میرے چاروں طرف افق ہے جو ایک پردہء سیمیں کی طرح فضائے بسیط میں پھیلا ہوا ہے،واقعات مستقبل کے افق سے نمودار ہو کر ماضی کے افق میں چلے جاتے ہیں،لیکن گم نہیں ہوتے،موقع محل،اسے واپس تحت الشعور سے شعور میں لے آتا ہے، شعور انسانی افق ہے،جس سے جھانک کر وہ مستقبل کےآئینہ ادراک میں دیکھتا ہے ۔
دوستو ! اُفق کے پار سب دیکھتے ہیں ۔ لیکن توجہ نہیں دیتے۔ آپ کی توجہ مبذول کروانے کے لئے "اُفق کے پار" یا میرے دیگر بلاگ کے،جملہ حقوق محفوظ نہیں ۔ پوسٹ ہونے کے بعد یہ آپ کے ہوئے ، آپ انہیں کہیں بھی کاپی پیسٹ کر سکتے ہیں ، کسی اجازت کی ضرورت نہیں !( مہاجرزادہ)

فیس بک کے دیوانے

پیر، 8 جون، 2015

فرض و نوافل

ﺗﺮﺍﻭﯾﺢ ﮐﯽ ﺭﮐﻌﺘﯿﮟ ﺑﯿﺲ ﮨﯽ ﮨﯿﮟ؟ 
’’ ﻧﮩﯿﮟ ﺣﻀﻮﺭؐ ﺳﮯ ﺻﺮﻑ ﺍٓٹھ ﮨﯽ ﺛﺎﺑﺖ ﮨﯿﮟ۔ ‘‘  ﺣﻀﺮﺕ ﻋﻤﺮؓ ﮐﮯ ﺩﻭﺭ ﻣﯿﮟ ﺻﺤﺎﺑﮧؓ ﻧﮯ ﺑﯿﺲ ﺭﮐﻌﺘﯿﮟ ﺟﻤﺎﻋﺖ ﮐﮯ ﺳﺎﺗﮫ ﺍﺩﺍ ﮐﯽ ﺗﮭﯿﮟ ‘ ﮐﯿﺎ ﺍﻧﮩﻮﮞ ﻧﮯ ﻏﻠﻂ ﮐﯿﺎ؟ ‘‘ 
’’ ﺑﯿﺲ ﮐﯽ ﺩﻟﯿﻞ ﮐﻤﺰﻭﺭ ﮨﮯ ‘ ﮨﻢ ﻧﮯ ﺗﻮ ﺍﭘﻨﮯ ﺑﺰﺭﮔﻮﮞ ﮐﻮ ﺍٓﭨﮫ ﭘﮍﮬﺘﮯ ﮨﯽ ﺩﯾﮑﮭﺎ ﮨﮯ۔ ‘‘ 
’’ ﺍٓٹھ ﮐﯽ ﺩﻟﯿﻞ ﮐﻤﺰﻭﺭ ﮨﮯ ﮨﻢ ﺗﻮ ﺑﯿﺲ ﮨﯽ ﭘﮍﮬﯿﮟ ﮔﮯ۔ ‘‘ 
ﻗﺎﮨﺮﮦ ﺳﮯ ﺩﻭﺭ ﺍﯾﮏ ﮔﺎﺋﻮﮞ ﮐﯽ ﻣﺴﺠﺪ ﻣﯿﮟ ﻣﺎﮦ ﺭﻣﻀﺎﻥ ﮐﯽ ﺍﯾﮏ ﺷﺐ ﻧﻤﺎﺯﯾﻮﮞ ﮐﮯ ﺩﺭﻣﯿﺎﻥ ﺗﮑﺮﺍﺭ ﮨﻮﺭﮨﯽ ﺗﮭﯽ۔ ﺍﺱ ﺳﮯ ﭘﮩﻠﮯ ﯾﮧ ﮐﮧ ﺗﮑﺮﺍﺭ ﻟﮍﺍﺋﯽ ﺗﮏ ﭘﮩﻨﭽﺘﯽ ‘ ﺍﯾﮏ ﺍﺟﻨﺒﯽ ﺍٓﺩﻣﯽ ﺟﻮ ﺍﻧﮩﯿﮟ ﺷﮑﻞ ﻭ ﺻﻮﺭﺕ ﺳﮯ ﻋﻠﻤﯽ ﻭﺟﺎﮨﺖ ﮐﺎ ﺣﺎﻣﻞ ﻧﻈﺮ ﺍٓﺗﺎ ﺗﮭﺎ ﺍﭨﮭﺎ ﺍﻭﺭ ﺑﺎﺍٓﻭﺍﺯ ﺑﻠﻨﺪ ﮐﮩﻨﮯ ﻟﮕﺎ۔ 
’’ ﺍﯾﮭﺎ ﺍﻻﺧﻮﺍﻥ ! ﺍﺟﻨﺒﯽ ﮐﯽ ﺍٓﻭﺍﺯ ﮐﯽ ﮔﮭﻦ ﮔﺮﺝ ﮐﭽﮫ ﺍﯾﺴﯽ ﺗﮭﯽ ﮐﮧ ﺑﺤﺚ ﮐﺮﻧﮯ ﻭﺍﻟﮯ ﺍﺱ ﮐﯽ ﻃﺮﻑ ﻣﺘﻮﺟﮧ ﮨﻮﻧﮯ ﻟﮕﮯ۔
 ﻣﯿﮟ ﺗﺮﺍﻭﯾﺢ ﮐﮯ ﻣﺴﺌﻠﮧ ﭘﺮﺍٓﭖ ﮐﯽ ﺑﺤﺚ ﮐﺎﻓﯽ ﺩﯾﺮ ﺳﮯ ﺳﻦ ﺭﮨﺎ ﮨﻮﮞ ‘ ﻣﺴﺠﺪ ﻣﯿﮟ ﺷﻮﺭﻭ ﻏﻞ ﮐﺮﻧﺎ ﺍٓﺩﺍﺏ ﻣﺴﺠﺪ ﮐﮯ ﺧﻼﻑ ﮨﮯ ﺟﺒﮑﮧ ﺍٓﭖ ﮐﯽ ﺑﺤﺚ ﺟﮭﮕﮍﮮ ﺍﻭﺭ ﻟﮍﺍﺋﯽ ﮐﯽ ﺻﻮﺭﺕ ﺍﺧﺘﯿﺎﺭ ﮐﺮ ﭼﮑﯽ ﮨﮯ۔ ﻣﺴﺌﻠﮧ ﺑﺠﺎﺋﮯ ﺳﻠﺠﮭﻨﮯ ﮐﮯ ﺍ ﻟﺠﮭﺘﺎ ﺟﺎﺭﮨﺎ ﮨﮯ۔ ﺍﮔﺮ ﺍٓﭖ ﻣﯿﺮﮮ ﺩﻭ ﺳﻮﺍﻟﻮﮞ ﮐﺎ ﺟﻮﺍﺏ ﺩﮮ ﺩﯾﮟ ﺗﻮ ﺷﺎﯾﺪ ﻣﺴﺌﻠﮧ ﺳﻠﺠﮫ ﺟﺎﺋﮯ۔ ﮐﯿﺎ ﺍٓﭖ ﻣﺠﮭﮯ ﺍﺱ ﺑﺎﺕ ﮐﯽ ﺍﺟﺎﺯﺕ ﺩﯾﮟ ﮔﮯ؟
 ‘‘ ’’ ﺟﯽ ﺟﯽ ﺍٓﭖ ﻓﺮﻣﺎﺋﯿﮯ ﻣﺴﺌﻠﮧ ﺳﻠﺠﮭﻨﺎ ﭼﺎﮨﯿﮯ۔ ‘‘ 
ﮐﺌﯽ ﺍٓﻭﺍﺯﯾﮟ ﻣﺨﺘﻠﻒ ﺍﻃﺮﺍﻑ ﺳﮯ ﺑﻠﻨﺪ ﮨﻮﺋﯿﮟ۔
’’ ﺳﻮﺍﻝ ﯾﮧ ﮨﮯ۔ ‘‘ ﺍﺟﻨﺒﯽ ﻧﮯ ﻟﻮﮔﻮﮞ ﮐﻮ ﺍﭘﻨﯽ ﻃﺮﻑ ﻣﺘﻮﺟﮧ ﮐﺮﺗﮯ ﮨﻮﺋﮯ ﮐﮩﺎ ﮐﮧ
 
ﺗﺮﺍﻭﯾﺢ ﮐﺎ ﺷﺮﻋﯽ ﺣﮑﻢ ﮐﯿﺎ ﮨﮯ؟ ﯾﻌﻨﯽ ﯾﮧ ﻓﺮﺽ ﮨﮯ ﺳﻨﺖ ﻣﻮﮐﺪﮦ ﮨﮯ ﯾﺎ ﻧﻔﻞ ﮨﮯ؟ 
‘‘ ﯾﮧ ﻧﻔﻞ ﮨﮯ ‘ ﯾﮧ ﻧﻔﻞ ﮨﮯ۔ ‘‘ ﺑﯿﮏ ﻭﻗﺖ ﮐﺌﯽ ﺍٓﻭﺍﺯﯾﮟ ﺑﻠﻨﺪ ﮨﻮﺋﯿﮟ۔
  ﺑﮩﺖ ﺧﻮﺏ ! ﺍﭼﮭﺎ ! ﺍﺏ ﯾﮧ ﺑﺘﺎﯾﺌﮯ ﮐﮧ ﺍﺳﻼﻡ ﻣﯿﮟ ﻣﺴﻠﻤﺎﻧﻮﮞ ﮐﮯ ﺍﺗﺤﺎﺩ ﻭ ﺍﺗﻔﺎﻕ ﺍﻭﺭ ﺍﺧﻮﺕ ﻭ ﻣﺤﺒﺖ ﮐﮯ ﺑﺎﺭﮮ ﻣﯿﮟ ﮐﯿﺎ ﺣﮑﻢ ﮨﮯ۔ ﯾﮧ ﻓﺮﺽ ﮨﮯ ﯾﺎ ﻧﻔﻞ؟  
’’ ﻓﺮﺽ ﮨﮯ۔ ﻓﺮﺽ ﮨﮯ۔ ‘‘ ﻟﻮﮔﻮﮞ ﻧﮯ ﺟﻮﺍﺏ ﺩﯾﺎ۔
’’ ﺍﯾﮭﺎ ﺍﻻﺧﻮﺍﻥ ! ﻧﻔﻞ ﻭﮦ ﻓﻌﻞ ﮨﮯ ﮐﮧ ﺍﮔﺮ ﮐﺴﯽ ﻭﻗﺖ ﺍﺳﮯ ﻧﮧ ﮐﯿﺎ ﺟﺎﺋﮯ ﺗﻮ ﺍٓﺩﻣﯽ ﮔﻨﺎﮦ ﮔﺎﺭ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﻮﺗﺎ ﺟﺒﮑﮧ ﻓﺮﺽ ﻭﮦ ﭼﯿﺰ ﮨﮯ ﺟﺲ ﮐﮯ ﺿﺎﺋﻊ ﮨﻮﻧﮯ ﺳﮯ ﺍﻧﺴﺎﻥ ﮔﻨﺎﮦ ﮔﺎﺭ ﮨﻮﺗﺎ ﮨﮯ۔ ‘‘ ﮐﯿﺎ ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﺻﺤﯿﺢ ﮐﮩﺎ؟
’’ ﺟﯽ ﺑﺎﻟﮑﻞ ﭨﮭﯿﮏ۔ ‘‘ ﻣﺠﻤﻊ ﻧﮯ ﭘﻮﺭﯼ ﺗﻮﺟﮧ ﺳﮯ ﺟﻮﺍﺏ ﺩﯾﺎ۔
’’ ﻭ ﺍﻋﺘﺼﻤﻮﺍ ﺑﺤﺒﻞ ﺍﻟﻠﮧ ﺟﻤﻌﯿﺎً ﻭ ﻻ ﺗﻔﺮﻗﻮﺍ ‘‘ ﮐﺎ ﺍﺭﺷﺎﺩ ﺍﻟٰﮩﯽ ﮨﻤﯿﮟ ﺍﺱ ﮐﯽ ﺭﺳﯽ ﮐﻮ ﻣﻞ ﮐﺮ ﻣﻀﺒﻮﻃﯽ ﺳﮯ ﺗﮭﺎﻣﻨﮯ ﮐﺎ ﺣﮑﻢ ﺩﯾﺘﺎ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﻓﺮﻗﮧ ﻓﺮﻗﮧ ﮨﻮﻧﮯ ﺳﮯ ﻣﻨﻊ ﮐﺮﺗﺎ ﮨﮯ ﮐﯿﻮﻧﮑﮧ ﺟﮭﮕﮍﮮ ﺍﻭﺭ ﺗﻨﺎﺯﻉ ﺳﮯ ﻣﺴﻠﻤﺎﻧﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﮐﻢ ﮨﻤﺘﯽ ﭘﯿﺪﺍ ﮨﻮﮔﯽ ﺍﻭﺭ ﺍﻥ ﮐﯽ ﮨﻮﺍ ﺍﮐﮭﮍ ﺟﺎﺋﮯ ﮔﯽ۔ ’’ ﻭﻻ ﺗﻨﺎﺯﻋﻮﺍ ﻓﺘﻔﺸﻠﻮﺍ ﻭ ﺗﺬﮬﺐ ﺭﯾﺤﮑﻢ۔ ‘‘ ﺗﺮﺍﻭﯾﺢ ﻧﻔﻞ ﮨﮯ۔ﺍﺗﺤﺎﺩ ﻓﺮﺽ ﮨﮯ۔ ﺍﺏ ﺍٓﭖ ﻣﺠﮭﮯ ﺑﺘﺎﯾﺌﮯ ﮐﮧ ﺟﻮ ﺷﺨﺺ ﺍﯾﮏ ﻧﻔﻞ ﮐﮯ ﻗﯿﺎﻡ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﻣﺴﻠﻤﺎﻧﻮﮞ ﮐﮯ ﺩﺭﻣﯿﺎﻥ ﺗﻔﺮﯾﻖ ﺍﻭﺭ ﺍﻧﺘﺸﺎﺭ ﭘﯿﺪﺍ ﮐﺮﮮ ﺍﯾﺴﺎ ﺷﺨﺺ ﺩﯾﻦ ﻭ ﻣﻠﺖ ﮐﺎ ﺧﯿﺮ ﺧﻮﺍﮦ ﮨﻮﮔﺎ ﯾﺎ ﺩﺷﻤﻦ؟ ’’
ﺩﺷﻤﻦ ! ﺩﺷﻤﻦ ‘‘ ﭘﻮﺭ ﺍ ﻣﺠﻤﻊ ﺑﯿﮏ ﺯﺑﯿﺎﻥ ﮨﻮ ﮐﺮ ﺑﻮﻻ۔
’’ ﺗﻤﮩﺎﺭﺍ ﺩﺷﻤﻦ ﺗﻤﮩﺎﺭﺍ ﺍﺗﺤﺎﺩ ﭼﺎﮨﺘﺎ ﮨﮯ ﯾﺎ ﺍﻧﺘﺸﺎﺭ؟
’’ ‘‘ ﺍﻧﺘﺸﺎﺭ۔ ‘‘
’’ ﺍﺏ ﺳﻮﭼﺌﮯ ﮐﮧ ﺟﻮ ﺷﺨﺺ ﺣﻀﻮﺭ ﺍﮐﺮﻡؐ ﮐﯽ ﺍﻣﺖ ﻣﯿﮟ ﺍﻧﺘﺸﺎﺭ ﭘﯿﺪﺍ ﮐﺮﻧﺎ ﭼﺎﮨﺘﺎ ﮨﮯ، ﻭﮦ ﺣﻀﻮﺭﺍﮐﺮﻡؐ ﮐﺎ ﺻﺤﯿﺢ ﭘﯿﺮﻭﮐﺎﺭ ﮨﻮﺳﮑﺘﺎ ﮨﮯ؟ ‘‘
’’ ﺣﻀﻮﺭ ﺍﮐﺮﻡؐ ﮐﺎ ﭘﯿﺮﻭﮐﺎﺭ ﻧﮩﯿﮟ ‘ ﻭﮦ ﺩﺷﻤﻦ ﮐﺎ ﺍﯾﺠﻨﭧ ﮨﯽ ﮨﻮﺳﮑﺘﺎ ﮨﮯ۔ ‘‘ ﺍﯾﮏ ﻧﻮﺟﻮﺍﻥ ﻧﮯ ﮐﮭﮍﮮ ﮨﻮ ﮐﺮ ﺟﺬﺑﺎﺕ ﺳﮯ ﻣﻐﻠﻮﺏ ﺍٓﻭﺍﺯ ﻣﯿﮟ ﮐﮩﺎ۔
’’ ﺍﺏ ﺟﻮ ﻟﻮﮒ ﺍﯾﺴﺎ ﮐﺎﻡ ﮐﺮﯾﮟ ﺗﻤﮩﺎﺭﺍ ﮐﺎﻡ ﺍﻧﮩﯿﮟ ﺭﻭﮐﻨﺎ ﺍﻭﺭ ﺳﻤﺠﮭﺎﻧﺎ ﮨﮯ ﯾﺎ ﺍﻥ ﮐﺎ ﺳﺎتھ ﺩﯾﻨﺎ ﮨﮯ؟ ‘‘
’’ ﮨﻢ ﺍﻧﮩﯿﮟ ﺭﻭﮐﯿﮟ ﮔﮯ؟ ’’
‘‘ ﺗﻤﮩﯿﮟ ﺍٓٹھ ﺍﻭﺭ ﺑﯿﺲ ﺗﺮﺍﻭﯾﺢ ﮐﺎ ﻣﺴﺌﻠﮧ ﺯﯾﺎﺩﮦ ﻋﺰﯾﺰ ﮨﮯ ﯾﺎ ﻣﺴﻠﻤﺎﻧﻮﮞ ﮐﺎ ﺍﺗﺤﺎﺩ؟ ‘‘
’’ ﺍﺗﺤﺎﺩ، ﺍﺗﺤﺎﺩ۔ ‘‘
 ﺍﯾﮭﺎ ﺍﻻﺧﻮﺍﻥ ! ﺍﮔﺮ ﺗﻢ ﺍﺗﺤﺎﺩ ﭼﺎﮨﺘﮯ ﮨﻮ ﺗﻮ ﺍﺱ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﺗﻤﮩﯿﮟ ﺗﮭﻮﮌﯼ ﺳﯽ ﻗﺮﺑﺎﻧﯽ ﺩﯾﻨﺎ ﮨﻮﮔﯽ۔ ﮐﯿﺎ ﺗﻢ ﯾﮧ ﻗﺮﺑﺎﻧﯽ ﺩﻭ ﮔﮯ؟ 
’’ ﮨﻢ ﮨﺮ ﻃﺮﺡ ﮐﯽ ﻗﺮﺑﺎﻧﯽ ﺩﯾﮟ ﮔﮯ۔ ‘‘
’’ ﻗﺮﺑﺎﻧﯽ ﺻﺮﻑ ﺍﺗﻨﯽ ﮨﮯ ﮐﮧ ﺗﻤﮩﯿﮟ ﺟﺲ ﺍﻣﺎﻡ ﯾﺎ ﺍﭘﻨﯽ ﺗﺤﻘﯿﻖ ﭘﺮ ﺍﻋﺘﻤﺎﺩ ﻭ ﺍﻃﻤﯿﻨﺎﻥ ﮨﮯ ‘ ﺍﺱ ﭘﺮ ﻋﻤﻞ ﮐﺮﻭ۔ ﺩﻭﺳﺮﻭﮞ ﮐﻮ ﺩﻟﯿﻞ ﺳﮯ ﺳﻤﺠﮭﺎﺋﻮ ﻟﯿﮑﻦ ﺩﻭﺳﺮﮮ ﮐﺎ ﺑﮭﯽ ﺍﺱ ﮐﯽ ﺭﺍﺋﮯ ﺍﻭﺭ ﺗﺤﻘﯿﻖ ﭘﺮ ﭼﻠﻨﮯ ﮐﺎ ﺣﻖ ﺗﺴﻠﯿﻢ ﮐﺮﻭ ﮐﯿﻮﻧﮑﮧ ﮨﺮ ﻣﺴﻠﻤﺎﻥ ﺍﭘﻨﮯ ﻣﻮﻗﻒ ﮐﯽ ﺳﭽﺎﺋﯽ ﮐﮯ ﺛﺒﻮﺕ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﻗﺮﺍٓﻥ ﻭ ﺳﻨﺖ ﺳﮯ ﮨﯽ ﺩﻟﯿﻞ ﭘﯿﺶ ﮐﺮﺗﺎ ﮨﮯ۔ ﮐﻮﺋﯽ ﺍﻧﺠﯿﻞ ﯾﺎ ﺗﻮﺭﺍﺕ ﺳﮯ ﺍﺳﺘﺪ ﻻﻝ ﻧﮩﯿﮟ ﮐﺮﺗﺎ۔ ﺗﻌﺒﯿﺮ ﻭ ﺗﺸﺮﯾﺢ ﻣﯿﮟ ﺍﺧﺘﻼﻑ ﮨﻮﻧﺎ ﻓﻄﺮﯼ ﺍﻣﺮ ﮨﮯ۔ ﻓﺮﻭﻋﯽ ﻣﺴﺎﺋﻞ ﻣﯿﮟ ﺟﻮ ﺟﺲ ﺭﺍﺋﮯ ﮐﻮ ﻣﻨﺎﺳﺐ ﺳﻤﺠﮭﮯ ‘ ﺍﺱ ﭘﺮ ﻋﻤﻞ ﮐﺮﮮ ﺟﺒﮑﮧ ﺩﯾﻦ ﮐﮯ ﺑﻨﯿﺎﺩﯼ ﺍﻭﺭ ﻣﺘﻔﻘﮧ ﻣﺴﺎﺋﻞ ﮐﻮ ﻋﻤﻠﯽ ﺯﻧﺪﮔﯽ ﻣﯿﮟ ﻧﺎﻓﺬ ﮐﺮﻧﮯ ﮐﯿﻠﺌﮯ ﺗﻤﺎﻡ ﻟﻮﮒ ﻣﻞ ﺟﻞ ﮐﺮ ﺯﻭﺭ ﻟﮕﺎﺋﯿﮟ۔ ﺗﻤﮩﺎﺭﺍ ﺩﺷﻤﻦ ﺍﻧﮕﺮﯾﺰ ﮨﻮ ﯾﺎ ﯾﮩﻮﺩﯼ ‘ ﻭﮦ ﺗﻢ ﭘﺮ ﮔﻮﻟﯽ ﭼﻼﺗﮯ ﮨﻮﺋﮯ ﯾﮧ ﻓﺮﻕ ﻧﮩﯿﮟ ﮐﺮﮮ ﮔﺎ ﮐﮧ ﻓﻼﮞ ﺷﺎﻓﻌﯽ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﻓﻼﮞ ﺣﻨﻔﯽ۔ ﻓﻼﮞ ﺍٓﭨﮫ ﺗﺮﺍﻭﯾﺢ ﭘﮍﮬﺘﺎ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﻓﻼﮞ ﺑﯿﺲ۔ ﺍﺱ ﮐﯽ ﻧﻈﺮ ﻣﯿﮟ ﺗﻤﺎﻡ ﮐﻠﻤﮧ ﮔﻮ ﺍﺱ ﮐﮯ ﺩﺷﻤﻦ ﮨﯿﮟ۔ ﺍﺱ ﮐﯽ ﮐﺎﻣﯿﺎﺑﯽ ﺍﺱ ﻣﯿﮟ ﮨﮯ ﮐﮧ ﺗﻤﮩﯿﮟ ﺍٓﭘﺲ ﻣﯿﮟ ﻟﮍﺍﺋﮯ ﺭﮐﮭﺎ۔ ﺍﺱ ﻟﯿﮯ ﺍٓﺝ ﺿﺮﻭﺭﺕ ﯾﮧ ﮨﮯ ﮐﮧ ﮨﻢ ﻓﺮﻭﻋﯽ ﺍﺧﺘﻼﻓﺎﺕ ﺳﮯ ﺑﺎﻻﺗﺮ ﮨﻮ ﮐﺮ ﮐﻔﺮ ﻭ ﻇﻠﻢ ﮐﮯ ﺧﻼﻑ ﻣﺘﺤﺪ ﮨﻮﺟﺎﺋﯿﮟ ﺍﻭﺭ ﺧﻮﺩ ﮐﻮ ﺻﺤﯿﺢ ﻣﺴﻠﻤﺎﻥ ﺑﻨﺎﺋﯿﮟ۔ ‘‘
ﺍﺟﻨﺒﯽ ﮐﯽ ﺗﻘﺮﯾﺮ ﺧﺘﻢ ﮨﻮﺋﯽ ﺗﻮ ﻟﻮﮒ ﮐﮭﮍﮮ ﮨﻮ ﮐﺮ ﺍﻧﺘﮩﺎﺋﯽ ﻋﻘﯿﺪﺕ ﻭ ﺍﺣﺘﺮﺍﻡ ﮐﮯ ﺳﺎﺗﮫ ﺍﺳﮯ ﻣﻠﻨﮯ ﻟﮕﮯ۔ ﮔﺎﺋﻮﮞ ﮐﺎ ﺍﯾﮏ ﻭﺟﯿﮩﮧ ﺷﺨﺺ ﺟﻮ ﺍﭘﻨﮯ ﻟﺒﺎﺱ ﺍﻭﺭ ﭼﮩﺮﮮ ﺳﮯ ﺍﯾﮏ ﻣﺘﻤﻮﻝ ﺍﻭﺭ ﻣﻌﺰﺯ ﺍٓﺩﻣﯽ ﺩﮐﮭﺎﺋﯽ ﺩﯾﺘﺎ ﺗﮭﺎ ‘ ﺍٓﮔﮯ ﺑﮍﮬﺎ ﺍﻭﺭ ﺍﺱ ﻧﮯ ﺍ ﺟﻨﺒﯽ ﺳﮯ ﭘﻮﭼﮭﺎ ’’ : ﻣﯿﮟ ﺍٓﭖ ﮐﯽ ﺑﺎﺗﻮﮞ ﺳﮯ ﺑﮩﺖ ﻣﺘﺎﺛﺮ ﮨﻮﺍ ‘ ﺍٓﭖ ﺍﭘﻨﺎ ﺗﻌﺎﺭﻑ ﮐﺮﻭﺍﺋﯿﮟ ﺗﻮ ﻣﮩﺮﺑﺎﻧﯽ ﮨﻮﮔﯽ۔ ‘‘
’’ ﻣﯿﺮﺍ ﻧﺎﻡ ﺣﺴﻦ ﺍﻟﺒﻨﺎ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﻣﯿﮟ ﻗﺎﮨﺮﮦ ﻣﯿﮟ ﺭﮨﺘﺎ ﮨﻮﮞ !!!




خیال رہے کہ "اُفق کے پار" یا میرے دیگر بلاگ کے،جملہ حقوق محفوظ نہیں ۔ !

افق کے پار
دیکھنے والوں کو اگر میرا یہ مضمون پسند آئے تو دوستوں کو بھی بتائیے ۔ اگر آپ کو شوق ہے کہ زیادہ لوگ آپ کو پڑھیں تو اپنا بلاگ بنائیں ۔