میرے چاروں طرف افق ہے جو ایک پردہء سیمیں کی طرح فضائے بسیط میں پھیلا ہوا ہے،واقعات مستقبل کے افق سے نمودار ہو کر ماضی کے افق میں چلے جاتے ہیں،لیکن گم نہیں ہوتے،موقع محل،اسے واپس تحت الشعور سے شعور میں لے آتا ہے، شعور انسانی افق ہے،جس سے جھانک کر وہ مستقبل کےآئینہ ادراک میں دیکھتا ہے ۔
دوستو ! اُفق کے پار سب دیکھتے ہیں ۔ لیکن توجہ نہیں دیتے۔ آپ کی توجہ مبذول کروانے کے لئے "اُفق کے پار" یا میرے دیگر بلاگ کے،جملہ حقوق محفوظ نہیں ۔ پوسٹ ہونے کے بعد یہ آپ کے ہوئے ، آپ انہیں کہیں بھی کاپی پیسٹ کر سکتے ہیں ، کسی اجازت کی ضرورت نہیں !( مہاجرزادہ)

فیس بک کے دیوانے

جمعہ، 4 مارچ، 2016

حقوقِ نسواں سے تحفّظِ خواتین تک !

⁠⁠⁠⁠⁠تحفظ خواتین بل کے بعد پنجاب میں مردوں نے گھٹنے ٹیک دیئے۔
اللہ دتہ نے گھریلو کام کاج سنبھال لئے .
 جبکہ اللہ جوائی سیر سپاٹے کے لئے مری روانہ .


حکومت کو نہ جانے کیا سوجھی ، کہ خواتین کے تحفّظ کے لئے نکل کھڑی ہوئی ،
پہلے تو ، ملازمت کرنے والی خواتین کے تحفّظ کے لئے بِل بنایا ۔ اچھا کیا !

اور اب حال میں ،
گھریلو خواتین کے تحفّظ کا بل بنا لیا ۔
یہ بل اُن مظلوم خواتین کے لئے ہے جو ظلم سہہ سہہ کر امن کا پرچار کرتی ہیں ۔ کہ میرا شوہر بہت اچھا ہے ۔
جن کے شوہروں نے اپنی ماں کے بیوی کو قابو میں کرنے کے 101 مچرّب نسخے یاد کر رکھے ہوتے ہیں ۔
یہ اور بات کے اُن کی ماں کو یہ نسخے ، ماں کی ماں نے بتائے تھے ، جو شوہر کو قابو میں کرنے کے تھے ۔ مگر عقلبند ماں نے اُن نسخوں میں ترمیمات کر کے ، بیٹوں کو بیوی کو قابو میں کرنے کے لئے پیش کر دیا اور بیٹیوں کے لئے وہی رکھے،
اور نہ بیٹے کے قابو میں بہو رہی اور نہ بیٹی کے قابو میں داماد۔

لہذا اب حکومت نے ، اِن اَتھرے لوگوں کو قابو میں کرنے کا بیڑا اُٹھایا ہے ۔ معلوم نہیں کون کس کے قابو میں آتا ہے ۔

لیکن اب پاکستان کے ہر دیہات و شہر میں ، " شوہر پورہ " وجود میں آنے لگیں گے ، جہاں دو دن کے لئے گھر سے نکالے جانے والے ، شوہروں کا ٹھکانہ ہوگا  اور جہاں ایسے مظلوم شوہروں کو سہارا دینے کے لئے وافر مقدار میں ہم درد دستیاب ہوں گی ۔
کیوں کہ کہا جاتا ہے کہ لوہے کی کلہاڑی کو لکڑیاں کاٹنے کے لئے مدد بھی لکڑی ہی دیتی ہے ۔
معلوم نہیں اِس چار حرفی لفظ میں کیا جادو ہے ، کہ لکھو لکڑی تو پڑھی جاتی ہے ، لڑکی ۔

اور اِس کا حل بھی وہ نکال ہی لیں گے کہ گلے میں باندھی جانے والی گھنٹی (ٹریکر) کو کیسے ، جوسر مشین چلا چلا کر اَن ٹریک کرے ۔
یا پھر ۔ ۔ ۔ ۔ 
شہباز شریف کی طرح 4 گھر بنائے ۔










خیال رہے کہ "اُفق کے پار" یا میرے دیگر بلاگ کے،جملہ حقوق محفوظ نہیں ۔ !

افق کے پار
دیکھنے والوں کو اگر میرا یہ مضمون پسند آئے تو دوستوں کو بھی بتائیے ۔ اگر آپ کو شوق ہے کہ زیادہ لوگ آپ کو پڑھیں تو اپنا بلاگ بنائیں ۔