میرے چاروں طرف افق ہے جو ایک پردہء سیمیں کی طرح فضائے بسیط میں پھیلا ہوا ہے،واقعات مستقبل کے افق سے نمودار ہو کر ماضی کے افق میں چلے جاتے ہیں،لیکن گم نہیں ہوتے،موقع محل،اسے واپس تحت الشعور سے شعور میں لے آتا ہے، شعور انسانی افق ہے،جس سے جھانک کر وہ مستقبل کےآئینہ ادراک میں دیکھتا ہے ۔
دوستو ! اُفق کے پار سب دیکھتے ہیں ۔ لیکن توجہ نہیں دیتے۔ آپ کی توجہ مبذول کروانے کے لئے "اُفق کے پار" یا میرے دیگر بلاگ کے،جملہ حقوق محفوظ نہیں ۔ پوسٹ ہونے کے بعد یہ آپ کے ہوئے ، آپ انہیں کہیں بھی کاپی پیسٹ کر سکتے ہیں ، کسی اجازت کی ضرورت نہیں !( مہاجرزادہ)

فیس بک کے دیوانے

جمعہ، 3 جون، 2016

ﮔﭩﺮ ﮐﮯ ﮈﮬﮑﻦ

ﻣﯿﮟ ﺍﯾﮏ ﭘﺮﺍﺋﻤﺮﯼ ﺍﺳﮑﻮﻝ ﭨﯿﭽﺮ ﮨﻮﮞ ۔ ﮨﻤﺎﺭﮮ ﮔﻮﺭﻧﻤﻨﭧ ﭘﺮﺍﺋﻤﺮﯼ ﺍﺳﮑﻮﻝ ﻣﻮﺍﭼﮫ ﮔﻮﭨﮫ ﻣﯿﮟ ﺁﺝ ﺍُﺭﺩﻭ ﮐﺎ ﭘﺮﭼﮧ ﺗﮭﺎ ۔ ﻣﯿﺮﯼ ﮈﯾﻮﭨﯽ ﭘﺎﻧﭽﻮﯾﮟ ﺟﻤﺎﻋﺖ ﯾﻌﻨﯽ ﺟﻤﺎﻋﺖ ﭘﻨﺠﻢ ﮐﮯ ﻃﻠﺒﮧ ﭘﺮ ﺗﮭﯽ ۔ ﺟﻤﺎﻋﺖ ﭘﻨﺠﻢ ﮐﻮ ﺑﺮﺁﻣﺪﮮ ﻣﯿﮟ ﺟﮕﮧ ﻣﻠﯽ ﺗﮭﯽ ۔ ﻣﯿﮟ ﺍﺣﺘﯿﺎﻃﯽ ﺗﺪﺑﯿﺮ ﮐﮯ ﻃﻮﺭ ﭘﺮ ﺑﺮﺁﻣﺪﮮ ﮐﮯ ﺍﯾﮏ ﺍﯾﺴﮯ ﮐﻮﻧﮯ ﻣﯿﮟ ﮐﮭﮍﺍ ﺗﮭﺎ ﮐﮧ ﺟﮩﺎﮞ
ﭼﮭﺖ ﺳﮯ ﻣﺰﯾﺪ ﮐﺴﯽ ﺳﯿﻤﻨﭧ ﮐﮯ ﭨﮑﮍﮮ ﮐﮯ ﮔِﺮﻧﮯ ﮐﺎ ﮐﻮﺋﯽ ﭼﺎﻧﺲ ﻧﮩﯿﮟ ﺗﮭﺎ۔ ﺗﯿﺲ ﻋﺪﺩ ﺑﭽﻮﮞ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﺩﺱ ﺩﺱ ﮐﯽ ﺗﯿﻦ ﺳﯿﺪﮬﯽ ﻗﻄﺎﺭﻭﮞ ﻣﯿﮟ ﭨﻮﭨﯽ ﭘﮭﻮﭨﯽ ﮐﺮﺳﯿﻮﮞ ﮐﺎ ﺍﻧﺘﻈﺎﻡ ﮐﯿﺎ ﮔﯿﺎ ﺗﮭﺎ ۔ ﺑﭽﻮﮞ ﮐﯽ ﻣﺠﮭﮯ ﺍﻭﺭ ﺍﻧﺘﻈﺎﻣﯿﮧ ﺩﻭﻧﻮﮞ ﮐﻮ ﮨﯽ ﮐﻮﺋﯽ ﺧﺎﺹ ﭘﺮﻭﺍﮦ ﻧﮩﯿﮟ ﺗﮭﯽ ۔
ﺑﻮﺳﯿﺪﮦ ﭼﮭﺖ ﺳﮯ ﮔﺮﻧﮯ ﻭﺍﻟﮯ ﺳﯿﻤﻨﭧ ﮐﮯ ﭨﮑﮍﻭﮞ ﺳﮯ ﺑﭽﻮﮞ ﮐﻮ ﮐﻮﺋﯽ ﺧﻄﺮﮦ ﻧﮩﯿﮟ ﺗﮭﺎ ﮐﯿﻮﻧﮑﮧ ﮨﻤﺎﺭﺍ ﻋﻘﯿﺪﮦ ﮨﮯ ﮐﮧ ﮨﺮ ﺑﭽﮯ ﮐﯽ ﺣﻔﺎﻇﺖ ﭘﺮ ﺍﻟﻠﮧ ﮐﯽ ﻃﺮﻑ ﺳﮯ ﺍﯾﮏ ﻓﺮﺷﺘﮧ ﻣﺎﻣﻮﺭ ﮨﻮﺗﺎ ﮨﮯ ﺟﻮ ﺍُﺱ ﮐﯽ ﺣﻔﺎﻇﺖ ﮐﺮﺗﺎ ﺭﮨﺘﺎ ﮨﮯ ۔ ﮨﺎﮞ ﺍﮔﺮ ﮐﺴﯽ ﮐﯽ ﺍﻟﻠﮧ ﮐﯽ ﻃﺮﻑ ﺳﮯ ﮨﯽ ﻟﮑﮭﯽ ﮨﻮ ﺗﻮ ﺍُﺳﮯ ﮐﻮﻥ ﭨﺎﻝ ﺳﮑﺘﺎ ﮨﮯ۔
ﺧﻼﻑ ﻣﻌﻤﻮﻝ ﺁﺝ ﮐﮯ ﭘﯿﭙﺮ ﻣﯿﮟ ﺍﯾﮏ ﺑﭽﮧ ﮐﻢ ﺗﮭﺎ ۔ ﺩﯾﻮﺍﺭ ﮐﮯ ﺳﺎﺗﮫ ﺟُﮍﯼ ﭘﮩﻠﯽ ﻗﻄﺎﺭ ﮐﯽ ﭘﮩﻠﯽ ﮐُﺮﺳﯽ ﺧﺎﻟﯽ ﭘﮍﯼ ﺗﮭﯽ ۔ ﯾﮧ ﺍﻭﯾﺲ ﮐﯽ ﮐُﺮﺳﯽ ﺗﮭﯽ ۔ ﮐﺎﻟﮯ ﭘﯿﻠﮯ ﺑﭽﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﻭﺍﺣﺪ ﺑﭽﮧ ﮐﮧ ﺟﺴﮯ ﺩﯾﮑﮫ ﮐﺮ ﮐﻮﺋﭩﮧ ﮐﯽ ﻣﺸﮩﻮﺭ ﺯﻣﺎﻧﮧ ﺳُﺮﺥ ﻭ ﺳﻔﯿﺪ ﺧُﻮﺑﺎﻧﯽ ﯾﺎﺩ ﺁ ﺟﺎﺋﮯ ۔

ﺁﺝ ﺍﻭﯾﺲ ﻏﯿﺮ ﺣﺎﺿﺮ ﻧﮩﯿﮟ ﺗﮭﺎ ﺑﻠﮑﮧ ﺍُﺱ ﻧﮯ ﭼُﮭﭩﯽ ﻟﮯ ﻟﯽ ﺗﮭﯽ ۔ ﺍﺳﮑﻮﻝ ﺳﮯ ﻧﮩﯿﮟ !! ﺩُﻧﯿﺎ ﺳﮯ !! ﺩﺍﺋﻤﯽ ﭼُﮭﭩﯽ !!
ﻭﮦ ﺍﯾﮏ ﺩِﻥ ﭘﮩﻠﮯ ﮨﯽ ﺍﭘﻨﯽ ﮔﻠﯽ ﻣﯿﮟ ﮐﮭﯿﻠﺘﮯ ﮨﻮﺋﮯ ﮔﭩﺮ ﮐﮯ ﮐُﮭﻠﮯ ﺩﮬﺎﻧﮯ ﻣﯿﮟ ﮔِﺮ ﮐﺮ ﻣﺮ ﮔﯿﺎ ﺗﮭﺎ ۔ ﺑﺪﻗﺴﻤﺖ ﺗﮭﺎ  ﻭﺭﻧﮧ ﺍُﺱ ﮐﯽ ﮐﻤﯿﻮﻧﭩﯽ ﮐﮯ ﺑﭽﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺑﮍﮮ ﮨﻮ ﮐﺮ ﻣﺨﺎﻟﻒ ﺳﯿﺎﺳﯽ ﭘﺎﺭﭨﯽ ﮐﮯ ﮨﺎﺗﮭﻮﮞ ﺷﮩﯿﺪ ﮨﻮﻧﮯ ﮐﯽ ﺭﻭﺍﯾﺖ ﺗﮭﯽ۔
ﺑﭽﮯ ﭘُﻮﺭﮮ ﺍﻧﮩﻤﺎﮎ ﺳﮯ ﭘﯿﭙﺮ ﺣﻞ ﮐﺮﻧﮯ ﻣﯿﮟ ﻣﺼﺮﻭﻑ ﺗﮭﮯ ۔ ﭘﯿﭙﺮ ﮐﺎ ﺩﻭﺭﺍﻧﯿﮧ ﺍﯾﮏ ﮔﮭﻨﭩﮧ ﺗﮭﺎ ﺍﻭﺭ ﺍﺏ ﺁﺧﺮﯼ ﺩﺱ ﻣﻨﭧ ﭼﻞ ﺭﮨﮯ ﺗﮭﮯ ۔ ﻣﺠﮭﮯ ﺑﺮﺁﻣﺪﮮ ﮐﮯ ﻣﺤﻔﻮﻅ ﮐﻮﻧﮯ ﻣﯿﮟ ﮐﮭﮍﮮ ﭘُﻮﺭﮮ ﭘﭽﺎﺱ ﻣﻨﭧ ﮨﻮﻧﮯ ﻭﺍﻟﮯ ﺗﮭﮯ ۔ ﺁﺧﺮﮐﺎﺭ ﺑﻮﺭﯾﺖ ﺳﮯ ﺗﻨﮓ ﺁ ﮐﺮ ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﺭﺳﮏ ﻟﯿﻨﮯ ﮐﺎ ﺍﺭﺍﺩﮦ ﮐﺮ ﻟﯿﺎ ۔ ﭼﮭﺖ ﭘﺮ ﻟﭩﮑﺘﯽ ﺳﯿﻤﻨﭧ ﮐﯽ ﮐﮭﭙﺮﯾﻠﻮﮞ ﮐﮯ ﻧﯿﭽﮯ ﭨﮩﻠﺘﮯ ﮨﻮﺋﮯ ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﺑﭽﻮﮞ ﮐﮯ ﺟﻮﺍﺑﺎﺕ ﮐﺎ ﺟﺎﺋﺰﮦ ﻟﯿﻨﺎ ﺷﺮﻭﻉ ﮐﯿﺎ ۔ ﺗﻘﺮﯾﺒﺎً ﺳﺒﮭﯽ ﺑﭽﮯ ﺁﺧﺮﯼ ﺳﻮﺍﻝ ﮐﻮ ﻧﻤﭩﺎ ﺭﮨﮯ ﺗﮭﮯ ۔
ﺳﻮﺍﻝ ﺗﮭﺎ !! ﺁﭖ ﺑﮍﮮ ﮨﻮ ﮐﺮ ﮐﯿﺎ ﺑﻨﯿﮟ ﮔﮯ ؟؟
ﭘﺎﻧﭽﻮﯾﮟ ﺟﻤﺎﻋﺖ ﮐﮯ ﺑﭽﻮﮞ ﺳﮯ ﻣﺠﮭﮯ ﮐﺴﯽ ﺗﺨﻠﯿﻘﯽ ﻣﻀﻤﻮﻥ ﮐﯽ ﺗﻮ ﻗﻄﻌﺎً ﮐﻮﺋﯽ ﺍُﻣﯿﺪ ﻧﮩﯿﮟ ﺗﮭﯽ ﻟﯿﮑﻦ ﻭﻗﺖ ﮔﺰﺍﺭﯼ ﮐﻮ ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﺍُﻥ ﮐﮯ ﺟﻮﺍﺑﯽ ﭘﺮﭼﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺟﮭﺎﻧﮑﻨﺎ ﺷﺮﻭﻉ ﮐﺮ ﺩﯾﺎ ۔
ﺗﯿﺴﺮﯼ ﻗﻄﺎﺭ ﮐﯽ ﭼﺎﺭﻭﮞ ﮐﺮﺳﯿﻮﮞ ﭘﺮ ﮈﺍﮐﭩﺮ ﺻﺎﺣﺒﺎﻥ ﺑﺮﺍﺟﻤﺎﻥ ﺗﮭﮯ۔ ﭘﮭﺮ ﺍﯾﮏ ﭘﺎﺋﻠﭧ ﺍﻭﺭ ﯾﻮﮞ ﯾﮧ ﺳﻠﺴﻠﮧ ﭘﮩﻠﯽ ﻗﻄﺎﺭ ﮐﮯ ﻭﺳﻂ ﺗﮏ ﮈﺍﮐﭩﺮ ، ﭘﺎﺋﻠﭧ ﺍﻭﺭ ﺍﻧﺠﻨﺌﯿﺮ ﮐﮯ ﺩﺭﻣﯿﺎﻥ ﮨﯽ ﮔﮭﻮﻣﺘﺎ ﺭﮨﺎ !!
ﭘﮩﻠﯽ ﻗﻄﺎﺭ ﮐﯽ ﭘﮩﻠﯽ ﺧﺎﻟﯽ ﮐﺮﺳﯽ ﮐﮯ ﭘﯿﭽﮭﮯ ﺍﻭﯾﺲ ﮐﺎ ﺩﻭﺳﺖ ﻋﺒﺪﺍﻟﻠﮧ ﺑﯿﭩﮭﺎ ﺗﮭﺎ ! ﻋﺒﺪﺍﻟﻠﮧ ﺍﻭﺭ ﺍﻭﯾﺲ ﮐﻼﺱ ﮐﮯ ﺩﻭﺭﺍﻥ ﺑﮭﯽ ﺍﮐﮭﭩﮯ ﮨﯽ ﺑﯿﭩﮭﺘﮯ ﺗﮭﮯ ۔ ﻋﺒﺪﺍﻟﻠﮧ ﮐﮯ ﺟﻮﺍﺑﯽ ﭘﺮﭼﮯ ﭘﺮ ﺟﻮﺍﺏ ﺩﯾﮑﮭﺘﮯ ﮨﯽ ﺍﯾﺴﺎ ﻟﮕﺎ ﺟﯿﺴﮯ ﭼﮭﺖ ﺳﮯ ﻟﭩﮑﺘﯽ ﺳﯿﻤﻨﭧ ﮐﯽ ﮐﮭﭙﺮﯾﻠﯿﮟ ﯾﮏ ﺩﻡ ﭼﻤﮑﺎﺩﮌ ﺑﻦ ﮐﮯ ﻣﯿﺮﮮ ﺳﺮ ﮐﮯ ﺍﻭﮨﺮ ﺳﮯ ﻣﯿﺰﺍﺋﻠﻮﮞ ﮐﯽ ﺻﻮﺭﺕ ﺯﺑﻨﮓ ﺯﺑﻨﮓ ﮔﺰﺭﻧﮯ ﻟﮕﯽ ﮨﻮﮞ ۔
ﻋﺒﺪﺍﻟﻠﮧ ﮐﺎ ﭘﺮﭼﮧ ﮐُﺮﺳﯽ ﮐﮯ ﺩﺳﺘﮯ ﭘﺮ ﭘﮍﺍ ﺗﮭﺎ ﺍﻭﺭ ﺍُﺱ ﮐﯽ سوﺟﮭﯽ ﮨﻮﺋﯽ ﺁﻧﮑﮭﯿﮟ ﺍُﺱ ﮐﯽ ﮔﻮﺩ ﻣﯿﮟ ﺟﻤﯽ ﮨﻮﺋﯽ ﺗﮭﯿﮟ ۔

ﻋﺒﺪﺍﻟﻠﮧ ﮐﺎ ﺟﻮﺍﺏ ﺑﮭﯽ ﻣﺨﺘﺼﺮ ﺳﺎ ﮨﯽ ﺗﮭﺎ !!
"" ﺑﮍﺍ ﮨﻮﻧﺎ ﺑﮩﺖ ﻣُﺸﮑﻞ ﮨﮯ !! ﻟﯿﮑﻦ ﺍﮔﺮ ﮨﻮ ﮔﯿﺎ ﺗﻮ ﮐﺎﺭﯾﮕﺮ ﺑﻨﻮﮞ ﮔﺎ !! ﮔﭩﺮ ﮐﮯ ﮈﮬﮑﻦ ﺑﻨﺎﻧﮯ ﻭﺍﻻ ﮐﺎﺭﯾﮕﺮ !! ﺑﮩﺖ ﺳﺎﺭﮮ ﮈﮬﮑﻦ ﺑﻨﺎﺅﮞ ﮔﺎ !! ﺑﮩﺖ ﺳﺎﺭﮮ !! ""

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ﻋﺎﺑﯽ ﻣﮑﮭﻨﻮﯼ

خیال رہے کہ "اُفق کے پار" یا میرے دیگر بلاگ کے،جملہ حقوق محفوظ نہیں ۔ !

افق کے پار
دیکھنے والوں کو اگر میرا یہ مضمون پسند آئے تو دوستوں کو بھی بتائیے ۔ آپ اِسے کہیں بھی کاپی اور پیسٹ کر سکتے ہیں ۔ ۔ اگر آپ کو شوق ہے کہ زیادہ لوگ آپ کو پڑھیں تو اپنا بلاگ بنائیں ۔