میرے چاروں طرف افق ہے جو ایک پردہء سیمیں کی طرح فضائے بسیط میں پھیلا ہوا ہے،واقعات مستقبل کے افق سے نمودار ہو کر ماضی کے افق میں چلے جاتے ہیں،لیکن گم نہیں ہوتے،موقع محل،اسے واپس تحت الشعور سے شعور میں لے آتا ہے، شعور انسانی افق ہے،جس سے جھانک کر وہ مستقبل کےآئینہ ادراک میں دیکھتا ہے ۔
دوستو ! اُفق کے پار سب دیکھتے ہیں ۔ لیکن توجہ نہیں دیتے۔ آپ کی توجہ مبذول کروانے کے لئے "اُفق کے پار" یا میرے دیگر بلاگ کے،جملہ حقوق محفوظ نہیں ۔ پوسٹ ہونے کے بعد یہ آپ کے ہوئے ، آپ انہیں کہیں بھی کاپی پیسٹ کر سکتے ہیں ، کسی اجازت کی ضرورت نہیں !( مہاجرزادہ)

فیس بک کے دیوانے

جمعہ, اپریل 29, 2016

ملائی افسانے۔ عورت اور سانپ

ﮔﺎﮌﯼ ﮐﻮﺋﯽ ﺩﺱ ﮐﻮﺱ ﭼﻠﯽ ﮨﻮ ﮔﯽ ﮐﮧ ﺍﯾﮏ ﺧﺎﺗﻮﻥ ﻧﮯ ﺷﻮﺭ ﻣﭽﺎ ﺩﯾﺎ ﮐﮧ ﺍﺱ ﮐﯽ ﺷﻠﻮﺍﺭ ﮐﮯ ﭘﺎﺋﻨﭽﮯ ﻣﯿﮟ ﺳﺎﻧﭗ ﮔﮭﺲ ﮔﯿﺎ ﮨﮯ
ﺧﺎﺗﻮﻥ ﻣﺴﺘﻘﻞ ﭼﯿﺨﯿﮟ ﻣﺎﺭ ﺭﮨﯽ ﺗﮭﯽ ﺍﻭﺭ ﮐﮩﺘﯽ ﺟﺎ ﺗﯽ ﺗﮭﯽ ﮐﮧ ﻣﺠﮭﮯ ﺑﭽﺎﺅ ‘ ﻣﺠﮭﮯ ﺳﺎﻧﭗ ﮐﺎﭦ ﮐﮭﺎﺋﮯ ﮔﺎ۔ 

ﺳﺎﻧﭗ ﺍﮔﺮ ﺗﮭﺎ ﺗﻮ ﻧﮧ ﮐﺎﭦ ﺭﮨﺎ ﺗﮭﺎ ﺍﻭﺭ ﻧﮧ ﮨﯽ ﺧﺎﺗﻮﻥ ﮐﯽ ﺟﺎﻥ ﭼﮭﻮﮌ ﺭﮨﺎ ﺗﮭﺎ۔ ﻋﻮﺭﺕ ﺫﺍﺕ ﺗﮭﯽ ‘ ﻣﺮﺩﻭﮞ ﮐﺎ ﺍﺱ ﮐﮯ ﺟﺴﻢ ﮐﻮ ہاتھ ﻟﮕﺎﻧﺎ ﻣﻨﺎﺳﺐ ﻧﮧ ﺗﮭﺎ۔ ﺁﺧﺮ ﮐﺎﺭ ﺑﺲ ﺭﻭﮐﯽ ﮔﺌﯽ ﺍﻭﺭ ﺧﻮﺍﺗﯿﻦ ﮐﮯ حوﺻﻠﮯ ﺍﻭﺭ ﮨﻤﺖ ﺳﮯ ﺳﺎﻧﭗ ﻭﺍﻟﯽ ﺧﺎﺗﻮﻥ ﮐﻮ ﺳﮍﮎ ﭘﺮ ﺍﺗﺎﺭﺍﮔﯿﺎ، ﻭﮦ ﺑﺪﺳﺘﻮﺭ ﭼﯿﺦ ﺭﮨﯽ ﺗﮭﯽ۔
ﺳﮍﮎ ﮐﻨﺎﺭﮮ ﺩﯾﮩﺎﺗﯽ ﻟﺒﺎﺱ ﻣﯿﮟ ﺍﯾﮏ ﺟﻮﺍﻥ ﺁﺩﻣﯽ ﮐﮭﮍﺍ ﺗﮭﺎ، ہاتھ ﻣﯿﮟ ﺍﯾﮏ ﺩﺭﻣﯿﺎﻧﮯ ﺳﺎﺋﺰ ﮐﺎ ﺑﮑﺲ ﺗﮭﺎ ‘ ﻭﮦ ﺑﮭﯽ ﺍﺱ ﺗﻤﺎﺷﮯ ﮐﻮ ﺩﯾﮑﮭﻨﮯ ﻭﺍﻟﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺷﺮﯾﮏ ﮨﻮ ﮔﯿﺎ۔ 

ﺳﺎﻧﭗ ﻭﺍﻟﯽ ﺧﺎﺗﻮﻥ ﮐﻮ ﺧﻮﺍﺗﯿﻦ ﻧﮯ ﻧﯿﭽﮯ ﻟﭩﺎ ﺩﯾﺎ ﺍﻭﺭ ﺍﯾﮏ ﭼﮭﮍﯼ ﺳﮯ ﺷﻠﻮﺍﺭ ﮐﮯ ﺍﻭﭘﺮ ﻭﺍﺭ ﺷﺮﻭﻉ ﮐﺮﺩﺋﯿﮯ ﺳﺎﻧﭗ ﻧﮯ ﺍﻧﺪﺍﺯﮦ ﮐﺮ ﻟﯿﺎ ﮨﻮ ﮔﺎ ﮐﮧ ﺑﺎﮨﺮ ﺍﺱ ﮐﮯ ﺩﺷﻤﻦ ﮐﮭﮍﮮ ﮨﯿﮟ ﺍﺱ ﻟﺌﮯ ﻭﮦ ﺑﺎﮨﺮ ﺁﻧﮯ ﭘﺮ ﺗﯿﺎﺭ ﻧﮧ ﺗﮭﺎ۔ ﺑﮩﺮ ﺣﺎﻝ ﺟﺐ ﻭﺍﺭ ﺷﺪﺕ ﺍﺧﺘﯿﺎﺭ ﮐﺮ ﮔﺌﮯ ﺗﻮ ﺳﺎﻧﭗ ﻧﮯ ﺷﻠﻮﺍﺭ ﮐﮯ ﭘﺎﺋﻨﭽﮯ ﺳﮯ ﺳﺮ ﻧﮑﺎﻻ ﺍﻭﺭ ﺁﮨﺴﺘﮧ ﺳﮯ ﺑﺎﮨﺮ ﺁﮔﯿﺎ۔
ﯾﮧ ﺍﯾﮏ ﺳﯿﺎﮦ ﺭﻧﮓ ﮐﺎ ﮐﻮﺑﺮﺍ ﺳﺎﻧﭗ ﺗﮭﺎ ﺟﺲ ﮐﺎ ﮈﺳﺎ ﮨﻮﺍ ﭘﺎﻧﯽ ﻧﮩﯿﮟ ﻣﺎﻧﮕﺘﺎ۔ ﺍﺱ ﻃﺮﺡ ﮐﺎ ﺳﺎﻧﭗ ﺍﮔﺮ ﮨﺎﺗﮭﯽ ﮐﻮ ﮐﺎﭦ ﻟﮯ ﺗﻮ ﻭﮦ ﭼﻨﺪ ﻣﻨﭧ ﻣﯿﮟ ﮨﻼﮎ ﮨﻮ ﺟﺎﺗﺎ ﮨﮯ۔
ﺳﺎﻧﭗ ﮐﯽ ﮨﯿﺒﺖ ﺳﮯ ﺳﺐ ﻟﻮﮒ ﺩﮨﺸﺖ ﺯﺩﮦ ﮨﻮ ﮔﺌﮯ ‘ﮐﺴﯽ ﮐﯽ ﮨﻤﺖ ﻧﮧ ﭘﮍﯼ ﮐﮧ ﺍﺱ ﮐﮯ ﻧﺰﺩﯾﮏ ﺟﺎﺋﮯ ‘ﺳﺐ ﮐﯽ ﻗﻮﺕ ﻓﯿﺼﻠﮧ ﺟﻮﺍﺏ ﺩﮮ ﭼﮑﯽ ﺗﮭﯽ۔
ﺳﺎﻧﭗ ﮐﻮ ﮐﯿﺴﮯ ﻣﺎﺭﺍ ﺟﺎﺋﮯ؟

یا ﺍﺱ ﮐﮯ ﺍﻭﭘﺮ ﺳﮯ ﺑﺲ ﮔﺰﺍﺭﯼ ﺟﺎﺋﮯ!
ﯾﺎ ﺍﻧﺘﻈﺎﺭ ﮐﯿﺎﺟﺎ ﺋﮯ ﮐﮧ ﻭﮦ ﮐﺪﮬﺮ ﮐﺎ ﺭﺥ ﮐﺮﺗﺎ ﮨﮯ!
ﺧﻮﻓﻨﺎﮎ ﺁﻧﮑﮭﻮﮞ ﻭﺍﻟﮯ ﺳﺎﻧﭗ ﻧﮯ ﭘﮭﻦ ﺍﭨﮭﺎﺭﮐﮭﺎ ﺗﮭﺎ ﺍﻭﺭ ﭼﺎﺭﻭﮞ ﻃﺮﻑ ﺩیکھ ﺭﮨﺎ ﺗﮭﺎ ﺟﯿﺴﮯ ﮐﺴﯽ ﮐﻮ ﺗﻼﺵ ﮐﺮ ﺭﮨﺎ ﮨﻮ۔
ﺩﯾﮩﺎﺗﯽ ﺟﻮﺍﻥ ﺟﺲ ﻧﮯ بکس ﭘﮑﮍﺍ ﮨﻮﺍ ﺗﮭﺎ ‘ ﺳﺎﻧﭗ ﺳﮯ ﮐﺎﻓﯽ ﺩﻭﺭ ﺗﮭﺎ ﺍﻭﺭ ﺑﻈﺎﮨﺮ ﺍﺱ ﺻﻮﺭﺗﺤﺎﻝ ﺳﮯ ﻣﺤﻈﻮﻅ ﮨﻮ ﺭﮨﺎ ﺗﮭﺎ۔
ﺑﺲ ﮐﮯ ﺍﯾﮏ ﻣﺴﺎﻓﺮ ﻧﮯ ﺩﻋﻮﯼٰ ﮐﯿﺎ ﮐﮧ ﺍﺱ ﮐﮯ ﭘﺎﺱ ﺍﯾﮏ ﺍﯾﺴﺎ ﺩﻡ ﮨﮯ ﮐﮧ ﺳﺎﻧﭗ ﺍﻧﺪﮬﺎ ﮨﻮ ﺟﺎﺋﮯ ﮔﺎ ﭘﮭﺮ ﺍﺱ ﮐﻮ ﺁﺭﺍﻡ ﺳﮯ ﻣﺎﺭ ﺳﮑﯿﮟ ﮔﮯ۔ ﻣﺴﺎﻓﺮ ﻧﮯ ﺟﻮ ﺳﺎﻧﭗ ﺳﮯ ﺑﯿﺲ ﻓﭧ ﮐﮯ ﻓﺎﺻﻠﮯ ﭘﺮ ﺗﮭﺎ ‘ ﺩﻡ ﮐﺮﻧﺎ ﺷﺮﻭﻉ ﮐﯿﺎ۔ ﺍﺑﮭﯽ ﭼﻨﺪ ﻟﻤﺤﮯ ﮔﺰﺭﮮ ﺗﮭﮯ ﮐﮧ ﺳﺎﻧﭗ ﻧﮯ ﺍﺱ ﺯﻭﺭ ﮐﯽ ﭘﮭﻨﮑﺎ ﺭ ﻣﺎﺭﯼ ﮐﮧ ﺩﻡ ﮐﺮﻧﮯ ﻭﺍﻻ ﻣﺴﺎﻓﺮ ﺟﻮ ﺧﺎﺻﺎ ﺩﻭﺭ ﺗﮭﺎ ‘ ﺩﮬﮍﺍﻡ ﺳﮯ ﺯﻣﯿﻦ ﭘﺮ ﺁ ﮔﺮﺍ۔
ﺳﺎﻧﭗ ﮐﯽ ﭘﮭﻨﮑﺎﺭ ﺳﮯ ﺍﺱ ﮐﺎ ﺭﻧﮓ ﺯﺭﺩ ﭘﮍ ﮔﯿﺎ۔ ﻭﮦ ﺩﻡ ﮐﺮﻧﺎ ﺑﮭﻮﻝ ﮔﯿﺎ ﺍﻭﺭ ﺑﮭﺎﮒ ﮐﺮ ﺑﺲ ﻣﯿﮟ بیٹھ ﮔﯿﺎ۔ ﺍﺏ ﺳﺐ ﻟﻮﮒ ﺩﻡ ﺑﺨﻮﺩ ﺗﮭﮯ ﮐﮧ ﺳﺎﻧﭗ ﮐﯿﺎ ﮐﺮﺗﺎ ﮨﮯ؟
ﺟﺲ ﺧﺎﺗﻮﻥ ﺳﮯ ﺍﺑﺘﺪﺍﮨﻮﺋﯽ ﺗﮭﯽ ﺍﺳﮯ ﺳﺎﻧﭗ ﻧﮯ ﻗﻄﻌﺎََ ﮐﻮﺋﯽ ﮔﺰﻧﺪ ﻧﮧ ﭘﮩﻨﭽﺎﺋﯽ ۔ﻭﮦ ﭘﺘﮭﺮ ﭘﺮ ﺑﯿﭩﮭﯽ ﮈﺭﺍﻣﮯ ﮐﻮ ﺩیکھ ﺭﮨﯽ ﺗﮭﯽ۔
ﮐﺴﯽ ﻧﮯ ﻣﺸﻮﺭﮦ ﺩﯾﺎ ﮐﮧ ﭘﯿﺎﻟﮯ ﻣﯿﮟ ﺩﻭﺩﮪ ﮈﺍﻝ ﮐﺮ ﺳﺎﻧﭗ ﮐﻮ ﺍﯾﮏ ﻃﺮﻑ ﻟﮯ ﺟﺎﯾﺎ ﺟﺎﺋﮯ۔

ﯾﮧ ﺳﺐ ﺑﺎﺗﯿﮟ ﺟﺎﺭﯼ ﺗﮭﯿﮟ ﮐﮧ ﺳﺎﻧﭗ ﺍﭘﻨﯽ ﺟﮕﮧ ﺳﮯ ﮨﻼ ﺍﻭﺭ ﺳﯿﺪﮬﺎ بکس ﻭﺍﻟﮯ ﺩﯾﮩﺎﺗﯽ ﺟﻮﺍﻥ ﮐﯽ ﺟﺎﻧﺐ ﺳﺮﮐﻨﮯ ﻟﮕﺎ۔ ﭼﻨﺪ ﻟﻤﺤﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﻭﮦ ﻧﻮﺟﻮﺍﻥ ﮐﮯ ﺑﺎﻟﮑﻞ ﻗﺮﯾﺐ ﭘﮩﻨﭻ ﮔﯿﺎ ‘ ﺍﺏ ﺳﺎﻧﭗ ﺍﺗﻨﺎ ﻗﺮﯾﺐ ﺗﮭﺎ ﮐﮧ ﻧﻮﺟﻮﺍﻥ ﺑﮭﺎﮒ ﺑﮭﯽ ﻧﮧ ﺳﮑﺘﺎ ﺗﮭﺎ!
ﺩﯾﮩﺎﺗﯽ ﺟﻮﺍﻥ ﮐﺎ ﺭﻧﮓ ﺯﺭﺩ ﺗﮭﺎ ﺍﻭﺭ ﮨﻮﺵ ﺍُﮌﮮ ﮨﻮﺋﮯ ‘ﺍﺳﮯ ﯾﮧ ﺧﯿﺎﻝ ﺗﮭﺎ ﮐﮧ ﺳﺎﻧﭗ ﻧﮯ ﺍﺳﮯ ﺍﺏ ﮐﺎﭨﺎ ﮐﮧ ﺍﺏ ﮐﺎﭨﺎ۔
ﻧﻮﺟﻮﺍﻥ ﻧﮯ ﺍﯾﮏ ﭼﯿﺦ ﻣﺎﺭﯼ ﺍﻭﺭ ﭼﻨﺪ ﻟﻤﺤﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺍﺱ ﮐﺎ ﺟﺴﻢ ﻧﯿﻼ ﭘﮍﻧﮯ ﻟﮕﺎ۔ ﺍﺱ ﺗﮍﭘﺘﮯ ﮨﻮﺋﮯ ﺷﮑﺎﺭ ﮐﻮ ﭼﮭﻮﮌ ﮐﺮ ﺳﺎﻧﭗ ﺍﯾﮏ ﻃﺮﻑ ﮐﻮ ﭼﻞ ﻧﮑﻼ ﺍﻭﺭ ﺍﯾﺴﺎ ﻏﺎﺋﺐ ﮨﻮﺍ ﺟﯿﺴﮯ ﮐﺒﮭﯽ ﻭﮨﺎﮞ ﺗﮭﺎ ﮨﯽ ﻧﮩﯿﮟ۔
ﺁﻥ ﮐﯽ ﺁﻥ ﻣﯿﮟ ﻧﻮﺟﻮﺍﻥ ﮐﮯ ﻣﻨﮧ ﺳﮯ ﺟﮭﺎﮒ ﻧﮑﻠﻨﮯ ﻟﮕﯽ ﺍﻭﺭ ﺩﯾﮑﮭﺘﮯ ﺩﯾﮑﮭﺘﮯ ﺍﺱ ﻧﮯ ﺩﻡ ﺗﻮﮌ ﺩﯾﺎ۔
ﻭﮦ ﮐﻮﻥ ﺗﮭﺎ ؟
ﺍﻭﺭ ﺍﺱ ﮐﯽ ﻧﻌﺶ ﮐﻮ ﮐﮩﺎﮞ ﭘﮩﻨﭽﺎﯾﺎ ﺟﺎﺋﮯ؟
ﺍﺱ ﮐﮯ ﻟﺌﮯ ﺗﮭﻮﮌﯼ ﺳﯽ ﺟﺎﻧﮑﺎﺭﯼ ﺿﺮﻭﺭﯼ ﺗﮭﯽ!
ﭘﺮﺍﺋﮯ ﺳﺎﻣﺎﻥ ﮐﻮہاتھ ﻟﮕﺎﻧﺎﻭﯾﺴﮯ ﺗﻮ ﻣﻨﺎﺳﺐ ﻧﮧ ﺗﮭﺎ ﻣﮕﺮ ﺟﻮﺍﻥ ﮐﮯ ﺟﺴﻢ ﭘﺮ ﮐﻮﺋﯽ ﺍﯾﺴﯽ ﻗﺎﺑﻞِ ﺷﻨﺎﺧﺖ ﺷﮯ ﻧﮧ ﺗﮭﯽ ،
ﺟﺲ ﺳﮯ ﭘﺘﺎﭼﻠﮯ ﮐﮧ ﻭﮦ ﮐﮩﺎﮞ ﮐﺎ ﺭﮨﻨﮯ ﻭﺍﻻ ﮨﮯ؟
ﻣﺠﺒﻮﺭﺍََ ﺍﺱ ﮐﺎ بکس ﮐﮭﻮﻻ ﮔﯿﺎ ﺗﺎ ﮐﮧ ﺍﺱ ﻣﯿﮟ ﺳﮯ ﺍﺱ ﮐﺎ ﺍﺗﺎ ﭘﺘﺎﻣﻌﻠﻮﻡ ﮐﯿﺎ ﺟﺎﺋﮯ ۔
ﺟﺐ بکس ﮐﮭﻼ ﺗﻮ ﻟﻮﮔﻮﮞ ﮐﯽ ﻣﺎﺭﮮ ﺣﯿﺮﺕ ﺍﻭﺭ ﺧﻮﻑ ﮐﮯ ﭼﯿﺨﯿﮟ ﻧﮑﻞ ﮔﺌﯿﮟ۔ بکس ﻣﯿﮟ ﮐﮩﻨﯽ ﺗﮏ ﮐﭩﮯ ﮨﻮﺋﮯ ﺩﻭ ہاتھ ﯾﺎ ﺑﺎﺯﻭ ﻣﻮﺟﻮﺩ ﺗﮭﮯ۔ ﺑﺎﺯﻭﺅﮞ ﻣﯿﮟ ﭘﮭﻨﺴﯽ ﮨﻮﺋﯽ ﺳﻮﻧﮯ ﮐﯽ ﺁٹھ ﺁٹھ ﭼﻮﮌﯾﺎﮞ ﺗﮭﯿﮟ, ﺍﯾﺴﺎ ﺩﮐﮭﺎﺋﯽ ﭘﮍﺗﺎ ﺗﮭﺎ ﮐﮧ ﻧﻮﺟﻮﺍﻥ ﻧﮯ ﮐﮩﯿﮟ ﮈﺍﮐﺎ ﻣﺎﺭﺍ ﯾﺎ ﻭﺍﺭﺩﺍﺕ ﮐﯽ ﻣﮕﺮ ﺑﺎﺯﻭﺅﮞ ﻣﯿﮟ ﺳﮯ ﭼﻮﮌﯾﺎﮞ ﺍﺗﺮ ﻧﮧ ﺳﮑﯿﮟ۔ ﻣﺠﺒﻮﺭﺍََ ﮐﮩﻨﯽ ﺗﮏ ﺑﺎﺯﻭ ﮐﺎﭦ ﮐﺮ ﺑﮑس ﻣﯿﮟ ﺭکھ لئے ﮐﮧ ﺍﺏ ﺁﺭﺍﻡ ﺳﮯ ﭼﻮﮌﯾﺎﮞ ﺍﺗﺎﺭﻭﮞ ﮔﺎ ﺍﻭﺭ ﺑﺎﺯﻭﺅﮞ ﮐﻮ ﮐﺴﯽ ﻣﻨﺎﺳﺐ ﺟﮕﮧ ﭘﺮ ﭘﮭﯿﻨﮏ ﺩﻭﮞ ﮔﺎ۔ ﻧﺰﺩﯾﮑﯽ ﺗﮭﺎﻧﮯ ﮐﻮ ﺍﻃﻼﻉ ﺩﯼ ﮔﺌﯽ۔ 

ﭘﺘﺎﭼﻼ ﮐﮧ ﺍﺑﮭﯽ ﺍﺑﮭﯽ ﻭﺍﺭﺩﺍﺕ ﮨﻮﺋﯽ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﮐﺴﯽ ﻧﮯ ﺳﻮﻧﮯ ﺍﻭﺭ ﺩﯾﮕﺮ ﺍﺷﯿﺎﺀ ﮐﻮ ﻟﻮﭨﺘﮯ ﮨﻮﺋﮯ ﺍﯾﮏ ﻋﻮﺭﺕ ﮐﮯ ﺑﺎﺯﻭ ﮐﺎﭦ ﻟﺌﮯ۔ ﻭﮨﺎﮞ ﻣﻮﺟﻮﺩ ﻣﺴﺎﻓﺮ ﺍﻟﻠﮧ ﺍﮐﺒﺮ ‘ ﺍﻟﻠﮧ ﺍﮐﺒﺮ ﭘﮑﺎﺭﻧﮯ ﻟﮕﮯ ﺍﻭﺭ ﮐﮩﻨﮯ ﻟﮕﮯ
" ﺍﮮ ﺍﻟﻠﮧ ﺗﻮ ﻧﮯ ﮐﺲ ﻃﺮﺡ ﻇﻠﻢ ﮐﺎ ﺑﺪﻟﮧ ﻟﮯ ﻟﯿﺎ ﺍﻭﺭ ﻇﺎﻟﻢ ﮐﻮ ﻋﺒﺮﺕ ﮐﺎ ﻧﺸﺎﻥ ﺑﻨﺎ ﺩﯾﺎ "

٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭
فیس بک پر کسی ملائی ذہن نے یہ کہانی پیسٹ کی ، بجائے غور سے پڑھنے کے سب بے وقوف ۔
بے وقوفانہ ریمارکس دے رہے ہیں !
کیوں کہ مذھب اچھے بھلے انسان کو اندھا کر دیتا ہے 

(مُفت پور کا مُفتی)

 

خیال رہے کہ "اُفق کے پار" یا میرے دیگر بلاگ کے،جملہ حقوق محفوظ نہیں ۔ !

افق کے پار
دیکھنے والوں کو اگر میرا یہ مضمون پسند آئے تو دوستوں کو بھی بتائیے ۔ اگر آپ کو شوق ہے کہ زیادہ لوگ آپ کو پڑھیں تو اپنا بلاگ بنائیں ۔