میرے چاروں طرف افق ہے جو ایک پردہء سیمیں کی طرح فضائے بسیط میں پھیلا ہوا ہے،واقعات مستقبل کے افق سے نمودار ہو کر ماضی کے افق میں چلے جاتے ہیں،لیکن گم نہیں ہوتے،موقع محل،اسے واپس تحت الشعور سے شعور میں لے آتا ہے، شعور انسانی افق ہے،جس سے جھانک کر وہ مستقبل کےآئینہ ادراک میں دیکھتا ہے ۔
دوستو ! اُفق کے پار سب دیکھتے ہیں ۔ لیکن توجہ نہیں دیتے۔ آپ کی توجہ مبذول کروانے کے لئے "اُفق کے پار" یا میرے دیگر بلاگ کے،جملہ حقوق محفوظ نہیں ۔ پوسٹ ہونے کے بعد یہ آپ کے ہوئے ، آپ انہیں کہیں بھی کاپی پیسٹ کر سکتے ہیں ، کسی اجازت کی ضرورت نہیں !( مہاجرزادہ)

فیس بک کے دیوانے

بدھ، 29 مارچ، 2017

میمو گیٹ اور اسامہ بن لادن

آپریشن نیپچون ، اسامہ بن لادن آپریشن، ﮐﯽ ﻣﻨﻈﻮﺭﯼ ﺳﯽ ﺁﺋﯽ ﺍﮮ ﮐﮯ ﮈﺍﺋﺮﯾﮑﭩﺮ ﻟﯿﻮﻥ ﭘﻨﯿﭩﺎ ﺍﻭﺭ ﭼﯿﺌﺮﻣﯿﻦ ﺟﻮﺍﺋﻨﭧ ﭼﯿﻔﺲ ﺁﻑ ﺳﭩﺎﻑ ﺍﯾﮉﻣﺮﻝ ﻣﺎﺋﯿﮏ ﻣﻮﻟﻦ ﻧﮯ ﺩﯼ۔
ﺟﻼﻝ ﺁﺑﺎﺩ ﮐﮯ ﺍﻣﺮﯾﮑﯽ ﺍﺋﯿﺮ ﺑﯿﺲ ﭘﺮ ﭼﺎﺭ ﮨﯿﻠﯽ ﮐﺎﭘﭩﺮ ﺗﯿﺎﺭ ﮐﮭﮍﮮ ﺗﮭﮯ ‘ ﺩﻭ ﺑﻠﯿﮏ ﮨﺎﮎ ﺗﮭﮯ ﺍﻭﺭ ﺩﻭ ﭼﻨﯿﻮﮎ ‘ ﮨﯿﻠﯽ ﮐﺎﭘﭩﺮﻭﮞ ﻣﯿﮟ 25 ﮐﻤﺎﻧﮉﻭﺯ ﺳﻮﺍﺭ ﺗﮭﮯ ‘ 
ﯾﮧ ﭼﺎﺭﻭﮞ ﮨﯿﻠﯽ ﮐﺎﭘﭩﺮ ﯾﮑﻢ ﻣﺌﯽ 2011 ﺀ ﺭﺍﺕ ﮔﯿﺎﺭﮦ ﺑﺞ ﮐﺮ ﺩﺱ ﻣﻨﭧ ﭘﺮ ﺟﻼﻝ ﺁﺑﺎﺩ ﺳﮯ ﺍﮌﮮ ﺍﻭﺭ ﺩﺱ ﻣﻨﭧ ﻣﯿﮟ ﭘﺎﮐﺴﺘﺎﻧﯽ ﺣﺪﻭﺩ ﻣﯿﮟ ﺩﺍﺧﻞ ﮨﻮ ﮔﺌﮯ ‘ ﮨﯿﻠﯽ ﮐﺎﭘﭩﺮﻭﮞ ﮐﯽ ﺣﻔﺎﻇﺖ ﮐﮯﻟﺌﮯ ﺍﻣﺮﯾﮑﯽ ﻃﯿﺎﺭﻭﮞ ﻧﮯ ﺍﻓﻐﺎﻥ ﺣﺪﻭﺩ ﻣﯿﮟ ﭘﺮﻭﺍﺯﯾﮟ ﺷﺮﻭﻉ ﮐﺮ ﺩﯾﮟ ‘ ﮨﯿﻠﯽ ﮐﺎﭘﭩﺮﺯﺩﺭﯾﺎﺋﮯ ﮐﺎﺑﻞ ﮐﮯ ﺍﻭﭘﺮ ﭘﺮﻭﺍﺯ ﮐﺮﺗﮯ ﮨﻮﺋﮯ ﭼﮑﺪﺭﮦ ﺁﺋﮯ ‘ ﻭﮨﺎﮞ ﺳﮯ ﮐﺎﻻ ﮈﮬﺎﮐﮧ ﮐﮯ ﮔﺎﺅﮞ ﮐﻨﺪﺭ ﺣﺴﻦ ﺯﺋﯽ ﭘﮩﻨﭽﮯ ‘ ﺩﻭ ﮨﯿﻠﯽ ﮐﺎﭘﭩﺮ ﻭﮨﯿﮟ ﺭﮎ ﮔﺌﮯ ﺍﻭﺭ ﺩﻭ ﺁﮔﮯ ﺭﻭﺍﻧﮧ ﮨﻮ ﮔﺌﮯ ‘ ﯾﮧ ﺩﻭﻧﻮﮞ ﮨﯿﻠﯽ ﮐﺎﭘﭩﺮ 12 ﺑﺞ ﮐﺮ 30 ﻣﻨﭧ ﭘﺮ ﺑﻼﻝ ﮐﺎﻟﻮﻧﯽ ﺍﯾﺒﭧ ﺁﺑﺎﺩ ﭘﮩﻨﭻ ﮔﺌﮯ-
ﮐﻤﺎﻧﮉﻭﺯ ﺭﺳﯿﻮﮞ ﮐﯽ ﻣﺪﺩ ﺳﮯ ﺍﺳﺎﻣﮧ ﺑﻦ ﻻﺩﻥ ﮐﮯ ﮔﮭﺮ ﺍﺗﺮﮮ ‘ ﺩﻭ ﺣﺼﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺗﻘﺴﯿﻢ ﮨﻮﺋﮯ ‘ ﺁﺩﮬﮯ ﺍﻧﯿﮑﺴﯽ ﮐﯽ ﻃﺮﻑ ﭼﻠﮯ ﮔﺌﮯ ﺍﻭﺭ ﺁﺩﮬﮯ ﻻﺩﻥ ﮐﻤﭙﺎﺅﻧﮉ ﻣﯿﮟ ﺩﺍﺧﻞ ﮨﻮ ﮔﺌﮯ ‘ ﺍﺳﺎﻣﮧ ﺑﻦ ﻻﺩﻥ ﻧﮯ ﮐﻼﺷﻨﮑﻮﻑ ﺍﭨﮭﺎ ﻟﯽ ﺍﻭﺭ ﺍﻟﻤﺎﺭﯼ ﺳﮯ ﮨﯿﻨﮉ ﮔﺮﻧﯿﮉ ﻧﮑﺎﻝ ﻟﯿﺎ ‘ ﮐﻤﺎﻧﮉﻭﺯ ﻧﮯ ﮔﻮﻟﯽ ﭼﻼ ﺩﯼ ‘ ﺍﺳﺎﻣﮧ 12 ﺑﺞ ﮐﺮ 39 ﻣﻨﭧ ﭘﺮ ﮔﻮﻟﯿﻮﮞ ﮐﺎ ﻧﺸﺎﻧﮧ ﺑﻦ ﮔﺌﮯ ‘ ﺍﻥ ﮐﯽ ﺍﮨﻠﯿﮧ ﺍﯾﻤﻞ ﺯﺧﻤﯽ ﮨﻮ ﮔﺌﯽ ‘ ﮐﻤﺎﻧﮉﻭﺯ ﮐﮯ ﺩﻭﺳﺮﮮ ﺩﺳﺘﮯ ﻧﮯ ﺍﻧﯿﮑﺴﯽ ﻣﯿﮟ ﺍﺳﺎﻣﮧ ﮐﮯ ﺻﺎﺣﺒﺰﺍﺩﮮ ﺧﺎﻟﺪ ﺑﻦ ﺍﺳﺎﻣﮧ ‘ ﻣﺪﺩ ﮔﺎﺭ ﺍﺑﻮ ﺍﺣﻤﺪ ﺍﻟﮑﻮﯾﺘﯽ ‘ ﮐﻮﯾﺘﯽ ﮐﮯ ﺑﮭﺎﺋﯽ ﺍﺑﺮﺍﺭ ﺍﻭﺭ ﺍﻥ ﮐﯽ ﺍﮨﻠﯿﮧ ﺑﺸﺮﯼٰ ﮐﻮ ﮔﻮﻟﯿﻮﮞ ﺳﮯ ﺍﮌﺍ ﺩﯾﺎ ‘ ﺑﺎﺭﮦ ﺑﺞ ﮐﺮ 53 ﻣﻨﭧ ﭘﺮ ﺍﺳﺎﻣﮧ ﺑﻦ ﻻﺩﻥ ﮐﯽ ﻣﻮﺕ ﮐﯽ ﺗﺼﺪﯾﻖ ﮨﻮﺋﯽ۔ ﮐﻤﺎﻧﮉﻭﺯ ﻧﮯ ﮐﻤﭙﺎﺅﻧﮉ ﻣﯿﮟ ﻣﻮﺟﻮﺩ ﮐﻤﭙﯿﻮﭨﺮﺯ ‘ ﻓﺎﺋﻠﯿﮟ ‘ ﮐﺘﺎﺑﯿﮟ ‘ ﮈﺍﺋﺮﯾﺎﮞ ﺍﻭﺭ ﺳﯽ ﮈﯾﺰ ﺗﮭﯿﻠﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺑﮭﺮﯾﮟ ﺍﻭﺭ ﻭﺍﭘﺴﯽ ﮐﮯﻟﺌﮯ ﺗﯿﺎﺭ ﮨﻮ ﮔﺌﮯ ‘ ﺍﯾﮏ ﺑﺞ ﮐﺮ ﭼﮫ ﻣﻨﭧ ﭘﺮ ﮨﯿﻠﯽ ﮐﺎﭘﭩﺮ ﻭﺍﭘﺲ ﺁﺋﮯ ‘ ﺍﯾﮏ ﮨﯿﻠﯽ ﮐﺎﭘﭩﺮ ﮐﯽ ﺩﻡ ﮔﮭﺮ ﮐﯽ ﺑﺎﺅﻧﮉﺭﯼ ﻭﺍﻝ ﺳﮯ ﭨﮑﺮﺍ ﮔﺌﯽ ‘ ﺩﮬﻤﺎﮐﮧ ﮨﻮﺍ ﺍﻭﺭ ﻣﻘﺎﻣﯽ ﺁﺑﺎﺩﯼ ﺟﺎﮒ ﮔﺌﯽ ‘ ﻟﻮﮔﻮﮞ ﮐﻮ ﭘﺸﺘﻮ ﻣﯿﮟ ﺑﺘﺎﯾﺎ ﮔﯿﺎ
” ﺁﭖ ﭘﯿﭽﮭﮯ ﮨﭧ ﺟﺎﺋﯿﮟ ‘ ﺳﭙﯿﺸﻞ ﺁﭘﺮﯾﺸﻦ ﮨﻮ ﺭﮨﺎ ﮨﮯ ‘ ﺁﭖ ﮐﻮ ﮔﻮﻟﯽ ﻣﺎﺭ ﺩﯼ ﺟﺎﺋﮯ ﮔﯽ “
ﻟﻮﮒ ﻭﺍﭘﺲ ﺑﮭﺎﮒ ﮔﺌﮯ ‘ ﮐﻤﺎﻧﮉﻭﺯ ﺩﻭﺳﺮﮮ ﮨﯿﻠﯽ ﮐﺎﭘﭩﺮ ﻣﯿﮟ ﺳﻮﺍﺭ ﮨﻮﺋﮯ ‘ ﻣﺘﺎﺛﺮﮦ ﮨﯿﻠﯽ ﮐﺎﭘﭩﺮ ﮐﻮ ﺑﻢ ﺳﮯ ﺍﮌﺍ ﺩﯾﺎ ﮔﯿﺎ ‘ ﮨﯿﻠﯽ ﮐﺎﭘﭩﺮ ﺭﻭﺍﻧﮧ ﮨﻮ ﮔﺌﮯ ‘ ﺩﮬﻤﺎﮐﮯ ﮐﯽ ﺁﻭﺍﺯ ﺳﮯ ﭘﻮﻟﯿﺲ ﺍﻭﺭ ﻓﻮﺝ ﮐﮯ ﺍﮨﻠﮑﺎﺭ ﻣﺘﻮﺟﮧ ﮨﻮ ﮔﺌﮯ ‘ ﯾﮧ ﻟﻮﮒ ﺍﯾﮏ ﺑﺞ ﮐﺮ 15 ﻣﻨﭧ ﭘﺮ ﻭﮨﺎﮞ ﭘﮩﻨﭽﮯ ‘ ﯾﮧ ﮔﮭﺮ ﻣﯿﮟ ﺩﺍﺧﻞ ﮨﻮﺋﮯ ‘ ﺯﺧﻤﯽ ﺧﺎﺗﻮﻥ ﮐﻮ ﻋﺮﺑﯽ ﺑﻮﻟﺘﮯ ﺩﯾﮑﮭﺎ ‘ ﻭﮨﺎﮞ ﻻﺷﯿﮟ ﺑﮭﯽ ﺗﮭﯿﮟ ‘ ﺧﺎﺗﻮﻥ ﺳﮯ ﺍﻧﮑﻮﺍﺋﺮﯼ ﮐﯽ ‘ ﭘﺘﮧ ﭼﻼ ﺑﯿﮉ ﺭﻭﻡ ﻣﯿﮟ ﺍﺳﺎﻣﮧ ﯾﻤﻨﯽ ﮐﺎ ﺧﻮﻥ ﺑﮑﮭﺮﺍ ﮨﻮﺍ ﮨﮯ ،
7 ﻣﻨﭧ ﭘﺮ ﻟﯿﻔﭩﯿﻨﻨﭧ ﮐﺮﻧﻞ ‏( ﻧﺎﻡ ﻏﺎﻟﺒﺎً ﻋﺎﺑﺪ ﺗﮭﺎ ‏) ﻧﮯ ﺁﺭﻣﯽ ﭼﯿﻒ ﺟﻨﺮﻝ ﺍﺷﻔﺎﻕ ﭘﺮﻭﯾﺰ ﮐﯿﺎﻧﯽ ﮐﻮ ﻓﻮﻥ ﭘﺮ ﺍﻃﻼﻉ ﺩﮮ ﺩﯼ ‘ ﺁﺭﻣﯽ ﭼﯿﻒ ﻧﮯ ﺍﺋﯿﺮ ﭼﯿﻒ ﮐﻮ ﻓﻮﻥ ﮐﯿﺎ ‘ ﺍﺋﯿﺮ ﭼﯿﻒ ﻧﮯ ﮨﺎﺋﯽ ﺍﻟﺮﭦ ﺟﺎﺭﯼ ﮐﺮ ﺩﯾﺎ ‘ ﺍﺱ ﻋﻤﻞ ﻣﯿﮟ 43 ﻣﻨﭧ ﺧﺮﭺ ﮨﻮ ﮔﺌﮯ ‘ ﮨﻤﺎﺭﮮ ﺍﯾﻒ 16 ﺍﮌﮮ ﻟﯿﮑﻦ ﺍﻣﺮﯾﮑﯽ ﮨﯿﻠﯽ ﮐﺎﭘﭩﺮﺯ ﺍﺱ ﺩﻭﺭﺍﻥ ﮐﺎﻻ ﮈﮬﺎﮐﮧ ﻣﯿﮟ ﺭﯼ ﻓﯿﻮﻟﻨﮓ ﮐﺮ ﮐﮯ ﺟﻼﻝ ﺁﺑﺎﺩ ﻭﺍﭘﺲ ﭘﮩﻨﭻ ﭼﮑﮯ ﺗﮭﮯ۔

ﺁﺭﻣﯽ ﭼﯿﻒ ﻧﮯ ﺭﺍﺕ ﺗﯿﻦ ﺑﺠﮯ ﻭﺯﯾﺮﺍﻋﻈﻢ ﺍﻭﺭ ﺳﯿﮑﺮﭨﺮﯼ ﺧﺎﺭﺟﮧ ﮐﻮ ﺍﻃﻼﻉ ﺩﮮ ﺩﯼ ‘ ﺻﺒﺢ ﭘﺎﻧﭻ ﺑﺠﮯ ﺍﯾﮉﻣﺮﻝ ﻣﺎﺋﯿﮏ ﻣﻮﻟﻦ ﻧﮯ ﺟﻨﺮﻝ ﮐﯿﺎﻧﯽ ﮐﻮ ﻓﻮﻥ ﮐﯿﺎ ﺍﻭﺭ ﺁﭘﺮﯾﺸﻦ ﮐﯽ ﺗﺼﺪﯾﻖ ﮐﺮ ﺩﯼ ‘ ﺁﺭﻣﯽ ﭼﯿﻒ ﻧﮯ ﺻﺒﺢ 6 ﺑﺞ ﮐﺮ 45 ﻣﻨﭧ ﭘﺮ ﺻﺪﺭ ﺁﺻﻒ ﻋﻠﯽ ﺯﺭﺩﺍﺭﯼ ﮐﻮ ﺳﺎﺭﯼ ﺻﻮﺭﺗﺤﺎﻝ ﺳﮯ ﺁﮔﺎﮦ ﮐﺮ ﺩﯾﺎ۔

ﯾﮧ 36 ﻣﻨﭧ ﮐﺎ ﺁﭘﺮﯾﺸﻦ ﭘﻮﺭﯼ ﺩﻧﯿﺎ ﻣﯿﮟ ﭘﺎﮐﺴﺘﺎﻥ ﮐﯽ ﺑﺪﻧﺎﻣﯽ ﮐﺎ ﺑﺎﻋﺚ ﺑﻦ ﮔﯿﺎ ‘ ﮨﻤﺎﺭﮮ ﻧﻈﺎﻡ ﮐﯽ ﭼﺎﺭ ﺧﻮﻓﻨﺎﮎ ﺧﺎﻣﯿﺎﮞ ﺩﻧﯿﺎ ﮐﮯ ﺳﺎﻣﻨﮯ ﺁ ﮔﺌﯿﮟ ‘ ﻭﮦ ﺧﺎﻣﯿﺎﮞ ﮐﯿﺎ ﺗﮭﯿﮟ؟
ﭘﮩﻠﯽ ﺧﺎﻣﯽ: ﺩﻧﯿﺎ ﮐﺎ ﻣﻮﺳﭧ ﻭﺍﻧﭩﯿﮉ ﭘﺮﺳﻦ ﺁﭨﮫ ﺳﺎﻝ ﺗﮏ ﭘﺎﮐﺴﺘﺎﻥ ﮐﮯ ﺣﺴﺎﺱ ﻋﻼﻗﮯ ﻣﯿﮟ ﭼﮭﭙﺎ ﺭﮨﺎ ‘ ﺍﺱ ﻧﮯ ﺍﺱ ﺩﻭﺭﺍﻥ ﺷﺎﺩﯾﺎﮞ ﺑﮭﯽ ﮐﯿﮟ ‘ ﺑﭽﮯ ﺑﮭﯽ ﭘﯿﺪﺍ ﮐﺌﮯ ﺍﻭﺭ ﯾﮧ ﻣﮑﻤﻞ ﺯﻧﺪﮔﯽ ﺑﮭﯽ ﮔﺰﺍﺭﺗﺎ ﺭﮨﺎ ﺍﻭﺭ ﭘﺎﮐﺴﺘﺎﻥ ﮐﮯ ﮐﺴﯽ ﺍﺩﺍﺭﮮ ﮐﻮ ﮐﺎﻧﻮﮞ ﮐﺎﻥ ﺧﺒﺮ ﻧﮧ ﮨﻮﺋﯽ ۔
ﺩﻭﺳﺮﯼ ﺧﺎﻣﯽ: ﺍﻣﺮﯾﮑﯽ ﮨﯿﻠﯽ ﮐﺎﭘﭩﺮ ﺍﻓﻐﺎﻧﺴﺘﺎﻥ ﺳﮯ ﭘﺎﮐﺴﺘﺎﻥ ﺁﺋﮯ ‘ ﮐﻨﭩﻮﻧﻤﻨﭧ ﺍﯾﺮﯾﺎ ﻣﯿﮟ ﺁﭘﺮﯾﺸﻦ ﮐﯿﺎ ﺍﻭﺭ ﺑﺤﻔﺎﻇﺖ ﻭﺍﭘﺲ ﭼﻠﮯ ﮔﺌﮯ ﺍﻭﺭ ﮨﻤﯿﮟ ﻋﻠﻢ ﻧﮧ ﮨﻮ ﺳﮑﺎ ‘ ﻣﯿﺮﺍ ﺧﺪﺷﮧ ﮨﮯ ﺍﮔﺮ ﺑﻼﻝ ﮐﺎﻟﻮﻧﯽ ﻣﯿﮟ ﺍﻣﺮﯾﮑﯽ ﮨﯿﻠﯽ ﮐﺎﭘﭩﺮ ﮐﻮ ﺣﺎﺩﺛﮧ ﭘﯿﺶ ﻧﮧ ﺁﺗﺎ ﺗﻮ ﺷﺎﯾﺪ ﮨﻤﯿﮟ ﻣﺎﺋﯿﮏ ﻣﻮﻟﻦ ﮐﮯ ﻓﻮﻥ ﺳﮯ ﭘﮩﻠﮯ ﺍﺱ ﺁﭘﺮﯾﺸﻦ ﮐﯽ ﺍﻃﻼﻉ ﻧﮧ ﮨﻮﺗﯽ۔
ﺗﯿﺴﺮﯼ ﺧﺎﻣﯽ: ﮨﻢ ﺍﻃﻼﻉ ﮐﮯ 43 ﻣﻨﭧ ﺑﻌﺪ ﺗﮏ ﺍﯾﻒ ﺳﻮﻟﮧ ﻃﯿﺎﺭﮮ ﻧﮩﯿﮟ ﺍﮌﺍ ﺳﮑﮯ۔
ﭼﻮﺗﮭﯽ ﺧﺎﻣﯽ:  ﮨﻤﺎﺭﺍ ﺳﺴﭩﻢ ﺍﻣﺮﯾﮑﯽ ﮨﯿﻠﯽ ﮐﺎﭘﭩﺮﻭﮞ ﮐﯽ ﭘﺮﻭﺍﺯ ﮐﺎ ﺍﻧﺪﺍﺯﮦ ﻧﮩﯿﮟ ﮐﺮ ﺳﮑﺎ ‘ ﻭﮦ ﺁﺋﮯ ‘ ﺁﭘﺮﯾﺸﻦ ﮐﯿﺎ ﺍﻭﺭ ﻭﺍﭘﺲ ﭼﻠﮯ ﮔﺌﮯ۔

ﮨﻤﺎﺭﮮ ﺣﺴﺎﺱ ﺍﺩﺍﺭﻭﮞ ﮐﻮ ﻣﺤﺴﻮﺱ ﮨﻮﺍ ﺍﻣﺮﯾﮑﺎ ﮐﻮ ﮨﻤﺎﺭﮮ ﮐﺴﯽ ﺳﺮﮐﺎﺭﯼ ﯾﺎ ﻧﯿﻢ ﺳﺮﮐﺎﺭﯼ ﺍﺩﺍﺭﮮ ﮐﯽ ﻣﺪﺩ ﺣﺎﺻﻞ ﺗﮭﯽ ‘ ﯾﮧ ﺁﭘﺮﯾﺸﻦ ﻣﻘﺎﻣﯽ ﻣﺪﺩ ﮐﮯ ﺑﻐﯿﺮ ﻣﻤﮑﻦ ﻧﮩﯿﮟ ﺗﮭﺎ ‘ ﯾﮧ ﺍﺣﺴﺎﺱ ﮐﯿﻮﮞ ﭘﯿﺪﺍ ﮨﻮﺍ ؟

ﺍﺱ ﮐﯽ ﺑﮭﯽ ﮐﺌﯽ ﻭﺟﻮﮨﺎﺕ ﺗﮭﯿﮟ ‘ ﻣﺜﻼً ﺍﯾﺒﭧ ﺁﺑﺎﺩ ﺍﻓﻐﺎﻧﺴﺘﺎﻥ ﺳﮯ ﺩﻭﺭ ﺍﻭﺭ ﻣﺸﮑﻞ ﻋﻼﻗﮧ ﮨﮯ ‘ ﯾﮩﺎﮞ ﺁﭘﺮﯾﺸﻦ ﻣﮑﻤﻞ ﺭﯾﮑﯽ ﮐﮯ ﺑﻐﯿﺮ ﻧﺎﻣﻤﮑﻦ ﺗﮭﺎ ﺍﻭﺭ ﺭﯾﮑﯽ ﮐﯽ ﺳﮩﻮﻟﺘﯿﮟ ﻃﺎﻗﺘﻮﺭ ﻟﻮﮔﻮﮞ ﮐﯽ ﻣﺪﺩ ﮐﮯ ﺑﻐﯿﺮ ﻣﺸﮑﻞ ﺗﮭﯿﮟ۔

ﺁﭘﺮﯾﺸﻦ ﺳﮯ ﻗﺒﻞ ﮨﯿﻠﯽ ﮐﺎﭘﭩﺮﻭﮞ ﮐﮯ ﺭﺍﺳﺘﮯ ﻣﯿﮟ ﺁﻧﮯ ﻭﺍﻟﮯ ﺍﻭﻧﭽﮯ ﺩﺭﺧﺘﻮﮞ ﮐﯽ ﺷﺎﺥ ﺗﺮﺍﺷﯽ ﺍﻭﺭ ﮐﭩﺎﺋﯽ ﮐﯽ ﮔﺌﯽ ‘ ﯾﮧ ﮐﭩﺎﺋﯽ ﮐﺲ ﻧﮯ ﮐﺮﺍﺋﯽ؟ ﯾﮧ ﺳﻮﺍﻝ ﺍﮨﻢ ﺗﮭﺎ ‘

٭ - ﺁﭘﺮﯾﺸﻦ ﮐﮯ ﻭﻗﺖ ﺍﯾﺒﭧ ﺁﺑﺎﺩ ﮐﯽ ﺑﺠﻠﯽ ﺑﻨﺪ ﮐﺮ ﺩﯼ ﮔﺌﯽ ‘ ﯾﮧ ﺑﺠﻠﯽ ﮐﺲ ﻧﮯ ﺑﻨﺪ ﮐﺮﺍﺋﯽ؟

٭ - ﮐﺎﻻ ﮈﮬﺎﮐﮧ ﻣﯿﮟ ﮨﯿﻠﯽ ﮐﺎﭘﭩﺮﻭﮞ ﮐﮯﻟﺌﮯ ﭘﭩﺮﻭﻝ ﮐﺎ ﺑﻨﺪﻭﺑﺴﺖ ﮐﯿﺎ ﮔﯿﺎ ﺗﮭﺎ ‘ ﯾﮧ ﺑﻨﺪﻭﺑﺴﺖ ﺑﮭﯽ ﺁﺳﺎﻥ ﮐﺎﻡ ﻧﮩﯿﮟ ﺗﮭﺎ؟

٭ - ﮨﯿﻠﯽ ﮐﺎﭘﭩﺮﻭﮞ ﮐﮯﻟﺌﮯ ﻣﺤﻔﻮﻅ ﺗﺮﯾﻦ ﺭﻭﭦ ﮐﺎ ﺗﻌﯿﻦ ﺑﮭﯽ ﺍﻧﺴﺎﻧﯽ ﻣﺪﺩ ﮐﮯ ﺑﻐﯿﺮ ﻣﻤﮑﻦ ﻧﮩﯿﮟ ﺗﮭﺎ۔

ﯾﮧ ﺳﻮﺍﻝ ﺍﮨﻢ ﺗﮭﮯ ‘ ﮨﻤﺎﺭﮮ ﺍﺩﺍﺭﻭﮞ ﻧﮯ ﺍﻥ ﺳﻮﺍﻟﻮﮞ ﮐﮯ ﺟﻮﺍﺏ ﺗﻼﺵ ﮐﺮﻧﺎ ﺷﺮﻭﻉ ﮐﺌﮯ ﺗﻮ ﺩﻭ ﻧﺎﻡ ﺳﺎﻣﻨﮯ ﺁ ﮔﺌﮯ ۔

٭ -  ﭘﮩﻼ ﺷﺨﺺ ﺷﮑﯿﻞ ﺁﻓﺮﯾﺪﯼ ﺗﮭﺎ ‘ ﯾﮧ ﺷﺨﺺ ﺧﯿﺒﺮﺍﯾﺠﻨﺴﯽ ﻣﯿﮟ ﻣﯿﮉﯾﮑﻞ ﺍﻧﭽﺎﺭﺝ ﺗﮭﺎ ‘ ﺍﺱ ﻧﮯ ﺍﺳﺎﻣﮧ ﺑﻦ ﻻﺩﻥ ﮐﺎ ﮈﯼ ﺍﯾﻦ ﺍﮮ ﺣﺎﺻﻞ ﮐﺮﻧﮯ ﮐﮯﻟﺌﮯ ﺑﻼﻝ ﮐﺎﻟﻮﻧﯽ ﻣﯿﮟ ﭘﻮﻟﯿﻮ ﮐﯽ ﺟﻌﻠﯽ ﻣﮩﻢ ﭼﻼﺋﯽ ‘ ﺟﻌﻠﯽ ﻭﺭﮐﺮﺯ ﻻﺩﻥ ﮐﮯ ﮔﮭﺮ ﺩﺍﺧﻞ ﮐﺮﺍﺋﮯ ‘ ﺧﻮﻥ ﮐﺎ ﻧﻤﻮﻧﮧ ﻟﯿﺎ ﺍﻭﺭ ﻧﻤﻮﻧﮯ ﻧﮯ ﻻﺩﻥ ﮐﯽ ﻣﻮﺟﻮﺩﮔﯽ ﮐﯽ ﺗﺼﺪﯾﻖ ﮐﺮ ﺩﯼ ‘ ﺍﻣﺮﯾﮑﯿﻮﮞ ﻧﮯ ﺑﻼﻝ ﮐﺎﻟﻮﻧﯽ ﻣﯿﮟ ﻻﺩﻥ ﮐﮯ ﮔﮭﺮ ﮐﮯ ﻧﺰﺩﯾﮏ ﮐﺮﺍﺋﮯ ﭘﺮ ﮔﮭﺮ ﺑﮭﯽ ﻟﯿﺎ ‘ ﯾﮧ ﻭﮨﺎﮞ ﺳﮯ ﻻﺩﻥ ﮐﮯ ﮔﮭﺮ ﮐﯽ ﻧﮕﺮﺍﻧﯽ ﮐﺮﺗﮯ ﺭﮨﮯ ‘ ﺷﮑﯿﻞ ﺁﻓﺮﯾﺪﯼ ﮐﻮ ﮔﺮﻓﺘﺎﺭ ﮐﺮ ﻟﯿﺎ ﮔﯿﺎ ‘ ﺁﻓﺮﯾﺪﯼ ﻧﮯ ﺍﭘﻨﺎ ﺟﺮﻡ ﺗﺴﻠﯿﻢ ﮐﺮ ﻟﯿﺎ۔

٭ -   ﺩﻭﺳﺮﺍ ﻧﺎﻡ ﺍﻣﺮﯾﮑﺎ ﻣﯿﮟ ﭘﺎﮐﺴﺘﺎﻥ ﮐﮯ ﺳﻔﯿﺮ ﺣﺴﯿﻦ ﺣﻘﺎﻧﯽ ﮐﺎ ﺗﮭﺎ ‘ ﺣﺴﯿﻦ ﺣﻘﺎﻧﯽ 2002 ﺀﺳﮯ ﺍﻣﺮﯾﮑﺎ ﻣﯿﮟ ﺭﮦ ﺭﮨﮯ ﺗﮭﮯ ‘ ﯾﮧ ﺍﺱ ﺩﻭﺭﺍﻥ ﺍﻣﺮﯾﮑﺎ ﮐﮯ ﺍﻥ ﺍﺩﺍﺭﻭﮞ ﺍﻭﺭ ﺗﮭﻨﮏ ﭨﯿﻨﮑﺲ ﻣﯿﮟ ﮐﺎﻡ ﮐﺮﺗﮯ ﺭﮨﮯ ﺟﻨﮩﯿﮟ ﺳﯽ ﺁﺋﯽ ﺍﮮ ﻓﻨﮉﻧﮓ ﮐﺮﺗﯽ ﺗﮭﯽ ‘ ﺻﺪﺭ ﺁﺻﻒ ﻋﻠﯽ ﺯﺭﺩﺍﺭﯼ ﻧﮯ ﺍﻣﺮﯾﮑﯽ ﺧﻮﺍﮨﺶ ﭘﺮ ﺍﻧﮩﯿﮟ ﺍﭘﺮﯾﻞ 2008 ﺀﻣﯿﮟ ﺳﻔﯿﺮ ﺑﻨﺎﺩﯾﺎ ‘ ﯾﮧ ﭘﺎﮐﺴﺘﺎﻥ ﻣﺨﺎﻟﻒ ﺍﻣﺮﯾﮑﯽ ﺑﻞ ” ﮐﯿﺮﯼ ﻟﻮﮔﺮ ﺑﻞ “ ﮐﮯ ﺧﺎﻟﻖ ﺑﮭﯽ ﺳﻤﺠﮭﮯ ﺟﺎﺗﮯ ﺗﮭﮯ ‘ ﯾﮧ ﺁﺻﻒ ﻋﻠﯽ ﺯﺭﺩﺍﺭﯼ ﺍﻭﺭ ﺳﯽ ﺁﺋﯽ ﺍﮮ ﮐﮯ ﺍﻧﺘﮩﺎﺋﯽ ﻗﺮﯾﺐ ﺗﮭﮯ ‘ ﯾﮧ ﺍﯾﮏ ﻃﺮﻑ ﺻﺪﺭ ﺳﮯ ﺑﺮﺍﮦ ﺭﺍﺳﺖ ﺭﺍﺑﻄﮯ ﻣﯿﮟ ﺭﮨﺘﮯ ﺗﮭﮯ ﺍﻭﺭ ﯾﮧ ﺩﻭﺳﺮﯼ ﻃﺮﻑ ﮈﺍﺋﺮﯾﮑﭩﺮ ﺳﯽ ﺁﺋﯽ ﺍﮮ ﻟﯿﻮﻥ ﭘﻨﯿﭩﺎ ﮐﻮ ﺑﮭﯽ ﮈﺍﺋﺮﯾﮑﭧ ﻓﻮﻥ ﮐﺮ ﻟﯿﺘﮯ ﺗﮭﮯ ‘ ﭘﺎﮐﺴﺘﺎﻥ ﮐﮯ ﺣﺴﺎﺱ ﺍﺩﺍﺭﮮ ﺍﻥ ﮐﮯ ﮐﺮﺩﺍﺭ ﺳﮯ ﻣﻄﻤﺌﻦ ﻧﮩﯿﮟ ﺗﮭﮯ ‘ ﺣﺴﯿﻦ ﺣﻘﺎﻧﯽ ﮐﮯ ﺧﻼﻑ ﺧﻔﯿﮧ ﺗﺤﻘﯿﻘﺎﺕ ﺷﺮﻭﻉ ﮨﻮﺋﯿﮟ ﺗﻮ ﺍﻧﮑﺸﺎﻓﺎﺕ ﭘﺮ ﺍﻧﮑﺸﺎﻓﺎﺕ ﮨﻮﺗﮯ ﭼﻠﮯ ﮔﺌﮯ۔

ﺍﻣﺮﯾﮑﺎ ﻣﯿﮟ ﭘﺎﮐﺴﺘﺎﻧﯽ ﺳﻔﺎﺭﺕ ﺧﺎﻧﮯ ﮐﮯ ﻣﻠﭩﺮﯼ ﺍﺗﺎﺷﯽ ﻧﮯ ﺍﺱ ﺳﻠﺴﻠﮯ ﻣﯿﮟ ﺍﮨﻢ ﮐﺮﺩﺍﺭ ﺍﺩﺍ ﮐﯿﺎ ‘ ﻭﮦ ﺍﻧﺘﮩﺎﺋﯽ ﭘﮍﮬﮯ ﻟﮑﮭﮯ ﺍﻭﺭ ﺍﯾﻤﺎﻧﺪﺍﺭ ﺍﻓﺴﺮ ﺗﮭﮯ ‘ ﻭﮦ ﻣﻠﭩﺮﯼ ﺍﺗﺎﺷﯽ ﺑﻨﻨﮯ ﺳﮯ ﻗﺒﻞ ﺷﻮﮐﺖ ﻋﺰﯾﺰ ﺍﻭﺭ ﯾﻮﺳﻒ ﺭﺿﺎ ﮔﯿﻼﻧﯽ ﮐﮯ ﻣﻠﭩﺮﯼ ﺳﯿﮑﺮﭨﺮﯼ ﺭﮨﮯ ﺗﮭﮯ ‏( ﯾﮧ ﺍﺱ ﻭﻗﺖ ﻟﯿﻔﭩﯿﻨﻨﭧ ﺟﻨﺮﻝ ﮨﯿﮟ ﺍﻭﺭ ﯾﮧ ﺍﯾﮏ ﺍﮨﻢ ﮐﻮﺭ ﮐﯽ ﮐﻤﺎﻧﮉ ﮐﺮ ﺭﮨﮯ ﮨﯿﮟ ‘( ﯾﮧ ﻣﻌﻠﻮﻣﺎﺕ ﺟﻤﻊ ﮐﺮﺗﮯ ﺭﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﭘﺎﮐﺴﺘﺎﻥ ﺑﮭﺠﻮﺍﺗﮯ ﺭﮨﮯ ‘ ﻣﻌﻠﻮﻣﺎﺕ ﺍﻧﺘﮩﺎﺋﯽ ﺣﺴﺎﺱ ﺗﮭﯿﮟ ‘ ﯾﮧ ﺍﯼ ﻣﯿﻞ ﯾﺎ ﺳﻔﺎﺭﺗﯽ ﺑﯿﮓ ﭘﺮ ﺍﻋﺘﻤﺎﺩ ﻧﮩﯿﮟ ﮐﺮ ﺳﮑﺘﮯ ﺗﮭﮯ ﭼﻨﺎﻧﭽﮧ ﺍﻧﮩﻮﮞ ﻧﮯ ﺗﻤﺎﻡ ﺛﺒﻮﺕ ﮨﺎﺗﮫ ﺳﮯ ﻟﮑﮭﮯ ﺍﻭﺭ ﺑﺮﺍﮦ ﺭﺍﺳﺖ ﺟﻨﺮﻝ ﭘﺎﺷﺎ ﺍﻭﺭ ﺟﻨﺮﻝ ﮐﯿﺎﻧﯽ ﮐﻮ ﭘﮩﻨﭽﺎدیئے ‘ ﺍﻧﮑﺸﺎﻓﺎﺕ ﺧﻮﻓﻨﺎﮎ ﺗﮭﮯ ﺍﻭﺭ ﯾﮧ ﺛﺎﺑﺖ ﮐﺮﺗﮯ ﺗﮭﮯ ﺍﻣﺮﯾﮑﺎ ﻧﮯ ﮐﺲ ﻃﺮﺡ ﭘﺎﮐﺴﺘﺎﻥ ﻣﯿﮟ ﺟﺎﺳﻮﺳﯽ ﮐﺎ ﻧﯿﭧ ﻭﺭﮎ ﺑﻨﺎﯾﺎ ‘ ﺍﻣﺮﯾﮑﯽ ﺟﺎﺳﻮﺳﻮﮞ ﮐﻮ ﮐﺲ ﻃﺮﺡ ﻭﯾﺰﮮ ﺟﺎﺭﯼ ﮐﺌﮯ ﮔﺌﮯ ‘ ﯾﮧ ﻟﻮﮒ ﮐﺲ ﻃﺮﺡ ﺣﺴﺎﺱ ﺁﻻﺕ ﭘﺎﮐﺴﺘﺎﻥ ﻻﺗﮯ ﺭﮨﮯ ‘ ﺧﯿﺒﺮ ﭘﺨﺘﻮﻧﺨﻮﺍﮦ ﮐﯽ ﺣﮑﻮﻣﺖ ﮐﮯ ﮐﺲ ﮐﺲ ﻋﮩﺪﯾﺪﺍﺭ ﻧﮯ ﺍﻥ ﮐﯽ ﻣﺪﺩ ﮐﯽ ‘ ﻭﻓﺎﻕ ﮐﺎ ﮐﻮﻥ ﮐﻮﻥ ﺳﺎ ﻭﺯﯾﺮ ‘ ﺍﯾﻮﺍﻥ ﺻﺪﺭ ﮐﺎ ﮐﻮﻥ ﮐﻮﻥ ﺳﺎ ﮐﺎﺭﻧﺪﮦ ﺍﻭﺭ ﻭﺯﯾﺮﺍﻋﻈﻢ ﮐﮯ ﺳﭩﺎﻑ ﮐﺎ ﮐﻮﻥ ﮐﻮﻥ ﺳﺎ ﺭﮐﻦ ﺍﻥ ﻟﻮﮔﻮﮞ ﮐﮯ ﺳﺎﺗﮫ ﻣﻼ ﮨﻮﺍ ﺗﮭﺎ ‘ ﮐﺲ ﻣﺬﮨﺒﯽ ﺳﯿﺎﺳﯽ ﺟﻤﺎﻋﺖ ﮐﮯ ﻟﻮﮒ ﺍﻥ ﮐﮯ ﺭﺍﺑﻄﮯ ﻣﯿﮟ ﺗﮭﮯ ﺍﻭﺭ ﮐﺲ ﻧﮯ ﮐﺘﻨﯽ ﺭﻗﻢ ﻭﺻﻮﻝ ﮐﯽ ﺍﻭﺭ ﻭﮦ ﺭﻗﻢ ﮐﺲ ﺍﮐﺎﺅﻧﭧ ﻣﯿﮟ ﺭﮐﮭﯽ ﮔﺌﯽ ‘ ﯾﮧ ﺍﻧﮑﺸﺎﻓﺎﺕ ﺛﺎﺑﺖ ﮐﺮﺗﮯ ﺗﮭﮯ ۔
ﺍﺳﺎﻣﮧ ﺑﻦ ﻻﺩﻥ ﮐﮯ ﺧﻼﻑ ﺁﭘﺮﯾﺸﻦ ﺳﻮﻝ ﺣﮑﻮﻣﺖ ﮐﯽ ﻣﺮﺿﯽ ﺍﻭﺭ ﻣﻨﺸﺎﺀﮐﮯ ﻣﻄﺎﺑﻖ ﮨﻮﺍ ﺗﮭﺎ ﺍﻭﺭ ﺣﮑﻮﻣﺖ ﺁﭘﺮﯾﺸﻦ ﻣﯿﮟ ﺷﺎﻣﻞ ﺗﮭﯽ۔ ﻓﻮﺝ ﻧﮯ ﯾﮧ ﺗﻤﺎﻡ ﻣﻌﻠﻮﻣﺎﺕ ﺻﺪﺭ ﺁﺻﻒ ﻋﻠﯽ ﺯﺭﺩﺍﺭﯼ ﮐﮯ ﺳﺎﻣﻨﮯ ﺭﮐﮫ ﺩﯾﮟ ‘ ﺻﺪﺭ ﭘﺮﯾﺸﺎﻥ ﮨﻮ ﮔﺌﮯ ﺍﻭﺭ ﺻﺪﺭ ﮐﻮ ﻣﺤﺴﻮﺱ ﮨﻮﺍ ﻓﻮﺝ ﮐﺴﯽ ﺑﮭﯽ ﻭﻗﺖ ﺍﻧﮩﯿﮟ ﮔﺮﻓﺘﺎﺭ ﮐﺮ ﻟﮯ ﮔﯽ ‘ ﯾﮧ ﺧﻮﻑ ﺣﺴﯿﻦ ﺣﻘﺎﻧﯽ ﺗﮏ ﭘﮩﻨﭽﺎ ‘ ﺣﺴﯿﻦ ﺣﻘﺎﻧﯽ ﻧﮯ ﺍﭘﻨﮯ ﺩﻭﺳﺖ ﻣﻨﺼﻮﺭ ﺍﻋﺠﺎﺯ ﮐﻮ ﺍﻋﺘﻤﺎﺩ ﻣﯿﮟ ﻟﯿﺎ ‘ ﺩﻭﻧﻮﮞ ﻧﮯ ﻣﺎﺋﯿﮏ ﻣﻮﻟﻦ ﮐﮯﻟﺌﮯ ﭼﮭﻮﭨﺎ ﺳﺎ ﻣﻀﻤﻮﻥ ﮈﯾﺰﺍﺋﻦ ﮐﯿﺎ ‘ ﻣﻨﺼﻮﺭ ﺍﻋﺠﺎﺯ ﻧﮯ ﯾﮧ ﻣﻀﻤﻮﻥ ﻣﺎﺋﯿﮏ ﻣﻮﻟﻦ ﮐﻮ ﭘﮩﻨﭽﺎ ﺩﯾﺎ ‘ ﭘﯿﻐﺎﻡ ﻣﯿﮟ ﺩﺭﺝ ﺗﮭﺎ
” ﻓﻮﺝ ﺩﻭ ﻣﺌﯽ ﮐﮯ ﺁﭘﺮﯾﺸﻦ ﮐﯽ ﻭﺟﮧ ﺳﮯ ﻧﺎﺭﺍﺽ ﮨﮯ ‘ ﯾﮧ ﺳﻮﯾﻠﯿﻦ ﺣﮑﻮﻣﺖ ﭘﺮ ﻗﺒﻀﮧ ﮐﺮﻧﺎ ﭼﺎﮨﺘﯽ ﮨﮯ ‘ ﺁﭖ ﺟﻨﺮﻝ ﮐﯿﺎﻧﯽ ﮐﻮ ﺭﻭﮐﯿﮟ “
ﻣﺎﺋﯿﮏ ﻣﻮﻟﻦ ﮐﻮ ﯾﮧ ﺑﮭﯽ ﮐﮩﺎ ﮔﯿﺎ
” ﭘﺎﮐﺴﺘﺎﻥ ﻓﻮﺝ ﺍﻓﻐﺎﻥ ﻣﺴﺌﻠﮯ ﮐﯽ ﺫﻣﮧ ﺩﺍﺭ ﮨﮯ “ ۔
ﺣﺴﯿﻦ ﺣﻘﺎﻧﯽ ‘ ﻣﻨﺼﻮﺭ ﺍﻋﺠﺎﺯ ﺍﻭﺭ ﻣﺎﺋﯿﮏ ﻣﻮﻟﻦ ﮐﮯ ﺩﺭﻣﯿﺎﻥ ﯾﮧ ﺭﺍﺑﻄﮯ ﺑﻠﯿﮏ ﺑﯿﺮﯼ ﮐﮯ ﺫﺭﯾﻌﮯ ﮨﻮﺋﮯ ﺗﮭﮯ ‘ ﯾﮧ ﭘﯿﻐﺎﻡ ﭘﺎﮐﺴﺘﺎﻥ ﻣﯿﮟ ﺑﻌﺪ ﺍﺯﺍﮞ ﻣﯿﻤﻮ ﺳﮑﯿﻨﮉﻝ ﮐﮩﻼﯾﺎ ‘ ﯾﮧ ﻣﯿﻤﻮ ﺑﮭﯽ ﺟﻨﺮﻝ ﮐﯿﺎﻧﯽ ﺍﻭﺭ ﺟﻨﺮﻝ ﭘﺎﺷﺎ ﮐﮯ ﻧﻮﭨﺲ ﻣﯿﮟ ﺁﮔﯿﺎ ‘ ﭘﺎﮐﺴﺘﺎﻥ ﮐﮯ ﭼﻨﺪ ﻣﺤﺐ ﻭﻃﻦ ﻟﻮﮔﻮﮞ ﻧﮯ ﻣﻨﺼﻮﺭ ﺍﻋﺠﺎﺯ ﮐﻮ ﻏﯿﺮﺕ ﺩﻻﺋﯽ ‘ ﯾﮧ ﺿﻤﯿﺮ ﮐﮯ ﺩﺑﺎﺅ ﻣﯿﮟ ﺁﺋﮯ ﺍﻭﺭ ﺍﻧﮩﻮﮞ ﻧﮯ 10 ﺍﮐﺘﻮﺑﺮ 2011 ﺀﮐﻮ ﺑﺮﻃﺎﻧﻮﯼ ﺍﺧﺒﺎﺭ ﻓﻨﺎﻧﺸﻞ ﭨﺎﺋﻤﺰ ﻣﯿﮟ ﺍﭘﻨﮯ ﻣﻀﻤﻮﻥ ﻣﯿﮟ ” ﺍﻋﺘﺮﺍﻑ ﺟﺮﻡ “ ﮐﺮ ﻟﯿﺎ ﯾﻮﮞ ﺣﻘﺎﺋﻖ ﺳﺎﻣﻨﮯ ﺁ ﮔﺌﮯ۔
ﺻﺪﺭ ﺁﺻﻒ ﻋﻠﯽ ﺯﺭﺩﺍﺭﯼ ﮐﮯ ﭘﺎﺱ ﺍﺏ ﺑﭽﺎﺅ ﮐﺎ ﮐﻮﺋﯽ ﺫﺭﯾﻌﮧ ﻧﮩﯿﮟ ﺗﮭﺎ ‘ ﺯﺭﺩﺍﺭﯼ ﺻﺎﺣﺐ ﻧﮯ ﻣﯿﺎﮞ ﻧﻮﺍﺯ ﺷﺮﯾﻒ ﺳﮯ ﻣﺪﺩ ﻣﺎﻧﮓ ﻟﯽ ‘ ﯾﮧ ﻣﺪﺩ ﻓﻮﺝ ﮐﮯ ﻧﻮﭨﺲ ﻣﯿﮟ ﺁ ﮔﺌﯽ ‘ ﺁﺭﻣﯽ ﭼﯿﻒ ﻧﮯ ﻣﯿﺎﮞ ﻧﻮﺍﺯ ﺷﺮﯾﻒ ﮐﻮ ﺳﺎﺭﮮ ﺣﻘﺎﺋﻖ ﺑﺘﺎ ﺩﯾﺌﮯ ‘ ﻣﯿﺎﮞ ﻧﻮﺍﺯ ﺷﺮﯾﻒ ﻧﮯ ﻣﺪﺩ ﮐﮯ ﺑﺠﺎﺋﮯ ﺧﻢ ﭨﮭﻮﻧﮏ ﮐﺮ ﺁﺻﻒ ﻋﻠﯽ ﺯﺭﺩﺍﺭﯼ ﮐﮯ ﺧﻼﻑ ﻣﯿﺪﺍﻥ ﻣﯿﮟ ﺍﺗﺮﻧﮯ ﮐﺎ ﻓﯿﺼﻠﮧ ﮐﺮﻟﯿﺎ ‘ ﺣﮑﻮﻣﺖ ﻧﮯ ﺷﺪﯾﺪ ﺩﺑﺎﺅ ﻣﯿﮟ ﺣﺴﯿﻦ ﺣﻘﺎﻧﯽ ﮐﻮ ﭘﺎﮐﺴﺘﺎﻥ ﻃﻠﺐ ﮐﯿﺎ ﺍﻭﺭ 22 ﻧﻮﻣﺒﺮ ﮐﻮ ﺍﻥ ﺳﮯ ﺍﺳﺘﻌﻔﯽٰ ﻟﮯ ﻟﯿﺎ۔
ﻣﯿﺎﮞ ﻧﻮﺍﺯ ﺷﺮﯾﻒ 23 ﻧﻮﻣﺒﺮ 2011 ﺀﮐﻮ ﮐﺎﻻ ﮐﻮﭦ ﭘﮩﻦ ﮐﺮ ﺳﭙﺮﯾﻢ ﮐﻮﺭﭦ ﮔﺌﮯ ﺍﻭﺭ ﻣﯿﻤﻮ ﺳﮑﯿﻨﮉﻝ ﮐﯽ ﺗﺤﻘﯿﻘﺎﺕ ﮐﮯﻟﺌﮯ ﺭﭦ ﺩﺍﺋﺮ ﮐﺮ ﺩﯼ ‘ ﻋﺪﺍﻟﺖ ﻧﮯ ﭘﭩﯿﺸﻦ ﺳﻤﺎﻋﺖ ﮐﮯﻟﺌﮯ ﻣﻨﻈﻮﺭ ﮐﺮ ﻟﯽ۔ ‏
ﻣﻠﮑﯽ ﺗﺎﺭﯾﺦ ﻣﯿﮟ ﭘﮩﻠﯽ ﺑﺎﺭ ﺍﭘﻮﺯﯾﺸﻦ ﭘﺎﺭﭨﯽ ﮐﮯ ﺳﺮﺑﺮﺍﮦ ‘ ﺁﺭﻣﯽ ﭼﯿﻒ ﺍﻭﺭ ﺁﺋﯽ ﺍﯾﺲ ﺁﺋﯽ ﮐﮯ ﮈﺍﺋﺮﯾﮑﭩﺮ ﺟﻨﺮﻝ ﻧﮯ ﺍﭘﻨﮯ ﮐﺴﯽ ﺳﻔﯿﺮ ﮐﮯ ﺧﻼﻑ ﺳﭙﺮﯾﻢ ﮐﻮﺭﭦ ﺁﻑ ﭘﺎﮐﺴﺘﺎﻥ ﻣﯿﮟ ﺟﻮﺍﺏ ﺟﻤﻊ ﮐﺮﺍﺋﮯ۔

ﺳﭙﺮﯾﻢ ﮐﻮﺭﭦ ﻧﮯ ﺣﺴﯿﻦ ﺣﻘﺎﻧﯽ ﮐﺎ ﻧﺎﻡ ﺍﯼ ﺳﯽ ﺍﯾﻞ ﭘﺮ ﮈﺍﻻ ﺍﻭﺭ ﺗﺤﻘﯿﻘﺎﺕ ﮐﮯﻟﺌﮯ ﺗﯿﻦ ﺭﮐﻨﯽ ﻋﺪﺍﻟﺘﯽ ﮐﻤﯿﺸﻦ ﺑﻨﺎ ﺩﯾﺎ ‘

ﮐﻤﯿﺸﻦ ﮐﮯ ﺳﺮﺑﺮﺍﮦ ﺟﺴﭩﺲ ﻗﺎﺿﯽ ﻓﺎﺋﺰ ﻋﯿﺴﯽٰ ﺗﮭﮯ (جن کے انصاف کا تجربہ مہاجرزادہ کو 2006 میں ہوچکا ہے ، جب وہ بلوچستان ھائی کورٹ، کے سربراہ تھے) ‘ ﮐﻤﯿﺸﻦ ﻧﮯ 11 ﺟﻮﻥ 2012 ﺀﮐﻮ ﺭﭘﻮﺭﭦ ﭘﯿﺶ ﮐﺮ ﺩﯼ ‘ ﺭﭘﻮﺭﭦ ﻣﯿﮟ ﻣﯿﻤﻮ ﮐﻮ ﺣﻘﯿﻘﺖ ﺍﻭﺭ ﺍﺱ ﺣﻘﯿﻘﺖ ﮐﺎ ﺧﺎﻟﻖ ﺣﺴﯿﻦ ﺣﻘﺎﻧﯽ ﮐﻮ ﻗﺮﺍﺭ ﺩﯾﺎ ﮔﯿﺎ ‘ ﮐﻤﯿﺸﻦ ﻧﮯ ﻟﮑﮭﺎ:


٭ -
ﺣﺴﯿﻦ ﺣﻘﺎﻧﯽ ﺳﻔﯿﺮ ﮐﯽ ﺣﯿﺜﯿﺖ ﺳﮯ ﭘﺎﮐﺴﺘﺎﻥ ﺳﮯ ﺳﺎﻻﻧﮧ 20 ﻻﮐﮫ ﮈﺍﻟﺮ ‏( ﺩﻭ ﻣﻠﯿﻦ ‏) ﺗﻨﺨﻮﺍﮦ ﻟﯿﺘﮯ ﺗﮭﮯ ﻟﯿﮑﻦ ﺍﻥ ﮐﯽ ﻭﻓﺎﺩﺍﺭﯾﺎﮞ ﺍﻣﺮﯾﮑﺎ ﮐﮯ ﺳﺎﺗﮫ ﺗﮭﯿﮟ۔


٭ -
ﺣﺴﯿﻦ ﺣﻘﺎﻧﯽ ﻧﮯ ﭘﺎﮐﺴﺘﺎﻥ ﻣﯿﮟ ﺭﮨﻨﺎ ﺗﮏ ﭘﺴﻨﺪ ﻧﮩﯿﮟ ﮐﯿﺎ ‘ ﻣﻠﮏ ﻣﯿﮟ ﺍﻥ ﮐﯽ ﮐﻮﺋﯽ ﺟﺎﺋﯿﺪﺍﺩ ﺗﮭﯽ ﺍﻭﺭ ﻧﮧ ﮨﯽ ﺑﯿﻨﮏ ﺑﯿﻠﻨﺲ ‘ ﯾﮧ ﮨﻤﯿﺸﮧ ﺍﻣﺮﯾﮑﺎ ﮐﻮ ﭘﺎﮐﺴﺘﺎﻥ ﭘﺮ ﺗﺮﺟﯿﺢ ﺩﯾﺘﮯ ﺭﮨﮯ۔


٭ -
ﻣﯿﻤﻮ ﻟﮑﮭﻨﮯ ﮐﯽ ﻭﺟﮧ ﭘﺎﮐﺴﺘﺎﻥ ﮐﯽ ﺳﻮﯾﻠﯿﻦ ﺣﮑﻮﻣﺖ ﮐﻮ ﺍﻣﺮﯾﮑﺎ ﮐﺎ ﺩﻭﺳﺖ ﻇﺎﮨﺮ ﮐﺮﻧﺎ ﺗﮭﺎ ﺍﻭﺭ ﯾﮧ ﺛﺎﺑﺖ ﮐﺮﻧﺎ ﺗﮭﺎ ﺍﯾﭩﻤﯽ ﭘﮭﯿﻼﺅ ﺭﻭﮐﻨﮯ ﮐﺎ ﮐﺎﻡ ﺻﺮﻑ ﺳﻮﯾﻠﯿﻦ ﺣﮑﻮﻣﺖ ﮐﺮ ﺳﮑﺘﯽ ﮨﮯ۔


٭ -
ﭘﺎﮐﺴﺘﺎﻧﯽ ﺳﻔﯿﺮ ﻧﮯ ﻣﯿﻤﻮ ﮐﮯ ﺫﺭﯾﻌﮯ ﺍﻣﺮﯾﮑﺎ ﮐﻮ ﭘﺎﮐﺴﺘﺎﻥ ﻣﯿﮟ ﻧﺌﯽ ﺳﯿﮑﻮﺭﭨﯽ ﭨﯿﻢ ﺑﻨﺎﻧﮯ ﮐﯽ ﺗﺮﻏﯿﺐ ﺑﮭﯽ ﺩﯼ ﺍﻭﺭ ﯾﮧ ﺍﺱ ﻣﻤﮑﻨﮧ ﺳﯿﮑﻮﺭﭨﯽ ﭨﯿﻢ ﮐﺎ ﺳﺮﺑﺮﺍﮦ ‏( ﻭﺯﯾﺮﺍﻋﻈﻢ ‏) ﺑﻨﻨﺎ ﭼﺎﮨﺘﮯ ﺗﮭﮯ ۔

ﭼﻨﺎﻧﭽﮧ ﮐﻤﯿﺸﻦ ﯾﮧ ﺳﻤﺠﮭﺘﺎ ﮨﮯ ﺣﺴﯿﻦ ﺣﻘﺎﻧﯽ ﻧﮯ ﺍﺱ ﻣﯿﻤﻮ ﮐﮯ ﺫﺭﯾﻌﮯ ﺁﺋﯿﻦ ﮐﯽ ﺧﻼﻑ ﻭﺭﺯﯼ ﮐﯽ۔

ﺁﭖ ﯾﮧ ﺭﭘﻮﺭﭦ ﺟﮩﺎﮞ ﺳﮯ ﺑﮭﯽ ﭘﮍﮬﯿﮟ ﺁﭖ ﮐﻮ ﺣﺴﯿﻦ ﺣﻘﺎﻧﯽ ﺍﻣﺮﯾﮑﯽ ﺍﯾﺠﻨﭧ ﺍﻭﺭ ﭘﺎﮐﺴﺘﺎﻥ ﮐﮯ ﻣﺨﺎﻟﻒ ﺩﮐﮭﺎﺋﯽ ﺩﯾﮟ ﮔﮯ ‘ ﺁﭖ ﮐﻮ ﻣﺤﺴﻮﺱ ﮨﻮ ﮔﺎ ﺍﻣﺮﯾﮑﺎ ﻧﮯ ﺍﺳﺎﻣﮧ ﺑﻦ ﻻﺩﻥ ﮐﻮ ﺗﻼﺵ ﮐﺮﻧﮯ ‘ ﺍﻥ ﮐﮯ ﮔﺮﺩ ﮔﮭﯿﺮﺍ ﺗﻨﮓ ﮐﺮﻧﮯ ﺍﻭﺭ 2 ﻣﺌﯽ 2011 ﮐﮯ ﺁﭘﺮﯾﺸﻦ ﮐﮯﻟﺌﮯ ﭘﺎﮐﺴﺘﺎﻥ ﮐﮯ ﺳﻔﯿﺮ
ﺣﺴﯿﻦ ﺣﻘﺎﻧﯽ ﮐﻮ ﺍﺳﺘﻌﻤﺎﻝ ﮐﯿﺎ ﺍﻭﺭ ﯾﮧ ﺍﭘﻨﯽ ﺭﺿﺎ ﺍﻭﺭ ﺭﻏﺒﺖ ﮐﮯ ﺳﺎﺗﮫ ﺍﺳﺘﻌﻤﺎﻝ ﮨﻮﺋﮯ ﺍﻭﺭﺍﮔﺮ ﯾﮧ 2010 ﺀﺍﻭﺭ 2011 ﺀﻣﯿﮟ ﺍﻣﺮﯾﮑﺎ ﮐﯽ ﻣﺪﺩ ﻧﮧ ﮐﺮﺗﮯ ‘ ﯾﮧ ﺭﯾﻤﻨﮉ ﮈﯾﻮﺱ ﺟﯿﺴﮯ ﮐﺎﻧﭩﺮﯾﮑﭩﺮﺯ ﺍﻭﺭ ﺑﻠﯿﮏ ﻭﺍﭨﺮ ﺟﯿﺴﯽ ﺳﯿﮑﻮﺭﭨﯽ ﺍﯾﺠﻨﺴﯿﻮﮞ ﮐﻮ ﻭﯾﺰﮮ ﺟﺎﺭﯼ ﻧﮧ ﮐﺮﺗﮯ ‘ ﯾﮧ ﺍﮔﺮ ﺍﻣﺮﯾﮑﯽ ﺍﻧﺘﻈﺎﻣﯿﮧ ﮐﻮ ﺍﻥ ﻟﻮﮔﻮﮞ ﮐﮯ ﺑﺎﺭﮮ ﻣﯿﮟ ﺑﺮﯾﻔﻨﮓ ﻧﮧ ﺩﯾﺘﮯ ﺟﻨﮩﯿﮟ ﭘﺎﮐﺴﺘﺎﻥ ﻣﯿﮟ ﺧﺮﯾﺪﺍ ﺟﺎ ﺳﮑﺘﺎ ﺗﮭﺎ ‘ ﺗﺮﻏﯿﺐ ﺩﯼ ﺟﺎ ﺳﮑﺘﯽ ﺗﮭﯽ ﯾﺎ ﭘﮭﺮ ﺩﺑﺎﯾﺎ ﺟﺎ ﺳﮑﺘﺎ ﺗﮭﺎ ﺗﻮ ﺍﻣﺮﯾﮑﺎ ﮐﺒﮭﯽ ﺍﺳﺎﻣﮧ ﺑﻦ ﻻﺩﻥ ﺗﮏ ﭘﮩﻨﭻ ﭘﺎﺗﺎ ﺍﻭﺭ ﻧﮧ ﮨﯽ ﯾﮧ 2 ﻣﺌﯽ ﺟﯿﺴﺎ ﺁﭘﺮﯾﺸﻦ ﮐﺮ ﭘﺎﺗﺎ ﭼﻨﺎﻧﭽﮧ ﯾﮧ ﺣﺴﯿﻦ ﺣﻘﺎﻧﯽ ﺗﮭﮯ ﺟﻨﮩﻮﮞ ﻧﮯ ﻋﮩﺪﮮ ‘ ﭘﯿﺴﮯ ﺍﻭﺭ ﺗﮭﭙﮑﯽ ﮐﮯ ﻻﻟﭻ ﻣﯿﮟ ﭘﺎﮐﺴﺘﺎﻥ ﺳﮯ ﻏﺪﺍﺭﯼ ﮐﯽ ﺍﻭﺭ ،
ﺍﺱ ﻏﺪﺍﺭﯼ ﺳﮯ ﺻﺪﺭ ﺁﺻﻒ ﻋﻠﯽ ﺯﺭﺩﺍﺭﯼ ‘ ﻭﺯﯾﺮﺍﻋﻈﻢ ﯾﻮﺳﻒ ﺭﺿﺎ ﮔﯿﻼﻧﯽ ‘ ﻣﯿﺎﮞ ﻧﻮﺍﺯ ﺷﺮﯾﻒ ‘ ﺟﻨﺮﻝ ﮐﯿﺎﻧﯽ ﺍﻭﺭ ﺟﻨﺮﻝ ﭘﺎﺷﺎ ﺳﻤﯿﺖ ﺯﯾﺎﺩﮦ ﺗﺮ ﻣﻘﺘﺪﺭ ﻟﻮﮒ ﻭﺍﻗﻒ ﺗﮭﮯ ‘ ﯾﮧ ﺣﻘﺎﺋﻖ ﭼﯿﻒ ﺟﺴﭩﺲ ﺁﻑ ﭘﺎﮐﺴﺘﺎﻥ ﺍﻓﺘﺨﺎﺭ ﭼﻮﺩﮬﺮﯼ ﺍﻭﺭ ﺗﯿﻦ ﺭﮐﻨﯽ ﻋﺪﺍﻟﺘﯽ ﮐﻤﯿﺸﻦ ﮐﮯ ﻧﻮﭨﺲ ﻣﯿﮟ ﺑﮭﯽ ﺗﮭﮯ ﻟﯿﮑﻦ ﺣﺴﯿﻦ ﺣﻘﺎﻧﯽ ﺍﺱ ﮐﮯ ﺑﺎﻭﺟﻮﺩ 31 ﺟﻨﻮﺭﯼ 2012 ﺀﮐﻮ ﻣﻠﮏ ﺳﮯ ﺑﺎﮨﺮ ﺑﮭﯽ ﭼﻠﮯ ﮔﺌﮯ ﺍﻭﺭ ﺍﻥ ﮐﮯ ﺧﻼﻑ ﮐﻮﺋﯽ ﻓﯿﺼﻠﮧ ﺑﮭﯽ ﻧﮩﯿﮟ ﺁﯾﺎ ‘ ﮐﯿﻮﮞ؟

ﺷﺎﯾﺪ ﺍﻣﺮﯾﮑﺎ ﮐﺎ ﺩﺑﺎﺅ ﺗﮭﺎ ﺍﻭﺭ ﺍﺱ ﺩﺑﺎﺅ ﻧﮯ ﺍﯾﮏ ﺍﯾﮏ ﮐﺮ ﮐﮯ ﺣﺴﯿﻦ ﺣﻘﺎﻧﯽ ﮐﮯ ﺧﻼﻑ ﺍﭨﮭﻨﮯ ﻭﺍﻟﯽ ﺗﻤﺎﻡ ﺁﻭﺍﺯﯾﮟ ﺧﺎﻣﻮﺵ ﮐﺮﺍ ﺩﯾﮟ ‘

ﻭﻗﺖ ﮔﺰﺭﻧﮯ ﮐﮯ ﺳﺎﺗﮫ ﺳﺎﺗﮫ ﺍﻓﺘﺨﺎﺭ ﻣﺤﻤﺪ ﭼﻮﺩﮬﺮﯼ ﻧﮯ ﺍﭘﻨﯽ ﺗﺮﺟﯿﺤﺎﺕ ﺑﺪﻝ ﻟﯿﮟ ‘ ﺟﻨﺮﻝ ﭘﺎﺷﺎ ﺍﻭﺭ ﺟﻨﺮﻝ ﮐﯿﺎﻧﯽ ﺭﯾﭩﺎﺋﺮ ﮨﻮ ﮔﺌﮯ ‘ ﯾﻮﺳﻒ ﺭﺿﺎ ﮔﯿﻼﻧﯽ ﮐﻮ ﻋﮩﺪﮮ ﺳﮯ ﮨﭩﺎ ﺩﯾﺎ ﮔﯿﺎ ‘ ﺁﺻﻒ ﻋﻠﯽ ﺯﺭﺩﺍﺭﯼ ﺣﺴﯿﻦ ﺣﻘﺎﻧﯽ ﮐﮯ ﺩﻭﺳﺖ ﺍﻭﺭ ﻣﺪﺩ ﮔﺎﺭ ﺗﮭﮯ ﺍﻭﺭﭘﯿﭽﮭﮯ ﺭﮦ ﮔﺌﮯ۔
ﻣﯿﺎﮞ ﻧﻮﺍﺯ ﺷﺮﯾﻒ ﺗﻮ ﯾﮧ 2013 ﺀﻣﯿﮟ ﺍﻗﺘﺪﺍﺭ ﻣﯿﮟ ﺁﮔﺌﮯ ﺍﻭﺭ ﯾﮧ ﺁﺗﮯ ﮨﯽ ﻓﻮﺝ ﮐﻮ ﺍﭘﻨﮯ ﺻﻔﺤﮯ ﭘﺮ ﻻﻧﮯ ﮐﯽ ﮐﻮﺷﺶ ﻣﯿﮟ ﻣﺼﺮﻭﻑ ﮨﻮ ﮔﺌﮯ ‘ ﯾﮧ ﮐﻮﺷﺶ ﺍﻧﮩﯿﮟ ﺩﮬﺮﻧﻮﮞ ﺗﮏ ﻟﮯ ﮔﺌﯽ ﺍﻭﺭ ﯾﮧ ﺑﺒﺎﻧﮓ ﺩﮨﻞ ﯾﮧ ﮐﮩﻨﮯ ﭘﺮ ﻣﺠﺒﻮﺭ ﮨﻮ ﮔﺌﮯ ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﻣﯿﻤﻮ ﺳﮑﯿﻨﮉﻝ ﻣﯿﮟ ﺁﺻﻒ ﻋﻠﯽ ﺯﺭﺩﺍﺭﯼ ﮐﮯ ﺧﻼﻑ ﻓﺮﯾﻖ ﺑﻦ ﮐﺮ ﻏﻠﻄﯽ ﮐﯽ ﺗﮭﯽ۔

ﯾﻮﮞ ﯾﮧ ﺍﯾﺸﻮ ﺗﺎﺭﯾﺦ ﮐﯽ ﭘﭽﮭﻠﯽ ‘ ﺍﻧﺪﮬﯽ ﺍﻭﺭ ﺳﯿﻠﻦ ﺯﺩﮦ ﮐﻮﭨﮭﮍﯼ ﻣﯿﮟ ﺩﻓﻦ ﮨﻮﺗﺎ ﭼﻼ ﮔﯿﺎ ‘ ﻋﺪﺍﻟﺖ ‘ ﻓﻮﺝ ﺍﻭﺭ ﭘﺎﺭﻟﯿﻤﻨﭧ ﺗﯿﻨﻮﮞ ﻧﮯ ﻣﯿﻤﻮ ﺳﮑﯿﻨﮉﻝ ﻓﺮﺍﻣﻮﺵ ﮐﺮ ﺩﯾﺎ ‘ ﺁﺻﻒ ﻋﻠﯽ ﺯﺭﺩﺍﺭﯼ ﻣﺪﺕ ﭘﻮﺭﯼ ﮐﺮ ﮐﮯ ﺩﻭﺑﺌﯽ ﻣﯿﮟ ﺑﯿﭩﮫ ﮔﺌﮯ ﺍﻭﺭ ﺣﺴﯿﻦ ﺣﻘﺎﻧﯽ ﺍﻣﺮﯾﮑﺎ ﻣﯿﮟ ﺍﭘﻨﯽ ” ﺟﻤﻊ ﭘﻮﻧﺠﯽ “ ﺳﮯ ﻟﻄﻒ ﺍﻧﺪﻭﺯ ﮨﻮﻧﮯ ﻟﮕﮯ۔

ﯾﮧ ﺍﯾﺸﻮ ﺷﺎﯾﺪ ﻗﻮﻡ ﮐﮯ ﺣﺎﻓﻈﮯ ﺳﮯ ﺑﮭﯽ ﻣﺤﻮ ﮨﻮ ﺟﺎﺗﺎ ﻟﯿﮑﻦ ﺣﺴﯿﻦ ﺣﻘﺎﻧﯽ ﻧﮯ 10 ﻣﺎﺭﭺ ﮐﻮ ﻭﺍﺷﻨﮕﭩﻦ ﭘﻮﺳﭧ ﻣﯿﮟ ﻣﻀﻤﻮﻥ ﻟﮑﮫ ﮐﺮ ﺍﭘﻨﺎ ﮨﯽ ﮔﮍﮬﺎ ﻣﺮﺩﮦ ﺩﻭﺑﺎﺭﮦ ﺯﻧﺪﮦ ﮐﺮ ﺩﯾﺎ ‘ ﻣﻀﻤﻮﻥ ﮐﺎ ﻋﻨﻮﺍﻥ

Yes, the Russian ambassador met Trump’s team. So? That’s what we diplomats do . ‏
 ﺟﯽ ‘ ﺭﻭﺳﯽ ﺳﻔﯿﺮ ﻧﮯ ﭨﺮﻣﭗ ﮐﯽ ﭨﯿﻢ ﺳﮯ ﻣﻼﻗﺎﺕ ﮐﯽ ‘ ﺗﻮ ﮐﯿﺎ ﮨﻮﺍ؟ ﮨﻢ ﺳﻔﯿﺮ ﯾﮧ ﮐﺮﺗﮯ ﺭﮨﺘﮯ ﮨﯿﮟ ‏
ﺣﺴﯿﻦ ﺣﻘﺎﻧﯽ ﻧﮯ ﺍﺱ ﻣﻀﻤﻮﻥ ﻣﯿﮟ ﺍﻧﮑﺸﺎﻑ ﮐﯿﺎ ‘ ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﺳﻮﯾﻠﯿﻦ ﻗﯿﺎﺩﺕ ﮐﯽ ﺍﺟﺎﺯﺕ ﺳﮯ ﭘﺎﮐﺴﺘﺎﻥ ﻣﯿﮟ ﺍﺳﺎﻣﮧ ﺑﻦ ﻻﺩﻥ ﮐﯽ ﺗﻼﺵ ﮐﯿﻠﺌﮯ ﺳﯽ ﺁﺋﯽ ﺍﮮ ﮐﮯ ﺍﮨﻠﮑﺎﺭﻭﮞ ﮐﻮ ﻣﺪﺩ ﺩﯼ ﺗﮭﯽ ‘ ﺣﺴﯿﻦ ﺣﻘﺎﻧﯽ ﻧﮯ ﺍﻋﺘﺮﺍﻑ ﮐﯿﺎ ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﺻﺪﺭ ﺑﺎﺭﺍﮎ ﺣﺴﯿﻦ ﺍﻭﺑﺎﻣﮧ ﮐﯽ ﺍﻟﯿﮑﺸﻦ ﻣﮩﻢ ﮐﮯ ﺩﻭﺭﺍﻥ ﭼﻨﺪ ﺍﮨﻢ ﻟﻮﮔﻮﮞ ﺳﮯ ﺗﻌﻠﻘﺎﺕ ﺍﺳﺘﻮﺍﺭ ﮐﺌﮯ ‘ ﯾﮧ ﻟﻮﮒ ﺍﻟﯿﮑﺸﻦ ﺟﯿﺘﻨﮯ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ﺍﻭﺑﺎﻣﮧ ﮐﯽ ﻧﯿﺸﻨﻞ ﺳﯿﮑﻮﺭﭨﯽ ﮐﺎ ﺣﺼﮧ ﺑﻦ ﮔﺌﮯ ‘ ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﺍﻥ ﮐﯽ ﺩﺭﺧﻮﺍﺳﺖ ﭘﺮ ﭘﺎﮎ ﻓﻮﺝ ﺳﮯ ﺑﺎﻻ ﺑﺎﻻ ﺳﯽ ﺁﺋﯽ ﺍﮮ ﮐﯽ ﻣﺪﺩ ﮐﯽ ‘ ﻣﯿﮟ ﻧﮯﯾﮧ ﻣﺪﺩ ﭘﺎﮐﺴﺘﺎﻥ ﮐﯽ ﺳﻮﯾﻠﯿﻦ ﻗﯿﺎﺩﺕ ‏( ﺻﺪﺭ ﺍﻭﺭ ﻭﺯﯾﺮﺍﻋﻈﻢ ‏) ﮐﯽ ﺍﺟﺎﺯﺕ ﺳﮯ ﮐﯽ ‘ ﺣﺴﯿﻦ ﺣﻘﺎﻧﯽ ﻧﮯ ﻟﮑﮭﺎ ۔ ﻣﯿﺮﯼ ﻭﺟﮧ ﺳﮯ ﺍﻣﺮﯾﮑﯽ ﺣﮑﻮﻣﺖ ﻧﮯ ﭘﺎﮐﺴﺘﺎﻥ ﮐﮯ ﺧﻔﯿﮧ ﺍﺩﺍﺭﻭﮞ ﺍﻭﺭ ﻓﻮﺝ ﮐﯽ ﻣﺪﺩ ﮐﮯ ﺑﻐﯿﺮ ﺍﺳﺎﻣﮧ ﺑﻦ ﻻﺩﻥ ﮐﻮ ﺗﻼﺵ ﮐﺮ ﻟﯿﺎ ‘ ﺍﻣﺮﯾﮑﺎ ﮐﻮ ﻓﻮﺝ ﺍﻭﺭ ﺧﻔﯿﮧ ﺍﺩﺍﺭﻭﮞ ﭘﺮ ﺍﺳﻼﻣﯽ ﺍﻧﺘﮩﺎ ﭘﺴﻨﺪﻭﮞ ﺳﮯ ﮨﻤﺪﺭﺩﯼ ﮐﺎ ﺷﮏ ﺗﮭﺎ ۔ ﺻﺪﺭ ﺁﺻﻒ ﻋﻠﯽ ﺯﺭﺩﺍﺭﯼ ﺍﻭﺭ ﯾﻮﺳﻒ ﺭﺿﺎ ﮔﯿﻼﻧﯽ ﭼﺎﮨﺘﮯ ﺗﮭﮯ۔
ﭘﺎﮐﺴﺘﺎﻥ ﻃﺎﻟﺒﺎﻥ ﮐﯽ ﺣﻤﺎﯾﺖ ﺧﺘﻢ ﮐﺮﮮ،
ﺑﮭﺎﺭﺕ ﺍﻭﺭ ﺍﻓﻐﺎﻧﺴﺘﺎﻥ ﮐﮯ ﺳﺎﺗﮫ ﺗﻌﻠﻘﺎﺕ ﭨﮭﯿﮏ ﮐﺮﮮ ﺍﻭﺭ
ﭘﺎﮐﺴﺘﺎﻥ ﮐﯽ ﺧﺎﺭﺟﮧ ﭘﺎﻟﯿﺴﯽ ﺳﮯ ﻓﻮﺝ ﮐﺎ ﮐﺮﺩﺍﺭ ﺧﺘﻢ ﮨﻮ۔

ﯾﮧ ﺍﺱ ﺳﻠﺴﻠﮯ ﻣﯿﮟ ﺍﻣﺮﯾﮑﺎ ﺳﮯ ﻣﺪﺩ ﭼﺎﮨﺘﮯ ﺗﮭﮯ۔ ﺣﺴﯿﻦ ﺣﻘﺎﻧﯽ ﮐﮯ ﺍﺱ ﺍﻋﺘﺮﺍﻑ ﻧﮯ ﺳﺎﺭﯼ ﮐﮩﺎﻧﯽ ﮐﮭﻮﻝ ﮐﺮ ﺭﮐﮫ ﺩﯼ ‘ ﯾﮧ ﺛﺎﺑﺖ ﮨﻮ ﮔﯿﺎ، ﭘﺎﮐﺴﺘﺎﻥ ﭘﯿﭙﻠﺰﭘﺎﺭﭨﯽ ﻧﮯ ﺍﻣﺮﯾﮑﯿﻮﮞ ﮐﻮ ﺑﮯ ﺷﻤﺎﺭ ﺳﮩﻮﻟﺘﯿﮟ ﻓﺮﺍﮨﻢ ﮐﯿﮟ ‘ ﺍﻣﺮﯾﮑﺎ ﻧﮯ ﺍﻥ ﺳﮩﻮﻟﺘﻮﮞ ﮐﯽ ﺑﻨﯿﺎﺩ ﭘﺮ ﭘﺎﮐﺴﺘﺎﻥ ﻣﯿﮟ ﺟﺎﺳﻮﺳﯽ ﮐﺎ ﺧﻮﻓﻨﺎﮎ ﻧﯿﭧ ﻭﺭﮎ ﺑﻨﺎ ﯾﺎ ‘ ﯾﮧ ﻧﯿﭧ ﻭﺭﮎ ﺟﮩﺎﮞ ﺍﺳﺎﻣﮧ ﺑﻦ ﻻﺩﻥ ﮐﮯ ﮔﺮﺩ ﮔﮭﯿﺮﺍ ﺗﻨﮓ ﮐﺮﺗﺎ ﺭﮨﺎ ﯾﮧ ﻭﮨﺎﮞ ﭘﺎﮐﺴﺘﺎﻥ ﮐﮯ ﺍﻧﺘﮩﺎﺋﯽ ﺣﺴﺎﺱ ﻋﻼﻗﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺑﮭﯽ ﮔﮭﺲ ﮔﯿﺎ ﯾﮩﺎﮞ ﺗﮏ ﮐﮧ ﺍﻣﺮﯾﮑﺎ ﻧﮯ ﺟﺐ ﺍﭘﻨﮯ ﮨﯿﻠﯽ ﮐﺎﭘﭩﺮ ﺍﯾﺒﭧ ﺁﺑﺎﺩ ﺑﮭﺠﻮﺍﺋﮯ ﺗﻮ ﮨﻤﺎﺭﺍ ﻓﻀﺎﺋﯽ ﻧﻈﺎﻡ ﺍﻧﮩﯿﮟ ” ﭨﺮﯾﺲ “ نہیں ﮐﺮ ﺳﮑﺎ ﺍﻭﺭ ﻧﮧ ﮨﯽ ﮨﻤﺎﺭﺍ ﺯﻣﯿﻨﯽ ﻧﻈﺎﻡ ﺍﻧﮩﯿﮟ ﺩﯾﮑﮫ ﺳﮑﺎ ‘ ﯾﮧ ﮨﯿﻠﯽ ﮐﺎﭘﭩﺮ ﮐﺎﻻ ﮈﮬﺎﮐﮧ ﻣﯿﮟ ﺍﺗﺮﺗﮯ ﺍﻭﺭ ﭘﺮﻭﺍﺯ ﮐﺮﺗﮯ ﺭﮨﮯ ‘ ﯾﮧ ﻭﮨﺎﮞ ﺭﯼ ﻓﯿﻮﻟﻨﮓ ﺑﮭﯽ ﮐﺮﺍﺗﮯ ﺭﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﮨﻤﯿﮟ ﮐﺎﻧﻮﮞ ﮐﺎﻥ ﺧﺒﺮ ﻧﮧ ﮨﻮﺋﯽ۔
ﺍﻣﺮﯾﮑﺎ ﻧﮯ ﺟﮩﺎﮞ ﭘﺎﮐﺴﺘﺎﻧﯽ ﺳﻔﯿﺮﺍﻭﺭ ﺳﻮﻝ ﺣﮑﻮﻣﺖ ﮐﻮ ﮨﺎﺗﮫ ﻣﯿﮟ ﻟﮯ ﺭﮐﮭﺎ ﺗﮭﺎ ﻭﮨﺎﮞ ﺍﺱ ﻧﮯ ﻣﻠﮏ ﻣﯿﮟ ﺟﺎﺳﻮﺳﻮﮞ ﮐﺎ ﺟﺎﻝ ﺑﮭﯽ ﺑﭽﮭﺎ ﺩﯾﺎ ‘ ﯾﮧ ﺟﺎﺳﻮﺱ ﺍﺳﻼﻡ ﺁﺑﺎﺩ ﻣﯿﮟ ﭘﻮﻟﯿﺲ ‘ ﺭﯾﭩﺎﺋﺮ ﻓﻮﺟﯽ ﺍﻓﺴﺮﻭﮞ ﺍﻭﺭ ﺍﻋﻠﯽٰ ﺳﺎﺑﻖ ﺑﯿﻮﺭﻭ ﮐﺮﯾﭩﺲ ﮐﮯ ﮔﮭﺮﻭﮞ ﻣﯿﮟ کرایہ دار بن کر بیٹھے تھے اور منہ مانگا کرایہ ادا کر رہے تھے ۔ ﯾﮧ ﺍﭘﻨﮯ ﻣﺎﻟﮏ ﻣﮑﺎﻥ ﺳﮯ ﻣﻌﻠﻮﻣﺎﺕ ﺑﮭﯽ ﻟﯿﺘﮯ ﺗﮭﮯ ﺍﻭﺭ ﭘﻨﺎﮦ ﺑﮭﯽ۔ ﺍﻣﺮﯾﮑﯽ ﺟﺎﺳﻮﺳﻮﮞ ﻧﮯ ﺍﻥ ﮔﮭﺮﻭﮞ ﻣﯿﮟ ﺑﻢ ﭘﺮﻭﻑ ﮐﻤﺮﮮ ﺑﻨﺎ ﺭﮐﮭﮯ ﺗﮭﮯ ‘ ﯾﮧ ﻓﻀﺎﺋﯽ ﺁﻻﺕ ﺑﮭﯽ ﺳﺎﺗﮫ ﻟﮯ ﮐﺮ ﺁﺋﮯ ﺗﮭﮯ ﺍﻭﺭ ﯾﮧ ﻟﻮﮒ ﺟﻼﻝ ﺁﺑﺎﺩ ﺳﮯ ﺍﯾﺒﭧ ﺁﺑﺎﺩ ﺗﮏ ﺯﻣﯿﻨﯽ ﺭﻭﭦ ﺑﮭﯽ ﺑﻨﺎ ﭼﮑﮯ ﺗﮭﮯ۔ ﭼﻨﺎﻧﭽﮧ ﯾﮧ ﺩﻭﻣﺌﯽ ﮐﻮ ﻣﮑﮭﻦ ﮐﮯ ﺑﺎﻝ ﮐﯽ ﻃﺮﺡ ﺁﺋﮯ ﺍﻭﺭ ﻣﮑﮭﻦ ﮐﮯ ﺑﺎﻝ ﮐﯽ ﻃﺮﺡ ﻧﮑﻞ ﮔﺌﮯ ﺍﻭﺭ ﮨﻤﯿﮟ ﮐﺎﻧﻮﮞ ﮐﺎﻥ ﺧﺒﺮ ﻧﮧ ﮨﻮﺋﯽ۔

ﻣﯿﮟ ﺳﻤﺠﮭﺘﺎ ﮨﻮﮞ ﺣﺴﯿﻦ ﺣﻘﺎﻧﯽ ﮐﮯ ﺍﻋﺘﺮﺍﻑ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ﺧﺎﻣﻮﺷﯽ ﮐﯽ ﮐﻮﺋﯽ ﮔﻨﺠﺎﺋﺶ ﻧﮩﯿﮟ ﺑﭽﯽ:
ﺳﭙﺮﯾﻢ ﮐﻮﺭﭦ ﺁﻑ ﭘﺎﮐﺴﺘﺎﻥ ﮐﻮ ﻓﻮﺭﯼ ﻧﻮﭨﺲ ﻟﯿﻨﺎ ﭼﺎﮨﯿﮯ۔
ﻣﯿﻤﻮ ﺳﮑﯿﻨﮉﻝ ﮐﯽ ﺭﭘﻮﺭﭦ ﻧﮑﺎﻟﻨﯽ ﭼﺎﮨﯿﮯ ‘ ﺻﺪﺭ ﺁﺻﻒ ﻋﻠﯽ ﺯﺭﺩﺍﺭﯼ ‘ ﯾﻮﺳﻒ ﺭﺿﺎ ﮔﯿﻼﻧﯽ ‘ ﻣﯿﺎﮞ ﻧﻮﺍﺯ ﺷﺮﯾﻒ ‘ ﺟﻨﺮﻝ ﮐﯿﺎﻧﯽ ﺍﻭﺭ ﺟﻨﺮﻝ ﭘﺎﺷﺎ ﮐﻮ ﻃﻠﺐ ﮐﺮﻧﺎ ﭼﺎﮨﯿﮯ۔
ﺣﺴﯿﻦ ﺣﻘﺎﻧﯽ ﮐﮯ ﺧﻼﻑ ﺭﯾﮉ ﻭﺍﺭﻧﭧ ﺟﺎﺭﯼ ﮐﺮﻧﮯ ﭼﺎﮨﺌﯿﮟ۔
ﮐﯿﺲ ﮐﯽ ﻧﺌﮯ ﺳﺮﮮ ﺳﮯ ﺗﺤﻘﯿﻘﺎﺕ ﮨﻮﻧﯽ ﭼﺎﮨﺌﯿﮟ ﺍﻭﺭ
ﺫﻣﮧ ﺩﺍﺭﻭﮞ ﮐﻮ ﮐﮍﯼ ﺳﺰﺍ ﺩﯾﻨﯽ ﭼﺎﮨﯿﮯ۔
ﺣﺴﯿﻦ ﺣﻘﺎﻧﯽ ﮐﮯ ﺧﻼﻑ ﭘﺎﺭﻟﯿﻤﺎﻧﯽ ﮐﻤﯿﺸﻦ ﺑﮭﯽ ﺑﻨﻨﺎ ﭼﺎﮨﯿﮯ ‘ ﯾﮧ ﮐﻤﯿﺸﻦ ﺣﺴﯿﻦ ﺣﻘﺎﻧﯽ ﮐﻮ ﻏﺪﺍﺭ ﻗﺮﺍﺭ ﺩﮮ۔

ﺩﻭﺳﺮﺍ ‘ ﻭﻗﺖ ﺁ ﭼﮑﺎ ﮨﮯ ﮨﻢ ﺳﻔﺎﺭﺕ ﺟﯿﺴﮯ ﺍﮨﻢ ﻋﮩﺪﻭﮞ ﮐﮯﻟﺌﮯ ﮐﺮﺍﺋﯽ ﭨﯿﺮﯾﺎ ﺑﻨﺎﺋﯿﮟ ﺍﻭﺭ ﺍﺱ ﮐﺮﺍﺋﯽ ﭨﯿﺮﯾﺎ ﭘﺮﻣﮑﻤﻞ ﻋﻤﻞ ﮐﯿﺎ ﺟﺎﺋﮯ ‘ ﭘﺎﮐﺴﺘﺎﻥ ﭘﯿﭙﻠﺰ ﭘﺎﺭﭨﯽ ﮐﮯ ﺩﻭﺭ ﻣﯿﮟ ﺑﺮﻃﺎﻧﯿﮧ ﺍﻭﺭ ﺍﻣﺮﯾﮑﺎ ﺩﻭﻧﻮﮞ ﺍﮨﻢ ﻣﻠﮑﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺍﯾﺴﮯ ﻟﻮﮔﻮﮞ ﮐﻮ ﺳﻔﯿﺮ ﺑﻨﺎﯾﺎﮔﯿﺎ ﺗﮭﺎﺟﻦ ﮐﺎﭘﺎﮐﺴﺘﺎﻥ ﻣﯿﮟ ﮐﻮﺋﯽ ﺳﭩﯿﮏ ﻧﮩﯿﮟ ﺗﮭ۔
ﻭﺍﺟﺪ ﺷﻤﺲ ﺍﻟﺤﺴﻦ ﻣﺪﺗﻮﮞ ﭘﮩﻠﮯ ﺑﺮﻃﺎﻧﯿﮧ ﺷﻔﭧ ﮨﻮ ﭼﮑﮯ ﺗﮭﮯ ‘ ﯾﮧ ﺟﻮﻥ 2008 ﺀﻣﯿﮟ ﻭﮨﯿﮟ ﺳﮯ ﺳﻔﯿﺮ ﺑﻨﺎ ﺩﯾﺌﮯ ﮔﺌﮯ ‘ ﯾﮧ ﺩﻭﺭﺍﻥ ﺳﻔﺎﺭﺕ ﮐﺒﮭﯽ ﭘﺎﮐﺴﺘﺎﻥ ﺗﺸﺮﯾﻒ ﻧﮩﯿﮟ ﻻﺋﮯ ‘ ﯾﮧ ﭘﺎﮐﺴﺘﺎﻥ ﭘﯿﭙﻠﺰ ﭘﺎﺭﭨﯽ ﮐﯽ ﺣﮑﻮﻣﺖ ﺧﺘﻢ ﮨﻮﻧﮯ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ﺑﮭﯽ ﺩﻭﻣﺎﮦ ﺍﻭﺭ ﭼﻮﺩﮦ ﺩﻥ ﺳﻔﯿﺮ ﺭﮨﮯ ‘ ﺷﻨﯿﺪ ﮨﮯ ﺁﺻﻒ ﻋﻠﯽ ﺯﺭﺩﺍﺭﯼ ﻧﮯ ﻣﯿﺎﮞ ﻧﻮﺍﺯ ﺷﺮﯾﻒ ﺳﮯ ﺩﺭﺧﻮﺍﺳﺖ ﮐﯽ ﺗﮭﯽ ﺍﻭﺭ ﻣﯿﺎﮞ ﺻﺎﺣﺐ ﻧﮯ ﺍﭘﻨﮯ ﺳﺎﺑﻖ ﺍﺗﺤﺎﺩﯼ ﮐﯽ ﺩﺭﺧﻮﺍﺳﺖ ﭘﺮ ﻭﺍﺟﺪ ﺷﻤﺲ ﺍﻟﺤﺴﻦ ﮐﻮ ﻣﺰﯾﺪ ﺩﻭ ﻣﺎﮦ ﺩﮮ ﺩﯾﺌﮯ ﺗﮭﮯ ‘ ﻭﺍﺟﺪ ﺻﺎﺣﺐ ﺍﺳﺘﻌﻔﮯ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ﺑﮭﯽ ﭘﺎﮐﺴﺘﺎﻥ ﺗﺸﺮﯾﻒ ﻧﮩﯿﮟ ﻻﺋﮯ۔
ﺣﺴﯿﻦ ﺣﻘﺎﻧﯽ ﻧﮯ ﺟﻨﺮﻝ ﭘﺮﻭﯾﺰ ﻣﺸﺮﻑ ﮐﮯ ﺩﻭﺭ ﻣﯿﮟ ﻣﺸﯿﺮ ﺍﻃﻼﻋﺎﺕ ﺑﻨﻨﮯ ﮐﯽ ﮐﻮﺷﺶ ﮐﯽ ‘ ﯾﮧ ﻧﺎﮐﺎﻡ ﮨﻮ ﺋﮯ ﺍﻭﺭ ﯾﮧ ﺍﻣﺮﯾﮑﺎ ” ﺟﻼﻭﻃﻦ “ ﮨﻮ ﮔﺌﮯ ‘ ﯾﮧ 2008 ﺀﻣﯿﮟ ﺍﻣﺮﯾﮑﯽ ﺍﺛﺮﻭﺭﺳﻮﺥ ﮐﯽ ﻭﺟﮧ ﺳﮯ ﺳﻔﯿﺮ ﺑﻦ ﮔﺌﮯ ‘ ﺳﻔﺎﺭﺕ ﺍﻧﺠﻮﺍﺋﮯ ﮐﯽ ‘ ﺍﻣﺮﯾﮑﯿﻮﮞ ﮐﻮ ” ﻧﻮﺍﺯﮦ “ ﺍﯼ ﺳﯽ ﺍﯾﻞ ﺗﮍﻭﺍﺋﯽ “ ﺍﻣﺮﯾﮑﺎ ﮔﺌﮯ ﺍﻭﺭﯾﮧ ﺍﺏ ﮈﻭﻧﻠﮉ ﭨﺮﻣﭗ ﮐﯽ ﻧﻈﺮﻭﮞ ﻣﯿﮟ ﺁﻧﮯ ﮐﮯﻟﺌﮯ ﭘﺎﮐﺴﺘﺎﻥ ﻣﺨﺎﻟﻒ ﻣﻀﺎﻣﯿﻦ ﻟﮑﮫ ﺭﮨﮯ ﮨﯿﮟ ۔

ﭼﻨﺎﻧﭽﮧ ﺣﺴﯿﻦ ﺣﻘﺎﻧﯽ ﮨﻮﮞ ﯾﺎ ﻭﺍﺟﺪ ﺷﻤﺲ ﺍﻟﺤﺴﻦ ﯾﮧ ﻏﯿﺮﻣﻠﮑﯽ ﺗﮭﮯ ‘ ﯾﮧ ﻏﯿﺮﻣﻠﮑﯽ ﮨﯿﮟ ﺍﻭﺭ ﯾﮧ ﻏﯿﺮﻣﻠﮑﯽ ﺭﮨﯿﮟ ﮔﮯ ‘ ﭘﺎﮐﺴﺘﺎﻥ ﺍﻥ ﮐﺎ ﻣﻠﮏ ﺗﮭﺎ ﺍﻭﺭ ﻧﮧ ﮨﯽ ﮨﻮ ﮔﺎ ‘ ﭘﺎﮐﺴﺘﺎﻥ ﻣﯿﮟ ﺍﻥ ﮐﯽ ﺍﯾﮏ ﭼﭙﮧ ﺯﻣﯿﻦ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﻧﮧ ﮨﯽ ﺍﮐﺎﺅﻧﭧ ﻟﮩٰﺬﺍ ﮨﻢ ﺍﮔﺮ ﻣﻠﮏ ﮐﻮ ﻏﺪﺍﺭﻭﮞ ﺳﮯ ﺑﭽﺎﻧﺎﭼﺎﮨﺘﮯ ﮨﯿﮟ ﺗﻮﭘﮭﺮ ﮨﻤﯿﮟ ﺣﺴﯿﻦ ﺣﻘﺎﻧﯽ ﺟﯿﺴﮯ ﻟﻮﮔﻮﮞ ﮐﮯ ﺧﻼﻑ ﻗﺎﻧﻮﻥ ﺳﺎﺯﯼ ﮐﺮﻧﺎ ﮨﻮ ﮔﯽ ‘ ﯾﮧ ﻟﻮﮒ ﮐﺴﯽ ﻗﯿﻤﺖ ﭘﺮ ﺍﻋﻠﯽٰ ﻋﮩﺪﻭﮞ ﺗﮏ ﻧﮩﯿﮟ ﭘﮩﻨﭽﮯ ﭼﺎﮨﺌﯿﮟ ‘ ﮨﻢ ﻧﮯ ﺍﮔﺮ ﺁﺝ ﻗﺎﻧﻮﻥ ﻧﮧ ﺑﻨﺎﯾﺎ ‘ ﮨﻢ ﻧﮯ ﺍﮔﺮ ﺁﺝ ﺍﯾﺴﮯ ﻟﻮﮔﻮﮞ ﮐﺎ ﺭﺍﺳﺘﮧ ﻧﮧ ﺭﻭﮐﺎ ﺗﻮ ﯾﮧ ﻟﻮﮒ ﮐﺴﯽ ﺑﮭﯽ ﻭﻗﺖ ﮨﻤﺎﺭﺍ ﺍﯾﭩﻤﯽ ﭘﺮﻭﮔﺮﺍﻡ ﺍﻣﺮﯾﮑﺎ ﮐﮯ ﺣﻮﺍﻟﮯ ﮐﺮ ﺩﯾﮟ ﮔﮯ ۔
ﮨﯿﻠﯽ ﮐﺎﭘﭩﺮ ﺁﺋﯿﮟ ﮔﮯ ﺍﻭﺭ ﮨﻤﺎﺭﺍ ﻧﯿﻮ ﮐﻠﯿﺌﺮ ﭘﺮﻭﮔﺮﺍﻡ ﺗﺒﺎﮦ ﮐﺮ ﮐﮯ ﻭﺍﭘﺲ ﭼﻠﮯ ﺟﺎﺋﯿﮟ ﮔﮯ ‘ ﮨﻢ ﺍﮔﺮ ﺍﯾﺴﮯ ﺳﺎﻧﺤﻮﮞ ﺳﮯ ﺑﭽﻨﺎ ﭼﺎﮨﺘﮯ ﮨﯿﮟ ﺗﻮ ﭘﮭﺮ ﮨﻤﯿﮟ ﻣﯿﻤﻮ ﺳﮑﯿﻨﮉﻝ ﺩﻭﺑﺎﺭﮦ ﮐﮭﻮﻟﻨﺎ ﮨﻮﮔﺎ ‘ ﮨﻤﯿﮟ ﺫﻣﮧ ﺩﺍﺭﻭﮞ ﮐﻮ ﺳﺰﺍ ﺩﯾﻨﯽ ﮨﻮ ﮔﯽ ‘ ﯾﮧ ﻣﻌﺎﻣﻠﮧ ﺍﺏ ﻧﺎﺅ ﺍﻭﺭ ﻧﯿﻮﺭ ﮐﮯ ﻓﯿﺰ ﻣﯿﮟ ﺩﺍﺧﻞ ﮨﻮ ﭼﮑﺎ ﮨﮯ ‘ ﮨﻢ ﻧﮯ ﺍﮔﺮ ﺍﺏ ﺑﮭﯽ ﺩﯾﺮ ﮐﺮ ﺩﯼ ﺗﻮ ﮨﻢ ﻭﻗﺖ ﮐﮯ ﺑﯿﻠﻨﮯ ﻣﯿﮟ ﭘﺲ ﺟﺎﺋﯿﮟ ﮔﮯ۔

٭٭٭٭٭٭٭٭٭
نوٹ: جذباتیت کے طوفان کے زیر اثر لکھی گئی یہ تحریر دل و دماغ کا غبار نکالنے کے لئے اچھی ہے ، شائد چند دنوں اِس کا غلغلہ رہے اور پھر یہ کسی مزید نئے مضمون کے لئے سٹرکچر تیار کرے ، حکومت ، عدلیہ اور مقننہ میں ۔ عہدے اور وہ بھی گریڈ 20 سے اوپر کے لئے جان مارنا پڑتی ہے ، جب اچھی سالانہ رپورٹس ملتی ہیں ، تاکہ مزید ترقی کر کے اپنا اور اپنے بچوں کا شاندار مستقبل بنایا جائے ، یہ مستقبل کسی جز وقتی یا کُل وقتی صحافی کے بے ہنگم سوچ پر قربان نہیں کیا جاسکتا ،  اور نہ ہی کسی اسلامو فاشسٹ انسان کے ہاتھوں کھلونا بنایا جاسکتا ہے ۔
مضمون لکھنے والے صحافی جو بھی ہو اُس کو الیکٹرونک انقلاب کے بارے میں " کَکھ " بھی معلومات نہیں ۔ اُنہیں تو یہ بھی معلوم نہیں کہ اُن کا بند موبائل اُن کی موبائل کے نزدیک ہونے والی گفتگو کا ایک ایک لفظ ، موبائل کمپنی کے خالق کے ذریعے اُس اداروں تک پہنچا رہا ہے ، جنہیں دلچسپی ہے ۔
کئی پاکستانی ، جانباز ہیں جنہوں نے آئینِ پاکستان سے وفادار رہنے کا حلف اٹھایا ، اب جو امریکہ کی گود میں چوسنی چوس رہے ہیں اور پیارے ملک کی پیاری باتیں ، چوسنی چسانے والے تک پہنچاتے ہیں ، کئی اِس کا صلہ پا چکے ہیں اور امریکہ میں میں اپنی زندگی کے آخری دن پرسکون انداز میں گذار رہے ہیں ، اُن گے گونگلوؤں پر کافی مٹی پڑ چکی ہے ، جسے پھونک تو دور، ٹھوکر مار کر بھی ہٹایا نہیں جاسکتا ۔
پاکستان کی بقاء کے نعرے بس اب یہی رہ گئے ہیں کہ پُرامن پاکستان ، ہماری اولادوں اور اُن کی اولادوں کے لئے ۔

اگر ہماری آئی ایس آئی ، کاغذات میں دنیا کی پہلے نمبر پر انٹیلیجنس ایجنسی کہلا سکتی ہے تو باقی انٹیلیجنس ایجنسیاں ، چوڑیاں اور گھاگھرے پہن کر نہیں بیٹھی ہیں۔
محبِ وطن بھی ملکی ادارے بناتے ہیں اور غدار بھی !
دنیا کے ہر ملک میں محبِ وطن بھی ہیں اور غدار بھی ۔ آپ نے کیا بننا ہے ؟
یہ ملک کے اداروں کا آپ سے برتاؤ پر منحصر ہے ۔
بہر حال معلومات کے لئے مزید پڑھئے !

آپریشن نیپچون - سی آئی اے کا مشن

سوموار، 27 مارچ، 2017

فوجی عدالتوں کی توسیع اور 28 ویں ترمیم !

فیس بُک پر ایک دوست نے فرینڈ ریکوئسٹ بھیجی اور اِن بکس میں ، پیغام بھیجا کہ میری وال پر مضمون پڑھیں ۔ دل ایک دم ٹھٹکا ، کہ یہ حملہ آور کون ہے ، لیکن یہ صرف پیغام تھا ، اِس کے ساتھ کوئی ، خطرناک لنک نہیں تھا ، وال کھولی ،یقیناً ہمارے نوجوانوں کی ملکی حالات کے بارے میں جو تشویش اور پریشانی ہے وہ ، اِس پوسٹ سے ظاہر ہو رہی ہے ، نو جوان بھی ملکی حالات ٹھیک کرنے کے لئے پاکستان کے سرجیکل سپیشلسٹ کی طرف نظریں اٹھائے ہوئے ہے ، درج ذیل اصلی مضمون ہے ، آخر میں درج ہے پڑھئیے

28ویں آئینی ترمیم, پاک فوج اور ایک نیا NRO...!!!

اور میرے خیالات سے بھی اگر چاھئیں مستفید ہوں یا نہ ہوں ، یہ آپ کی مرضی ہے ۔
٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭
//جو فوجی عدالتیں، "مذہبی دہشتگردوں" کو منطقی انجام تک پہنچا سکتی ہیں تو آخر "معاشی، معاشرتی، سیاسی اور لسانی دہشتگردوں" کو کیوں نہیں۔۔۔؟؟؟//

فوج کا کام ، آئین کی حدود میں رہ کر اپنی آئینی ذمہ داریاں پوری کرنا ہے ۔ جو عوام کے بنائے ہوئے 1973 کے آئین اور بعد میں کی گئی ترمیمات میں موجود ہیں !

آئین میں ترمیمات ، عوام ہی کرتے ہیں ۔ یہ سب " باشعور " ووٹر جانتے ہیں ، یہی وجہ ہے کہ وہ اپنے میں سے کسی ایک ،" مسلمان "کو منتخب کر کے صوبائی اور قومی اسمبلیوں میں بھیجتے ہیں ۔
ہو سکتا ہے کہ میرا پسندیدہ شخص جو سب سے زیادہ ووٹ لے کر اسمبلی میں پہنچا ہو : میری ہی طرح کا انسان ہو ۔ جو :
1- اپنی جوانی میں وہی کام کرتا ہو جو نوجوان کرتے ہیں ،
2- ملازمت یا عہدہ ملنے کے بعد عوام کے وہی کام کرتا ہو جو عوام چاھتے ہوں ۔
3- اپنے محلے اور شہر میں ویسے ہی رہتا ہو جیسے ، وہاں کے لوگ رہتے ہوں ۔

یقیناً اُس کے دوست بھی ہونگے اور مخالف بھی ۔ لیکن جب وہ اپنے علاقے کے ووٹ لے کر خواہ 33 فیصد ہی کیوں نہ ہوں اسمبلی میں آجاتا ہے ، تو اُسے اپنے ووٹروں کے لئے بنائے جانے والے قانون کا ساتھ دینا چاھئیے ، چاہے اُس کے ووٹر :
1- زانی ہوں اور بے نکاح بچے پیدا کرنے والے ہوں !
2۔ چور اور ڈکیت ہوں ۔
3- رشوت خور ہوں یا بھتہ خور ۔
5- گھر بیٹھ کر عورتوں کی کمائی کھاتے ہوں ۔
6- لوگوں کو حج اور عمرہ کے نام پر لوٹتے ہوں !
7- قانون اُن کے گھر کی باندی ہے جس کی صرف ناک نہیں پورا جسم موم کا بنا ہوا ہے ۔ جیسے مرضی نئی بنا لو ۔
8۔ پولیس آپ سے قانون کا احترام نہ کروانا اپنا فرض سمجھتی ہو ۔
9-تمام سرکاری ملازم ، گریڈ 17 سے لیکر 22 تک ان 33 فیصد ووٹروں  کو آفس میں بٹھا کر باقی 77 فیصد عوام کے پیسوں سے چائے اور کھانا کھلاتے ہوں ۔
10- حلفیہ بیان پر جھوٹی شہادت دینے والے ہوں !

تو اے نوجوان دوست معظم ڈار : پھر گلہ کس بات کا ، آپ یقیناً ، 77 فیصد اُن لوگوں میں سے ہوں گے ، جن کے امید وار کے کل ووٹ 33 فیصد سے کم ہوں گے ، اِس کا مطلب ہے کہ آپ جس شہر میں رہ رہے ہیں وہاں کے لوگ مندرجہ بالا خصوصیات سیاست سے تعلق رکھتے ہوں ، جسے آپ ظلم گردانتے ہیں ، تو ایسا کریں آپ ہجرت کر جائیں کیوں کہ آپ میں اہلیت نہیں کہ 77 فیصد آئین کے آرٹیکل 62 اور 63 پر پورا اترنے والوں کو ایک جگہ اکٹھا کر سکیں ، یہی وجہ ہے کہ متحد اقلیت ، منتشر اجتماعیت کی نکیل تھامے ہوئی ہے ۔
سوشل میڈیا پر کسی کی صرف افواہوں اور جھوٹے بیانوں پر پگڑیاں اٹھا ، گلوبل ولیج کے تھڑے کی خصوصیت ہے ۔ کسی باوقار ملک کے شہری کی نہیں ۔
یاد رہے ۔ ملکی آئین کے خلاف کام کرنے والوں کے خلاف اشتغاثہ ، ملک دائر کرتا ہے ، لیکن مقدمہ
گواہوں اور گواہیوں کی بنیاد پر آگے قدم بڑھاتا - مقدمے کا مقصد ، انسان کو قبر میں پہنچانا نہیں ، بلکہ اُسے اُس کی غلطی کا احساس دلانا ہوتا ہے اور حدود کے مطابق جرائم کی سزا دے کر پاک کرنا اور لوگوں کو عبرت دلانا ہوتا ہے ،
کیوں کہ اُس کا کیا گیا فتنہ ، قتل سے زیادہ شدید تھا ۔
 
٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭

"بادی النظر میں تو" 28ویں آئینی ترمیم کا "مقصد" فوجی عدالتوں کو "توسیع دینا" ہے مگر درحقیقت، یہ "پانامہ کے چوروں اور سرے محل کے موروں" کی ملی بھگت سے، افواج پاکستان کے "کردار کو متنازعہ بنانے" کیلئے تیار کی گئ "ایک سازش" ہے جس کا "سکرپٹ"، کہیں اور نہیں، بلکہ ہمارے "وزیراعظم ہاوس" میں ہی لکھا گیا ہے؛ بھلے، کیا DAWN Leaks کے بعد "مریم میڈیا سیل" فارغ بیٹھے گا کیا۔۔۔
تصویر کا پہلا رخ؛ فوجی عدالتیں بنانے کا "ایک مقصد" تو، ایک "کمزور عدالتی نظام" کی موجودگی میں، "دہشتگردی" جیسے سنگین جرائم میں فریقوں کو "فوری اور بلا تعطل انصاف" کی فراہمی کو یقینی بنانا ہوتا ہے۔ مگر کوئی ان "چوروں اور کمیشن خوروں" سے یہ بھی پوچھے کہ آخر عدالتی نظام کی "کمزوریوں کو دور" کرنے میں کیا "مصلحت حائل" ہے۔ سچ تو یہ ہے کہ "ایک مجرم" کو ہمیشہ اپنے "پکڑے جانے کا خوف" رہتا ہے؛ یہی خوف تو شریفوں اور زرداریوں کو "روکتا ہے" قانون کے "ہاتھ مضبوط کرنے" سے۔۔۔
مگر تصویر کا دوسرا رخ؛ فوجی عدالتوں کے "پیروں" میں "قانون شہادت، پارلیمانی مانیٹرنگ کمیٹی اور دہشتگردی میں امتیاز" جیسی بیڑیاں ڈالنا، دراصل فوج کے "کردار کو عیب دار اور کارکردگی کو داغدار" کرنا ہے۔ بلاشک وشبہ، 28ویں آئینی ترمیم ہماری بدمعاشیہ کے "خفیہ گٹھ جوڑ اور پس پردہ مذموم مقاصد" کو بالکل "ننگا" کر کے رکھ دیتی ہے۔ فوجی عدالتوں کی "کارکردگی" پر رانا ثناءاللہ کے "زریں خیالات" کو بھلے کون بھول سکتا ہے اور اس "فوج دشمن" کے "پانامہ شریف سے تعلق" سے بھلے کون انکار کر سکتا ہے۔۔۔
موضوع کو سمیٹتے ہوئے، میں اپنے قارئین کی خدمت میں چند اہم سوالات پیش کرتا ہوں:-
جو فوجی عدالتیں، "مذہبی دہشتگردوں" کو منطقی انجام تک پہنچا سکتی ہیں تو آخر "معاشی، معاشرتی، سیاسی اور لسانی دہشتگردوں" کو کیوں نہیں۔۔۔؟؟؟
جو پارلیمنٹ، عدالتی نظام کی "کمزوریوں کو دور کرنے سے قاصر" ہو وہ بھلے فوجی عدالتوں کی نگرانی کرنے کا کیا "اخلاقی اور قانونی جواز" رکھتی ہے۔۔۔؟؟؟
21ویں صدی میں تکنیکی شواہد سے استفادے کی بجائے، فوجی عدالتوں کو قانون شہادت سے مشروط کرنے کا مقصد؛ دہشتگردوں کو سہولت اور تحفظ دینا تو نہیں۔۔۔؟؟؟
حسین حقانی کی سیاسی منظرنامہ میں "ڈرامائی انٹری" کا مقصد، کہیں میثاق جمہوریت اور NRO زدہ بدمعاشیہ کیلئے ایک "نئے NRO" کی راہ ہموار کرنا تو نہیں۔۔۔؟؟؟
کیا واقعی؛ پاک فوج کی "اعلی قیادت" اپنے خلاف، اپنے اندرونی دشمنوں کی جانب سے "کسے جانے والے شکنجے" سے "بے خبر ہے" یا پھر کسی "خوش گمانی" کا شکار ہے۔۔۔؟؟؟
سوالات کے خوابوں کے انتظار اور پاکستان کیلئے نیک تمناؤں کے ساتھ:-
خدا کرے میری ارض پاک پر اترے۔۔۔
وہ فصل گل جسے اندیشہ زوال نہ ھو۔۔۔!!!
نگارشات ڈار

اے انصاف زندہ باد

⁠⁠⁠⁠⁠تمام ثبوتوں اور گواہوں کے باوجود ملزمان باعزت بری۔۔۔۔۔ 




تو جناب والا خدارا پاکستان میں لفظ انصاف پر پابندی لگا دیں
مورخہ March 23, 2017

لاہور (شیر سلطان ملک) صف اول کے صحافی اور کالم نگار جاوید چوہدری اپنی تازہ ترین تحریر میں لکھتے ہیں ۔۔۔۔


آپ اور میں تھوڑی دیر کے لیے ماضی میں چلتے ہیں‘ 2009ء کا سن تھا‘ حج کا زمانہ تھا‘ پاکستان سے ایک لاکھ 59ہزارافراد حج کی ادائیگی کے لیے سعودی عرب پہنچے‘ حجاج کو مکہ مکرمہ کے مختلف علاقوں کی مختلف عمارتوں میں رکھا گیا‘
پینتیس ہزار حاجیوں کو حرم سے ساڑھے تین سے پانچ کلو میٹر دور 87زیر تعمیر عمارتوں میں ٹھونس دیا گیا‘ یہ عمارتیں خراب بھی تھیں‘ ناقابل رہائش بھی تھیں اوربنیادی سہولتوں سے بھی محروم تھیں‘ حاجیوں کو دقت کا سامنا کرنا پڑا,
 2009ء کے حج میں بے شمار دوسری بدنظمیاں بھی سامنے آئیں‘ حاجیوں نے شکایات شروع کیں‘ خبریں بنیں اور شائع اور نشر ہوئیں‘ملک میں کہرام برپا ہوگیا‘ ملک میں یوسف رضا گیلانی کی حکومت تھی ‘ اعظم خان سواتی اور حامد سعید کاظمی وفاقی وزراء تھے‘ حامد سعید کاظمی کے پاس مذہبی اموراور اعظم سواتی کے پاس سائنس اینڈ ٹیکنالوجی کا قلم دان تھا۔

اعظم سواتی جمعیت علماء اسلام (ف) کے ’’کوٹے‘‘ پر سینیٹر اور وزیر بنے تھے جب کہ حامد سعید کاظمی کا تعلق پیپلز پارٹی سے تھا۔

سواتی صاحب نے2010ء میں حامد سعید کاظمی پر حج میں بدعنوانی کا الزام لگا دیا‘ ان کا دعویٰ تھا حامد سعید کاظمی نے ڈائریکٹر جنرل حج راؤ شکیل کے ساتھ مل کر حج میں کرپشن کی‘ اعظم سواتی نے یہ الزام میرے پروگرام ’’کل تک‘‘ میں لگایا تھا‘ یہ کرپشن کے دستاویزی ثبوت بھی ساتھ لائے تھے‘ پروگرام میں حامد سعید کاظمی بھی موجود تھے‘ انھوں نے حلف اٹھایا اور الزام کو جھوٹا قرار دے دیا‘ یہ الزامات‘ خبریں اور حاجیوں کی شکایتیں چیف جسٹس آف پاکستان افتخار محمد چوہدری تک پہنچیں۔
چیف جسٹس نے سوموٹو نوٹس لیا اور حامد سعید کاظمی کے خلاف انکوائری شروع کرا دی‘ سعودی عرب کے شہزادے بندر بن خالد بن عبدالعزیز نے بھی چیف جسٹس کو خط لکھ دیا‘ شہزادے کا کہنا تھا
’’پاکستانی حکام حج میں کرپشن کے مرتکب ہوئے‘ میرے پاس ان کی بدعنوانی کے ناقابل تردید ثبوت موجود ہیں‘‘ شہزادے نے لکھا
’’پاکستانی حکام کو حرم سے دو کلومیٹر کے فاصلے پر 3350 ریال میں رہائش گاہیں مل رہی تھیں لیکن انھوں نے یہ رہائش گاہیں لینے کے بجائے ساڑھے تین کلومیٹر دور 3600 ریال میں معمولی درجے کی عمارتیں لے لیں‘‘

سپریم کورٹ نے یہ خط بھی تحقیقات میں شامل کرا دیا۔

تحقیقات شروع ہوئیں تو وزیراعظم یوسف رضا گیلانی کے صاحبزادے عبدالقادر گیلانی‘ وزیر مذہبی امور حامد سعید کاظمی‘ جوائنٹ سیکریٹری مذہبی امور راجہ آفتاب الاسلام اور ڈی جی حج راؤ شکیل کے نام سامنے آگئے‘
وزیراعظم نے سپریم کورٹ کے دباؤ میں حامد سعید کاظمی اور پارٹی کے پریشر میں اعظم سواتی کو وزارتوں سے فارغ کر دیا‘ حکومت نے قومی اسمبلی کی قائمہ کمیٹی کے ارکان کو بھی تحقیقات کی اجازت دے دی‘

قائمہ کمیٹی کے ارکان سعودی عرب گئے اورانھوں نے بھی حج کے انتظامات میں بدعنوانی کی تصدیق کر دی‘ حکومت نے ڈی جی حج راؤ شکیل کو سعودی عرب سے واپس بلا لیا؛

21 نومبر کو سعودی عرب نے 25 ہزار حاجیوں کو اڑھائی سو ریال فی کس واپس کرنے کا اعلان کردیا۔

20 دسمبر 2010ء کو وزیر داخلہ رحمن ملک نے قومی اسمبلی میں تسلیم کر لیا
’’حج انتظامات میں 16 لاکھ ریال کی کرپشن ہوئی تھی‘ حکومت بدعنوانی کے ذمے داروں کو سخت سزا دے گی‘‘

ملزمان نے اس دوران ضمانت قبل از گرفتاری کرا لی‘ یہ ضمانت 15 مارچ 2011ء کو ختم ہوگئی۔

حامد سعید کاظمی کمرہ عدالت سے گرفتارہو گئے جب کہ17مارچ 2011ء کو نیب نے ڈی جی حج راؤ شکیل کوبھی گرفتار کر لیا ‘ یہ لوگ اس کے بعد عدالتوں میں پیش ہوتے رہے ‘

عدالت نے 30 مئی 2012ء کوان پر فرد جرم عائد کر دی ‘یہ کیس چلا اور یہ چلتا ہی چلا گیا ‘ تاریخ پر تاریخ اور سماعتوں پر سماعتیں ہوتی رہیں یہاں تک کہ اسپیشل جج سینٹرل ملک نذیر احمد نے 3 جون 2016ء کو حامد سعید کاظمی اور جوائنٹ سیکریٹری آفتاب الاسلام کو سولہ سولہ سال اور ڈائریکٹر جنرل حج کو 40 سال قید کی سزا سنا دی‘ ملزموں کو پندرہ پندرہ کروڑ روپے جرمانہ بھی کیا گیا‘ عدالت کے حکم پر حامد سعید کاظمی اور آفتاب الاسلام کو احاطہ عدالت سے گرفتار کر لیا گیا جب کہ راؤ شکیل پہلے سے ہی نیب کی حراست میں تھے‘ یہ تینوں ملزم جیل بھجوا دیے گئے‘

حامد سعید کاظمی نے فیصلے کے خلاف اسلام آباد ہائی کورٹ اور سپریم کورٹ میں اپیل دائر کر دی‘ یہ اپیل 9 ماہ زیر سماعت رہی یہاں تک کہ 20 مارچ 2017ء کو اسلام آباد ہائی کورٹ نے تینوں ملزموں کو باعزت بری کر دیا‘ عدالت کا کہنا تھا ؛
’’ملزمان کے خلاف کوئی الزام ثابت نہیں ہو سکا‘‘
یوں عدالتی حکم کے بعد تینوں ملزمان باعزت بری ہو گئے۔

ہائی کورٹ کا فیصلہ آ چکا ہے‘ ملزمان اب ملزمان نہیں رہے‘ یہ باعزت بری ہو چکے ہیں‘ ملزمان کی بریت کے بعد ہمیں اب یہ بھی ڈکلیئر کر دینا چاہیے
٭ - 2009ء کے حج کے دوران کسی حاجی کے ساتھ زیادتی نہیں ہوئی تھی‘
٭ - اعظم سواتی اور قائمہ کمیٹی کے تمام الزامات جھوٹے تھے‘
٭ - حاجیوں کی رہائش گاہیں ساڑھے تین کلو میٹر دور نہیں تھیں‘
٭ - ان کا کرایہ 3600 ریال بھی ادا نہیں کیا گیا ‘
٭ - سعودی شہزادے بندر بن خالد بن عبدالعزیز کا خط بھی جھوٹا تھا‘
٭ - سپریم کورٹ نے بھی غلط سوموٹو لیا تھا‘
٭ - ایف آئی اے اور نیب کی انکوائری بھی غلط تھی‘
٭ - وزیر داخلہ رحمن ملک نے 20 دسمبر 2010ء کو قومی اسمبلی میں 16 لاکھ ریال کی کرپشن کا اعتراف بھی نہیں کیا تھا‘
٭ - عدالت میں پیش کردہ ساری دستاویزات بھی جھوٹی تھیں‘
٭ حکومتی وکیلوں نے بھی جھوٹ بولا تھا‘
٭ اسپیشل جج کا فیصلہ بھی جانبدارانہ تھا اور
٭ 35 ہزار حاجیوں کی شکایتیں بھی جھوٹی تھیں اور

ان تمام جھوٹوں کا ایک ہی مقصد تھا حامد سعید کاظمی‘ راؤ شکیل اور راجہ آفتاب الاسلام کو پھنسانا اور وزیراعظم یوسف رضا گیلانی کے صاحبزادے عبدالقادر گیلانی کو بدنام کرنا اور بس‘ ہمیں اب یہ سارا مقدمہ بھی جھوٹا اور بے بنیاد قرار دینا چاہیے۔ (ش س م ۔ ع م)

٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭
کرہ ارض کے واحد خلیفہ سے اللہ کا الکتاب میں خطاب !
يَا دَاوُودُ إِنَّا جَعَلْنَاكَ خَلِيفَةً فِي الْأَرْضِ فَاحْكُم بَيْنَ النَّاسِ بِالْحَقِّ وَلَا تَتَّبِعِ الْهَوَى فَيُضِلَّكَ عَن سَبِيلِ اللَّهِ إِنَّ الَّذِينَ يَضِلُّونَ عَن سَبِيلِ اللَّهِ لَهُمْ عَذَابٌ شَدِيدٌ بِمَا نَسُوا يَوْمَ الْحِسَابِ [38:26]


اے داؤد ! بے شک ہم نے تجھے دنیا کا ایک خلیفہ قرار دیا ہے ۔ پس انسانوں کے درمیان الحق سے حکم (فیصلہ/حکومت) کر اور اٗن کی خواہشات کی اتباع (دورانِ فیصلہ/حکومت) مت کر !
یقینا! وہ تجھے سبیل اللہ سے بھٹکا دیں گے !
بے شک جو سبیل اللہ سے بھٹک جاتے ہیں اُن کے لئے شدید عذاب ہے ۔ وہ اِس لئے کہ وہ یوم الحساب (اپنے حساب ) کو بھول گئے !

 

اتوار، 26 مارچ، 2017

ایسٹ تِمور - پاکستان سے پاکستانی ۔

چم چم ، میں  اور بڑھیا جس دن سے یہاں پہنچے ہیں ، یہاں موجود پاکستانیوں کی محبت اور دعوتوں کا لطف اُٹھا رہے ہیں، جو یہاں ایک فیملی کی طرح رہتے ہیں ، اجنبیوں کے درمیان مانوس زبان کی آواز سننے کو کان کتنا ترستے ہیں ، اِس کا اندازہ دیارِ غیر میں موجود افراد ہی کر سکتے ہیں ۔ 

چم چم کی تاریخ پیدائش 14 مارچ ہے ، لیکن اُس کی دستیابی کی صورت میں ، سالگرہ 10 مارچ سے ہی شروع ہوجاتی ہے، ویسے میں گھر میں جب بھی کیک آتا ، اُسے چم چم اپنی سالگرہ کا کیک سمجھ کر کاٹتی ، نانا نانی ، ماما بابا ، خالی ، پھوپی ، چچاؤں ، دونوں ماموں کے کیک کی تو کوئی بات نہیں لیکن جب اُس نے لڈؤ اور برفی کے کیک پر حق جمانا شروع کیا تو اُسے بتایا کہ ، سالگرہ سال میں صرف ایک ہوتی ہے ۔ لیکن اب بھی ، کوئی پانچ چھ کیک تو اُس کی سالگرہ کے ہوتے ہیں، جو مختلف دنوں میں سالگرہ مِس کرنے والے کاٹتے ہیں اب آخری کیک ، اسلام آباد میں دادا کے گھر کاٹا جائے گا ،
گو کہ 14 مارچ کو یہاں پہنچتے ہی اُس کی ماما نے سالگرہ کا انتظام کیا تھا ، جس میں تین فیلیز شامل تھیں،  پھر اعلان کیا کہ  18 مارچ کو بروز ہفتہ سالگرہ ہوگی اور تمام پاکستانی مدعو ہیں ، اُس کے لئے وٹس ایپ بر دعوت دے ڈالی ، مگر 20 مارچ کو الیکشن کی غیر یقینی صورت حال کی وجہ سے یہ آج 26 مارچ کو ملتوی کرنا پڑی ۔

چم چم کی ماما کا خیال تھا کہ کرسٹو رے ، کے دامن میں بیچ کا علاقہ اِس کے لئے نہایت موزوں ہے ، سب نے کہا کہ ، ریسٹورانٹ سے نہیں بلکہ گھریلو چیزیں بنوائی جائیں گی ۔ 

صبح دس بھے میزبانوں کا قافلہ روانہ ہوا ، یہ دیکھ کر حیرت ہوئی کہ 3 کلومیٹر بیچ کھچا کھچ بھری ہوئی تھی، 

سب سے آخر میں جہاں ہم نے جگہ منتخب کی تھی ، جہاں ابھی تک کافی جگہ خالی تھی ، چٹائیاں اور چادریں بچا کر ، جگہ پر قبضہ کیا ، دوسرا مرحلہ ہیپی برتھ ڈے کے غبارے اور جھنڈیاں ٹانکنے کا تھا ۔ جھنڈیاں ٹانکتے وقت ، غبارے پھلانے کی ذمہ داری تین نوجوانوں کو دی ۔ 

 
چم چم نے سمندر دیکھا تو مچل گئی ، وہ پانی کی طرف دوڑی تو اُس کی ماما نے چلا کر واپس بلایا تو اُس نے کہا ،
" ماما بیچ پر پارٹی کیوں رکھی ؟"

بات تو اُس کی درست تھی ۔ لیکن سب تو کیک کاٹنے کے بعد ہونا تھا ،
آہستہ آہستہ مہمان آنا شروع ہو گئے ، وعدہ تو قریباً 37 افراد اور 20 بچوں کے آنے کا تھا ، جن میں پاکستانی اور یواین کی 5 فیملیز بھی تھیں جن میں سے تین فیملیز آئیں ، جن کی 5 بچیاں چم چم کی ہم عمر تو نہیں لیکن کھیل میں ماہر تھیں ، اُنہیں بھی پانی میں جانے سے روکا ،

11 بجے ، جب آخری پاکستانی فیملی آئی تو کیک کاٹا گیا ،
چم چم اور بچیاں تو کیک کاٹتے ہی پانی کی طرف دوڑیں ،


بوڑھے نے بڑھیا سے گلہ کیا ،
" خواہ مخواہ ، مجھے پینٹ اور قمیض پہنا دی "
" آرام سے بیٹیں اور مہمانوں کو دیکھیں " اب بوڑھا چم چم تو نہیں ، کہ بات منوا کر چھوڑے۔

کھانے کے بعد سب کو بیٹی اور بڑھیا نے اکٹھا کیا اور غبارے پُھلانے کا مقابلہ شروع کروا دیا ،مقامی لوگ دیوار پر آکر بیٹھ گئے ، غیر ملکی دور سے خوش ہو رہے تھے ۔

اُس کے بعد ، " جیوے جیوے پاکستان " سب نے مل کر گایا ،


سوہنی دھرتی اللہ رکھے ، سے لوگوں کے دل میں جذبہءِ پاکستان گرمایا ۔

پاکستان کا قومی ترانہ مل کر پڑھا ۔

پھر بیت بازی کا مقابلہ شروع ہوا ، جب شعر ختم ہوتے ہیں تو پھر صحیح مقابلہ شروع ہوتا ہے ، شعر و شاعری کا یہ مقابلہ ، محمد ارشاد نے بلا مبالغہ اپنی دو نظمیں سنا کر جیت لیا جو اُس نے میٹرک میں کہیں تھیں۔

یوں ایسٹ تِمُور میں بزمِ ادب کی بنیاد پڑھ گئی ۔


 

ہفتہ، 25 مارچ، 2017

چپکے سے بہار آئے

آج ہمارا پروگرام عطارو جزیرے پر جانے کا تھا ۔جس کا دیلی سے فاصلہ 42 کلومیٹر تھا ۔ یہاں سے ایک بڑا جہاز برلن نکرومہ ، جب یہ آیا ہوگا تو اِس کی حالت ، اچھی تھی ، مگر اب یہ بُری حالت میں ہفتہ اور اتوار کو چلتا ہے ۔ بلکہ یوں سمجھو کہ ، صتف ہفتہ اور اتوار کو ٹورسٹ کو لے کر جاتا ہے ۔ 


اور دوسری درمیانے سائز کی بوٹ ڈریگن سٹار عطارو جاتی ہے . ایک دن پہلے بکنگ کرائی ، ڈریگن سٹار کے چار کمپارٹمنٹ ہیں ، وی آئی پی ، ٹورسٹ ، فیملی اور تیموری ورکرز ، کرایہ بالترتیب ، 25، 15، 10 اور 5 ڈالر ہے بوٹ صبح 8 بجے روانہ ہوکر واپس ڈیڑھ بجے سے تین بجے کے درمیان موسم کے مطابق واپس آتی ہے ،
وی آئی پی ، کلاس کا ائرکون خراب تھا ، لہذا ہم نے ٹورسٹ کا ٹکٹ لیا اور صبح پکنک کھانا بنا کر راوبگی کی جگہ اگئے جو شپ یارڈ کے ، شمال مغربی کنارے پر تھی ۔ گیغ بند تھے لہذا ساتھ پارک میں ، سمندر کے ساتھ بنی منڈیر پر انتظار کے لئے بیٹھ گئے سامان کار ہی میں رہا ۔
بڑھیا نے کیتھولک عیسائیوں کی سرزمین پر 40 نمازوں کا قصد کیا تھا چنانچہ اُس نے کعبہ نما سے کعبہ کی سمت نکالی جانماز بچھائی اور بیٹھ گئی ، 

چم چم منڈیر پر بیٹھ کر بوٹ کا انتظار کرنے لگی ، 

مجھے دور ، گرجا نظر آیا تو میں نے فوٹو گرافی کے لئے اپنا نائکن 3100 ڈی ایس ایل آر نکالا، اور فوٹو گرافی شروع کی ،یہاں جتنے بھی گرجے اور مندر ہیں ، انڈونیشیاء نے بنوائے تھے ، 1975 سے پہلے یہاں پرتگالیوں کا راج تھا ، دسمبر میں انڈونیشی فوج کے ایکشن کے بعد ، یہاں کے عیسائی عوام نے مزاحمتی تحریک شروع کر دی ۔ 1999 میں آزادی کے بعد تِموریوں نے جابجا ، جنگ لڑنے والوں کے مجسمے بنائے ، عجائب گھروں میں پوری تحریک کی تصویریں اور دیگر معلومات رکھیں ۔
 یہاں کے درخت بہت قدیم ہیں ، جو بہت خوبصورت دکھائی دیتے ہیں ، درختوں کے پیچھے مجھے ایک مجسمہ نظر آیا وہاں سے گرجے اور مجسمے کی تصویر لی ، پھر مجسمے کے نزدیک گیا ، یہ تمور کی آزادی دو ہیروؤں کا مجسمہ ہے ، جس میں مرتے ہوئے شخص کو دوسرا سہارا دیئے ہوئے ہے ، دونوں مجسمے فن کا اعلیٰ نمونہ ہیں ۔
میں دو تین تصوریں کھنیچ کر واپس جانے کے لئے مڑا تو ایک تِمُوری نوجوان کان میں ہینڈ فری لگا کر سامنے سے آتا ہوا نظر آیا ، اُس نے میری طرف دیکھا ، اور زور سے کہا ،
" السلام و علیکم "
مجھے ایسا لگا کہ ویرانے میں چپکے سے بہار آگئی ہے ۔
" وعلیکم السلام ، ور حمۃ اللہ و برکاتۃ " کہا ، وہ چلتے چلتے رک گیا ، میں نے آگے بڑھ کرگرم جوشی ہاتھ ملایا-
" پاکستان ؟ " اُس نے پوچھا ،
" الحمد للہ " میں نے جواب دیا ۔
 
،  نوجوان کا تعلق یہاں کی مسلم آبادی سے تھا میں نے پوچھا ،

" تمھیں کیسے اندازہ ہوا کہ میں مسلمان ہوں ، ہندو بھی ہوسکتا ہوں" 

" پچھلے جمعہ کو میں نے آپ کو مسجدِ نور میں دیکھا تھا " اُس نے جواب دیا ،" لیکن یہ نہیں معلوم تھا کہ آپ انڈین ہو یا پاکستانی "
اُس نوجوان سے کافی باتیں کرنے کا دل چاہا رہا تھا کہ چم چم کی آواز آئی ۔
" آوا ! بوٹ ارہی ہے " چنانچہ اُس کا موبائل نمبر لیا اور آئیندہ ملنے کا کہہ کر ہاتھ ملا کر چل پڑا ۔
بڑھیا نے پوچھا یہ کون تھا جس سے آپ باتیں کر رہے تھے ،
" ایک مسلمان " اور سامان اٹھا کر باقی بچوں کے ساتھ بوٹ کی طرف بڑھ گیا ۔




سوموار، 20 مارچ، 2017

صدارتی الیکشن - ایسٹ تِمُور

UNآج ایسٹ تِمُور میں صدارتی انتخابات ہیں ، یہاں 14 سیاسی پارٹیاں ہیں ۔ تمام سکولوں میں چھٹی ہے اور اُن میں پولنگ سٹیشن بنائے گئے ہیں ، یہاں ہر ووٹر صدر کے انتخاب کے لئے ووٹ ڈالتا ہے ۔ جمہوری ملکوں میں جو صدر کا رتبہ ہوتا ہے وہ یہاں بھی ہے ، گویا یہاں کا صدر اور پاکستان کا صدر ، دونوں کی طاقت ایک جیسی ہیں ، یعنی ھیڈ آف دی سٹیٹ اور سٹیٹ فنکشن کی سربراہی پر صدر مطمئن ہوتے ہیں اور طاقت کا سرچشمہ چونکہ عوام ہیں  ۔ لہذا    وہ اپنی طاقت وزیر اعظم کے حوالے کر کے مطمئن ہوجاتے ہیں ۔  موجودہ صدر جوز ماریہ ونکولیس ہے جس کا  سابقہ گوریلا لقب   ۔ ٹیٹم ،  یعنی دو تیز آنکھیں ہے ۔طور متن راک کے نام سے مشہور ہیں ۔  
صدارتی انتخابات کا یہاں آج 20 مارچ 2017 کو پہلا راونڈ ہے ، جیتنے والے کو 51 فیصد ووٹ لینا لازمی ہے ، بصورتِ دیگر دوسرا راونڈ 20 اپریل کو ہوگا ۔ 

صدارتی انتخابات کے امیدواراں  کی تعداد  8 ہے  ،
1- جوز انتونیو دی جیسسز دی نیوس  ۔(جوز شمالا 
 روؤا کے نام سے مشہور ہے )  یہ سابقہ گوریلا لیڈر ہیں ۔  2016 تک یہ ڈپٹی کمشنر  اینٹی کرپشن کمیشن میں رہے ہیں ۔ 
2- جوز لوئیس گتیریس  - فرینٹی مڈانکا  ،ایک سیاسی پارٹی ہے  - جس کا مقصد ایسٹ تِمُور  کا احیائے نو ہے ۔
3- اموریم ویرا ، آزاد امید وار ۔
4- لوئیس   اے تلمان   ، آزاد امید وار ۔
5- فرانکوس گتیریس ۔  سابقہ گوریلا جنگجو  ہے –سابقہ صدارتی امیدوار تھا ، لیکن سیکنڈ راونڈ  میں ھار  گیا ۔ انقلابی فرنٹ پارٹی،  ایسٹ تِمُور  سے تعلق ہے ۔ 
6- انتونیو دی کنسیکاؤ ۔ کا تعلق  جمہوری پارٹی سے ہے۔
8-   انجیلا فریتاس   ۔ لیبر پارٹی کی واحد خاتون امیدوار ہے ۔ 
ایسٹ تِمُور سٹیٹ کا دار الخلافہ دیلی ہے اور 11,67,233 افراد پر مشتمل سٹیٹ،   کل 13 انتظامی میونسپل کمیٹیوں میں منقسم ہے ۔  انہیں ڈسٹرکٹ کہا جاتا ہے ۔  یہ ڈٖسٹرکٹ مزید سب ڈسٹرکٹ میں منقسم ہیں ۔ 

مختلف میونسپلٹیز، وہاں  کا رقبہ، آبادی  اور گھروں کی تعداد  کے بارے میں شماریات درج ذیل ہیں ۔

ایسٹ تِمُور سٹیٹ کا سرکاری مذہب  ، کیتھولک ہے اور چرچ کو یہاں فوقیت حاصل ہے ،پاپائے روم یہاں کا روحانی پیشوا ہے ۔  یہی وجہ ہے کہ  1975 میں جب ایسٹ تِمُور  کو پرتگیزیوں  سے آزادی ملی  اور انڈونیشیاء نے 7 دسمبر کو فوجی ایکشن کیا تو یہاں کے لوگوں نے اپنی آزادی کے لئے ہتھیار اٹھا لئے ۔
1999 میں پولنگ کے بعد عیسائی  لیڈر کی فتح  ایک خونیں انقلاب لائی  جس میں شکست خوردہ اسلامو فاشسٹ  مسلمانوں کے ہاتھوں  1400 افراد ہلاک ہوئے  تو یو این کے امن دستوں نے یہاں کا چارج سنبھال لیا ۔ جس میں پاکستانی دستے بھی شامل تھے ، پاکستانی بٹالین کی کمانڈ کرنل مسعود احمد خان (اب بریگیڈئر ریٹائرڈ ) کر رہے تھے ، جنہوں نے یہاں اچھے اخلاق اور برتاؤ کا مظاہرہ کیا ، یہی وجہ ہے کہ  
تِمُور پاکستان فوج کی بہت عزت کر تے ہیں ،
یہاں دیلی میں  پاکستان سے آئے ہوئے  ، نوجوانوں نے  اپنی ایک یونئین بنائی ہے ، جس کے موجودہ صدر  کامران سعید ہیں جو ابھی رجسٹریشن کے مراحل میں ہے ۔
یہاں  کی ایک مسجد میں ہر جمعرات کو شبِ جمعہ میں مغرب سے عشاء تک تبلیغ کی جاتی ہے جس  ایک نوجوان عزیز الحق  خطاب کرتے ہیں جن کا تعلق کراچی کی تبلیغی جماعت سے ہے ۔ 




اتوار، 19 مارچ، 2017

اکاونٹ بندش کا نوٹس !

اعلانِ خصوصی !

فیس بُک کی بہت منتیں کیں لیکن اُس نے " خاکد کو خالد" کرنے سے انکار کر دیا ۔ ایسٹ تیمور کی سِم لی ، تو خیال آیا کہ نیا اکاونٹ بنایا جائے اور موجودہ اکاونٹ کو بند کردیا جائے ۔ جو کہ پہلا اکاونٹ تھا ،
جن دوستوں نے یہ پیغام پڑھ لیا ہے وہ اِس اکاونٹ کو اپنے پاس ایڈ کر لیں ۔ شکریہ !

خالد مہاجر زادہ !

خاکد سے خالد کا فیس بُک پر سفر

ہفتہ، 11 مارچ، 2017

سلام اس پر کہ جس نے گالیاں سن کر دعائیں دیں

سلام اس پر کہ جس نے بے کسوں کی دستگیری کی
سلام اس پر کہ جس نے بادشاہی میں فقیری کی

سلام اس پرکہ اسرار محبت جس نے سکھلائے
سلام اس پر کہ جس نے زخم کھا کر پھول برسائے

سلام اس پر کہ جس نے خوں کے پیاسوں کو قبائیں دیں
سلام اس پر کہ جس نے گالیاں سن کر دعائیں دیں

سلام اس پر کہ دشمن کو حیات جاوداں دے دی
سلام اس پر، ابو سفیان کو جس نے اماں دے دی

سلام اس پر کہ جس کا ذکر ہے سارے صحائف میں
سلام اس پر، ہوا مجروح جو بازار طائف میں

سلام اس پر، وطن کے لوگ جس کو تنگ کرتے تھے
سلام اس پر کہ گھر والے بھی جس سے جنگ کرتے تھے

سلام اس پر کہ جس کے گھر میں چاندی تھی نہ سونا تھا
سلام اس پر کہ ٹوٹا بوریا جس کا بچھونا تھا

سلام اس پر جو سچائی کی خاطر دکھ اٹھاتا تھا
سلام اس پر، جو بھوکا رہ کے اوروں کو کھلاتا تھا

سلام اس پر، جو امت کے لئے راتوں کو روتا تھا
سلام اس پر، جو فرش خاک پر جاڑے میں سوتا تھا

سلام اس پر جو دنیا کے لئے رحمت ہی رحمت ہے
سلام اس پر کہ جس کی ذات فخر آدمیت ہے

سلام اس پر کہ جس نے جھولیاں بھردیں فقیروں کی
سلام اس پر کہ مشکیں کھول دیں جس نے اسیروں کی

سلام اس پر کہ جس کی چاند تاروں نے گواہ دی
سلام اس پر کہ جس کی سنگ پاروں نے گواہی دی

سلام اس پر، شکستیں جس نے دیں باطل کی فوجوں کو
سلام اس پر کہ جس کی سنگ پاروں نے گواہی دی

سلام اس پر کہ جس نے زندگی کا راز سمجھایا
سلام اس پر کہ جو خود بدر کے میدان میں آیا

سلام اس پر کہ جس کا نام لیکر اس کے شیدائی
الٹ دیتے ہیں تخت قیصریت، اوج دارائی

سلام اس پر کہ جس کے نام لیوا ہر زمانے میں
بڑھادیتے ہیں ٹکڑا، سرفروشی کے فسانے میں

سلام اس ذات پر، جس کے پریشاں حال دیوانے
سناسکتے ہیں اب بھی خالد و حیدر کے افسانے

درود اس پر کہ جس کی بزم میں قسمت نہیں سوتی
درود اس پر کہ جس کے ذکر سے سیری نہیں ہوتی

درود اس پر کہ جس کے تذکرے ہیں پاک بازوں میں
درود اس پر کہ جس کا نام لیتے ہیں نمازوں میں

درود اس پر، جسے شمع شبستان ازل کہئے
درود اس ذات پر، فخرِ بنی آدم جسے کہئے​
(ماہر القادری)​

بدھ، 8 مارچ، 2017

حسبنا الکتاب اور مذہبی فکری غلام !

ایک مذہبی سوچ رکھنے والے ، صاحبِ علم کا مضمون ، جن کا نعرہ ہے ۔ " حسبنا کتاب اللہ "۔ اُنہوں اچھی توجہ،  دو گروہانِ تبلیغ کی طرف مبذول کروائی ہے ۔ بنیادی طور پر یہ ایک " اعلیٰ " مضمون ہے ، لیکن ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔!
٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭

دیکھا جائے تو اِن دونوں کے مقاصد ہی الگ ہے اور اسی لئے سوچ کے زاویہ نگاہ میں بھی فرق ہے اور یہ فرق اُن کے رویوں سے بھی یوں مترشح ہوتا ہے۔
غیر مُخلص مذہبی اور مُخلص دینی راہنماؤں کی تلاشِ فہم کے طریقہ کار میں تضاد کی وجوہات
-----------------------------------------------
اِن کے نقطہ نکاہ کی دوری کا اندازہ لگانے میں مدد فراہم کرنے میں دونوں گروہوں کا ایک طرف قرآن کی مجموعی تعلیم کو صرفِ نظر کرتے ہوئے شریعت کے نام سے غیر مُخلص مکتبِ مُلا کے موقف اور دوسری طرف سے حسبُنا کتاب اللہ کے موقف پر قائم مُخلص بانیانِ پاکستان کا تفصیلی تقابلی جائزہ لے کر وضاحت کی جاتی ہے:

· 1-مفاد پرست مذہبی راہنما ایک ظاہری اور ایک خفیہ ایجنڈا رکھتے ہیں، جبکہ ان کی کاوشوں کا محور خفیہ ایجنڈا ہوا کرتا ہے۔
مخلص دینی راہنما کے تمام مقاصد واضح اور متعین ہوتے ہیں۔ ان کے ہاں کوئی خفیہ ایجنڈا نہیں پایا جاتا۔ وہ جو بات کرتے ہیں، صاف انداز میں کرتے ہیں اور ان کے قول و فعل میں کوئی تضاد نہیں پایا جاتا۔

2-مفاد پرست راہنما اپنے پیروکاروں کو اپنا فکری غلام بنانے کے لئے مختلف ہتھکنڈے استعمال کرتے ہیں ۔
اس کے برعکس مخلص راہنما کبھی کسی شخص کو استعمال نہیں کرتے بلکہ وہ انہیں آزادی فکر دینے کی کوشش کرتے ہیں۔

· 3-مفاد پرست راہنما خود یا ان کے مقربین کی ٹیم، اپنے پیروکاروں کو یہی تلقین کرتے ہیں کہ وہ کسی مختلف نقطہ نظر رکھنے والے عالم کی تقریر نہ سنیں اور نہ ہی ان کی تحریریں پڑھیں ورنہ وہ گمراہ ہو جائیں گے۔
مخلص راہنما اس بات کی دعوت دیتے ہیں کہ لوگوں کو دونوں نقطہ ہائے نظر کو سمجھنا چاہیے اور ہر وہ نقطۂ نظر جو عقلی اعتبار سے درست ہو،اسے اختیار کر لینا چاہیے۔

· 4- مفاد پرست راہنما اپنی بات کو خدا کے حکم کے طور پر پیش کرتے ہیں اور اس سے اختلاف کرنے کو گمراہی، کفر اور الحاد قرار دیتے ہیں۔
مخلص راہنما اپنی بات کو، اگرچہ وہ واقعتاً خدا کا حکم ہی ہو، اس طرح سے پیش کرتے ہیں کہ "میری سمجھ کے مطابق خدا کا حکم یہی ہے۔ اگر آپ بھی ایسا ہی سمجھتے ہیں تو اس پر عمل کیجیے۔"
· 5-مفاد پرست راہنماؤں کے گرد مفاد پرست "مقربین خاص" کی ایک ٹیم ہوتی ہے جو ہر ہر موقع پر اپنے شیخ کو عوام میں مقبول بنانے کے عمل میں مشغول ہوتی ہے۔
مخلص راہنماؤں کے گرد ایسی کوئی ٹیم موجود نہیں ہوتی۔ ان کے شاگرد اور پیروکار بھی انہیں بس "ایک انسان اور ایک عالم" سمجھتے ہیں اور ان کی شخصیت کو کبھی حق و باطل کا معیار قرار نہیں دیتے۔
· 6- مفاد پرست راہنماؤں کے گرد مقربین خاص کا حلقہ انہیں عوام سے دور رکھتا ہے۔
مخلص راہنماؤں کے گرد ایسا کوئی حلقہ نہیں ہوتا اور یہ حضرات عوام سے گھل مل کر رہتے ہیں۔
· 7- مفاد پرست راہنما بعض اوقات اہمیت جتانے کے لئے کسی بڑی شخصیت کی روح سے اپنے روحانی تعلق کا دعوی کرتے ہیں
جبکہ مخلص راہنما ایسا کوئی دعوی نہیں کرتے اور نہ ہی اِس کی ضرورت سمجھتے ہیں،
· 8-مفاد پرست راہنماؤں کی کمراہ کُن کرامتوں کا بھرپور پراپیگنڈا کیا جاتا ہے اور عقل کی بہت مخالفت کی جاتی ہے اور اس بات پر زور دیا جاتا ہے کہ لوگ اپنی عقل پر اعتماد کرنے کی بجائے راہنما کی کرامت پر اعتماد کریں۔
مخلص راہنماؤں کے ہاں عقل کو غیر معمولی اہمیت دی جاتی ہے۔ لوگوں کو علم سے وابستہ کر کے انہیں اس ذہنی سطح پر لایا جاتا ہے کہ وہ خود اپنی عقل کو استعمال کر کے صحیح و غلط کا فیصلہ کریں۔
· 9-مفاد پرست راہنماؤں کے ہاں کسی مخصوص شخص یا گروہ کو مخالف قرار دے کر اس کی تردید، تفسیق اور تکفیر میں ساری توانائیاں صرف کی جاتی ہیں۔
مخلص راہنما کسی مخصوص شخص یا گروہ کو نہیں بلکہ ان نظریات اور اعمال کو اپنی تنقید کا نشانہ بناتے ہیں جو ان کے خیال میں غلط ہوتے ہیں۔
· 10-مفاد پرست راہنماؤں کے ہاں " کراماتی واقعات" کو بنیادی اہمیت حاصل ہوتی ہے۔
جبکہ مخلص راہنماؤں کے ہاں دلائل کو زیادہ اہمیت حاصل ہوتی ہے
· 11-مفاد پرست راہنما کبھی پوری معلومات نہیں دیتے۔ ان کے ہاں تصویر کا صرف ایک رخ پیش کیا جاتا ہے اور دوسرے رخ کو اس طرح سے نظر انداز کر دیا جاتا ہے کہ وہ سرے سے موجود ہی نہیں ہے۔
مخلص راہنماؤں کے ہاں تصویر کے دونوں رخ پیش کئے جاتے ہیں۔ ایسے لوگ تصویر کا دوسرا رخ چھپانے کی بجائے اسے عوام کے سامنے پیش کر کے دلائل کے ذریعے یہ ثابت کرنے کی کوشش کرتے ہیں کہ اس میں کیا غلطی پائی جاتی ہے۔
· 12-مفاد پرست راہنماؤں کے ہاں اختلاف رائے ایک جرم سمجھا جاتا ہے۔ اور غلطی کی صورت میں شدید ردعمل سامنےآتا ہے۔
جبکہ مخلص راہنماؤں کے ہاں اختلاف رائے ایک قدر (Value) کی حیثیت رکھتا ہے اور اس کی بھرپور حوصلہ افزائی کی جاتی ہے۔
· 13-مفاد پرست راہنما اپنے پیروکاروں سے محبت کا مصنوعی سا مظاہرہ کرتے ہیں۔ کسی انحراف کی صورت میں اسے بھرپور انداز میں جذباتی طور پر بلیک میل کرتے ہیں۔
مخلص راہنما کا اپنے پیروکاروں سے تعلق محض خلوص پرمبنی ہوتا ہے۔ ان کے ہاں جذباتی طور پر بلیک میل کرنے کا تصور موجود نہیں ہوتا۔
· 14-مفاد پرست راہنماؤں کے حلقوں میں جذباتیت پیدا کرنے کی بھرپور کوشش کی جاتی ہے۔
مخلص راہنما بالعموم جذباتیت سے پرہیز کرتے ہیں۔ ان کے ہاں خاص طور پر اختلافی امور میں صرف دلائل کا تبادلہ کیا جاتا ہے اور جذباتیت پیدا کرنے کی کوشش نہیں کی جاتی۔
· 15-مفاد پرست راہنما اپنے پیروکاروں کو مکمل کنٹرول کرنے کی کوشش کرتے ہیں۔
جبکہ مخلص راہنما کبھی اپنے پیروکاروں کو کنٹرول کرنے کی کوشش نہیں کرتے۔
· 16-مفاد پرست راہنماؤں کی یہ کوشش ہوتی ہے کہ ان کا پیروکار اپنی پرانی شناخت بھلا کر نئی شناخت کو قبول کر لے، جبکہ
مخلص راہنما کبھی ایسا نہیں کرتے۔
· 17-مفاد پرست راہنما اپنے پیروکاروں کو معاشرے سے کاٹ دینے کی کوشش کرتےہیں،
جبکہ مخلص راہنما دلوں کو ملانے کا کام کرتے ہیں۔

· 18-مفاد پرست راہنماؤں کے ہاں چونکہ جذباتیت کو بہت اہمیت دی جاتی ہے اس وجہ سے ان کے حلقوں میں ایک تصوراتی (Fantastic) سا ماحول موجود ہوتا ہے۔ لوگ عموماً حقیقت سے فرار حاصل کر کے اس تصوراتی ماحول میں خوش ہو جاتے ہیں۔
مخلص راہنما لوگوں کو حقیقت پسند بناتے ہیں۔
· 19. مفاد پرست راہنماؤں کے ہاں سوالات کی حوصلہ شکنی کی جاتی ہے
جبکہ مخلص راہنماؤں کے ہاں سوالات کی حوصلہ افزائی کی جاتی ہے۔
یہاں یہ بیان کرنا بہت ضروری ہے کہ اگر ان میں سے کوئی ایک آدھ بات استثنائی طور پر اگر کسی راہنما میں پائی بھی جائے تو اس پر فوری طور پر مفاد پرست ہونے کا فتوی نہیں لگا دینا چاہیے۔ ہمیں حسن ظن سے کام لیتے ہوئے اس راہنما کو اس طرف توجہ دلا دینی چاہیے کہ اس معاملے میں اس کا طرز عمل مفاد پرست لیڈروں جیسا ہے۔ اگر اس کے پاس اس طرز عمل کی کوئی معقول توجیہ موجود ہو اور وہ خوشدلی سے اپنے طرز عمل میں تبدیلی کا فیصلہ کر لے تو یقیناً وہ راہنما، مخلص ہی ہوگا۔ اس کے برعکس اگر وہ بھڑک اٹھے اور توجہ دلانے والے کو بے نقط سنائے تو پھر جان لینا چاہیے کہ وہ لیڈر مخلص نہیں ہے۔

یہ بھی ممکن ہے کہ ایک شخص اپنی ابتدا میں مخلص ہو اور بعد میں وہ کسی وجہ سے مفاد پرستانہ کردار ادا کرنے لگ جائے۔ اس وجہ سے مذہبی راہنماؤں پر، خاص طور پر، نظر رکھنی چاہیے اور ان کی غلطیوں پر انہیں تنہائی میں بروقت توجہ دلانی چاہیے تاکہ وہ اپنی اصلاح کر سکیں۔ اس مسلسل چھان بین کی وجہ یہ ہے کہ ایک عام آدمی کی غلطی کا نقصان تو صرف اسے ہی پہنچے گا جبکہ مذہبی راہنما کی غلطی کا اثر بہت سے لوگوں تک پہنچے گا۔

اس میں یہ بات بھی اہم ہے کہ ہمیں اجتہادی غلطی اور کردار کی غلطی میں فرق کرنا چاہیے۔ اگر مذہبی راہنما درست نیت کے ساتھ، دلائل کی بنیاد پر کسی مسئلے کے بارے میں کوئی غلط رائے قائم کر بیٹھتا ہے تو یہ اجتہادی غلطی ہے۔ اجتہادی غلطی کا موجود ہونا کوئی مسئلہ نہیں ہے۔ایک مشہور حدیث کے مطابق مجتہد کو اس غلطی پر بھی اجر ملے گا۔ کردار کی غلطی سے مراد یہ ہے کہ وہ شخص ایسے ہتھکنڈے اختیار کرنے لگ جائے جس کے نتیجے میں لوگ اس کے فکری غلام بننا شروع ہو جائیں۔ ایسی صورت میں اس راہنما کو فوراً توجہ دلانی چاہیے کیونکہ یہ بہت بڑا مسئلہ ہے۔( انعام الحق)
٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭
میری رائے میں مخلص اور غیر مخلص کی تلاش کا کوئی انسانی طریق کار متعیّن نہیں ! کیوں کہ انسان میں جو بنیادی پیچیدگیاں ، اُس کے خالق نے " اِن بلٹ " کر رکھی ہیں وہ اُن پیچیدگیوں کے پیچ و خم سے نہیں نکل سکتا۔
آیات اللہ پر انسانی ردِ عمل ۔

میں آیات اللہ کے ذریعے ، مُّصَدِّقٌ لِّسَانًا عَرَبِيًّا میں اللہ نے انسانی پیچ خم کی مکمل تفصیل رسول اللہ کوكِتَابٌ کر دی ہے ،  جو آیات اللہ پر انسانی ردِ عمل ۔ کے چار حصوں کے  مضمون،  میں اجاگر کرنے کی کوشش کی گئی ہے ،( مہاجر زادہ )
ـــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــ 

پڑھنے کے لئے لنک دبائیں !

 آیات اللہ پرانسانی ردِعمل بدنصیب پرویز!
مہاجرزادہ کے مذہبی اساتذہ
کیا منکرینِ حدیث مسلمانوں کی راہنمائی کر سکتے ہیں ؟


 

خیال رہے کہ "اُفق کے پار" یا میرے دیگر بلاگ کے،جملہ حقوق محفوظ نہیں ۔ !

افق کے پار
دیکھنے والوں کو اگر میرا یہ مضمون پسند آئے تو دوستوں کو بھی بتائیے ۔ اگر آپ کو شوق ہے کہ زیادہ لوگ آپ کو پڑھیں تو اپنا بلاگ بنائیں ۔