میرے چاروں طرف افق ہے جو ایک پردہء سیمیں کی طرح فضائے بسیط میں پھیلا ہوا ہے،واقعات مستقبل کے افق سے نمودار ہو کر ماضی کے افق میں چلے جاتے ہیں،لیکن گم نہیں ہوتے،موقع محل،اسے واپس تحت الشعور سے شعور میں لے آتا ہے، شعور انسانی افق ہے،جس سے جھانک کر وہ مستقبل کےآئینہ ادراک میں دیکھتا ہے ۔
دوستو ! اُفق کے پار سب دیکھتے ہیں ۔ لیکن توجہ نہیں دیتے۔ آپ کی توجہ مبذول کروانے کے لئے "اُفق کے پار" یا میرے دیگر بلاگ کے،جملہ حقوق محفوظ نہیں ۔ پوسٹ ہونے کے بعد یہ آپ کے ہوئے ، آپ انہیں کہیں بھی کاپی پیسٹ کر سکتے ہیں ، کسی اجازت کی ضرورت نہیں !( مہاجرزادہ)

فیس بک کے دیوانے

ہفتہ، 26 نومبر، 2016

گرم پانی افق کے پار

1978 کاذکر ہے میں نوشہرہ میں کورس کر رہاتھا ، اطلاع ملی کے روسی ٹروپس دریائے آمو پار کر کے ، افغانستان میں داخل ہوگئے ہیں ۔ جہاں سے اُن کا ارادہ عظیم بلوچستان بنانے کے بعد گرم پانیوں میں ، گوادر کے راستے بحیرہ عرب پہنچے ۔
ٹل پہنچنے کے بعد میں علی زئی کے پاس انظر گڑھ پر اوپی سنبھالنے کا حکم ہوا ۔
پھر کمیونسٹ اور اسلام کی جنگ پاکستان میں چھڑ گئی اور بالآخر روس کا آخری فوجی دل میں حسرت اور اداس سوچوں سمیت ، افغانستان میں اُفق کے پار گرم پانیوں تک پہنچنے کا خواب بسائے ، اپنے تین سو ہیلی کاپٹر،  سو جنگی جہاز اور ڈیڑھ سو لوہے کے ٹینک اسکریپ بنوا کر ،
واپس دریائے آمو پار کر رہاتھا کمیونسٹ ملک چین بھی ہے ، لیکن اُس کے کمیونزم سے امریکہ کو اتنا خطرہ نہیں تھا جتنا بھیانک تصوّر، یہودی میڈیا نے دنیا کے دماغوں میں بٹھایا -
 
کمیونسٹ چین نے جو راستہ چنا وہ بھی گرم پانیوں کی طرف پاکستان ہی سے جاتا تھا ۔ جس میں ہر سال گوادر سے یورپ، افریقہ، وسطی ایشیاء اور خلیج تک چار سو بحری جہاز مستقبل میں جائیں گے

آج چین دنیا کی سب بڑی سافٹ پاور ہے جس کی بدولت وہ کوئی ملک طاقت کی بنیاد پر فتح کرنا تو دور کی بات،  ایک گولی چلائے بغیر ہی سپر پاور بننے جارہاہے، چین کی یہ طے شدہ پالیسی ہے کہ دنیا کے کسی جھگڑے، باہمی چپقلش اور قتل و غارت کا حصہ نہیں بنے گا۔
بلکہ اقتصادی میدان میں سپرپاورز کی پیچھے چھوڑ دے گا جن کی اقتصادی ترقی کا دارومدار ، جنگی ہتھیار بنانے اور جنگ کروانے پر ہے -
چین کی اِس سوچ نے "چین پاکستان اقتصادی راہداری"  کے خواب کو اُفق کے پار سے کھینچ کر اپنی گود میں لاکرحقیقت میں ڈھالا -

خیال رہے کہ "اُفق کے پار" یا میرے دیگر بلاگ کے،جملہ حقوق محفوظ نہیں ۔ !

افق کے پار
دیکھنے والوں کو اگر میرا یہ مضمون پسند آئے تو دوستوں کو بھی بتائیے ۔ آپ اِسے کہیں بھی کاپی اور پیسٹ کر سکتے ہیں ۔ ۔ اگر آپ کو شوق ہے کہ زیادہ لوگ آپ کو پڑھیں تو اپنا بلاگ بنائیں ۔