میرے چاروں طرف افق ہے جو ایک پردہء سیمیں کی طرح فضائے بسیط میں پھیلا ہوا ہے،واقعات مستقبل کے افق سے نمودار ہو کر ماضی کے افق میں چلے جاتے ہیں،لیکن گم نہیں ہوتے،موقع محل،اسے واپس تحت الشعور سے شعور میں لے آتا ہے، شعور انسانی افق ہے،جس سے جھانک کر وہ مستقبل کےآئینہ ادراک میں دیکھتا ہے ۔
دوستو ! اُفق کے پار سب دیکھتے ہیں ۔ لیکن توجہ نہیں دیتے۔ آپ کی توجہ مبذول کروانے کے لئے "اُفق کے پار" یا میرے دیگر بلاگ کے،جملہ حقوق محفوظ نہیں ۔ پوسٹ ہونے کے بعد یہ آپ کے ہوئے ، آپ انہیں کہیں بھی کاپی پیسٹ کر سکتے ہیں ، کسی اجازت کی ضرورت نہیں !( مہاجرزادہ)

فیس بک کے دیوانے

منگل، 1 نومبر، 2016

مصرع جو گُم ہو گیا !



اردوشاعری کی تاریخ میں بہت سےایسےاشعارہیں کہ جن کاپہلا مصرعہ اتنا مشہور ہوا کہ ان کا دوسرا مصرعہ جاننے کی کبھی ضرورت محسوس ہی نہیں ہوئی۔ تو کیا یہ مصرعے ایسے ہی تخلیق ہوئے یا ان کا کوئی دوسرا مصرعہ بھی ہے. 

 ایسے شعر درجِ ذیل ہیں کیا آپ اِن کا دوسرا مصرعہ جانتے ہیں ؟

٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭
گلزارِ ہست و بود نہ بیگانہ وار دیکھ
ہے دیکھنے کی چیز اسے بار بار دیکھ 

٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭
ہم طالب شہرت ہیں ہمیں ننگ سے کیا کام
بدنام اگر ہوں گے تو کیا نام نہ ہوگا
٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭
خط ان کا بہت خوب’عبارت بہت اچھی
اللہ کر ےزورِقلم اور بھی زیادہ
٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭
نزاکت بن نہیں سکتی حسینوں کے بنانے سے
خدا جب حسن دیتا ہے نزاکت آ ہی جاتی ہے
٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭
یہ راز تو کوئی راز نہیں ،سب اہلِ گلستان جانتے ہیں
ہر شاخ پہ اُلو بیٹھا ہے انجامِ گلستاں کیا ہوگا
٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭
داورِ محشر میرے نامہ اعمال نہ کھول
اس میں کچھ پردہ نشینوں کے بھی نام آتے ہیں
٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭
میں کس کے ہاتھ پر اپنا لہو تلاش کروں
تمام شہر نے پہنے ہوئے ہیں دستانے
٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭
ہم کو معلوم ہے جنت کی حقیقت لیکن
دل کےخوش رکھنے کو غالب یہ خیال اچھا ہے
٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭
قیس جنگل میں اکیلا ہے مجھے جانے دو
خوب گزرے گی جب مل بیٹھیں گے دیوانے دو
٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭
غم و غصہ و رنج و اندوں و حرما ں
ہمارے بھی ہیں مہرباں کیسے کیسے
٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭
مریضِ عشق پہ رحمت خدا کی
مرض بڑھتا گیا جوں جوں دوا کی
٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭
آخرگِل اپنی صرفِ میکدہ ہوئی
پہنچی وہیں پہ خاک جہاں کا خمیر تھا
٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭
بہت جی خوش ہواحالی سے مل کر
ابھی کچھ لوگ باقی ہیں اِس جہاں میں
٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭
نہ جانا کہ دنیا سے جاتا ہے کوئی
بڑی دیر کی مہرباں آتے آتے
٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭
نہ گورِسکندر نہ ہی قبرِ داراں
مٹے نامیوں کے نشاں کیسے کیسے
٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭
غیروں سے کہا تم نے، غیروں سے سنا تم نے
کچھ ہم سے کہا ہوتا کچھ ہم سے سنا ہوتا
٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭
جذبِ شوق سلامت ہے تو انشاءاللہ
کچھے دھاگے سے چلیں آئیں گے سرکار بندھے
٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭
قریب ہے یارو روزِمحشر، چھپے گا کشتوں کا خون کیونکر
جو چپ رہے گی زبانِ خنجر، لہو پکارے گا آستین کا
٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭
پھول تو دو دن بہارِجاں فزاں کھلا گئے
حسرت اُن غنچوں پہ ہے جو بن کھلے مرجھا گئے
٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭
کی میرے قتل کے بعد اُس نے جفا سے توبہ
ہائے اُس زود پشیماں کا پشیماں ہونا
٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭
خوب پردہ ہے چلمن سے لگے بیٹھے ہیں
صاف چھپتے بھی نہیں ،سامنے آتے بھی نہیں
٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭
اس سادگی پہ کون نہ مرجائے اے خدا
لڑتے بھی ہیں اور ہاتھ میں تلوار بھی نہیں
٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭
چل ساتھ کہ حسرت دلِ مرحوم سے نکلے
عاشق کا جنازہ ہے ذرا دھوم سے نکلے
٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭
الجھا ہے پاؤں یار کا زلف دراز میں 
  لو آپ  اپنے دام میں صیاد آ گیا 

٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭
اسی لئے تو قتل عاشقاں سے منع کرتے ہیں
اکیلے پھر رہے ہو یوسف بے کاررواں ہو کر

٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭
ہند کے شاعر و صورت گر و افسانہ نويس
آہ ! بيچاروں کے اعصاب پہ عورت ہے سوار

٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭
  
یہ فتنۃ آدمی کی خانہ ویرانی کو کیا کم ہے
ہوئے تم دوست جسکے دشمن اسکا آسماں
٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭

خیال رہے کہ "اُفق کے پار" یا میرے دیگر بلاگ کے،جملہ حقوق محفوظ نہیں ۔ !

افق کے پار
دیکھنے والوں کو اگر میرا یہ مضمون پسند آئے تو دوستوں کو بھی بتائیے ۔ اگر آپ کو شوق ہے کہ زیادہ لوگ آپ کو پڑھیں تو اپنا بلاگ بنائیں ۔