میرے چاروں طرف افق ہے جو ایک پردہء سیمیں کی طرح فضائے بسیط میں پھیلا ہوا ہے،واقعات مستقبل کے افق سے نمودار ہو کر ماضی کے افق میں چلے جاتے ہیں،لیکن گم نہیں ہوتے،موقع محل،اسے واپس تحت الشعور سے شعور میں لے آتا ہے، شعور انسانی افق ہے،جس سے جھانک کر وہ مستقبل کےآئینہ ادراک میں دیکھتا ہے ۔
دوستو ! اُفق کے پار سب دیکھتے ہیں ۔ لیکن توجہ نہیں دیتے۔ آپ کی توجہ مبذول کروانے کے لئے "اُفق کے پار" یا میرے دیگر بلاگ کے،جملہ حقوق محفوظ نہیں ۔ پوسٹ ہونے کے بعد یہ آپ کے ہوئے ، آپ انہیں کہیں بھی کاپی پیسٹ کر سکتے ہیں ، کسی اجازت کی ضرورت نہیں !( مہاجرزادہ)

فیس بک کے دیوانے

جمعہ، 30 دسمبر، 2016

پرانا دور

وہ دور بھی کیا دور تھا ، اُس دور میں ماسٹر اگر بچے کو مارتا تھا تو بچہ گھر آکر اپنے باپ کو نہیں بتاتا تھا، اور اگر بتاتا تھا تو باپ اُسے ایک اور تھپڑ رسید کردیتا تھا ۔

یہ وہ دور تھا جب ”اکیڈمی“کا کوئی تصور نہ تھا، ٹیوشن پڑھنے والے بچے نکمے شمار ہوتے تھے ۔ بڑے بھائیوں کے کپڑے چھوٹے بھائیوں کے استعمال میں آتے تھے اور یہ کوئی معیوب بات نہیں سمجھی جاتی تھی۔

لڑائی کے موقع پر کوئی پستول نہیں نکالتا تھا، صرف اتنا کہنا کافی ہوتا تھا کہ
”میں تمہارے ابا جی سے شکایت کروں گا،،۔

یہ سنتے ہی اکثر مخالف فریق کا خون خشک ہوجاتا تھا۔

اُس وقت کے اباجی بھی کمال کے تھے، صبح سویرے فجر کے وقت کڑکدار آواز میں سب کو نماز کے لیے اٹھا دیا کرتے تھے۔ بچے اپنے اپنے دوستوں کے ساتھ فجر کی نماز پڑھنے ٹولیوں میں مسجد کی طرف جاتے ۔ بے طلب عبادتیں ہر گھرکا معمول تھیں۔ ناشتہ اُس وقت تک نہ ملتا جب تک ناشتے سے پہلے ایک سیپارہ نہ ختم ہوتا ۔

کسی گھر میں مہمان آجاتا تو اِردگرد کے ہمسائے حسرت بھری نظروں سے اُس گھر کودیکھنے لگتے اور فرمائشیں کی جاتیں کہ ”پروہنے“کو ہمارے گھر بھی لے کرآئیں۔
مجھے اچھی طرح یاد ہے کہ ہم ہر سال ، مہمان بن کر جاتے ، پانچ سالہ چھوٹی بہن تنگ آجاتی اور احتجاج کرتی کہ وہ ابا کو شکایت لگائے گی کہ ہم بھوکے ہیں دوسروں کے گھروں میں کھانا کھاتے ، کیوں کہ ناشتہ ایک کے گھر ہوتا ، دوپہر کا کھانا دوسرے کے گھر اور شام کا کھانا سب ایک گھر میں جمع ہوجاتے ، خوش ذائقہ کھانے کا مقابلہ ہوتا ، اپنا اپنا کھانا لے کر آتے سب جی بھر کر کھاتے، مجھے یاد ہے کہ مہمان کے کھانے میں زردہ یا کھیر ضرور ہوتی۔ کھیر میں کُترے ہوئے بادام ، کھوپرا اور کشمش کے لئے ضرور کھاتا ۔زردہ بھی کئی رنگ کا ہوتا ۔

جس گھر میں مہمان آتا تھا وہاں پیٹی میں رکھے، فینائل کی خوشبو میں بسے  بستر نکالے جاتے ، پلنگوں کی ادوائن کَسی جاتی ۔
خوش آمدید اور شعروں کی کڑھائی والے تکیئے رکھے جاتے ،
مہمان کے لیے دھلا ہوا تولیہ لٹکایا جاتااورغسل خانے میں نئے صابن کی ٹکیا رکھی جاتی تھی۔
جس دن مہمان نے رخصت ہونا ہوتا تھا، سارے گھر والوں کی آنکھوں میں اداسی کے آنسو ہوتے تھے، مہمان جاتے ہوئے کسی چھوٹے بچے کو دس روپے کا نوٹ پکڑانے کی کوشش کرتا تو پورا گھر اس پر احتجاج کرتے ہوئے نوٹ واپس کرنے میں لگ جاتا ، تاہم مہمان بہرصورت یہ نوٹ دے کر ہی جاتا۔ اور مہمان کو ٹرین یا لاری اڈے تک چھوڑنا اور ٹھیلے سے فروٹ خرید کر دینا فرض میں شمار ہوتا ۔

شادی بیاہوں میں سارا محلہ شریک ہوتا تھا، شادی غمی میں آنے جانے کے لیے ایک جوڑا کپڑوں کا علیحدہ سے رکھا جاتا تھا جو اِسی موقع پر استعمال میں لایا جاتا تھا، جس گھر میں شادی ہوتی تھی اُن کے مہمان اکثر محلے کے دیگر گھروں میں ٹھہرائے جاتے تھے،
لڑکی والوں سے عورتیں پوچھتیں بہن جہیز کے لئے بتاؤ میں کیا دوں ؟
جو جہیز میں حصہ نہ ڈال سکتے وہ گھر میں پڑے ہوئے بڑے کنستر نما غلّے میں حسبِ توفیق رقم ڈال دیتے ، محلے کی جس لڑکی کی شادی ہوتی تھی بعد میں پورا محلہ باری باری میاں بیوی کی دعوت کرتا تھا۔
عید پر سویّاں گھروں میں خود بنائی جاتی ، سویّاں بنانے کی مشین ، کئی گھروں میں چکر لگاتی ۔
کبھی کسی نے اپنا عقیدہ کسی پر تھوپنے کی کوشش نہیں کی، کبھی کافر کافر کے نعرے نہیں لگے، بس ہمیں دو فرقوں کا علم تھا سُنّی اور شیعہ۔ ہمارے محلّے کے بخاری صاحب ہم بچوں کو لے کر مجلسوں میں لے کر جاتے۔ابّا اور امی نے کبھی اعتراض نہیں کیا ۔ 

دادی، بس ایک جملہ کہتیں کہ میت کے تین دن بعد رونا اچھی بات نہیں مردے کو تکلیف ہوتی ہے ۔
جس کے گھر میت ہوتی وہاں چالیس روز تک چولہا نہ جلتا اور نہ وہ بھوکے سوتے ۔ باریاں بندھ جاتیں ۔
ہر محلے میں ایک اماں حجن ضرور ہوتی جو حج کر کے اِس رتبے پر پہنچتی، جس سے حج کا آنکھوں دیکھا حال عورتیں سُنتی اور دل میں حج کی خواہش بیدار رکھتیں ،

سب کا رونا ہنسنا سانجھا تھا، سب کے دُکھ ایک جیسے تھے ، سب غریب تھے، سب خوشحال تھے۔

کسی کسی گھر میں بلیک اینڈ وائٹ ٹی وی ہوتا تھا اور سارے محلے کے بچے وہیں جاکر ڈرامے دیکھتے تھے۔

دوکاندار کو کھوٹا سکّہ چلا دینا ہی سب سے بڑا فراڈ ہوتا تھا ۔

آج کھوٹے سکے تو ملتے ہی نہیں، کیونکہ اب کھوٹے انسانوں کادور ہے،  جو کھوٹاہے، وہی خوب چلتا ہے اصل کو کوئی پوچھتاہی نہیں!
 

Your 2017 Horoscop !


As the New Year is fast approaching, it’s time to think about what the future holds! And though many persons don’t put stock into horoscopes and astrology, sometimes, those kooky predictions can be surprisingly spot on. So let’s take a look at the overview of zodiac 2017 for each sun sign.
  


ARIES (MARCH 21 – APRIL 19)

People who were born under the sign of Aries, 2017 will be a period of fun and adventure. This might be a good time to start a new business. Do not forget to go for vacations with your loved ones in 2017. Health can be excellent if you are regular in your exercise workouts. Love life will be blissful for the Rams provided you do not make promises that you cannot keep.
TAURUS (APRIL 20 – MAY 20)
The 2017 horoscope prediction for the Taurus star sign forecasts a harmonious and peaceful year for the bulls. Spiritually you will be inclined towards finding your inner peace. And do not let your fears spoil your well-being. Love affairs have chances of becoming permanent. Married couples can plan for a baby. A healthy diet is a must if do not wish to fall sick.

GEMINI (MAY 21 – JUNE 20)
2017 is a year of major changes for the individuals who were born under the Gemini sun sign. Do not let your hyperactivity spoil your happiness this year. Be it career or finance, think long term before planning anything drastic. Your psychic abilities too might improve in 2017 which help you understand your life better. The sun sign 2017 forecasts suggest that this might be the year when you find your right partner.

CANCER (JUNE 21 – JULY 22)
People born under the sign of Cancer will have a year of difficult choices in 2017. Do not go about splurging money on expensive stuff that you don’t need. Your partner might need your help in overcoming their fears. Health and relationships for the Crabs will need a lot of hard work in order to be stable.

LEO (JULY 23 – AUGUST 22)
The 2017 horoscope prediction for the Leo born sun sign predicts a fabulous year. You will be blessed with good luck and happiness. Don’t keep waiting for the right moment in your job or relationships. Just enjoy the journey and learn as you go along. You never know, you might even win that lucky lottery that you have been buying for so many years!

VIRGO (AUGUST 23 – SEPTEMBER 22)
For Virgo individual will have to be very diplomatic in 2017.  Some old decisions might create problems if you don’t handle them the right way. This is the right time to let go of relationships that haven’t been working out. And do not let stress get the better of you.

LIBRA (SEPTEMBER 23 – OCTOBER 22)
The 2017 Libra horoscope predictions forecast that this will be your year of discovery and innovations. Let your creative side come to the forefront. Express your ideas to other so that they can understand your dreams better. You will be a leading example for everyone around you. And do not forget to spend quality time with your family and loved ones.

SCORPIO (OCTOBER 23 – NOVEMBER 21)
2017 year horoscope predictions for Scorpio astrology sign foretell that this year you are in a hurry to put your past behind. You will take the initiative to make your goals and targets work out for you. Love affairs will be many but only few will be serious. Eat healthily if you wish to be physically and emotionally fit.

SAGITTARIUS (NOVEMBER 22 – DECEMBER 21)
Sagittarius zodiac in 2017 will have the enthusiasm and will power to move ahead with a firm mind. Your social life will be amazing. Career and business projects will be challenging but profitable. Skin allergies will need to be taken care of. Sex and romance will be at all-time high for the Archers in 2017.

CAPRICORN (DECEMBER 22 – JANUARY 19)
People born under the zodiac sign of Capricorn will have a peace of mind  and harmony in 2017. Though you have a reputation of being practical, in 2017 the sea goats will see an innovative side to their personality. Love and romance too will be an important part of your life. This is a good year to get married.

AQUARIUS (JANUARY 20 – FEBRUARY 18)

People born under the zodiac sign of Aquarius will flourish in 2017- it will be a year of excellent and positive opportunities. Be it love or career you will flourish in anything you put your heart to. Work will be plentiful and so will the remuneration. The pregnancy horoscope 2017 forecasts birth of a child for the Water Bearers in 2017.

PISCES (FEBRUARY 19 – MARCH 20]

The birthday horoscope 2017 predicts that the Pisces sun sign people will be able to look at life in a positive and calm manner. This cool demeanor will be the secret to their success in personal and professional life. The career prediction 2017 by date of birth warns you not to let your dreams and illusions stop you from achieving your goals. Fulfill all your projects with utmost sincerity and integrity

Who can advice rightly ?

Sorry its kind of irrelevant post but really need to ask، Can someone give me an advice? :

Lately, I noticed that my husband had lots of calls on His phone, and when I ask who is it, he always hangs it up quickly and he says it's one of his friends/business contacts.

I also noticed that recently, he has been coming home late, and when I ask why was he late, he always tells me that he went overtime because of a team meeting, although when I checked his pay slips, he had no overtime fee and I was a bit surprised since as far as I know, they didn't had any team meets since 3 months ago.

So, I went to his boss and asked about this, but his boss said that they only did a team building meeting one time with his co-office mates a long time ago (which confirms that I was right), and as an extra, he has been absent on that meeting, and his boss told me that he's been absent from work a couple of days as well.

The next day, he went out and told me he'll be attending his "urgent team meeting", so, keeping a distance, I followed him with my friend in her car and not far away from our place, a young girl fetched him from his car. 

We stopped our car from a distance to make sure they won't hear me and observed them, and when they were going to drive out, I was about to follow then but when We started the engine, it died on us.

So I want to ask for advice, where would the problem be?

, ,
,
 ,
,
,
,
,
Is it the spark plug that caused the starting to fail, or is it on the main engine? The clutch, perhaps? 


Please give me a good advice.

نمّو اور بولنے والا پراٹھا

یہ تصویر مجھے اپنا بچپن  یاد کرا گئی ۔ 

جب سکول سے دیر ہونے پر ، امّی پراٹھے پر اچار کا مصالحہ مسل کر ہاتھ میں پکڑا دیتی اور کہتیں ،
" نمّو راستے میں کھا لینا اور ھاں کسی دوست کو نہ دے دینا "

سکول پہنچتے پہنچے اچار پراٹھا کھا لیا جاتا جو گھر سے سو گز کے فاصلے پر تھا ۔ اور سکول میں لگے ہوئے نلکے سے منہ دھو کراور  پانی پی کر اسمبلی میں جا پہنچتے ۔
پھر جونہی آدھے گھنٹے کی بریک ہوتی ، نمّو  بھاگتے ہوئے گھر آتا، امّی نے چھلیاں ابال کر رکھی ہوتیں ۔آپا اور چھوٹے بھائی (امّو ) کا حصہ بھی امّی کے ھاتھ کی بنائی ہوئی کپڑے کی تھیلی میں لیتا اور راستے میں اپنی چھلی کھاتے ، سکول پہنچ کر دونوں کا حصہ انہیں دے دیتا ۔
امّی کی بنائی ہوئی چھلیوں سے، اصلی گھی کی سوندھی سوندھی خوشبو آتی ۔ ناشتہ  ایک ہی ہوتا یعنی ، پراٹھا اور چائے ۔ پراٹھا بھی ڈبل پرت کا کرکراتا ہوا ہوتا ۔ جس کے اندر نرم چکر دار گودا ہوتا ،
جونہی امی سیدھے توے سے پراٹھا اتارتیں ، نمّو اپنا پراٹھا لے کر چارپائی پر جا بیٹھتا فوراً اُس کی بھاپ نکالتا اوپر کی پرت الگ اور نیچے کی الگ کرتا اور نہیں ٹھنڈا کرنے اور کڑک ہونے کے لئے رکھ دیتا ، ساتھ ہی نرم گودا چائے میں ڈبو کر کھاتا ۔

اُس کے بعد کڑ کڑ کرتی پرتیں ۔ کھاتا لیکن نظریں چھوٹے بھائی پر ہوتیں کہیں وہ پرتوں پر بلّی کی طرح جھپٹا نہ مارے ۔
پھر نّمو گھر سے دور چلا گیا جب چھٹیوں پر گھر آتا تو امّی وہی پراٹھا بنا کر دیتیں ، نمّو چوکی پر بیٹھ کر پراٹھے سے بھاپ نکالتا اور پرتیں علیحدہ کئے امّی سے باتیں کرتا ہوا ، بغیر چوکنا ہوئے کھاتا ، کیوں کہ امّو بھی نوکری پر دور جاچکا تھا ۔ 

پھر نمّو کی شادی ھوگئی ، اُس کی بیوی کو بھی کڑکڑاتا پراٹھا بنانا آتا تھا ، بچے ہوئے ، چھوٹے بچے کی ضد ہوتہ کہ ،
" پپّا کی طرح " بولنے والا پراٹھا " ہی کھاؤں گا ۔

اب کہاں وہ بولنے والا پراٹھا اور کہاں نمّو !

لیکن ، پریشان نہ ہوں !

اب بھی نمّو بولنے والے پاپوں سے کبھی کبھی ناشتہ کرتا ہے اور پراٹھوں کی آوازکا لطف لیتا ہے ۔

بدھ، 28 دسمبر، 2016

کیا عمران خان یہودی ایجنٹ ہے ؟

آپ اس سوال کو کو سیاسی عداوت کانام بھی دے سکتے ہیں۔ مگر سابق گورنر سندھ، ھمدرد یونیورسٹی کے بانی ھے ۔ حکیم محمد سعید شہید ، کی
عمران خان سے کونسی سیاسی عداوت تھی....؟
حکیم محمد سعیدشہید،  نے اپنی شہادت سے دو سال قبل 1996 میں اپنی کتاب "جاپان کی کہانی" شائع کی اور اس کتاب میں سابق گورنر سندھ حکیم محمد سعید نے ، عمران خان کی یہودیت نوازی کا پردہ مکمل طور پر چاک کردیا تھا۔ حکیم محمد سعید اس یہودی سازش کو بےنقاب کرتے ہوئے ، اپنی کتاب کے صفحہ نمبر 13؛ 14 ؛ 15 پر لکھتے ہیں۔
" بیرونی قوتوں نے ایک سابق کرکٹر عمران خان کا انتخاب کیا ہے؛ یہودی میڈیا نے عمران خان کی پبلسٹی شروع کردی ہے؛ سی این این اور بی بی سی عمران خان کی تعریف میں زمین و آسماں کے قلابیں ملا رہی ہے۔ پاکستانی میڈیا کو کروڑوں روپے دیئے جا چکے ہیں، تاکہ عمران خان کو خاص انسان بنائے؛ برطانیہ جس نے فلسطین کو اسرائیلی ہاتھ میں دے کر؛ یہودی ریاست بنانے میں مکمل تعاون کیا؛ وہ ایک طرف عمران خان کو آگے بڑھا رہے ہیں اور دوسری طرف آغا خان کو ہوائیں دے رہا ہے۔"
حکیم محمد سعید شہید، آگے سوال اٹھاتے ہیں ، 
" میرے نوجوانوں؛؛ کیا پاکستان کی اگلی حکومت یہودی الاصل ہوگی ......؟؟"

یہ وہ دور تھا؛ جب عمران خان سیاست کا " س ی ا - - " یاد کررہا تھا؛
مگر اس حکیم الوقت نے اُس مرض کو بروقت بھانپ لیا تھا... جو پاکستانی قوم کی رگوں میں سرایت کر رہا تھا اور شائد یہی وہ حق و سچ کی جراءت کا نتیجہ تھا کہ حکیم محمد سعید کو بے دردی کے ساتھ شہید کیا گیا...

پارلیمنٹ پر حملہ ہو یا پاکستان کے سرکاری اداروں پر حملہ 120 دن کا دھرنا اور بار بار انگلی کے اٹھ جانے کا ذکر یہ تمام اس “گرینڈ پلان ” کا حصہ تھا جسے عمران خان اور اس کے اسپانسرز نے ” لندن ” میں بیٹھ کر تیار کیا تھا۔  یہودی قوتیں فیصلہ کرچکی تھیں ، کہ 2013 میں پاکستان ان کے نمائندے کے سپرد کردیا جانا چاھئیے، اِس سازش میں مقتدر شخصیات کو بھی شامل کیا گیا اور کوشش کی گئی کہ ایسے حالات پیدا کئے جائیں کہ حکومت بوکھلا جائے اور اِس بوکھلاہٹ میں ایسے حالات پیدا کر دیئے جائیں کہ ، فوج کو ایک بار پھر مجبوراً ایک قدم آگے بڑھنا پڑے ،
لیکن بحیثیت ایک پاکستانی میں ، اُن تمام سکیورٹی اور سیفٹی کے اداروں کو سلام پیش کرتا ہوں جنہوں نے ، اُن تمام چالوں کو اپنی سیاسی بصیرت اور مدبّرانہ صلاحیتوں سے ، شکست دی ، 

سوشل میڈیا پر ایک سوچے سمجھے منصوبے کے تحت ، چائے کی پیالی میں طوفان اُٹھانے کی کوشش کی جارہی ہے ، تاکہ پاکستان اور چائینہ کی اُن تمام کوششوں کو صفر سے ضرب دے دی جائے جو وہ مستقبل کے ایک نئے ایشیاء کی تخلیق کرنے کے لئے" سی پیک " کی صورت میں کر رہے ہیں جس میں ، یہودیوں  کا مستقبل دھندھلا رہا ہے ۔
چین ، روس، تاجکستان ، ازبکستان ، افغانستان ، چین ، ایران اور پاکستان ایک نئے تجارتی معاہدوں میں بندھ رہے ہیں ۔ اور وہ تمام یہودی سرمایہ کاری جو اُن کے خونی ہتھیاروں کو بنانے اور اِن ملکوں میں جہادِ ابلیس کے نام پر خون بہانے کے لئے کی جارہی تھیں وہ سب ضائع ہوجائیں گی،

اگر آپ موجودہ سی پیک روٹ کو دیکھیں تو یہ موجودہ سڑکوں سے گذرتی ہوئی، بلتستان ، پختونخواہ ، پنجاب اور سندھ سے گذرتی ہوئی بلوچستان میں ختم ہوتی ہے ۔
پنجاب حکومت نے موٹر وے اور فیڈرل گورنمنٹ نے نیشنل ھائی وے کی صورت میں پاکستان کے بڑے شہروں کے درمیان اور تجارتی روٹس پر ، اپنے عوام کی سہولت کے لئے ، بہترین سڑکوں کا جال بچھایا ہوا ہے۔

سی پیک ، کا پہلا قافلے کا دوطرفہ تجربہ ہوا، جس کو قومی اداروں نے اپنی پوری مساعی سے کامیاب بنایا ۔ لیکن ابھی خطرات کم نہیں ہوئے ۔
عمران خان کی صورت میں ، یہودی لابی ابھی تک نظریں جمائے بیٹھی ہے ، مگر اب اُن کو اپنا کوئی اور مہرہ تلاش کرنا پڑے گا کیوں ؟
موجودہ بلدیاتی نظام نے ، اُن کے ارادوں کو مکمل شکست سے دوچار کر دیا ہے ۔

میرے خیال میں اب اگلا دور ایک نئے پاکستان کی اقتصادی اور سیاسی شروعات کا دور ہوگا ، جس کے لئے ایشیاء کی تمام مقتدر قوتیں یہودی لابی کے خلاف متحد ہورہی ہیں ۔

منگل، 20 دسمبر، 2016

خنزیر کی چربی اور ای نمبرز سٹینڈرائزیشن

ﯾﻮﺭﭖ ﺳﻤﯿﺖ ﺗﻘﺮﯾﺒﺎ ﺗﻤﺎﻡ ﻏﯿﺮ ﻣﺴﻠﻢ ﻣﻤﺎﻟﮏ ﻣﯿﮟ ﺧﻨﺰﯾﺮ ﮐﺎ ﮔﻮﺷﺖ ﭘﮩﻠﯽ ﭘﺴﻨﺪ ﮨﮯ - ﺍﻥ ﻣﻠﮑﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺑﮩﺖ ﺳﮯ ﻓﺎﺭﻡ ﮨﯿﮟ ﺟﮩﺎﮞ ﺍﺱ ﺟﺎﻧﻮﺭ ﮐﯽ ﭘﺮﻭﺭﺵ ﮐﯽ ﺟﺎﺗﯽ ﮨﮯ - ﺍﮐﯿﻠﮯ ﻓﺮﺍﻧﺲ ﻣﯿﮟ ﮨﯽ 42,000 ﺳﮯ ﺯﯾﺎﺩﮦ ﻓﺎﺭﻡ ﮨﯿﮟ - ﺧﻨﺰﯾﺮ ﻣﯿﮟ ﺩﻭﺳﺮﮮ ﺗﻤﺎﻡ ﺟﺎﻧﻮﺭﻭﮞ ﮐﮯ ﻣﻘﺎﺑﻠﮯ ﺯﯾﺎﺩﮦ ﭼﺮﺑﯽ ﮨﻮﺗﯽ ﮨﮯ - ﻟﯿﮑﻦ ﯾﻮﺭﭖ ﺍﻭﺭ ﺍﻣﺮﯾﮑﮧ ﮐﮯ ﻟﻮﮒ ﭼﺮﺑﯽ ﺳﮯ ﭘﺮﮨﯿﺰ ﮐﺮﺗﮯ ﮨﯿﮟ -
ﺗﻮ ﺧﻨﺰﯾﺮ ﮐﯽ ﭼﺮﺑﯽ ﺟﺎﺗﯽ ﮐﮩﺎﮞ ﮨﮯ ؟
ﺗﻤﺎﻡ ﺧﻨﺰﯾﺮ ﻣﺤﮑﻤﮧ ﺧﻮﺭﺍﮎ ﮐﯽ ﻧﮕﺮﺍﻧﯽ ﻣﯿﮟ ﻣﺬﺑﺢ ﺧﺎﻧﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺫﺑﺢ ﮐﯿﮯ ﺟﺎﺗﮯ ﮨﯿﮟ - ﺍﻭﺭ ﻣﺤﮑﻤﮧ ﺧﻮﺭﺍﮎ ﮐﮯ ﻟﺌﮯ ﺍﻥ ﺧﻨﺰﯾﺮﻭﮞ ﺳﮯ ﻧﮑﻠﯽ ﮨﻮﺋﯽ ﭼﺮﺑﯽ ﮐﻮ ﺑﺮﺑﺎﺩ ‏( ﺧﺘﻢ ‏) ﮐﺮﻧﺎ ﺩﺭﺩ ﺳﺮ ﺗﮭﺎ -
ﺳﺎﭨھ ﺳﺎﻝ ﭘﮩﻠﮯ ﺗﮏ ﺍﺳﮯ ﻋﻤﻮﻣﺎ ﺟﻼ ﺩﯾﺎ ﺟﺎﺗﺎ ﺗﮭﺎ - ﭘﮭﺮ ﺍﻥ ﻟﻮﮔﻮﮞ ﻧﮯ ﭼﺮﺑﯽ ﮐﻮ ﺍﺳﺘﻌﻤﺎﻝ ﮐﺮﻧﺎ ﺳﯿﮑھ ﻟﯿﺎ -
 ـــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــ
غالباً 2000 کے آخر یا 2001 کے شروع میں 

Occupational Safety and Health Administration

کے دوران میں ، ای نمبرز سے متعارف ہوا تھا جو  American Standards Association (ASA)
انٹرنیشنل سٹینڈرائزیشن (جنرک نیم) کا حصہ تھی ۔ جو یقیناً ایک قابلِ شتائش معلومات تھیں ، 

یوں سمجھیں کہ ، ہر کوئی یہ نہیں سمجھ سکتا کہ ہمارے ملک میں کیا کیا چیزیں بازار سے تیار اشیاء میں ڈالی جاتی ہیں ، مثلاً ، چینیوں نے مونگ پھلّی کے اوپر کچھ اشیاء لگا کرکھانے کے لئے مارکیٹ میں بھیجی ہیں ۔

یہ بڑی بیٹی نے لاکر مجھے دیں ،

" اگر برفی یا چم چم کوئی کھانے کی چیز مانگیں تو یہ دینا ، اپنی "پرچونی" مت دینا ۔ بچوں کے پیٹ خراب ہوجائیں گے" 


اب اُس کو کیا معلوم کہ ، چم چم اور برفی کھاتی ہی میری پرچونی ہیں ۔ نہ میرا پیٹ خراب ہوا نہ اُن کا۔

خیر چینی ڈبے پر یہ معلومات ہیں ۔ 
کچھ سمجھ آئیں ؟
مجھے بھی نہیں آئیں ! چلیں میں کلوز اپ دکھاتا ہوں !

ا

لیکن اگر یہی پراڈکٹ امریکن ہوتی تو اِس کین پر ، تمام معلومات ، اِس سٹینڈرڈ کے تحت درج کی جاتیں ۔

 اب اگر ہم E100–E199 (colours) کو بڑا کر کے دیکھیں تو ہمیں معلوم ہوگا ۔ 


 اب اگر ہم پیلے رنگ  E100–E109 (colours) کو بڑا کر کے مزید دیکھیں ۔ تو معلوم ہو گا کہ، کسی بھی کھانے کی شئے میں ملایا گیا پیلا رنگ ، کس خوراک کی شئے کا جزو ہے ۔


گویا پیلے رنگ کی بنیاد ہلدی ہے اور اُس کا عام فہم نام E100 ہے ۔
جیسے میرا سویلئین نام 4410328480551  ہے ۔ جس سے آپ میری مکمل معلومات حاصل کر سکتے ہیں یا فوجی نام 17543 ہے ۔

اب ہم آتے ہیں انگریزوں کی طرف یا یورپی ممالک کی طرف ، کیا ہم پاکستان ، بھارت اور بنگلہ دیش والے اُنہیں الو کا پٹھا سمجھتے ہیں ، کہ وہ، 

گُڑ کھائیں اور گُلگُلوں سے پرہیز کریں گے
بلکہ اُلو کا پٹھا تو یورپی ممالک میں پاکستان ، بھارت اور بنگلہ دیش سے جانے والے دوغلے مسلمان بنا رہے ہیں ؟

 خنزیز کا گوشت یورپیوں،کی پسندیدہ غذا ہے ۔ جسے وہ خنزیر کو پال کر اور انہیں ذبح کر کے حاصل کرتے ہیں بالکل ایسے جیسے ہم دنبے یا بھیڑ سے فائدہ لیتے ہیں ۔
چنانچہ ، سور کا گوشت ، ہڈیاں ، چربی،  آنتیں ، کھال ، گوشت ، سری اور پائے سب سے وہ بھرپور فائدہ اٹھاتے ہیں اور دوسروں کو بھی منع نہیں کرتے جیسے ہندو، گائے ، بھیڑ بکری و مرٖغی کے چٹ پٹے روسٹ سے لذت کام و دہن لیتے ہیں ۔
یہ کام تو یورپی ممالک صدیوں سے کر رہے ہیں اور سب کو معلوم ہے ۔
اب رہا اسلامی نقطہءِ نظر ۔ اللہ کا حکم
الَّذِينَ آمَنُوا پر روزِروشن کی طرح عیاں ہے ۔ إِنَّمَا حَرَّمَ عَلَيْكُمُ الْمَيْتَةَ وَالدَّمَ وَلَحْمَ الْخِنزِيرِ وَمَا أُهِلَّ بِهِ لِغَيْرِ اللَّـهِ فَمَنِ اضْطُرَّ غَيْرَ بَاغٍ وَلَا عَادٍ فَلَا إِثْمَ عَلَيْهِ إِنَّ اللَّـهَ غَفُورٌ رَّحِيمٌ ﴿البقرة: 173﴾


تم پر یقیناً مردہ، خون اور لحم الخنزیر ، حرام کر دیئے ہیں !
٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭
 خنزیر کی چربی بیرونی استعمال کے لئے حلال یا حرام

اتوار، 18 دسمبر، 2016

کام چور بچے سے حرام خور مولوی تک



پاکستان کے گاؤں دیہاتوں ، یہاں تک شہروں میں بھی
 "جہاں جہالت کا اندھا، ننگا اور دنگا راج ہے"
 وہاں کے گھروں میں جو بچہ کاہل، کام چور ڈفر، حرام خور اور انتہائی درجے کا نکھٹو ہوتا اس کا باپ اس کو کان سے پکڑ کر تشریف پر لاتیں مارتا گھسیٹتا قریبی مسجد کے چوبارے پر باندھ کر، مُلاّ کے حوالے یہ کہہ کر کرتا ہے۔
"اعلیٰ حضرت ، چمڑی آپ کی اور ہڈیاں میری"
اسکے بعد دس سال تک کیا ہوتا ہے ؟
وہ اس بچے کے ورثاء کے علاوہ تمام دنیا خوب جانتی ہے مگر اس ہونے کا براہ راست اثر ہمارے معاشرے پر پڑتاہے جو اندر سے ناسور کی طرح قوم کے پڑھے لکھے لوگوں کے دماغوں کو بھی سڑاتا جاتا ہے ۔
اپنے جیسے پست و سازشی ذہنوں کے درمیان پرورش پایا ہوا یہ جادوگر ، اپنے ناقص علم کی ڈگڈگی بجاتا ، قوم کو اپنے پیچھے لے کر چلتا ہے افسوس اس بات کا ہے کہ اچھے اچھے پڑھے لکھے ذمہ دار افراد ان نکھٹو بچوں کے سامنے اپنے ٹھوڑیوں کے بل گرکر روتے نظر آتے ہیں۔
روز مرہ کی زندگی کے ہر معاملے کو عقل و شعور کے ساتھ باریکی بینی سے پرکھنے والے افراد اگر کسی معاملات میں عقل استعمال نہیں کرتے تو وہ ایسے مذہبی مسائل ہیں، جو لڑائیوں کے سواء کسی بھی اچھی بات کو جگہ نہیں دیتے ، جن کو سمجھنے اور سمجھانے کا مکمل ٹھیکہ انہوں نے، اِن کُند ذہن بچوں کے حوالےکیا ہوا ہے۔
گویا کہ وہ ، اِن بچوں سے بھی گزرے ہوئے ۔



رضاعت و الرجم

کثیر بن صالۃ کہتے ہیں کہ وہ ، زید بن ثابت اور مروان بن حکیم اس پر بات کر رہئے تھےکہ رضاعت و الرجم والی آیات کو قران میں کیوں نہیں لکھا گیا،؟ 
اچانک عمر بن خطاب تشریف فرماہوئے اور سننے لگے پھر انہونے کہا یہ بات میں زیادہ بہتر جانتا ہوں، اور انہیں بتایا کہ جب یہ آیت نازل ہوئ تو میں انکے پاس پہنچا اور دریافت فرمایا ،
يا رسول الله أكتبني آية الرجم قال فأتيته فذكرته قال فذكر آية الرجم قال فقال يا رسول الله أكتبني آية الرجم قال لا استطيع ذاك ترجمہ اے اللہ کے رسول، آپ مجھے رجم والی آیت لکھنے کی اجازت دیں ، تو انہونے فرمایا ، میں ایسا نہیں کر سکتا ،
-------------------------------------------------
المستدرك على الصحيحين (حدیث نمبر 8184) کے مطابق
------------------------------------------------- سنہ الکبرا بہقی 8/211 و سنہ الکبرا نسائ حدیث نمبر 7148، البانی (صحیحہ 6/412) کے مطابق بہقی نے اسکو مستند قرار دیا ہے،

بخاری ۔ عربی انگلش والیوم ۔9




جمعہ، 16 دسمبر، 2016

Blood Clots/Stroke


Stroke has a new indicator! They say if you forward this to ten people, you stand a chance of saving one life. Will you send this along? Blood Clots/Stroke - They Now Have a Fourth Indicator, the Tongue:

During a BBQ, a woman stumbled and took a little fall - she assured everyone that she was fine (they offered to call paramedics) ...she said she had just tripped over a brick because of her new shoes.

They got her cleaned up and got her a new plate of food. While she appeared a bit shaken up, Jane went about enjoying herself the rest of the evening.

Jane's husband called later telling everyone that his wife had been taken to the hospital - (at 6:00 PM Jane passed away.) She had suffered a stroke at the BBQ. Had they known how to identify the signs of a stroke, perhaps Jane would be with us today. Some don't die. They end up in a helpless, hopeless condition instead.

It only takes a minute to read this.

A neurologist says that if he can get to a stroke victim within 3 hours he can totally reverse the effects of a stroke...totally. He said the trick was getting a stroke recognized, diagnosed, and then getting the patient medically cared for within 3 hours, which is tough.
>>RECOGNIZING A STROKE<<

Thank God for the sense to remember the '3' steps, STR. Read and Learn!


Sometimes symptoms of a stroke are difficult to identify. Unfortunately, the lack of awareness spells disaster. The stroke victim may suffer severe brain damage when people nearby fail to recognize the symptoms of a stroke.


Now doctors say a bystander can recognize a stroke by asking three simple questions:

S *Ask the individual to SMILE.

T *Ask the person to TALK and SPEAK A SIMPLE SENTENCE (Coherently)
(i.e. Chicken Soup)

R *Ask him or her to RAISE BOTH ARMS.

If he or she has trouble with ANY ONE of these tasks, call emergency number immediately and describe the symptoms to the dispatcher.

New Sign of a Stroke -------- Stick out Your Tongue

NOTE: Another 'sign' of a stroke is this: Ask the person to 'stick' out his tongue. If the tongue is

'crooked', if it goes to one side or the other that is also an indication of a stroke.

A cardiologist says if everyone who gets this e-mail sends it to 10 people; you can bet that at least one life will be saved.

I have done my part. Will you?

A rise and fall - Nirala sweets

 The story of Nirala Sweets is akin to a Shakespearean tragedy of sorts - where fame, money and success simply disappeared overnight.

What was once the great ‘Taj’ of local sweets, without a single real competitor in sight, dismantled in a matter of days. But what happened to the great Nirala empire?

In 2006, Nirala Sweets, the confectionary chain based in Lahore, had a whopping 39 branches countrywide, including one each in Dubai and Sharjah. Apart from producing and selling traditional sweets, Nirala also had its own branded snacks, dairy products and beverages.

Nirala was founded in 1948 by a man called Taj Din who was originally a seller of woollen shawls in Indian-held Kashmir. When he migrated to Lahore after partition, he realised that the winter in the city was too short and he needed to find something else to do. The businessman observed that the city loved to eat. And everybody seemed to have a sweet tooth.

His first shop thus opened as a breakfast joint on Fleming Road with special recipes of “rabri,” halwa poori and just a few items of the traditional “mithai,” which made great waves in Lahore. Soon people were travelling great distances to eat at his tiny joint, and it was clear that the model was a success.

Eventually, Taj Din’s eldest son Farooq Ahmad joined him, and the mithai took the whole city by storm. Inspired by the famous pastry shops of Paris, Farooq Ahmad travelled the world, developing new techniques and improvising recipes.

Soon enough, Nirala under Farooq Ahmed gained a reputation for fine sweets, entrepreneurship and also great charity. Working with hot oil day after day, the workers at Nirala often suffered from burns standing over the stove. At this time, Taj Din was able to acquire the recipe for a special burn cream from a “hakim” in Lahore’s inner city. Instead of limiting it to his workers, he began to distribute it for free, to anybody who required it.

“Nirala continued to give us this free ointment having no match in terms of efficacy to people for years. “Unfortunately, this practice has also ended with the demise of the sweets”, said Muhammad Arshad Awan, a tailor at Hameed Nizami Road who personally witnessed people treated for burn injuries.

In the late 80s, Farooq Ahmad was diagnosed with Parkinson’s, and his eldest son, young and energetic Faisal Farooq took over the reins at just 20 years of age.

When his health deteriorated, nervous shareholders sold off their stakes and the company ultimately belonged solely to Farooq Ahmed. Under the new, young leadership, Nirala thrived.

The downfall of the empire began with a bank loan taken to set up a dairy factory. Faisal Farooq mortgaged all his property, worth billions of rupees at the time, including a spacious house in the posh locality of Shadman. What seemed like a good idea at the time, ended in disaster.

“A big initiative at the wrong time triggered the downfall of the confectionery chain,” said Shahbaz Ahmed, who previously served at Nirala Sweets as a manager and saw the expansion of outlets all over Pakistan and in the United Arab Emirates.

“The company started work on establishing a dairy factory at Tandlianwala on the Faisalabad-Okara Road in 2004,” he continued. “In different phases, the company borrowed more than Rs1.5 billion at high-interest rates from the Bank of Punjab when the dairy business was on the decline. The failure of the mega project was a blow for Nirala. It could not pay back the borrowed money and the interest kept piling on,” he said.

“About a hundred kanals of land on Multan Road, shops on Jail Road, Hafeez Centre, Moon Market, factories on Waris Road and many other properties were pledged against the bank loan. The value of the pledged property was far more than the actual amount and interest,” he added.

At this time, the death of a young boy in a road accident added to Faisal Farooq’s troubles.

“After spending ten days behind bars, in 2009, Faisal Farooq settled the issue with the aggrieved family. He remained under stress for years, causing serious digressions and people continued to leave him,” said Shahbaz Ahmed.

“The year 2014 was virtually the end of the great empire, and the factory on Waris Road was sealed for not paying outstanding taxes,” he said.

Faisal Farooq’s name was put on the exit control list (ECL). He was out of the country at the time and did not return. The man who used to keep the company of the country’s top political and business elite became an absconder.

Moreover, he is alleged to be the person who initiated the process of dividing the property among the heirs of the late Taj Din. Both his uncles, Mohammad Mahmood and Mohammad Maqsood, were disassociated from the business after he gave them their shares.

Farooq Ahmad, who once reigned the business world as one of the pioneers of mithai and a shareholder in countless businesses, now aged 71, lives in a small rented house in the outskirts of Lahore. His younger sons are working hard to support their own families and their parents with a whole business empire that simply disappeared down the drain.

“The entire family stood divided due to the stubbornness of Faisal Farooq,” said Sohail Shakir, an official of the City District Government Food Department, who knows the family and business well. “He adorned all that is usually associated with spoilt rich brats. He was totally different from his grandfather, father and uncles,” he said, adding that Nirala Sweets reached its logical conclusion due to wrong decisions.

خیال رہے کہ "اُفق کے پار" یا میرے دیگر بلاگ کے،جملہ حقوق محفوظ نہیں ۔ !

افق کے پار
دیکھنے والوں کو اگر میرا یہ مضمون پسند آئے تو دوستوں کو بھی بتائیے ۔ اگر آپ کو شوق ہے کہ زیادہ لوگ آپ کو پڑھیں تو اپنا بلاگ بنائیں ۔