میرے چاروں طرف افق ہے جو ایک پردہء سیمیں کی طرح فضائے بسیط میں پھیلا ہوا ہے،واقعات مستقبل کے افق سے نمودار ہو کر ماضی کے افق میں چلے جاتے ہیں،لیکن گم نہیں ہوتے،موقع محل،اسے واپس تحت الشعور سے شعور میں لے آتا ہے، شعور انسانی افق ہے،جس سے جھانک کر وہ مستقبل کےآئینہ ادراک میں دیکھتا ہے ۔
دوستو ! اُفق کے پار سب دیکھتے ہیں ۔ لیکن توجہ نہیں دیتے۔ آپ کی توجہ مبذول کروانے کے لئے "اُفق کے پار" یا میرے دیگر بلاگ کے،جملہ حقوق محفوظ نہیں ۔ پوسٹ ہونے کے بعد یہ آپ کے ہوئے !( خالد نعیم الدین)

فیس بک کے دیوانے

جمعہ، 30 جون، 2017

ﻣﺪﺩ ﮐﺮﯾﮟ ﮈﺍﮐﻮ ﻧﺎ ﺑﻨﯿﮟ

ﮨﻢ ﺍﻭﺭ ﮨﻤﺎﺭﮮ ﻏﯿﺮ ﻣﮩﺬﺏ ﺭﻭﯾﮯ ..

ﻓﯿﺼﻞ ﺁﺑﺎﺩ ﻧﺰﺩ ﺍﻻ ﺋﯿﮉ ﮨﺴﭙﺘﺎﻝ ﻣﯿﮟ ﺍﯾﮏ ﺩﻓﻌﮧ ﺍﻧﮉﻭﮞ ﺳﮯ ﺑﮭﺮﺍ ﭨﺮﮎ ﺣﺎﺩﺛﮯ ﮐﺎ ﺷﮑﺎﺭ ﮨﻮﺍ ﮐﻮﺋﯽ ﺗﯿﻦ ﭼﺎﺭ ﻣﻨﭧ ﺑﻌﺪ ﻣﯿﮟ ﺑﮭﯽ ﺭﺵ ﻟﮕﺎ ﺩﯾﮑﮫ ﮐﺮ ﺍﭘﻨﯽ ﺑﺎﺋﯿﮏ ﺳﮯ ﺍﺗﺮ ﮐﺮ ﺩﯾﮑﮭﻨﮯ ﻟﮕﺎ ﻟﻮﮒ ﺷﺎﭘﺮ ﺑﺎﻟﭩﯿﺎﮞ ﺑﮭﺮ ﺑﮭﺮ ﮐﺮ ﺍﻧﮉﻭﮞ ﮐﻮ ﺟﻤﻊ ﮐﺮ ﺭﻫﮯ ﺗﮭﮯ ﺍﻭﺭ ﻟﮯ ﺟﺎ ﺭﻫﮯ ﺗﮭﮯ ﮐﺌﯽ ﻋﻮﺭﺗﻮﮞ ﮐﻮ ﺩﻭﭘﭩﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺑﮭﯽ ﺟﻠﺪﯼ ﺟﻠﺪﯼ ﻣﺎﻝ ﻣﻔﺖ ﺟﻤﻊ ﮐﺮﺗﮯ ﺩﯾﮑﮭﺎ ،
ﭼﻮﻧﮑﮧ ﻧﻤﺎﺯ ﻓﺠﺮ ﮐﮯ ﮐﭽﮫ ﺩﯾﺮ ﺑﻌﺪ ﮐﺎ ﻭﺍﻗﻌﮧ ﺗﮭﺎ ﺗﻮ ﮐﺌﯽ ﻣﺮﺩ ﺍﻭﺭ ﻧﻮﺟﻮﺍﻥ ﺑﻐﯿﺮ ﻗﻤﯿﺾ ﺑﮭﯽ ﻣﺎﻝ ﻏﻨﯿﻤﺖ ﻟﻮﭨﻨﮯ ﻣﯿﮟ ﺑﺰﯼ ﺗﮭﮯ
ﻣﯿﮟ ﯾﮧ ﺳﺐ ﺩﯾﮑﮭﺘﮯ ﮨﻮﮰ ﮐﭽﮫ ﻣﺤﻈﻮﻅ ﺑﮭﯽ ﺍﻭﺭ ﮐﭽﮫ ﺷﺮﻣﻨﺪﮦ ﺑﮭﯽ ﮨﻮ ﺭﮬﺎ ﺗﮭﺎ ﺍﭘﻨﯽ ﻗﻮﻡ ﮐﯽ ﺍﺱ ﺍﺧﻼﻗﯽ ﭘﺴﺘﯽ ﺍﻭﺭ ﻏﯿﺮ ﻣﮩﺬﺏ ﺭﻭﯾﮧ ﮐﻮ ﺩﯾﮑﮭﺘﮯ ﮨﻮﮰ ﺟﻠﺪ ﺑﺎﺯﯼ ﻣﯿﮟ ﻟﻮﮒ ﺟﻮﺍﺏ ﻧﮩﯽ ﺩﮮ ﭘﺎ ﺭﻫﮯ ﺗﮭﮯ ﻣﺎﻝ ﻣﻔﺖ ﮐﻮ ﺳﻤﯿﭩﻨﮯ ﮐﯽ ﻭﺟﮧ ﺳﮯ ،
ﺟﺐ ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﺍﯾﮏ ﺩﻭ ﺑﺎﺭ ﮐﭽﮫ ﻟﻮﮔﻮﮞ ﺳﮯ ﭨﺮﮎ ﻭﺍﻟﮯ ﮐﺎ ﺍﺣﻮﺍﻝ ﺟﺎﻧﻨﺎ ﭼﺎﮨﺎ ﺗﻮ ﭘﮭﺮ ﻣﯿﮟ ﺧﻮﺩ ﮨﯽ ﭨﺮﮎ ﮈﺭﺍﺋﯿﻮﺭ ﮐﻮ ﺩﯾﮑﮭﻨﮯ ﺍﻭﭘﺮ ﮐﻮ ﭼﮍﮬﺎ ،ﺟﻮ ﮐﮧ ﺣﺎﺩﺛﮯ ﮐﯽ ﻭﺟﮧ ﺳﮯ ﺯﻣﯿﮟ ﺳﮯ ﭼﮫ ﺳﺎﺕ ﻓﭧ ﺍﻭﭘﺮ ﮐﻮ ﺍﭨﮭﺎ ﮨﻮﺍ ﺗﮭﺎ ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﺩﯾﮑﮭﺎ ﮐﮧ ﮈﺭﺍﺋﯿﻮﺭ ﺳﺎﻧﺲ ﺗﻮ ﻟﮯ ﺭﮬﺎ ﮬﮯ ﻣﮕﺮ ﺑﯿﮩﻮﺵ ﺗﮭﺎ ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﻧﯿﭽﮯ ﻣﺮﺩﻭ ﺯﻥ ﮐﻮ ﺑﮩﺖ ﺁﻭﺍﺯﯾﮟ ﺩﯾﮟ ﻣﮕﺮ ﮐﺴﯽ ﻧﮯ ﻣﺎﻝ ﻟﻮﭨﺘﮯ ﮨﻮﮰ ﻣﺠﮭﮯ ﺭﺳﭙﺎﻧﺲ ﻧﺎ ﺩﯾﺎ ﻣﯿﮟ ﻧﯿﭽﮯ ﺍﺗﺮﺍ ﺍﻭﺭ ﮐﭽﮫ ﻟﻮﮔﻮﮞ ﮐﻮ ﺭﺍﺿﯽ ﮐﯿﺎ ﮈﺭﺍﺋﯿﻮﺭ ﮐﯽ ﻣﺪﺩ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ..
ﺍﺳﯽ ﻃﺮﺡ ﻻﮨﻮﺭ ﭼﻮﺑﺮﺟﯽ ﻣﯿﮟ ﺍﯾﮏ ﺑﺎﺭ ﺟﮩﺎﺯ ﻭﺍﻟﮯ ﭘﺎﺭﮎ ﮐﯽ ﺩﯾﻮﺍﺭ ﮐﮯ ﺳﺎﺗﮫ ﺍﯾﮏ ﭘﮏ ﺍﭖ ﮐﺎ ﺣﺎﺩﺛﮧ ﮨﻮﺍ ﺟﺲ ﻣﯿﮟ ﺗﺮﺑﻮﺯ ﺑﮭﺮﮮ ﺗﮭﮯ ﯾﻘﯿﻦ ﮐﺮﯾﮟ ﮈﺍﺭﺋﯿﻮﺭ ﮐﻮ ﻣﺪﺩ ﺩﯾﻨﮯ ﺳﮯ ﭘﮩﻠﮯ ﺩﺱ ﭘﻨﺪﺭﮦ ﻟﻮﮒ ﺗﺮﺑﻮﺯﻭﮞ ﮐﻮ ﺷﻔﭧ ﮐﺮ ﭼﮑﮯ ﺗﮭﮯ۔

ﺍﺳﯽ ﻃﺮﺡ ﺍﯾﮏ ﺩﻭﺳﺖ ﺳﺮﮔﻮﺩﮬﺎ ﻣﯿﮟ ﭘﮏ ﺍﭖ ﭘﺮ ﻗﺮﺑﺎﻧﯽ ﮐﺎ ﺟﺎﻧﻮﺭ ﻟﯿﻨﮯ ﺟﺎ ﺭﮬﺎ ﺗﮭﺎ ﮐﮧ ﺣﺎﺩﺛﮧ ﮨﻮﮔﯿﺎ ﮐﺴﯽ ﻧﮯ ﻣﯿﺮﮮ ﺩﻭﺳﺖ ﮐﯽ ﻣﺪﺩ ﻧﮩﯽ ﮐﯽ ﻣﮕﺮ ﺟﯿﺐ ﺻﺎﻑ ﺿﺮﻭﺭ ﮐﯿﺎ ۔

ﺑﺎﻻﮐﻮﭦ ﻣﯿﮟ ﺯﻟﺰﻟﮯ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ﻟﻮﮔﻮﮞ ﻧﮯ ﻣﺮﻧﮯ ﻭﺍﻟﯽ ﺧﻮﺍﺗﯿﻦ ﮐﮯ ﻧﺎﮎ ﮐﺎﻥ ﮐﺎﭦ ﻟﺌﯿﮯ ﺗﮭﮯ ﻓﻘﻂ ﭼﻨﺪ ﮨﺰﺍﺭ ﮐﮯ ﺯﯾﻮﺭﺍﺕ ﮐﯽ ﮐﯽ ﺧﺎﻃﺮ ﻣﯿﮟ ﮐﮩﻨﺎ ﯾﮧ ﭼﺎﮨﺘﺎ ﮨﻮﮞ ﮐﮧ ﺍﯾﺴﺎ ﺻﺮﻑ ﻏﺮﯾﺐ ﺍﻭﺭ ﻣﺤﺮﻭﻡ ﻟﻮﮒ ﮨﯽ ﻧﮩﯽ ﮐﺮﺗﮯ ،ﺑﻠﮑﮧ ﺍﻓﺴﻮﺱ ﮐﮯ ﺳﺎﺗﮫ ﮨﺮ ﺟﮕﮧ ﯾﮩﯽ ﺣﺎﻝ ﮬﮯ۔

ﺻﺮﻑ ﺑﮩﺎﻭﻟﭙﻮﺭ ﻭﺍﻟﮯ ﺍﯾﺴﮯ ﻧﮩﯽ ﺑﻠﮑﮧ ﻓﯿﺼﻞ ﺁﺑﺎﺩ ﻻﮨﻮﺭ ﺳﺮﮔﻮﺩﮬﺎ ﺑﻠﮑﮧ ﮨﺮ ﺟﮕﮧ ﯾﮩﯽ ﺣﺎﻝ ﮬﮯ ﺑﺪ ﻗﺴﻤﺘﯽ ﺳﮯ ﺍﺱ ﻗﻮﻡ ﮐﺎ-

ﺑﺲ ﯾﺎ ﭨﺮﯾﻦ ﮐﮯ ﺣﺎﺩﺛﮯ ﻣﯿﮟ ﺯﺧﻤﯽ ﺍﻭﺭ ﮨﻼﮎ ﮨﻮﻧﮯ ﻭﺍﻟﻮﮞ ﺍﻓﺮﺍﺩ ﮐﯽ ﻣﺪﺩ ﮐﺮﻧﮯ ﮐﮯ ﺑﺠﺎﺋﮯ ﺍﻥ ﮐﯽ ﺟﯿﺒﯿﮟ ﺍﻭﺭ ﺍﻥ ﮐﺎ ﻗﯿﻤﺘﯽ ﺳﺎﻣﺎﻥ ﻟﻮﭦ ﻟﯿﺎ ﺟﺎﺗﺎ ﮨﮯ ﺍﻥ ﮐﮯ ﺑﭩﻮﮮ ﮐﮯ ﺳﺎﺗﮫ ﺳﺎﺗﮫ ﺷﻨﺎﺧﺘﯽ ﮐﺎﺭﮈ ﺑﮭﯽ ﻟﮯ ﺟﺎﺗﮯ ﮨﯿﮟ ﺟﺲ ﮐﯽ ﻭﺟﮧ ﺳﮯ ﺍﻥ ﮐﯽ ﺷﻨﺎﺧﺖ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﻮ ﭘﺎﺗﯽ ﺍﻭﺭ ﺍﻥ ﮐﻮ ﻻﻭﺍﺭﺙ ﻗﺮﺍﺭ ﺩﯾﺘﮯ ﮨﻮﺋﮯ ﺩﻓﻨﺎ ﺩﯾﺎ ﺟﺎﺗﺎ ﮨﮯ۔

ﻏﻢ ﮨﻮ ﯾﺎ ﺧﻮﺷﯽ ،ﺍﺱ ﻗﻮﻡ ﮐﺎ ﯾﮩﯽ ﺍﻧﺪﺍﺯ ﮨﻮﺗﺎ ﮬﮯ ۔

ﺷﺎﺩﯼ ﮐﯽ ﺭﻭﭨﯽ ﮨﻮ ﯾﺎ ﺧﯿﺮﺍﺕ ﮐﯽ ﺩﯾﮓ ﺳﯿﺎﺳﯽ ﺟﻠﺴﮯ ﮐﯽ ﺍﻓﻄﺎﺭ ﭘﺎﺭﭨﯽ ﮨﻮ ﯾﺎ ﻗﺪﺭﺗﯽ ﺁﻓﺎﺕ ﭘﺮ ﺩﯼ ﺟﺎﻧﮯ ﻭﺍﻟﯽ ﺍﻣﺪﺍﺩ ﮨﻢ ﮨﺮ ﺟﮕﮧ ﺗﻘﺮﯾﺒﺎً ﺍﯾﺴﮯ ﮨﯽ ﮨﯿﮟ ﭼﺎﮨﮯ ﻏﺮﯾﺐ ﻋﻼﻗﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﮐﭽﮫ ﮨﻮ ﯾﺎ ﺍﻣﯿﺮ ﻋﻼﻗﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺑﮍﮮ ﺍﻓﺴﻮﺱ ﮐﮯ ﺳﺎﺗﮫ ﮐﮩﻨﺎ ﭘﮍ ﺭﮬﺎ ﮬﮯ ﮐﮧ ﮨﻢ ﺍﯾﮏ ﻏﯿﺮ ﻣﮩﺬﺏ ﺍﻭﺭ ﺑﮯ ﺷﻌﻮﺭ ﻗﻮﻡ ﺳﮯ ﮨﯿﮟ۔

ﻟﯿﮑﻦ ﮨﺮ ﺟﮕﮧ ﺍﭼﮭﮯ ﺍﻭﺭ ﺑﺎﺷﻌﻮﺭ ﺍﻭﺭ ﻣﮩﺬﺏ ﻟﻮﮒ ﺑﮭﯽ ﮨﯿﮟ ﮨﯿﮟ ﺟﻦ ﮐﯽ ﻣﻮﺟﻮﺩﮔﯽ ﺳﮯ ﺍﻧﮑﺎﺭ ﻣﻤﮑﻦ ﻧﮩﯽ، ﺍﻟﻠّﻪ ﭘﺎﮎ ﻣﺠﮭﮯ ﺁﭘﮑﻮ ، ﮨﻢ ﺳﺐ ﮐﻮ ﺳﻤﺠﮫ ﺷﻌﻮﺭ ﻧﺼﯿﺐ ﮐﺮﮮ ﺍﻭﺭ ﺣﺎﺩﺛﮯ ﮐﮯ ﺷﮑﺎﺭ ﻟﻮﮔﻮﮞ ﮐﯽ ﻣﻐﻔﺮﺕ ﻓﺮﻣﺎئے .
ﺍﻭﺭ ﭘﺴﻤﺎﻧﺪﮔﺎﻥ ﮐﻮ ﺻﺒﺮ ﺟﻤﯿﻞ ﻋﻄﺎ ﻓﺮﻣﺎﮮ .ﺁﻣﯿﻦ

ﻧﻮﭦ
ﯾﮧ ﺗﺤﺮﯾﺮ ﮨﻤﺎﺭﯼ ﻏﯿﺮ ﻣﮩﺬﺏ ﺭﻭﯾﮧ ﮐﯽ ﻧﺸﺎﻥ ﺩﮬﯽ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﮨﮯ ﮐﺴﯽ ﮐﯽ ﺩﻝ ﺁﺯﺍﺭﯼ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﻧﮩیں ...
( نامعلوم)

اللہ کا لفظ خرق انسانی قربان گاہ پر !

 لوگ پوچھتے ہیں کہ اِس مضمون کا سیاق و سباق کیا ہے ؟
اِس مضمون کا سیاق ۔ 
یہ خوارق کیا ہوتا ہے ؟
اور یہ لفظ کس کی ایجاد ہے ، انسانوں کو بہکانے کے لئے ؟
شائد خرقہ پوشوں نے ایجاد کیا ہو !  اللہ  کے لفظ ،   خ ر ق   کے بارے میں ، درج ذیل کتابوں سے دی جانے والے غلط معلومات ہیں :

اللہ نے محمدﷺ کو اپنے کلام میں انسانی لفظ " خوارق العادت " کا بیڑہ غرق کرنے اور اُسے اپنی طرف موسوم کرنے کے لئے الکتاب میں اِن آیات میں بیئن کیا ۔

" خوارق العادت " حرکات  پر ایمان لانے والوں ، کو انسانوں کو بھٹکا کر کفار میں شامل ہونے، سے پہلے درج ذیل آیات پر ضرور نظر ڈالنا چاھئیے:
٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭
 اِس مضمون کےتین سباق ۔  
٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭
 1.  خوارق العادات، لفظ پر  اسلامی رنگ چڑھانے کے لئے ، سب سے پہلے اللہ کو مبتلاء کرنے والوں  کے لئے تنذیر :
 
اتَّبِعْ مَا أُوحِيَ إِلَيْكَ مِن رَّبِّكَ ۖ لَا إِلَـٰهَ إِلَّا هُوَ ۖ وَأَعْرِضْ عَنِ الْمُشْرِكِينَ ﴿6:106
وَجَعَلُوا لِلَّـهِ شُرَكَاءَ الْجِنَّ وَخَلَقَهُمْ وَخَرَقُوا لَهُ بَنِينَ وَبَنَاتٍ بِغَيْرِ عِلْمٍ سُبْحَانَهُ وَتَعَالَىٰ عَمَّا يَصِفُونَ ﴿6:100﴾
 
2.   اللہ کی آیات  کو خرق کرنے والوں کے لئے ، اللہ انباء   :وَلَا تَمْشِ فِي الْأَرْضِ مَرَحًا إِنَّكَ لَن تَخْرِقَ الْأَرْضَ وَلَن تَبْلُغَ الْجِبَالَ طُولًا ﴿17:37﴾
3.   اللہ کی آیت   سے لفظ " خرق "     کی تفصیل :

فَانطَلَقَا حَتَّىٰ إِذَا رَكِبَا فِي السَّفِينَةِ خَرَقَهَا قَالَ أَخَرَقْتَهَا لِتُغْرِقَ أَهْلَهَا لَقَدْ جِئْتَ شَيْئًا إِمْرًا  ﴿18:71﴾
 
 ٭٭٭٭٭٭یہ بھی سیاقی مضمون ہے ٭٭٭٭٭

اللہ کو معجزے دکھانے والے

اللہ کو معجزے دکھانے والے


لوگ پوچھتے ہیں کہ اِس مضمون کا سیاق و سباق کیا ہے ؟
اِس مضمون کا سیاق ۔ 
اللہ  کے لفظ ،ع ج ز  کے بارے میں ، درج ذیل کتابوں سے دی جانے والے غلط معلومات ہیں :

اللہ نے محمدﷺ کو اپنے کلام میں انسانی لفظ " معجزہ " کا بیڑہ غرق کرنے اور اُسے اپنی طرف موسوم کرنے کے لئے الکتاب میں اِن آیات میں بیئن کیا ۔

معجزے پر ایمان لانے والوں ، کو انسانوں کو بھٹکا کر کفار میں شامل ہونے، سے پہلے درج ذیل آیات پر ضرور نظر ڈالنا چاھئیے:

٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭
 اِس مضمون کے دس  سباق ۔ 
٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭
1- ایک غُرَابً کا پریشانی کے حل کے لئے معجزے کا انتظار کرنا ۔
فَبَعَثَ اللَّـهُ غُرَابًا يَبْحَثُ فِي الْأَرْضِ لِيُرِيَهُ كَيْفَ يُوَارِي سَوْءَةَ أَخِيهِ قَالَ يَا وَيْلَتَىٰ أَعَجَزْتُ أَنْ أَكُونَ مِثْلَ هَـٰذَا الْغُرَابِ فَأُوَارِيَ سَوْءَةَ أَخِي فَأَصْبَحَ مِنَ النَّادِمِينَ ﴿5:31

2- خود کو مسندِ خلافت پر بٹھائے رکھنے کے لئے اللہ کے خلاف انسانی معجزانہ کوششیں:
وَرَبُّكَ الْغَنِيُّ ذُو الرَّحْمَةِ ۚ إِن يَشَأْ يُذْهِبْكُمْ وَيَسْتَخْلِفْ مِن بَعْدِكُم مَّا يَشَاءُ كَمَا أَنشَأَكُم مِّن ذُرِّيَّةِ قَوْمٍ آخَرِينَ ﴿6:133
إِنَّ مَا تُوعَدُونَ لَآتٍ وَمَا أَنتُم بِمُعْجِزِينَ ﴿6:134﴾

3- اللہ کی آیات پر ایمان لانے والی قوم کو کافروں کا معجزے دکھانے کی سعی اول اور موجودہ سعی :
وَلَا يَحْسَبَنَّ الَّذِينَ كَفَرُوا سَبَقُوا إِنَّهُمْ لَا يُعْجِزُونَ ﴿8:59﴾

4- اللہ کے ڈے ون سے قرار دئیے جانے والے الشُّهُورُ الْحَرَامُ (شَهْرُ رَمَضَانَ سے لے کر الشَّهْرَ الْحَرَامَ ، الْحَجَّ تک ) ، میں ، کافرین کو اللہ کی طرف سے معجزے دکھانے کی کھلی چھٹی ۔
فَسِيحُوا فِي الْأَرْضِ أَرْبَعَةَ أَشْهُرٍ وَاعْلَمُوا أَنَّكُمْ غَيْرُ مُعْجِزِي اللَّـهِ وَأَنَّ اللَّـهَ مُخْزِي الْكَافِرِينَ ﴿9:2﴾

5- اللہ اور اُس کا رسول معجزے دکھانے والے مشکرین سے اعلانِ بری ءُ الذمہ :
وَأَذَانٌ مِّنَ اللَّـهِ وَرَسُولِهِ إِلَى النَّاسِ يَوْمَ الْحَجِّ الْأَكْبَرِ أَنَّ اللَّـهَ بَرِيءٌ مِّنَ الْمُشْرِكِينَ وَرَسُولُهُ فَإِن تُبْتُمْ فَهُوَ خَيْرٌ لَّكُمْ وَإِن تَوَلَّيْتُمْ فَاعْلَمُوا أَنَّكُمْ غَيْرُ مُعْجِزِي اللَّـهِ وَبَشِّرِ الَّذِينَ كَفَرُوا بِعَذَابٍ أَلِيمٍ  ﴿9:3﴾

6- اللہ کو معجزہ دکھانے کے لئے استنباط کرنے والوں کو اللہ کی طرف سے معلومات ۔
وَيَسْتَنبِئُونَكَ أَحَقٌّ هُوَ قُلْ إِي وَرَبِّي إِنَّهُ لَحَقٌّ وَمَا أَنتُم بِمُعْجِزِينَ ﴿10:53﴾

7. پوری زمین پر اللہ کی آیات کے خلاف معجزہ دکھانے کے لئے ، مِّن دُونِ اللَّـهِ،  أَوْلِيَاءَ کی تلاش کرنے والوں پر دُگنے عذاب کی بشارت !
أُولَـٰئِكَ لَمْ يَكُونُوا مُعْجِزِينَ فِي الْأَرْضِ وَمَا كَانَ لَهُم مِّن دُونِ اللَّـهِ مِنْ أَوْلِيَاءَ يُضَاعَفُ لَهُمُ الْعَذَابُ مَا كَانُوا يَسْتَطِيعُونَ السَّمْعَ وَمَا كَانُوا يُبْصِرُونَ ﴿11:20﴾

8. اللہ کی آیات پر اللہ کو ومعجزے دکھانے والوں کا چیلنج
قَالَ إِنَّمَا يَأْتِيكُم بِهِ اللَّـهُ إِن شَاءَ وَمَا أَنتُم بِمُعْجِزِينَ ﴿11:33﴾

9. اگر اللہ نےاپنی آیات میں معجزے دکھانے والوں کو پکڑا تو اُن کے معجزات مٹی کا ڈھیر ثابت ہوں گے :
أَفَأَمِنَ الَّذِينَ مَكَرُوا السَّيِّئَاتِ أَن يَخْسِفَ اللَّـهُ بِهِمُ الْأَرْضَ أَوْ يَأْتِيَهُمُ الْعَذَابُ مِنْ حَيْثُ لَا يَشْعُرُونَ ﴿16:45
أَوْ يَأْخُذَهُمْ فِي تَقَلُّبِهِمْ فَمَا هُم بِمُعْجِزِينَ ﴿16:46 

10- کہا ابراھیم کی زوج نے، میں اللہ کی آیت میں کوئی معجزہ نہیں دکھا سکتی :
قَالَتْ يَا وَيْلَتَىٰ أَأَلِدُ وَأَنَا عَجُوزٌ وَهَـٰذَا بَعْلِي شَيْخًا إِنَّ هَـٰذَا لَشَيْءٌ عَجِيبٌ ﴿11:72﴾


 ٭٭٭٭٭٭یہ بھی سیاقی مضمون ہے ٭٭٭٭٭

اللہ کا لفظ خرق انسانی قربان گاہ پر !


فی سبیل اللہ !

عربی کہانی سے انتخاب :
٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭
ﮔﺎﮨﮏ ﻧﮯ ﺩﮐﺎﻥ ﻣﯿﮟ ﺩﺍﺧﻞ ﮨﻮ ﮐﺮ ﺩﮐﺎﻧﺪﺍﺭ ﺳﮯ ﭘﻮﭼﮭﺎ :
"ﮐﯿﻠﻮﮞ ﮐﺎ ﮐﯿﺎ ﺑﮭﺎﺅ ﻟﮕﺎﯾﺎ ﮨﮯ؟
ﺩﮐﺎﻧﺪﺍﺭ ﻧﮯ ﺟﻮﺍﺏ ﺩﯾﺎ :
"ﮐﯿﻠﮯ 12 ﺩﺭﮨﻢ ﺍﻭﺭ ﺳﯿﺐ 10 ﺩﺭﮨﻢ۔

ﺍﺗﻨﮯ ﻣﯿﮟ ﺍﯾﮏ ﻋﻮﺭﺕ ﺑﮭﯽ ﺩﮐﺎﻥ ﻣﯿﮟ ﺩﺍﺧﻞ ﮨﻮﺋﯽ ﺍﻭﺭ ﮐﮩﺎ : " ﻣﺠﮭﮯ ﺍﯾﮏ ﮐﻠﻮ ﮐﯿﻠﮯ ﭼﺎﮨﯿﺌﮟ، ﮐﯿﺎ ﺑﮭﺎﺅ ﮨﮯ؟
ﺩﮐﺎﻧﺪﺍﺭ ﻧﮯ ﮐﮩﺎ : ﮐﯿﻠﮯ 3 ﺩﺭﮨﻢ ﺍﻭﺭﺳﯿﺐ 2 ﺩﺭﮨﻢ۔ ﻋﻮﺭﺕ ﻧﮯ ﺍﻟﺤﻤﺪ ﻟﻠﮧ ﭘﮍﮬﺎ۔
ﺩﮐﺎﻥ ﻣﯿﮟ ﭘﮩﻠﮯ ﺳﮯ ﻣﻮﺟﻮﺩ ﮔﺎﮨﮏ ﻧﮯ ﮐﮭﺎ ﺟﺎﻧﮯ ﻭﺍﻟﯽ ﻏﻀﺒﻨﺎﮎ ﻧﻈﺮﻭﮞ ﺳﮯ ﺩﮐﺎﻧﺪﺍﺭ ﮐﻮ ﺩﯾﮑﮭﺎ، ﺍﺱ ﺳﮯ ﭘﮩﻠﮯ ﮐﮧ ﮐﭽﮫ ﺍﻭﻝ ﻓﻮﻝ ﮐﮩﺘﺎ :
"ﺩﮐﺎﻧﺪﺍﺭ ﻧﮯ ﮔﺎﮨﮏ ﮐﻮ ﺁﻧﮑﮫ ﻣﺎﺭﺗﮯ ﮨﻮﺋﮯ ﺗﮭﻮﮌﺍ ﺍﻧﺘﻈﺎﺭ ﮐﺮﻧﮯ ﮐﻮ ﮐﮩﺎ۔
ﻋﻮﺭﺕ ﺧﺮﯾﺪﺍﺭﯼ ﮐﺮ ﮐﮯ ﺧﻮﺷﯽ ﺧﻮﺷﯽ ﺩﮐﺎﻥ ﺳﮯ ﻧﮑﻠﺘﮯ ﮨﻮﺋﮯ:
" ﺍﻟﻠﮧ ﺗﯿﺮﺍ ﺷﮑﺮ ﮨﮯ، ﻣﯿﺮﮮ ﺑﭽﮯ ﺍﻧﮩﯿﮟ ﮐﮭﺎ ﮐﺮ ﺑﮩﺖ ﺧﻮﺵ ﮨﻮﻧﮕﮯ۔
ﻋﻮﺭﺕ ﮐﮯ ﺟﺎﻧﮯ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ، ﺩﮐﺎﻧﺪﺍﺭ ﻧﮯ ﭘﮩﻠﮯ ﺳﮯ ﻣﻮﺟﻮﺩ ﮔﺎﮨﮏ ﮐﯽ ﻃﺮﻑ ﻣﺘﻮﺟﮧ ﮨﻮﺗﮯ ﮨﻮﺋﮯ ﮐﮩﺎ :
"ﺍﻟﻠﮧ ﮔﻮﺍﮦ ﮨﮯ، ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﺗﺠﮭﮯ ﮐﻮﺋﯽ ﺩﮬﻮﮐﺎ ﺩﯾﻨﮯ ﮐﯽ ﮐﻮﺷﺶ ﻧﮩﯿﮟ ﮐﯽ۔
ﯾﮧ ﻋﻮﺭﺕ ﭼﺎﺭ ﯾﺘﯿﻢ ﺑﭽﻮﮞ ﮐﯽ ﻣﺎﮞ ﮨﮯ۔ ﮐﺴﯽ ﺳﮯ ﺑﮭﯽ ﮐﺴﯽ ﻗﺴﻢ ﮐﯽ ﻣﺪﺩ ﻟﯿﻨﮯ ﮐﻮ ﺗﯿﺎﺭ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﮯ۔ ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﮐﺌﯽ ﺑﺎﺭ ﮐﻮﺷﺶ ﮐﯽ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﮨﺮ ﺑﺎﺭﻧﺎﮐﺎﻣﯽ ﮨﻮﺋﯽ ﮨﮯ۔ ﺍﺏ ﻣﺠﮭﮯ ﯾﮩﯽ ﻃﺮﯾﻘﮧ ﺳﻮﺟﮭﺎ ﮨﮯ ﮐﮧ ﺟﺐ ﮐﺒﮭﯽ ﺁﺋﮯ ﺗﻮ ﺍﺳﮯ ﮐﻢ ﺳﮯ ﮐﻢ ﺩﺍﻡ ﻟﮕﺎ ﮐﻮ ﭼﯿﺰ ﺩﯾﺪﻭﮞ۔ ﻣﯿﮟ ﭼﺎﮨﺘﺎ ﮨﻮﮞ ﮐﮧ ﺍﺱ ﮐﺎ ﺑﮭﺮﻡ ﻗﺎﺋﻢ ﺭﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﺍﺳﮯ ﻟﮕﮯ ﮐﮧ ﻭﮦ ﮐﺴﯽ ﮐﯽ ﻣﺤﺘﺎﺝ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﮯ۔ ﻣﯿﮟ ﯾﮧ ﺗﺠﺎﺭﺕ ﺍﻟﻠﮧ ﮐﮯ ﺳﺎﺗﮫ ﮐﺮﺗﺎ ﮨﻮﮞ ﺍﻭﺭ ﺍﺳﯽ ﮐﯽ ﺭﺿﺎ ﻭ ﺧﻮﺷﻨﻮﺩﯼ ﮐﺎ ﻃﺎﻟﺐ ﮨﻮﮞ۔

ﺩﮐﺎﻧﺪﺍﺭ ﮐﮩﻨﮯ ﻟﮕﺎ :
"ﯾﮧ ﻋﻮﺭﺕ ﮨﻔﺘﮯ ﻣﯿﮟ ﺍﯾﮏ ﺑﺎﺭ ﺁﺗﯽ ﮨﮯ۔ ﺍﻟﻠﮧ ﮔﻮﺍﮦ ﮨﮯ ﺟﺲ ﺩﻥ ﯾﮧ ﺁ ﺟﺎﺋﮯ، ﺍﺱ ﺩﻥ ﻣﯿﺮﯼ ﺑﮑﺮﯼ ﺑﮍﮪ ﺟﺎﺗﯽ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﺍﻟﻠﮧ ﮐﮯ ﻏﯿﺒﯽ ﺧﺰﺍﻧﮯ ﺳﮯ ﻣﻨﺎﻓﻊ ﺩﻭ ﭼﻨﺪ ﮨﻮﺗﺎ ﮨﮯ۔

ﮔﺎﮨﮏ ﮐﯽ ﺁﻧﮑﮭﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺁﻧﺴﻮ ﺁ ﮔﺌﮯ، ﺍﺱ ﻧﮯ ﺑﮍﮪ ﮐﺮ ﺩﮐﺎﻧﺪﺍﺭ ﮐﮯ ﺳﺮ ﭘﺮ ﺑﻮﺳﮧ ﺩﯾﺘﮯ ﮨﻮﺋﮯ ﮐﮩﺎ :
" ﺑﺨﺪﺍ ﻟﻮﮔﻮﮞ ﮐﯽ ﺿﺮﻭﺭﺗﻮﮞ ﮐﻮ ﭘﻮﺭﺍ ﮐﺮﻧﮯ ﻣﯿﮟ ﺟﻮ ﻟﺬﺕ ﻣﻠﺘﯽ ﮨﮯ ﺍﺳﮯ ﻭﮨﯽ ﺟﺎﻥ ﺳﮑﺘﺎ ﮨﮯ ﺟﺲ ﻧﮯ ﺁﺯﻣﺎﯾﺎ ﮨﻮ۔


بدھ، 28 جون، 2017

اللہ کی سنت ۔ عورتوں کے لئے

اللہ نے  محمدﷺ کو انسانی گناہوں سے معافی کے لئے اپنی سنت بتائی : جو سب   " الکتاب" (وحی متلو ) میں درج ہیں  اور اللہ تعالیٰ نے اِسے آفاقی سچائیوں کا انمٹ حصہ بنادیا ہے -
يَا أَيُّهَا النَّبِيُّ إِذَا جَاءَكَ الْمُؤْمِنَاتُ يُبَايِعْنَكَ عَلَىٰ أَن لَّا يُشْرِكْنَ بِاللَّـهِ شَيْئًا وَلَا يَسْرِقْنَ وَلَا يَزْنِينَ وَلَا يَقْتُلْنَ أَوْلَادَهُنَّ وَلَا يَأْتِينَ بِبُهْتَانٍ يَفْتَرِينَهُ بَيْنَ أَيْدِيهِنَّ وَأَرْجُلِهِنَّ وَلَا يَعْصِينَكَ فِي مَعْرُوفٍ ۙ فَبَايِعْهُنَّ وَاسْتَغْفِرْ لَهُنَّ اللَّـهَ ۖ إِنَّ اللَّـهَ غَفُورٌ رَّحِيمٌ ﴿12﴾  الممتحنة 

 اے النبی ! جب تیرے پاس المؤمنات آئیں ، تو ان سے بیعت لے ،
٭- یہ کہ وہ اللہ کے ساتھ کسی شئے کا شرک نہیں کریں گی ۔
٭- اور وہ  سرقہ نہیں کریں گی ،
٭- اور وہ  زنا نہیں کریں گی ،
٭- اور وہ اپنی اولادوں کو قتل نہیں کریں گی ،
٭- اور نہ ہی افتراء کیا ہوا بہتان ، اپنے ہاتھوں اور اپنے پاؤں کے سامنے لائیں گی (ایسی جگہ چل کر نہیں جائیں گی جہاں ، بھتان لگنے کا امکان ہو یا ان پر افترء کیا جاسکے یا خود اس کا حصہ بنیں گی ) ۔
٭- اور نہ ہی معروف (مروج قوانین) میں تیری معصیت کریں گی ۔
پس ان مؤمنات سے بیعت لے اور انس کے لئے استغفار کر (کہیں وہ معصومیت میں ان گناہوں کا شکار نہ کر دی جائیں ) بے شک اللہ غفور اور رحیم ھے

اللہ کی سنت ۔ گناہ سے معافی



اللہ نے  محمدﷺ کو انسانی گناہوں سے معافی کے لئے اپنی سنت بتائی : جو سب   " الکتاب" (وحی متلو ) میں درج ہیں  :
وَالَّذينَ لا يَدعونَ مَعَ اللَّهِ إِلٰهًا ءاخَرَ وَلا يَقتُلونَ النَّفسَ الَّتى حَرَّمَ اللَّهُ إِلّا بِالحَقِّ وَلا يَزنونَ ۚ وَمَن يَفعَل ذٰلِكَ يَلقَ أَثامًا ﴿68﴾
يُضٰعَف لَهُ العَذابُ يَومَ القِيٰمَةِ وَيَخلُد فيهِ مُهانًا ﴿69﴾
إِلّا مَن تابَ وَءامَنَ وَعَمِلَ عَمَلًا صٰلِحًا فَأُولٰئِكَ يُبَدِّلُ اللَّهُ سَيِّـٔاتِهِم حَسَنٰتٍ ۗ وَكانَ اللَّهُ غَفورًا رَحيمًا ﴿70﴾
وَمَن تابَ وَعَمِلَ صٰلِحًا فَإِنَّهُ يَتوبُ إِلَى اللَّهِ مَتابًا ﴿71﴾ سورة الفرقان  

اللہ سے معافی طلب کرنے کی شرائط :
مشرک ۔قاتل ۔  زانی ۔ شرابی ۔ چور ۔ حرام کھانے والے  ۔  پاکیزہ عورتوں پر تہمت لگانے والے ۔ ان کو اللہ پسند نہیں کرتا ۔ ان کی معافی کا میعار ۔
٭ -    زانی کی توبہ سو درے ھے ۔
الزَّانِيَةُ وَالزَّانِي فَاجْلِدُوا كُلَّ وَاحِدٍ مِّنْهُمَا مِائَةَ جَلْدَةٍ ۖ وَلَا تَأْخُذْكُم بِهِمَا رَأْفَةٌ فِي دِينِ اللَّـهِ إِن كُنتُمْ تُؤْمِنُونَ بِاللَّـهِ وَالْيَوْمِ الْآخِرِ ۖ وَلْيَشْهَدْ عَذَابَهُمَا طَائِفَةٌ مِّنَ الْمُؤْمِنِينَ  ﴿النور: 2﴾

٭ -  پاکباز عورت پر الزام لگانے والے کی توبہ اسی درے ھے ۔
وَالَّذِينَ يَرْمُونَ الْمُحْصَنَاتِ ثُمَّ لَمْ يَأْتُوا بِأَرْبَعَةِ شُهَدَاءَ فَاجْلِدُوهُمْ ثَمَانِينَ جَلْدَةً وَلَا تَقْبَلُوا لَهُمْ شَهَادَةً أَبَدًا ۚ وَأُولَـٰئِكَ هُمُ الْفَاسِقُونَ ﴿النور: 4﴾

٭ - سارق  و سارقہ کی توبہ ، قطع ید ھے ۔
وَالسَّارِقُ وَالسَّارِقَةُ فَاقْطَعُوا أَيْدِيَهُمَا جَزَاءً بِمَا كَسَبَا نَكَالًا مِّنَ اللَّـهِ ۗ وَاللَّـهُ عَزِيزٌ حَكِيمٌ  ﴿المائدة: 38﴾

٭ - قاتل کی توبہ ، خود کا قتل ھے۔ 
يَا أَيُّهَا الَّذِينَ آمَنُوا كُتِبَ عَلَيْكُمُ الْقِصَاصُ فِي الْقَتْلَى ۖ الْحُرُّ بِالْحُرِّ وَالْعَبْدُ بِالْعَبْدِ وَالْأُنثَىٰ بِالْأُنثَىٰ ۚ فَمَنْ عُفِيَ لَهُ مِنْ أَخِيهِ شَيْءٌ فَاتِّبَاعٌ بِالْمَعْرُوفِ وَأَدَاءٌ إِلَيْهِ بِإِحْسَانٍ ۗ ذَٰلِكَ تَخْفِيفٌ مِّن رَّبِّكُمْ وَرَحْمَةٌ ۗ فَمَنِ اعْتَدَىٰ بَعْدَ ذَٰلِكَ فَلَهُ عَذَابٌ أَلِيمٌ  ﴿البقرة: 178﴾

 ٭ - متفرّق جرائم کی سزائیں ۔ 
وَكَتَبْنَا عَلَيْهِمْ فِيهَا أَنَّ النَّفْسَ بِالنَّفْسِ وَالْعَيْنَ بِالْعَيْنِ وَالْأَنفَ بِالْأَنفِ وَالْأُذُنَ بِالْأُذُنِ وَالسِّنَّ بِالسِّنِّ وَالْجُرُوحَ قِصَاصٌ ۚ فَمَن تَصَدَّقَ بِهِ فَهُوَ كَفَّارَةٌ لَّهُ ۚ وَمَن لَّمْ يَحْكُم بِمَا أَنزَلَ اللَّـهُ فَأُولَـٰئِكَ هُمُ الظَّالِمُونَ ﴿المائدة: 45﴾
1- آنکھ نکالنے والے کی توبہ ، اس کی آنکھ نکالنا ھے ۔
2 - کان کاٹنے والے کی توبہ ، اپنا کان کٹوانا ھے ۔
3 - ناک کاٹنے والے کی توبہ ، اپنی ناک کٹوانا ھے ۔
4 - زبان کاٹنے والے کی توبہ ، اپنی زبان کٹوانا ھے ۔
5 - کسی کو زخم لگانے کی توبہ ، اتنا ھی زخم خود پر لگوانا ھے ۔
٭ - الخمر والميسر والانصاب والازلام ۔ کی توبہ ان سے مکمل چھٹکارا ھے ۔
يَا أَيُّهَا الَّذِينَ آمَنُوا إِنَّمَا الْخَمْرُ وَالْمَيْسِرُ وَالْأَنصَابُ وَالْأَزْلَامُ رِجْسٌ مِّنْ عَمَلِ الشَّيْطَانِ فَاجْتَنِبُوهُ لَعَلَّكُمْ تُفْلِحُونَ ﴿المائدة: 90﴾
٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭
وحی متلو میں محمد ﷺ نے ایمان والی عورتوں سے بیعت لی ہے ، اور اللہ تعالیٰ نے اِسے آفاقی سچائیوں کا انمٹ حصہ بنادیا ہے -
يَا أَيُّهَا النَّبِيُّ إِذَا جَاءَكَ الْمُؤْمِنَاتُ يُبَايِعْنَكَ عَلَىٰ أَن لَّا يُشْرِكْنَ بِاللَّـهِ شَيْئًا وَلَا يَسْرِقْنَ وَلَا يَزْنِينَ وَلَا يَقْتُلْنَ أَوْلَادَهُنَّ وَلَا يَأْتِينَ بِبُهْتَانٍ يَفْتَرِينَهُ بَيْنَ أَيْدِيهِنَّ وَأَرْجُلِهِنَّ وَلَا يَعْصِينَكَ فِي مَعْرُوفٍ ۙ فَبَايِعْهُنَّ وَاسْتَغْفِرْ لَهُنَّ اللَّـهَ ۖ إِنَّ اللَّـهَ غَفُورٌ رَّحِيمٌ ﴿12﴾  الممتحنة 
 اے النبی ! جب تیرے پاس المؤمنات آئیں ، تو ان سے بیعت لے ،
٭- یہ کہ وہ اللہ کے ساتھ کسی شئے کا شرک نہیں کریں گی ۔
٭- اور وہ  سرقہ نہیں کریں گی ،
٭- اور وہ  زنا نہیں کریں گی ،
٭- اور وہ اپنی اولادوں کو قتل نہیں کریں گی ،
٭- اور نہ ہی افتراء کیا ہوا بہتان ، اپنے ہاتھوں اور اپنے پاؤں کے سامنے لائیں گی (ایسی جگہ چل کر نہیں جائیں گی جہاں ، بھتان لگنے کا امکان ہو یا ان پر افترء کیا جاسکے یا خود اس کا حصہ بنیں گی ) ۔
٭- اور نہ ہی معروف (مروج قوانین) میں تیری معصیت کریں گی ۔
پس ان مؤمنات سے بیعت لے اور انس کے لئے استغفار کر (کہیں وہ معصومیت میں ان گناہوں کا شکار نہ کر دی جائیں ) بے شک اللہ غفور اور رحیم ھے

خیال رہے کہ "اُفق کے پار" یا میرے دیگر بلاگ کے،جملہ حقوق محفوظ نہیں ۔ !

افق کے پار
دیکھنے والوں کو اگر میرا یہ مضمون پسند آئے تو دوستوں کو بھی بتائیے ۔ اگر آپ کو شوق ہے کہ زیادہ لوگ آپ کو پڑھیں تو اپنا بلاگ بنائیں ۔