میرے چاروں طرف افق ہے جو ایک پردہء سیمیں کی طرح فضائے بسیط میں پھیلا ہوا ہے،واقعات مستقبل کے افق سے نمودار ہو کر ماضی کے افق میں چلے جاتے ہیں،لیکن گم نہیں ہوتے،موقع محل،اسے واپس تحت الشعور سے شعور میں لے آتا ہے، شعور انسانی افق ہے،جس سے جھانک کر وہ مستقبل کےآئینہ ادراک میں دیکھتا ہے ۔
دوستو ! اُفق کے پار سب دیکھتے ہیں ۔ لیکن توجہ نہیں دیتے۔ آپ کی توجہ مبذول کروانے کے لئے "اُفق کے پار" یا میرے دیگر بلاگ کے،جملہ حقوق محفوظ نہیں ۔ پوسٹ ہونے کے بعد یہ آپ کے ہوئے ، آپ انہیں کہیں بھی کاپی پیسٹ کر سکتے ہیں ، کسی اجازت کی ضرورت نہیں !( مہاجرزادہ)

فیس بک کے دیوانے

بدھ، 6 اپریل، 2016

موت کا فرشتہ !

ﺷﺎﻡ ﮐﮯ ﻭﻗﺖ ﮈﺭﺍﺋﯿﻮﺭ ﺍﯾﮏ ﺧﺎﻟﯽ ﻭﯾﻦ ﺩﻭﮌﺍﺋﮯ ﭼﻼ ﺟﺎ ﺭﮬﺎ ﺗﮭﺎ۔ ﺍﭼﺎﻧﮏ ﮔﺎﮌﯼ ﮐﮯ ﭨﺎﺋﺮ ﭼﺮﭼﺮﺍﺋﮯ ﺍﻭﺭ ﮔﺎﮌﯼ ﺁﮬﺴﺘﮧ ﮬﻮﺗﮯ ﮬﻮﺋﮯ ﺳﮍﮎ ﮐﮯ ﺍﯾﮏ ﻃﺮﻑ ﮐﮭﮍﯼ ﮬﻮ ﭼﮑﯽ ﺗﮭﯽ ...
ﻧﮩﺎﯾﺖ ﺻﺎﻑ ﺷﻔﺎﻑ ﺍﻭﺭ ﺳﻔﯿﺪ ﺭﻧﮓ ﮐﺎ ﺳﻮﭦ ﭘﮩﻨﮯ ﺍﯾﮏ ﺑﺎﺭﯾﺶ ﺑﺎﺑﺎ ﺟﯽ ﺁﮔﮯ ﺑﮍﮬﮯ ﺍﻭﺭ ﻭﯾﻦ ﮐﺎ ﺩﺭﻭﺍﺯﮦ ﮐﮭﻮﻝ ﮐﺮ ﮈﺭﺍﺋﯿﻮﺭ ﺳﮯ ﭘﭽﮭﻠﯽ ﺳﯿﭧ ﭘﺮ ﺁﺑﯿﭩﮭﮯ ...

“ ﮐﮩﺎﮞ ﺟﺎﻧﺎ ﮬﮯ ﺁﭖ ﮐﻮ ﺑﺎﺑﺎ ﺟﯽ؟ “ ﮈﺭﺍﺋﯿﻮﺭ ﻧﮯ ﮔﺎﮌﯼ ﺩﻭﮌﺍﺗﮯ ﮬﻮﺋﮯ ﺳﻮﺍﻝ ﮐﯿﺎ۔
“ ﻣﺠﮭﮯ ﮐﮩﯿﮟ ﻧﮩﯿﮟ ﺟﺎﻧﺎ ﮬﮯ ... ﺻﺮﻑ ﺁﭖ ﮐﮯ ﭘﺎﺱ ﺑﮭﯿﺠﺎ ﮔﯿﺎ ﮬﮯ ﻣﺠﮭﮯ .... ﻣﯿﮟ ﻣﻮﺕ ﮐﺎ ﻓﺮشتہ ﮬﻮﮞ “...
“ ﮨﺎﮨﺎﮨﺎ ... ﺧﻮﺏ ﻣﺬﺍﻕ ﮐﺮﺗﮯ ﮬﯿﮟ ﺁﭖ ﺑﮭﯽ ﺑﺎﺑﺎ ﺟﯽ۔ “ ﮈﺭﺍﺋﯿﻮﺭ ﻧﮯ ﻗﮩﻘﮩﮧ ﻟﮕﺎﯾﺎ ...
ﺗﮭﻮﮌﯼ ﺩﯾﺮ ﺑﻌﺪ ﮈﺭﺍﺋﯿﻮﺭ ﮐﻮ ﺳﮍﮎ ﮐﮯ ﮐﻨﺎﺭﮮ ﺩﻭ ﻋﻮﺭﺗﯿﮟ ﮐﮭﮍﯼ ﻧﻈﺮ ﺁﺋﯿﮟ۔ ﺍﯾﮏ ﻧﮯ ﻭﯾﻦ ﮐﻮ ﺭﮐﻨﮯ ﮐﺎ ﺍﺷﺎﺭﮦ ﮐﯿﺎ۔ ﮈﺭﺍﺋﯿﻮﺭ ﻧﮯ ﮔﺎﮌﯼ ﺭﻭﮎ ﺩﯼ۔ ﻭﮦ ﺧﻮﺵ ﺗﮭﺎ ﮐﮧ ﭼﻠﻮ ﮔﮭﺮ ﺟﺎﺗﮯ ﮬﻮﺋﮯ کچھ ﭘﯿﺴﮯ ﺑﻦ ﺟﺎﺋﯿﮟ ﮔﮯ ... ﺍﺱ ﻧﮯ ﮔﺎﮌﯼ ﮐﺎ ﺩﺭﻭﺍﺯﮦ ﮐﮭﻮﻻ ﺗﻮ ﻋﻮﺭﺗﯿﮟ ﺑﺎﺑﺎ ﺟﯽ ﺳﮯ ﭘﭽﮭﻠﯽ ﺳﯿﭧ ﭘﺮ ﺟﺎ ﺑﯿﭩﮭﯿﮟ ...
ﺑﺎﺟﯽ ! ﮐﮩﺎﮞ ﺟﺎﻧﺎ ﮬﮯ ﺁﭖ ﮐﻮ؟ “ ﮈﺭﺍﺋﯿﻮﺭ ﻧﮯ ﺳﭩﯿﺮﻧﮓ ﺳﻨﺒﮭﺎﻟﺘﮯ ﮬﻮﺋﮯ ﮐﮩﺎ۔۔
“ ﮨﻤﯿﮟ ﺣﯿﺎﺕ ﻧﮕﺮ ﺟﺎﻧﺎ ﮬﮯ “ ﺍﯾﮏ ﻋﻮﺭﺕ ﻧﮯ ﺟﻮﺍﺏ ﺩﯾﺎ ...
ﭨﮭﯿﮏ ﮬﮯ ﺑﺎﺟﯽ ... ﺍﻭﺭ ﺑﺎﺑﺎ ﺟﯽ ﺍﺏ ﺁﭖ ﺑﮭﯽ ﺑﺘﺎ ﮬﯽ ﺩﯾﮟ ﮐﮧ ﺁﭖ ﮐﻮ ﮐﮩﺎﮞ ﺟﺎﻧﺎ ﮬﮯ “ ﮈﺭﺍﺋﯿﻮﺭ ﻧﮯ ﮔﺎﮌﯼ ﭼﻼﺗﮯ ﮨﻮﺋﮯ ﮐﮩﺎ ..
“ ﻣﯿﮟ ﺁﭖ ﮐﻮ ﺑﺘﺎ ﺗﻮ ﭼﮑﺎ ﮬﻮﮞ ﮐﮧ ﻣﯿﮟ ﻣﻮﺕ ﮐﺎ ﻓﺮﺷﺘﮧ ﮬﻮﮞ ... ﻋﺰﺭﺍﺋﯿﻞ ...
ﺍﻭﺭ ﯾﮧ ﮐﮧ ﺗﻤﮭﺎﺭﯼ ﻣﻮﺕ ﮔﺎﮌﯼ ﻣﯿﮟ ﻟﮑﮭﯽ ﮬﻮﺋﯽ ﮬﮯ ... ﻣﺠﮭﮯ ﺍﻭﺭ ﮐﮩﯿﮟ ﻧﮭﯿﮟ ﺟﺎﻧﺎ۔ “
“ ﮨﺎﮨﺎﮨﺎﮨﺎ ... ﻭﯾﮕﻦ ﻣﯿﮟ ﺍﯾﮏ ﺑﺎﺭ ﭘﮭﺮ ﻗﮩﻘﮩﮧ ﺑﻠﻨﺪ ﮬﻮﺍ ... “ ﺳﻨﻮ ﺳﻨﻮ ﺑﺎﺟﯽ ! ﯾﮧ ﺑﺎﺑﺎ ﺟﯽ ﮐﮩﺘﮯ ﮬﯿﮟ ﮐﮧ ﻣﯿﮟ ﻣﻮﺕ ﮐﺎ ﻓﺮﺷﺘﮧ ﮬﻮﮞ ... ﮨﺎﮨﺎﮨﺎ “...
ﮈﺭﺍﺋﯿﻮﺭ ﻧﮯ ﺧﻮﺍﺗﯿﻦ ﮐﻮ ﻣﺨﺎﻃﺐ ﮐﺮ ﮐﮯ ﻗﮩﻘﮩﮧ ﻟﮕﺎﯾﺎ ﺍﻭﺭ ﮔﺎﮌﯼ ﻣﺰﯾﺪ ﺗﯿﺰ ﮐﺮﺩﯼ۔
“ ﻣﻮﺕ ﮐﺎ ﻓﺮﺷﺘﮧ؟
ﺑﺎﺑﺎ ﺟﯽ؟
ﮐﻮﻥ ﺑﺎﺑﺎ؟
ﮐﻮﻥ ﻣﻮﺕ ﮐﺎ ﻓﺮﺷﺘﮧ؟
ﯾﮩﺎﮞ ﺗﻮ ﮐﻮﺋﯽ ﺑﮭﯽ ﻧﮭﯿﮟ ﮬﮯ۔۔۔ “ ﻋﻮﺭﺗﻮﮞ ﻧﮯ ﺣﯿﺮﺕ ﺳﮯ ﺟﻮﺍﺏ ﺩﯾﺎ۔۔
“ ﺁﭖ ﺩﯾﮑﮭﻮ ﺗﻮ ﺳﮩﯽ ...
ﻣﯿﺮﮮ ﭘﯿﭽﮭﮯ ﺟﻮ ﺳﻔﯿﺪ ﮐﭙﮍﮮ ﭘﮩﻨﮯ ﺑﺎﺑﺎ ﺟﯽ ﺑﯿﭩﮭﮯ ﮬﯿﮟ ...
ﺁﭖ ﺳﮯ ﺍﮔﻠﯽ ﺳﯿﭧ ﭘﺮ “ ﮈﺭﺍﺋﯿﻮﺭ ﻧﮯ ﺩﮬﯿﺎﻥ ﺳﮯ ﮔﺎﮌﯼ ﭼﻼﺗﮯ ﮬﻮﺋﮯ ﮐﮩﺎ ...
“ ﻧﮩﯿﮟ ﺗﻮ ﺍﺩﮬﺮ ﺗﻮ ﮐﻮﺋﯽ ﺑﺎﺑﺎ ﺟﯽ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﮯ .....
ﺁﭖ ﻣﺬﺍﻕ ﮐﺮ ﺭﮨﮯ ﮬﯿﮟ “... ﻋﻮﺭﺗﻮﮞ ﻧﮯ ﮐﮩﺎ ﺗﻮ ﮈﺭﺍﺋﯿﻮﺭ ﮐﺎ ﺭﻧﮓ ﻓﻖ ﮬﻮ ﮔﯿﺎ
ﺍﺱ ﻧﮯ ﮔﺎﮌﯼ ﺭﻭﮎ ﺩﯼ ...
ﺍﺏ ﺟﻮ ﭼﭙﮑﮯ ﺳﮯ ﭘﯿﭽﮭﮯ ﺩﯾﮑﮭﺎ ﺗﻮ ﺑﺰﺭﮒ ﮐﯽ ﺁﻧﮑﮭﻮﮞ ﺳﮯ ﻭﺣﺸﺖ ﭨﭙﮏ ﺭﮬﯽ ﺗﮭﯽ ...
ﺟﺐ ﮐﮧ ﺩﻭﻧﻮﮞ ﻋﻮﺭﺗﯿﮟ ﺑﮯﻧﯿﺎﺯ ﮬﻮ ﮐﺮ ﺍﭘﻨﯽ ﺑﺎﺗﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﻣﮕﻦ ﺗﮭﯿﮟ ...
ﮈﺭﺍﺋﯿﻮﺭ ﺧﻮﻓﺰﺩﮦ ﮬﻮ ﮔﯿﺎ ﺍﻭﺭ ﮈﺭ ﮐﮯ ﻣﺎﺭﮮ ﮐﺎﻧﭙﻨﮯ ﻟﮕﺎ ...
“ ﺗﯿﺮﯼ ﻣﻮﺕ ﺍﺳﯽ ﮔﺎﮌﯼ ﻣﯿﮟ ﻟﮑﮭﯽ ﮬﻮﺋﯽ ﺗﮭﯽ ... ﺍﺏ ﻭﻗﺖ ﺁﻥ ﭘﮩﻨﭽﺎ ﮨﮯ “...
ﻣﻮﺕ ﮐﮯ ﻓﺮﺷﺘﮯ ﻧﮯ ﺳﺮﺩ ﻟﮩﺠﮯ ﻣﯿﮟ ﮐﮩﺎ ﺍﻭﺭ ﮈﺭﺍﺋﯿﻮﺭ ﮐﯽ ﻃﺮﻑ ﺍﭘﻨﺎ ﺑﮭﺎﺭﯼ ﺑﮭﺮﮐﻢ ﮬﺎتھ ﺑﮍﮬﺎ ﺩﯾﺎ ...
ﮔﺎﮌﯼ ﻣﯿﮟ ﺍﯾﮏ ﺯﻭﺭﺩﺍﺭ ﭼﯿﺦ ﺑﻠﻨﺪ ﮬﻮﺋﯽ ...
ﮈﺭﺍﺋﯿﻮﺭ ﻧﮯ ﮔﺎﮌﯼ ﮐﺎ ﺩﺭﻭﺍﺯﮦ ﮐﮭﻮﻻ ﻗﺮﯾﺒﯽ ﮐﮭﯿﺘﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺟﺎﺗﯽ ﮬﻮﺋﯽ ﭘﮕﮉﻧﮉﯼ ﭘﺮ ﺩﻭﮌ ﻟﮕﺎﺩﯼ ...
ﺩﻭﮌﺗﮯ ﮬﻮﺋﮯ ﺍﭼﺎﻧﮏ ﺍﺱ ﻧﮯ ﭘﯿﭽﮭﮯ ﻣﮍ ﮐﮯ ﺩﯾﮑﮭﺎ ﺗﻮ ﻣﻮﺕ ﮐﺎ ﺟﻌﻠﯽ ﻓﺮﺷﺘﮧ ﮈﺭﺍﺋﯿﻮﻧﮓ ﺳﯿﭧ ﭘﺮ ﺑﯿﭩﮭﺎ ﮔﺎﮌﯼ ﺑﮭﮕﺎ ﮐﮯ ﻟﮯ ﺟﺎ ﺭﮬﺎ ﺗﮭﺎ، ﺟﺐ ﮐﮧ ﭘﯿﭽﮭﮯ ﺑﯿﭩﮭﯽ ﺧﻮﺍﺗﯿﻦ ﮐﮯ ﻗﮩﻘﮩﮯ ﺑﻠﻨﺪ ﮬﻮ ﺭﮨﮯ ﺗﮭﮯ ... ﺍﻭﺭ ﺳﺎﺗﮫ ﮬﯽ ﻭﮐﭩﺮﯼ ﮐﯽ ﻋﻼﻣﺖ ﺑﻨﺎﺋﯽ ﺟﺎﺭﮬﯽ ﺗﮭﯽ ... ﮈﺭﺍﺋﯿﻮﺭ ﺍﺏ ﻣﻮﺕ ﮐﮯ ﻓﺮﺷﺘﮯ ﮐﯽ ﺳﺎﺭﯼ ﺣﻘﯿﻘﺖ سمجھ ﭼﮑﺎ ﺗﮭﺎ ....
ﺑﮯﭼﺎﺭﺍ کھیتوں میں کھڑا ﺧﺎﻟﯽ ہاتھ ﻣﻞ ﺭﮬﺎ ﺗﮭﺎ ...

خیال رہے کہ "اُفق کے پار" یا میرے دیگر بلاگ کے،جملہ حقوق محفوظ نہیں ۔ !

افق کے پار
دیکھنے والوں کو اگر میرا یہ مضمون پسند آئے تو دوستوں کو بھی بتائیے ۔ آپ اِسے کہیں بھی کاپی اور پیسٹ کر سکتے ہیں ۔ ۔ اگر آپ کو شوق ہے کہ زیادہ لوگ آپ کو پڑھیں تو اپنا بلاگ بنائیں ۔