میرے چاروں طرف افق ہے جو ایک پردہء سیمیں کی طرح فضائے بسیط میں پھیلا ہوا ہے،واقعات مستقبل کے افق سے نمودار ہو کر ماضی کے افق میں چلے جاتے ہیں،لیکن گم نہیں ہوتے،موقع محل،اسے واپس تحت الشعور سے شعور میں لے آتا ہے، شعور انسانی افق ہے،جس سے جھانک کر وہ مستقبل کےآئینہ ادراک میں دیکھتا ہے ۔
دوستو ! اُفق کے پار سب دیکھتے ہیں ۔ لیکن توجہ نہیں دیتے۔ آپ کی توجہ مبذول کروانے کے لئے "اُفق کے پار" یا میرے دیگر بلاگ کے،جملہ حقوق محفوظ نہیں ۔ پوسٹ ہونے کے بعد یہ آپ کے ہوئے ، آپ انہیں کہیں بھی کاپی پیسٹ کر سکتے ہیں ، کسی اجازت کی ضرورت نہیں !( مہاجرزادہ)

فیس بک کے دیوانے

بدھ، 16 ستمبر، 2015

درد،بھوک اور فاقے

مارچ 1993 میں کیون کارٹر نے یہ تصویر کھینچی اس تصویر نے انعام بھی جیتا تھا۔۔

یہ تصویر سوڈان میں لی گئی جب وہاں خوراک کا قحط تھا اور اقوام متحدہ کے تحت وہاں وہاں خوراک کے مراکز قائم کیے گئے تھے۔
فوٹو گرافر کیون کارٹر کے مطابق وہ ان خوراک کے مراکز کی فوٹو گرافی کرنے جا رہا تھا جب راستے میں اس لڑکے کو دیکھا جو کہ انہی مراکز کی جانب جانے کی کوشش میں تھا لیکن بھوک کمزوری فاقوں کی وجہ سے اس کا یہ حال تھا کہ اس سے ایک قدم اٹھانا دوبھر تھا
آخر یہ لڑکا تھک ہار کر گر گیا اور زمین سے سر لگا دیا۔۔
تصویر میں دیکھیں پیچھے ایک گدھ موجود ہے جو کہ اس انتظار میں ہے کب یہ لڑکا مرے کب میں اسے کھاوں
بس اسی منظر نے اس تصویر کی تاریخ کو آنسووں سے بھر دیا
کیون کارٹر نے یہ تصویر نیو یارک ٹائمز کو بیچی اور نیویارک ٹائمز کے مطابق جب انھوں نے یہ تصویر شائع کی تو ایک دن میں ان سے ہزاروں لوگوں نے رابطہ کیا اور اس لڑکے کا انجام جاننا چاہا کہ کیایہ بچ گیا تھا؟

لیکن نیو یارک ٹائمز والے خود اس کے انجام سے بے خبر تھے
بات یہیں ختم نہیں ہوتی-

فوٹوگرافر کیون کارٹر جس نے یہ سارا منظر کیمرے میں قید کیا وہ اس تصویر کے بعد اکثر اداس رہنے لگا اور ڈپریشن کا مریض بن گیا آخر اس میں موجود منظر نے اس فوٹو گرافر کو اپنی جان لینے پر مجبور کر دیا
کیون نے تینتیس سال کی عمر میں خود کشی کر لی اس کی خود کشی کا طریقہ بھی بہت عجیب تھا-
وہ اپنے گھر کے پاس والے اس میدان میں گیا جہاں وہ بچپن میں کھیلتا تھا اس نے اپنے کار کے سائلنسرمیں ایک ٹیوب فکس کی اور اس ٹیوب کو ڈرائیورنگ سیٹ والی کھڑکی سے کار کے اندر لے آیا تمام کھڑکیاں تمام دروزے لاک کر دیے اور گاڑی اسٹارٹ کر دی۔۔گاڑی میں سائلنسر سے نکلتا ہوا دھواں بھرنا شروع ہوا دھویں میں کاربن مونو آکسائیڈ ہوتی ہے جو کہ جان لیوا ہوتی ہے اسی کاربن مونو آکسائیڈ نے کیون کی جان لے لی
اس نے جو تحریر چھوڑی اس کا ایک حصہ یہ بھی تھا

" درد،بھوک اور فاقوں سے مرتے بچوں کی لاشوں کا مجھ پر سایہ ہے."


٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭
 Born into all-white community in the South African city of Pretoria, Kevin Carter was said to have had a strong social conscience from a young age. As a child he questioned how his “liberal” family could be “lackadaisical” about fighting apartheid; while serving out his conscription in the air force division of the South African Defence Force (a military organization which was often used to enforce apartheid policies) he would be severely beaten for defending a black waiter who was being insulted by other servicemen۔
Kevin Carter was an award-winning South African photojournalist best known for his Pulitzer Prize winning photograph of a starving child being coolly eyed by a vulture during the Sudanese famine in 1993 ۔


Born into all-white community in the South African city of Pretoria, Kevin Carter was said to have had a strong social conscience from a young age. As a child he questioned how his “liberal” family could be “lackadaisical” about fighting apartheid; while serving out his conscription in the air force division of the South African Defence Force (a military organization which was often used to enforce apartheid policies) he would be severely beaten for defending a black waiter who was being insulted by other servicemen. - See more at: http://www.roads.co/S=0/roads-blog/documentary-the-death-of-kevin-carter-by-dan-krauss/#sthash.Gn5d1Y4o.dpuf
Born into all-white community in the South African city of Pretoria, Kevin Carter was said to have had a strong social conscience from a young age. As a child he questioned how his “liberal” family could be “lackadaisical” about fighting apartheid; while serving out his conscription in the air force division of the South African Defence Force (a military organization which was often used to enforce apartheid policies) he would be severely beaten for defending a black waiter who was being insulted by other servicemen. - See more at: http://www.roads.co/S=0/roads-blog/documentary-the-death-of-kevin-carter-by-dan-krauss/#sthash.Gn5d1Y4o.dpuf
Born into all-white community in the South African city of Pretoria, Kevin Carter was said to have had a strong social conscience from a young age. As a child he questioned how his “liberal” family could be “lackadaisical” about fighting apartheid; while serving out his conscription in the air force division of the South African Defence Force (a military organization which was often used to enforce apartheid policies) he would be severely beaten for defending a black waiter who was being insulted by other servicemen. - See more at: http://www.roads.co/S=0/roads-blog/documentary-the-death-of-kevin-carter-by-dan-krauss/#sthash.Gn5d1Y4o.dpuf
 ٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭
Born into all-white community in the South African city of Pretoria, Kevin Carter was said to have had a strong social conscience from a young age. As a child he questioned how his “liberal” family could be “lackadaisical” about fighting apartheid; while serving out his conscription in the air force division of the South African Defence Force (a military organization which was often used to enforce apartheid policies) he would be severely beaten for defending a black waiter who was being insulted by other servicemen. - See more at: http://www.roads.co/S=0/roads-blog/documentary-the-death-of-kevin-carter-by-dan-krauss/#sthash.Gn5d1Y4o.dpuf



 کیا پاکستان سے درد ، بھوک اور فاقے ختم ہو گئے ہیں ؟









خیال رہے کہ "اُفق کے پار" یا میرے دیگر بلاگ کے،جملہ حقوق محفوظ نہیں ۔ !

افق کے پار
دیکھنے والوں کو اگر میرا یہ مضمون پسند آئے تو دوستوں کو بھی بتائیے ۔ اگر آپ کو شوق ہے کہ زیادہ لوگ آپ کو پڑھیں تو اپنا بلاگ بنائیں ۔