میرے چاروں طرف افق ہے جو ایک پردہء سیمیں کی طرح فضائے بسیط میں پھیلا ہوا ہے،واقعات مستقبل کے افق سے نمودار ہو کر ماضی کے افق میں چلے جاتے ہیں،لیکن گم نہیں ہوتے،موقع محل،اسے واپس تحت الشعور سے شعور میں لے آتا ہے، شعور انسانی افق ہے،جس سے جھانک کر وہ مستقبل کےآئینہ ادراک میں دیکھتا ہے ۔
دوستو ! اُفق کے پار سب دیکھتے ہیں ۔ لیکن توجہ نہیں دیتے۔ آپ کی توجہ مبذول کروانے کے لئے "اُفق کے پار" یا میرے دیگر بلاگ کے،جملہ حقوق محفوظ نہیں ۔ پوسٹ ہونے کے بعد یہ آپ کے ہوئے ، آپ انہیں کہیں بھی کاپی پیسٹ کر سکتے ہیں ، کسی اجازت کی ضرورت نہیں !( مہاجرزادہ)

فیس بک کے دیوانے

جمعہ، 8 جولائی، 2016

ایک کردار ساز شخصیت - عبدالستّار ایدھی



میں پڑھا لکھا تو نہیں ہوں لیکن مارکس اور لینن کی کتابیں پڑھی ہیں۔ کربلا والوں کی زندگی پڑھی ہے ۔
میں تمہیں بتاتا ہوں اصل جنگ کس کی ہے۔
اصل جنگ امیر و غریب کی ہے۔ ظالم و مظلوم کی ہے !
ـ عبدالستار ایدھی


**************************************


كُلُّ نَفْسٍ ذَائِقَةُ الْمَوْتِ ۗ
  **************************************
 آج ہم عبدالستار ایدھی کی 88 سال کی عمر میں وفات کا غم منا رہے ہیں ۔ 



لیکن اُس کا نام ، اُس وقت تک پاکستان کیا دنیا میں رہے گا جب تک ، مریضوں اور لاشوں کو اُٹھانے والی ایمبولینس ، ایدھی کے نام کے ساتھ سڑکوں پر دوڑتی رہے گی ۔

 ایدھی ، ایک آئیڈیا ،
 ایدھی ، ایک سوچ ،
 ایدھی ، ایک مکتب ،
 ایدھی ،ایک انسانیت کا ہرکارہ

 ایدھی ، انجیل کا عالم ، انجیل جس میں ، دکھی انسانوں کا علاج درج ہے ، سنتِ مسیح عیسیٰ ابن مریم پر چلنے والوں کے لئے ۔
إِذْ قَالَ اللَّـهُ يَا عِيسَى ابْنَ مَرْيَمَ
اذْكُرْ نِعْمَتِي عَلَيْكَ وَعَلَىٰ وَالِدَتِكَ
إِذْ أَيَّدتُّكَ بِرُوحِ الْقُدُسِ تُكَلِّمُ النَّاسَ فِي الْمَهْدِ وَكَهْلًا
وَإِذْ عَلَّمْتُكَ الْكِتَابَ وَالْحِكْمَةَ وَالتَّوْرَاةَ وَالْإِنجِيلَ
وَإِذْ تَخْلُقُ مِنَ الطِّينِ كَهَيْئَةِ الطَّيْرِ بِإِذْنِي فَتَنفُخُ فِيهَا فَتَكُونُ طَيْرًا بِإِذْنِي وَتُبْرِئُ الْأَكْمَهَ وَالْأَبْرَصَ بِإِذْنِي
وَإِذْ تُخْرِجُ الْمَوْتَىٰ بِإِذْنِي
وَإِذْ كَفَفْتُ بَنِي إِسْرَائِيلَ عَنكَ
إِذْ جِئْتَهُم بِالْبَيِّنَاتِ فَقَالَ الَّذِينَ كَفَرُوا مِنْهُمْ
إِنْ هَـٰذَا إِلَّا سِحْرٌ مُّبِينٌ
  ﴿5/110




عبدالستار ایدھی انٹرنیشنل ائر پورٹ اسلام آباد
 http://www.ufaqkaypaar.com/2016/06/blog-post_3.html

 

خیال رہے کہ "اُفق کے پار" یا میرے دیگر بلاگ کے،جملہ حقوق محفوظ نہیں ۔ !

افق کے پار
دیکھنے والوں کو اگر میرا یہ مضمون پسند آئے تو دوستوں کو بھی بتائیے ۔ آپ اِسے کہیں بھی کاپی اور پیسٹ کر سکتے ہیں ۔ ۔ اگر آپ کو شوق ہے کہ زیادہ لوگ آپ کو پڑھیں تو اپنا بلاگ بنائیں ۔