تھی؟

آج کل کی بیویاں خاوند کو اس طرح بلاتی ہیں جیسے نکے بھائی یا بیٹے کو- اتنا بے تکلفانہ انداز کہ انجان بندہ سمجھ ہی نہیں پاتا کہ مخاطب شخص میاں ہے یا کچھ اور -
ایک خاتون بولیں،
" میں اس "ایاز" سے بہت تنگ ہوں. پریشان کر رکھا ہے اس نے- اتنا گند ڈالتا ہے کہ کمرے کا حشر کر دیتا ہے- "

ہم ہمدردی سے بولے
" بس جی آج کل کی اولاد ہے ہی نکمی" -

خاتون بگڑ کر بولیں
"ہائے دماغ ٹھیک ہے۔۔۔ ایاز، اولاد نہیں میری اولاد کے ابا ہیں"-

آپ ہی بتاو اب اس میں ہمارا کیاقصور ہم کو جو لگا,سو کہہ دیا-
آج کل میاں ،بیوی انتہائے محبت کا اظہار کرتے ہوئے بات چیت بھی ایسے کرتے ہیں کہ اچھا خاصا بندہ دھوکا کھا جائے ۔ معلوم ہی نہیں ہوتا کہ لاڈ بچوں سے ہو رہا کہ آپس میں-
مائی بےبی، مائی مونا ,مائی سوئٹو، شونو مونو -

ایک دفعہ شادی پرکھانے کے دوران ایک فیملی کی طرف میری کمر تھی ۔ ان میں سے ایک صاحب کہنے لگے،

"بےبی تم کھانا کھاو مجھے پریشان نہ کرو "
میں نےپیچھے دیکھ کر ازراہ ہمدری کہا،
"بھائی آپ کھانا کھالیں " بےبی "کو میں گود میں پکڑ لیتا ہوں-"

بس ایک مکا پڑا۔ ۔ اس کے بعد چراغوں میں روشنی نہ رہی ۔
جب روشنی آئی تومعلوم ہوا کہ ان حضرت کی شادی ہفتہ پہلے ہوئی تھی-

آج بھی سوچتا ہوں کہ وہ بے بی کون تھی؟

جمعرات، 27 اگست، 2015

پارساؤں کی دنیا کی ایک کہانی

 یہ 20 اگست 2015 کی صبح 2 بج کر تیس منٹ کا وقت ، کہ رات کے سناٹے میں ، ایک فلیٹ کے باہر ، دھماکے سے کسی کے گرنے کی آواز آئی اور کراہنے کی آواز آئی اور ساتھ ہی اوپر سے چور چور چلانے کی آواز ائی ، فلیٹ والے دوڑ کر باہر نکلے ۔
دیکھا ایک نوجوان ، زمین پر پڑا چلا رہا ہے ۔ اُسے پکڑ لیا گیا ، گارڈ این سی او نے نوجوان کو اُٹھایا اور چور سمجھ کر دوتین رائفل کے بَٹ مارے اور گالیاں دیں ۔ اتنے میں اوپر سے وہ این سی او بھی اُتر آیا جس کے فلیٹ سے نوجوان جان بچا کر کودا تھا ۔
اُس نے گارڈ کو بتایا کہ یہ شخص اِس کے فلیٹ میں گھسا تھا ۔ اِس کی کھٹکے سے آنکھ کھلی ۔ تو اِس نے پوچھا کون ہے ؟ جس کے جواب میں چور نے بھاگنے کی کوشش کی تو اِس نے چور کو پکڑ لیا ۔ چور نے اُسے دھکا دیا اور کھڑکی کی طرف سے بالکونی پر گیا اور وہاں سے نیچے چھلانگ لگا دی ۔
گارڈ نے وائرلیس پر اپنے ڈیوٹی آفیسر کو اطلاع دی ۔
کینٹ میں کھلبلی مچ گئی ، تھوڑی دیر میں ملٹری پولیس ، ڈیوٹی آفیسر پہنچ گئے ۔ تحقیقات ہوئی ۔

آپ بھی پڑھئیے یہ جو مجھے موصول ہوئی، کیوں کہ مجھ میں ہمت نہیں کہ اِس کو اردو کے قالب میں ڈھالوں  :


Int rep , Fwd as received:-
On 20 Aug 15 at about 0230 hrs Capt Abdullah Iftikhar, s/o Brig Iftikhar Comdt Avn Engineering School Rawalpindi , 20 L ex HQ 6 Armd Div entered in qtr occupied by Hav/Clk Ghulam Abbas of HQ 303 Avn Base for sexual purposes. As per detail the a/n Sldr was on UN Msn and repatriated in Feb 15.

On 15 Aug 15 he went to Rwp for officials duty and returned on 19 Aug ni. The said offr used to come at said qtr in the absence of NCO.

Today the offr enter in qtr to meet his wife but the NCO was present at qtr who try to catch him but the offr jumped from 1st floor and got multiple injuries and was caught. Now he is under custody of 39 MP.NCO belongs to Khair Pur Miras (Sind) and have 4x children.

Capt Abdullah Iftikhar, s/o Brig Iftikhar Comdt Avn Engineering School Rawalpindi is also married.


٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭
مؤمنین کے  پڑھنے اور سمجھنے کے لئے ، دو آیات :

الزَّانِيَةُ وَالزَّانِي فَاجْلِدُوا كُلَّ وَاحِدٍ مِّنْهُمَا مِئَةَ جَلْدَةٍ وَلَا تَأْخُذْكُم بِهِمَا رَأْفَةٌ فِي دِينِ اللَّهِ إِن كُنتُمْ تُؤْمِنُونَ بِاللَّهِ وَالْيَوْمِ الْآخِرِ وَلْيَشْهَدْ عَذَابَهُمَا طَائِفَةٌ مِّنَ الْمُؤْمِنِينَ [24:2]


 يَا أَيُّهَا الَّذِينَ آمَنُوا كُونُوا قَوَّامِينَ بِالْقِسْطِ شُهَدَاءَ لِلَّـهِ وَلَوْ عَلَىٰ أَنفُسِكُمْ أَوِ الْوَالِدَيْنِ وَالْأَقْرَ‌بِينَ إِن يَكُنْ غَنِيًّا أَوْ فَقِيرً‌ا فَاللَّـهُ أَوْلَىٰ بِهِمَا فَلَا تَتَّبِعُوا الْهَوَىٰ أَن تَعْدِلُوا وَإِن تَلْوُوا أَوْ تُعْرِ‌ضُوا فَإِنَّ اللَّـهَ كَانَ بِمَا تَعْمَلُونَ خَبِيرً‌ا ﴿النساء: ١٣٥﴾

اب کمنٹس پڑھئیے

٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭
  • 1 share
  • Imran Rafiq Could not understand the purpose of this post except embarrassment for Army as an institution and poor NCO who has 4 children as well. Our society will make fun of the NCO and his children only, may I request you to delete the post for the same reason.
    Like · Reply · 5 · 14 hrs
  • Saeed Mirza .....zada is a gone case at this age
  • Muhammad Mushtaq officer will get his share even without this post sir if possible delet it please
  • Jalal Hameed Bhatti Khalid Mohajir Zada SAHIB - giving qtr no and army number of the NCO is a conduct unbecoming from you - no where in the world such details are given. I always respected you - but I am signing off from you for you have done something that is not expected of an officer of your status.
    Like · Reply · 5 · 12 hrs
  • Muhammad Rafiq Pl control yourself and delete the post.
    Like · Reply · 1 · 11 hrs
  • Tariq Fazal Please delete the post it is so disgusting
  • Asif Alvi We must read it and see morale decline in army. I was told that during last month a final term cadet was caught steeling RS. 700000/- from canteen. It is not fault of PMA or army. The crime is increasing in our country and that is how army will also be victim. I suggest better psychiatrist tests and harsh punishments. By the way, it happens in all modern armies. Few years back there was a scandal of B 57 pilot, Kelly with husband of her subordinate. She was thrown out and TIME carried full story.
    Unlike · Reply · 1 · 10 hrs
  • Muhammad Athar Dear brother your posts have no value. It just show your mental aproach
  • Muhammad Usman Anwar Sir Sorry to respond. But it is a pathetic post with height of irresponsibility that you are posting such stuff without any verification mere on basis of "Fwd as Received".
  • Tariq Fazal No body is denying occurrence of such crime but giving names and address in the episode can have severe repercussions on the effected family. Sharing such information is highly unethical and immoral more so when at this stage it is just an accusation.
    Like · Reply · 1 · 6 hrs
  • Tariq Akram · Friends with Liaqat Toor and 1 other
    The posting of this type post not recommended.
    Like · Reply · 1 · 6 hrs
  • Arjmand Iqbal What is the purpose of this post ? Please delete this khalid Khalid Mohajir Zada
    Like · Reply · 1 · 6 hrs
  • Masood Khan Leaking or sharing someones personal information publicly i
  • Masood Khan is a crime. Please avoid such posts
  • Khalid Mohajir Zada
    پاکستانی فوج کے اُس جوان کی بیوی سے جنسی فائدہ اُٹھانا جو ، ملکی خدمات کے لئے ، بیوی اور چار بچوں سے دور پڑا ہو ۔

    حلال اور عین عبادت ہے ؟
  • Khalid Mohajir Zada
    پہلے گندے آدمی کو بُرا کہو ، پھر مجھے گالیاں نکالو ۔ تو شائد برداشت کر لوں ۔
  • Rizwan Ali I Will no more received your posts and mail. Didn't feel like mentioning Sir at the start
  • Khalid Raja Similar information with picture has already been beaten sufficiently on Facebook.
    Posting on one's own time line is deliberate effort to tarnish the armed forces image. If this is not the aim, then the post may be removed please.
    Like · Reply · 1 · 5 hrs
  • Sajjad Sikander Ranjha · 3 mutual friends
    Strange unnecessary post ...... Disgusting.
  • Tariq Malik This Khalid Mohajir Zada is same Khalid Naeemuddin his mission seems to be degradation of Pakistan Army. There was no need of this post Allah always like those who keeps PARDA on others he has not done any favour to NCO or father of that capt please delete this person from your contact list or delete the Group
    Like · Reply · 2 · 5 hrs
  • Zahir Khan What's the source of the information? Posting of unconfirmed material be avoided. The narrative smacks foul plz.
    Like · Reply · 1 · 5 hrs
  • Khan Feroze Khokhar Khalid Mohajir Zada... please have some common sense ... writing name and units of that poor NCO where does he stands in society..
    Please remove it..
    Or you just wznt to disgrace army for your own reasons then and but this is not the way.
    Like · Reply · 1 · 3 hrs
  • Khalid Mohajir Zada
    میں دیکھنا چاھتا ہوں ، کہ بلاڈی سویلیئن اور کاسہ لیس فوجیوں میں کیا فرق ہے ۔
    یا دونوں ، پاکستانی منافقانہ سکّے کے دو رُخ ہیں ۔
  • Khalid Mohajir Zada
    کیا میں ، فوج کے باقی پارساؤں کے نام بھی لکھوں ؟
    جو اب ماتھے پر چٹائی ، کا تلک سجائے پھرتے ہیں اور لوگوں کو درس و تبلیغ کرتے ہیں !
  • Khan Feroze Khokhar You are doing this when army is already fighting in one front and has to look back towards black spots who are dragging civilians attension in other direction...
    You are beyond repair... please see some doctor
    • Khalid Mohajir Zada
      آہ فیروز خان ، 20 لانسر کے آفیسر نے اُس وقت کیا جب راحیل شریف مجرموں کو گردن سے پکڑ رہا ہے اور تمام مسلمان فوجیوں کا سر شرم سے جھکا دیا ۔
      افسوس ۔ افسوس صد افسوس


      کیف تحکمونک ؟
      Like · 1 · 3 hrs
  • Khan Feroze Khokhar Ifzal Ahmed Chohan please fo not respond he is beyong repair ...must be taken to hospital in some mental ward
    Like · Reply · 2 · 3 hrs
  • Khalid Mohajir Zada
    جب بریگیڈئر کے تعلیم یافتہ بیٹے نے پہلی منزل سے چوروں کی طرح چھلانگ لگائی اور پڑا گیا ۔ اُس وقت ۔۔۔۔۔ !
    کسی غیرت مند کو شرم نہیں آئی !
    Like · Reply · 1 · 3 hrs
  • Ifzal Ahmed Chohan I agree Khan Feroze Khokhar. He is beyond local repair
    Like · Reply · 1 · 3 hrs
  • Khan Feroze Khokhar I sincerely apologise from all army officer..
    On act of khalid Mohajir Zada Khalid Naeemuddin Khalid.. with all his names... he is from my course... and disgracing us..
    Like · Reply · 1 · 3 hrs
    • Khalid Mohajir Zada
      فیروز خان: میرے سرپرست بننے کی کوشش مت کرو !
      یومنون بنو ، لا یومنون نہیں ۔
  • Tariq Malik Ifzal he is trying to take revenge from Pak Army for not being promoted. You are 100% correct he is BLR and BER. HAHAHA
    Like · Reply · 2 · 3 hrs
    • Khalid Mohajir Zada
      ملک صاحب : ھاں مجھے انفنٹری سکول والوں نے الفاء نہیں دی اِس لئے بدلہ لے رھا ہوں ۔ آرمر والوں سے ،

  • Khan Feroze Khokhar Yes i agree to Tariq Malik.. Ifzal Ahmed Chohan.. leave him
    Like · Reply · 1 · 3 hrs
  • Tariq Malik Khan Feroze no need to apologize.
    Like · Reply · 1 · 3 hrs
  • Ifzal Ahmed Chohan OK boss. He is nt worth discussion
    Like · Reply · 2 · 3 hrs
  • Hamza Malik Yeh bnda he hi ultay damagh ka
  • Khalid Mohajir Zada
    ابھی تو پارٹی شروع ہوئی ہے ۔
  • Khalid Mohajir Zada
    بے غیرت وہ نہیں ۔ جو جرم کرے ۔ وہ مجرم کہلاتا ہے ۔
    بے غیرت وہ جو جرم چھپانے کی کوشش کریں ۔
    جو آج پکڑے جارہے ہیں مجرموں کے ساتھ '
  • Hamza Malik Budhay teri screenshots de diye hn.. Kisi ko.. Ab dekh kesa tujh se Allah badlaa leta he..See Translation
  • Khalid Mohajir Zada
    تمام سچ بولنے کا دعویٰ کرنے والے ۔ اللہ کی اِس آیت کا ترجمہ پڑھ لیں ، اپنے مفسّر کے قلم سے ۔
    يَا أَيُّهَا الَّذِينَ آمَنُوا كُونُوا قَوَّامِينَ بِالْقِسْطِ شُهَدَاءَ لِلَّـهِ وَلَوْ عَلَىٰ أَنفُسِكُمْ أَوِ الْوَالِدَيْنِ وَالْأَقْرَ‌بِينَ إِن يَكُنْ
    غَنِيًّا أَوْ فَقِيرً‌ا فَاللَّـهُ أَوْلَىٰ بِهِمَا فَلَا تَتَّبِعُوا الْهَوَىٰ أَن تَعْدِلُوا وَإِن تَلْوُوا أَوْ تُعْرِ‌ضُوا فَإِنَّ اللَّـهَ كَانَ بِمَا تَعْمَلُونَ خَبِيرً‌ا ﴿النساء: ١٣٥﴾
  • Hamza Malik
    قرآن کی آیات میں اتنا حسن ہے کہ آپ جیسے بے ضمیر لوگوں سے پردہ کر لیتی ہیں
  • Shahid Hameed Absurd post please remove administer
  • Khalid Mohajir Zada
    پارساؤں کی دنیا کا ایک بہت بُرا آدمی ۔ خالد ، نعیم الدین
  • Hamid Ghouse Admin please delete this post.
  • Zia Ud Din · Friends with Liaqat Toor and 4 others
    crime
  • Khalid Mohajir Zada
    بلاڈی سویلئین کتنے بُرے ہیں ۔ جو اپنے ہی سوئلئین کے پیٹ سے کپڑا ہٹاتے ہیں ۔
  • Khalid Mohajir Zada
    اور "کاسہ لیس فوجی" کتنے اچھے ہوتے ہیں ۔

  • Khalid Mohajir Zada
    پارساؤں کی دنیا کا ایک بہت بُرا آدمی ۔ خالد ، نعیم الدین
  • Mohiuddin Choudhry Such stories are so numerous, better not to mention.
    Like · Reply · 1 · 2 hrs
  • Like · Reply · 1 · 2 hrs
  • Zakaullah Butt · Friends with Imran Rafiq
    Mohajir sahab what is the moral of the story or was it just a news?
    Like · Reply · 1 hr
  • Amr Hamza burai ko maat phlain
    Like · Reply · 1 hr
  • Khalid Mohajir Zada
    جی اللہ عورت کا پردہ کیوں نہیں رکھتا ؟
    نو مہینے تک مٹکا اُٹھائے پھرتی ہے اور پھر کوڑے کے ڈھیر پر پھینک دیتی ہے ۔
    • Khalid Mohajir Zada
      دوستو ، بھائیو اور بزرگو !
      برائیوں پر پردہ ڈال ڈال کر ہم یہاں تک پہنچ گئے ہیں ۔ کہ اللہ کے اِس حکم کا علی الاعلان نکار کرتے ہیں :


      الزَّانِيَةُ وَالزَّانِي فَاجْلِدُوا كُلَّ وَاحِدٍ مِّنْهُمَا مِئَةَ جَلْدَةٍ وَلَا تَأْخُذْكُم بِهِمَا رَأْفَةٌ فِي دِينِ اللَّهِ إِن كُنتُمْ تُؤْمِنُونَ بِاللَّهِ وَالْيَوْمِ الْآخِرِ وَلْيَشْهَدْ عَذَابَهُمَا طَائِفَةٌ مِّنَ الْمُؤْمِنِينَ [24:2]
    • Khalid Mohajir Zada

      Write a reply...

  • Khalid Mohajir Zada
    مزے کی بات یہ ہے ، کہ کپتان صاحب شادی شدہ ہیں اور بیوی بھی ساتھ رکھی ہوئی ہے ۔
  • Khalid Mohajir Zada
    اِس کپتان کو سزا دینے کا ایک ہی طریقہ ہے ۔ کہ وزیرستان بھجوا دو ۔
    تاکہ وہاں یہ " شہید " ہو جائے اور اِن کے والد بریگیڈیر صاحب کا سر فخر سے اونچا ہوجائے ۔
    لوگ اِس کے تابوت پر ترانے پڑھیں ۔
    فوجی سلیوٹ ملے -
    اِس کی بیوی اور بچوں کو لوگ تنگ نہ کریں ۔
    یہ مفتیان الوقت کا فتوٰی ہے -
    رہی حوالدار کلرک کی بیوی ۔ اُسے کوڑے مارے جائیں
    ذلیل کیا جائے ۔
    اُس کے شوہر کو نامردی کے طعنے دئیے جائیں ۔
    اور
    اور
    اور ۔ ۔ ۔ !
    تاکہ ریٹائرڈ اور حاضر سروس فوجی افسران کا ، انسٹیٹیوشن کا بھرم رکھنے پر فخر سے سر بلند ہو سکے
    اور وہ
    ایمان ، تقویٰ اور جھاد فی سبیل الفوج کے پرچم تلے باوقار انداز میں مارچ کر سکیں ۔
    سویلئین مردہ باد
    پاک فوج کے حرام کام کرنے والے ۔
    حرامی زندہ باد ۔
    Like · Reply · 1 · 35 mins
  • Khalid Mohajir Zada
    پارساؤں کی دنیا کا ایک بہت بُرا آدمی ۔ خالد ، نعیم الدین

خیال رہے کہ "اُفق کے پار" یا میرے دیگر بلاگ کے،جملہ حقوق محفوظ نہیں ۔ !

افق کے پار
دیکھنے والوں کو اگر میرا یہ مضمون پسند آئے تو دوستوں کو بھی بتائیے ۔ اگر آپ کو شوق ہے کہ زیادہ لوگ آپ کو پڑھیں تو اپنا بلاگ بنائیں ۔