میرے چاروں طرف افق ہے جو ایک پردہء سیمیں کی طرح فضائے بسیط میں پھیلا ہوا ہے،واقعات مستقبل کے افق سے نمودار ہو کر ماضی کے افق میں چلے جاتے ہیں،لیکن گم نہیں ہوتے،موقع محل،اسے واپس تحت الشعور سے شعور میں لے آتا ہے، شعور انسانی افق ہے،جس سے جھانک کر وہ مستقبل کےآئینہ ادراک میں دیکھتا ہے ۔
دوستو ! اُفق کے پار سب دیکھتے ہیں ۔ لیکن توجہ نہیں دیتے۔ آپ کی توجہ مبذول کروانے کے لئے "اُفق کے پار" یا میرے دیگر بلاگ کے،جملہ حقوق محفوظ نہیں ۔ پوسٹ ہونے کے بعد یہ آپ کے ہوئے ، آپ انہیں کہیں بھی کاپی پیسٹ کر سکتے ہیں ، کسی اجازت کی ضرورت نہیں !( مہاجرزادہ)

فیس بک کے دیوانے

ہفتہ، 22 اپریل، 2017

ایک قرآن فہم خاتون کا قصہ!

ﺍﯾﮏ قرآن فہم ﺧﺎﺗﻮﻥ کی کہانی، جو ہر بات کا جواب قرآن کی آیت سے دیتی تھی جس نے نعمان بن ثابت (ﻤﺘﻮﻓﯽ 150 ﮪ) کے شاگرد ﻣﺤﺪﺙ ﻭ ﻓﻘﯿﮧ عبداللہ بن مبارک ( ﺍﻟﻤﺘﻮﻓﯽ 181 ﮪ) کو شرمندہ کر دیا ۔

یہ اُسی طرح کی کہانیوں میں سے ہے ، جو عموماً ایرانی پند و نصائح میں شمار ہوتی ہیں ، جنکا مقصد لوگوں کو دلچسپ مذہبی مواد فراہم کرنا ہے تاکہ ، کہانت گر کاہنوں کی روزی روٹی چلتی رہے ، خواہ وہ کہانت گر بازار ہوں ، یا بازار کی مسجد ۔ کسی بھی کہانی میں عورت کی شمولیت اُس کے محرم کے بغیر اور راستہ بھٹکنے سے ہوتی ہے ۔ کہانی کی مناسبت سے ، جوان ، بیوہ یا بوڑھی خواتین کی شمولیت کی جاتی ہے ، جیسے مختلف سفر ناموں میں ہوتی ہے ،
----------------------
 ﻋﺒﺪ ﺍﻟﻠﮧ ﺑﻦ ﻣﺒﺎﺭﮎ سے منسوب یہ کہانی ہے ، جس میں کئی جھول ہیں :
ﻣﯿﮟ ﺣﺞ ﺑﯿﺖ ﺍﻟﻠﮧ کے لئے ( غالباً اکیلا )  ﻧﮑﻼ۔ کی طرف منسوب بیان ہے !
ﻣﯿﮟ ﺭﺍﺳﺘﮯ ﭘﺮ ﺟﺎﺭﮨﺎ ﺗﮭﺎ ﮐﮧ ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﺍﯾﮏ ﺳﺎﯾﮧ ﺩﯾﮑﮭﺎ ۔ ﻏﻮﺭ ﮐﯿﺎ ﺗﻮ ﻭﮦ ﺍﯾﮏ ﺑﮍﮬﯿﺎ ﺗﮭﯽ ﺟﺲ ﻧﮯ ﺍﻭﻥ ﮐﮯ ﮐﭙﮍﮮ ( شائد سردیوں کا زمانہ تھا ) ﺯﯾﺐ ﺗﻦ ﮐﯿﮯ ﮨﻮﺋﮯ ﺗﮭﮯ ۔ ( ﻏﺎﻟﺒﺎً ﻭﮦ ﺭﺍﺳﺘﮧ ﺑﮭﭩﮏ ﮐﺮ ﺍﭘﻨﮯ محرموں ﺳﮯ ﺑﭽﮭﮍ ﮔﺌﯽ ﺗﮭﯽ )
ﺣﻀﺮﺕ ﻋﺒﺪ ﺍﻟﻠﮧ ﺑﻦ ﻣﺒﺎﺭﮎ ﮐﮯﺳﺎﺗﮫ ﺑﮍﮬﯿﺎ ﮐﯽ ﻣﻨﺪﺭﺟﮧ ﺫﯾﻞ ﮔﻔﺘﮕﻮ ﮨﻮﺋﯽ!
 
 ﻋﺒﺪﺍﻟﻠﮧ ﺑﻦ ﻣﺒﺎﺭﮎ : ﺍﻟﺴﻼﻡ ﻋﻠﯿﮑﻢ ﻭﺭﺣﻤۃ ﺍﻟﻠﮧ ﻭﺑﺮﮐﺎﺗﮧ
ﺑﮍﮬﯿﺎ : ﺳَﻼَﻡٌ ﻗَﻮْﻻً ﻣِﻦ ﺭَّﺏٍّ ﺭَّﺣِﻴﻢٍ
 
عبداللہ بن مبارک : آپ یہاں کیا کر رہی ہیں؟
ﺑﮍﮬﯿﺎ : ﻣَﻦ ﻳُﻀْﻠِﻞِ ﺍﻟﻠَّﻪُ ﻓَﻠَﺎ ﻫَﺎﺩِﻱَ ﻟَﻪُ ۔
 
ﻋﺒﺪﺍﻟﻠﮧ ﺑﻦ ﻣﺒﺎﺭﮎ : ﺁﭖ ﮐﮩﺎﮞ ﺳﮯ ﺁﺭﮨﯽ ﮨﯿﮟ؟
ﺑﮍﮬﯿﺎ : ﺳُﺒْﺤَﺎﻥَ ﺍﻟَّﺬِﻱ ﺃَﺳْﺮَﻯ ﺑِﻌَﺒْﺪِﻩِ ﻟَﻴْﻠًﺎ ﻣِﻦَ ﺍﻟْﻤَﺴْﺠِﺪِ ﺍﻟْﺤَﺮَﺍﻡِ ﺇِﻟَﻰ ﺍﻟْﻤَﺴْﺠِﺪِ ﺍﻟْﺄَﻗْﺼَﻰ۔
 
 ﻋﺒﺪﺍﻟﻠﮧ ﺑﻦ ﻣﺒﺎﺭﮎ : ﺁﭖ ﯾﮩﺎﮞ ﮐﺐ ﺳﮯ ﭘﮍﯼ ﮨﯿﮟ؟
ﺑﮍﮬﯿﺎ : ﺛَﻼﺙَ ﻟَﻴَﺎﻝٍ ﺳَﻮِﻳًّﺎ ۔ ﺑﺮﺍﺑﺮ ﺗﯿﻦ ﺭﺍﺕ ﺳﮯ
------------------------------
------------------
ﻋﺒﺪﺍﻟﻠﮧ ﺑﻦ ﻣﺒﺎﺭﮎ : ﺗﻤﮩﺎﺭﮮ ﮐﮭﺎﻧﮯ ﮐﺎ ﮐﯿﺎ ﺍﻧﺘﻈﺎﻡ ﮨﮯ؟
ﺑﮍﮬﯿﺎ : ﻭَﺍﻟَّﺬﻱ ﻫُﻮَ ﻳُﻄْﻌِﻤُﻨﻲ ﻭَ ﻳَﺴْﻘﻴﻦِ ۔ ﻭﮦ ﻣﺠﮭﮯ ﮐﮭﻼﺗﺎ ﭘﻼﺗﺎ ﮨﮯ ۔
 
ﻋﺒﺪﺍﻟﻠﮧ ﺑﻦ ﻣﺒﺎﺭﮎ : ﮐﯿﺎ ﻭﺿﻮ ﮐﺎ ﭘﺎﻧﯽ ﻣﻮﺟﻮﺩ ﮨﮯ؟
ﺧﺎﺗﻮﻥ : ﻓَﻠَﻢْ ﺗَﺠِﺪُﻭﺍ ﻣَﺎﺀً ﻓَﺘَﻴَﻤَّﻤُﻮﺍ ﺻَﻌِﻴﺪًﺍ ﻃَﻴِّﺒًﺎ ۔
ﺍﮔﺮ ﺗﻢ ﭘﺎﻧﯽ ﻧﮧ ﭘﺎﺋﻮ ﺗﻮ ﭘﺎﮎ ﻣﭩﯽ ﺳﮯ ﺗﯿﻤﻢ ﮐﺮﻭ۔
 
 
ﻋﺒﺪﺍﻟﻠﮧ ﺑﻦ ﻣﺒﺎﺭﮎ : ﯾﮧ ﮐﮭﺎﻧﺎ ﺣﺎﺿﺮ ﮨﮯ ﮐﮭﺎ ﻟﯿﺠﺌﮯ۔

ﺧﺎﺗﻮﻥ : ﺃَﺗِﻤُّﻮﺍ ﺍﻟﺼِّﻴَﺎﻡَ ﺇِﻟَﻰ ﺍﻟﻠَّﻴْﻞِ۔ ﺭﻭﺯﮮ ﺭﺍﺕ ﮐﮯ ﺁﻏﺎﺯ ﺗﮏ ﭘﻮﺭﮮ ﮐﺮﻭ۔
 
ﻋﺒﺪﺍﻟﻠﮧ ﺑﻦ ﻣﺒﺎﺭﮎ : ﯾﮧ ﺭﻣﻀﺎﻥ ﮐﺎ ﻣﮩﯿﻨﮧ ﺗﻮ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﮯ۔
ﺑﮍﮬﯿﺎ : ﻭَﻣَﻦ ﺗَﻄَﻮَّﻉَ ﺧَﻴﺮًﺍ ﻓَﺈِﻥَّ ﺍﻟﻠَّﻪَ ﺷﺎﻛِﺮٌ ﻋَﻠﻴﻢٌ۔
ﺍﻭﺭ ﺟﻮ ﻧﯿﮑﯽ ﮐﮯ ﻃﻮﺭ ﭘﺮ ﺧﻮﺷﯽ ﺳﮯ ﺭﻭﺯﮦ ﺭﮐﮭﮯ ﺗﻮ ﺑﯿﺸﮏ ﺍﻟﻠﮧ ﺗﻌﺎﻟﯽ ﺷﺎﮐﺮ ﺍﻭﺭ ﻋﻠﯿﻢ ﮨﮯ۔
 
ﻋﺒﺪﺍﻟﻠﮧ ﺑﻦ ﻣﺒﺎﺭﮎ : ﻟﯿﮑﻦ ﺳﻔﺮ ﻣﯿﮟ ﺗﻮ ﺭﻭﺯﮦ ﺍﻓﻄﺎﺭ ﮐﺮﻟﯿﻨﮯ ﮐﯽ ﺍﺟﺎﺯﺕ ﮨﮯ۔
ﺑﮍﮬﯿﺎ : ﻭَﺍَﻥْ ﺗَﺼُﻮْﻣُﻮْﺍ ﺧَﯿْﺮٌﻟَّﮑُﻢْ، ﺍِﻥْ ﮐُﻨْﺘُﻢْ ﺗَﻌْﻠَﻤُﻮْﻥَ۔
ﺍﻭﺭ ﺍﮔﺮ ﺗﻢ ﺭﻭﺯﮦ ﺭﮐﮭﻮ ﺗﻮ ﺗﻤﮩﺎﺭﮮ ﻟﯿﮯ ﺑﮩﺘﺮ ﮨﮯ ، ﺍﮔﺮ ﺗﻢ ﺟﺎﻧﻮ۔
 
ﻋﺒﺪﺍﻟﻠﮧ ﺑﻦ ﻣﺒﺎﺭﮎ : ﺁﭖ ﻣﯿﺮﮮ ﺟﯿﺴﮯ ﺍﻧﺪﺍﺯ ﻣﯿﮟ ﺑﺎﺕ ﮐﺮﯾﮟ۔
ﺑﮍﮬﯿﺎ : ﻣَﺎ ﻳَﻠْﻔِﻆُ ﻣِﻦْ ﻗَﻮْﻝٍ ﺇِﻟَّﺎ ﻟَﺪَﻳْﻪِ ﺭَﻗِﻴﺐٌ ﻋَﺘِﻴﺪٌ ۔
ﻭﮦ ﮐﻮﺉِ ﺑﺎﺕ ﻧﮩﯿﮟ ﮐﺮﺗﺎ ﻣﮕﺮ ﯾﮧ ﺍﺱ ﮐﮯ ﭘﺎﺱ ﺍﯾﮏ ﻣﺴﺘﻌﺪ ﻧﮕﮩﺒﺎﻥ ﺿﺮﻭﺭ ﮨﻮﺗﺎ ﮨﮯ۔
 
 ﻋﺒﺪﺍﻟﻠﮧ ﺑﻦ ﻣﺒﺎﺭﮎ : ﮐﺲ ﻗﺒﯿﻠﮧ ﺳﮯ ﺗﻌﻠﻖ ﺭﮐﮭﺘﯽ ﮨﯿﮟ؟
ﺑﮍﮬﯿﺎ : ﻭَﻻ ﺗَﻘْﻒُ ﻣَﺎ ﻟَﻴْﺲَ ﻟَﻚَ ﺑِﻪِ ﻋِﻠْﻢٌ ﺇِﻥَّ ﺍﻟﺴَّﻤْﻊَ ﻭَﺍﻟْﺒَﺼَﺮَ ﻭَﺍﻟْﻔُﺆَﺍﺩَ ﻛُﻞُّ ﺃُﻭْﻟَﺌِﻚَ ﻛَﺎﻥَ ﻋَﻨْﻪُ ﻣَﺴْﺌُﻮﻟًﺎ۔
ﺟﻮ ﺑﺎﺕ ﺗﻤﮩﯿﮟ ﻣﻌﻠﻮﻡ ﻧﮧ ﮨﻮ ﺍﺱ ﮐﮯ ﺩﺭﭘﮯ ﻧﮧ ﮨﻮ۔
ﺑﯿﺸﮏ ﮐﺎﻥ، ﺁﻧﮑﮫ ﺍﻭﺭ ﺩﻝ ﺍﺱ ﮐﯽ ﻃﺮﻑ ﺳﮯ ﺟﻮﺍﺑﺪﮦ ﮨﯿﮟ۔
 
 ﻋﺒﺪﺍﻟﻠﮧ ﺑﻦ ﻣﺒﺎﺭﮎ : ﻣﺠﮭﮯ ﻣﻌﺎﻑ ﮐﺮﺩﯾﮟ ، ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﻭﺍﻗﻌﯽ ﻏﻠﻄﯽ ﮐﯽ۔
ﺑﮍﮬﯿﺎ : ﻟَﺎ ﺗَﺜْﺮِﻳﺐَ ﻋَﻠَﻴْﻜُﻢُ ﺍﻟْﻴَﻮْﻡَ ۖ ﻳَﻐْﻔِﺮُ ﺍﻟﻠَّﻪُ ﻟَﻜُﻢْ ۔
ﺁﺝ ﺗﻢ ﭘﺮ ﮐﻮﺉِ ﻣﻼﻣﺖ ﻧﮩﯿﮟ، ﺍﻭﺭ ﺍﻟﻠﮧ ﺗﻤﮩﯿﮟ ﺑﺨﺶ ﺩﮮ۔
 
ﻋﺒﺪﺍﻟﻠﮧ ﺑﻦ ﻣﺒﺎﺭﮎ : ﮐﯿﺎ ﺁﭖ ﻣﯿﺮﯼ ﺍﻭﻧﭩﻨﯽ ﭘﺮ ﺑﯿﭩﮫ ﮐﺮ ﻗﺎﻓﻠﮧ ﺳﮯ ﺟﺎ ﻣﻠﻨﺎ ﭘﺴﻨﺪ ﮐﺮﯾﮟ ﮔﯽ؟
ﺑﮍﮬﯿﺎ : ﻭَﻣَﺎ ﺗَﻔْﻌَﻠُﻮﺍ ﻣِﻦْ ﺧَﻴْﺮٍ ﻳَﻌْﻠَﻤْﻪُ ﺍﻟﻠَّﻪُ۔
ﺍﻭﺭ ﺗﻢ ﺟﻮ ﻧﯿﮑﯽ ﮐﺮﺗﮯ ﮨﻮ۔ ﺍﻟﻠﮧ ﺍﺳﮯ ﺟﺎﻥ ﻟﯿﺘﺎ ﮨﮯ۔
 
 ﻋﺒﺪ ﺍﻟﻠﮧ ﺑﻦ ﻣﺒﺎﺭﮎ ﻓﺮﻣﺎﺗﮯ ﮨﯿﮟ ﮐﮧ ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﺍﭘﻨﯽ ﺍﻭﻧﭩﻨﯽ ﺑﭩﮭﺎ ﺩﯼ
( ﺗﺎﮐﮧ ﻭﮦ ﺧﺎﺗﻮﻥ ﺍﺱ ﭘﺮ ﺳﻮﺍ ﺭ ﮨﻮﺟﺎﺋﮯ )
ﺑﮍﮬﯿﺎ : ﻗُﻞ ﻟِّﻠْﻤُﺆْﻣِﻨِﻴﻦَ ﻳَﻐُﻀُّﻮﺍ ﻣِﻦْ ﺃَﺑْﺼَﺎﺭِﻫِﻢْ۔
ﺍﻭﺭ ﺍﮨﻞ ﺍﯾﻤﺎﻥ ﺳﮯﮐﮩﮧ ﺩﯾﺠﺌﮯ ﮐﮧ ﻭﮦ ﺍﭘﻨﯽ ﻧﮕﺎ ﮨﯿﮟ ﻧﯿﭽﯽ ﺭﮐﮭﯿﮟ۔

ﻓﺮﻣﺎﺗﮯ ﮨﯿﮟ ﮐﮧ ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﺍﭘﻨﯽ ﺍٓﻧﮑﮭﯿﮟ ﭘﮭﯿﺮ ﻟﯿﮟ ﺍﻭﺭ ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﮐﮩﺎ ﮐﮧ ﺗﻮ ﺳﻮﺍﺭ ﮨﻮ ﺟﺎ
ﺟﺐ ﻭﮦ ﻋﻮﺭﺕ ﺳﻮﺍﺭ ﮨﻮﻧﮯ ﻟﮕﯽ ﺗﻮ ﺍﻭﻧﭩﻨﯽ ﺑﺪﮎ ﺍﭨﮭﯽ ﺟﺲ ﺳﮯ ﺍﺱ ﺧﺎﺗﻮﻥ ﮐﮯ ﮐﭙﮍﮮ ﭘﮭﭧ ﮔﺌﮯ
ﺑﮍﮬﯿﺎ : ﻭَﻣَﺎ ﺃَﺻَﺎﺑَﻜُﻢْ ﻣِﻦْ ﻣُﺼِﻴﺒَﺔٍ ﻓَﺒِﻤَﺎ ﻛَﺴَﺒَﺖْ ﺃَﻳْﺪِﻳﻜُﻢْ
ﺗﻢ ﮐﻮ ﺟﻮ ﻣﺼﯿﺒﺖ ﭘﮩﻨﭽﺘﯽ ﮨﮯ ﻭﮦ ﺗﻤﮩﺎﺭﮮ ﺍﭘﻨﮯ ﮨﻮ ﮨﺎﺗﮭﻮﮞ ﮐﯽ ﮐﻤﺎﺋﯽ ﮨﮯ

ﻋﺒﺪ ﺍﻟﻠﮧ ﺑﻦ ﻣﺒﺎﺭﮎ : ﺗﻮ ﺻﺒﺮ ﮐﺮ ﺗﺎﮐﮧ ﻣﯿﮟ ﺍﻭﻧﭩﻨﯽ ﮐﺎ ﮔﮭﭩﻨﺎ ﺑﺎﻧﺪﮬﻮﮞ
( ﺣﻀﺮﺕ ﻋﺒﺪﺍﻟﻠﮧ ﺑﻦ ﻣﺒﺎﺭﮎؒ ﮐﯽ ﺫﮨﺎﻧﺖ ﺍﻭﺭ ﺳﻤﺠﮭﺪﺍﺭﯼ ﮐﯽ ﺩﺍﺩ ﺩﯾﺘﮯ ﮨﻮﺋﮯ )
ﺑﮍﮬﯿﺎ : ﻓَﻔَﻬَّﻤْﻨَﺎﻫَﺎ ﺳُﻠَﻴْﻤَﺎﻥَ۔ ﮨﻢ ﻧﮯ ﺳﻠﯿﻤﺎﻥ ﮐﻮ ﻭﮦ ﻓﯿﺼﻠﮧ ﺳﻤﺠﮭﺎﺩﯾﺎ
( ﯾﻌﻨﯽ ﺍٓﭖ ﺑﮩﺖ ﺳﻤﺠﮭﺪﺍﺭ ﮨﯿﮟ ﮐﮧ ﺑﺎﺕ ﺳﻤﺠﮫ ﮔﺌﮯ ﮨﯿﮟ )
 
ﻋﺒﺪ ﺍﻟﻠﮧ ﺑﻦ ﻣﺒﺎﺭﮎ : ﭘﮭﺮ ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﺍﻭﻧﭩﻨﯽ ﮐﺎ ﭘﺎﺅﮞ ﺑﺎﻧﺪﮬﺎ ﺍﻭﺭ ﻣﯿﮟ ﺍﺳﮯ ﮐﮩﺎ ﺗﻮ ﺳﻮﺍﺭ ﮨﻮﺟﺎ۔
ﺑﮍﮬﯿﺎ ﻧﮯ ﺳﻮﺍﺭ ﮨﻮﺗﮯ ﮨﻮﺋﮯ ﯾﮧ ﺍٓﯾﺖ ﭘﮍﮬﯽ :
ﺳُﺒْﺤَﺎﻥَ ﺍﻟَّﺬِﻱ ﺳَﺨَّﺮَ ﻟَﻨَﺎ ﻫَٰﺬَﺍ ﻭَﻣَﺎ ﻛُﻨَّﺎ ﻟَﻪُ ﻣُﻘْﺮِﻧِﻴﻦَ ﻭَﺇِﻧَّﺎ ﺇِﻟَﻰٰ ﺭَﺑِّﻨَﺎ ﻟَﻤُﻨﻘَﻠِﺒُﻮﻥَ۔
( ﯾﻌﻨﯽ ﺳﻮﺍﺭﯼ ﭘﺮ ﺳﻮﺍﺭ ﮨﻮﻧﮯ ﮐﯽ ﺩﻋﺎ ﺍﺱ ﻋﻮﺭﺕ ﻧﮯ ﭘﮍﮬﯽ )
 
ﻋﺒﺪ ﺍﻟﻠﮧ ﺑﻦ ﻣﺒﺎﺭﮎ ﻧﮯ ﮐﮩﺎ ﮐﮧ ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﺍﻭﻧﭩﻨﯽ ﮐﯽ ﻣﮩﺎﺭ ﭘﮑﮍﯼ
ﺍﻭﺭ ﺗﯿﺰﯼ ﺳﮯ ﭼﻠﻨﮯ ﻟﮕﺎ ﺍﻭﺭ ﺳﯿﭩﯽ ﻣﺎﺭﻧﮯ ﻟﮕﺎ
( ﯾﻌﻨﯽ ﺍﻭﻧﭧ ﮐﻮ ﭼﻼﻧﮯ ﮐﮯ ﻟﺌﮯ ﺟﻮ ﺍٓﻭﺍﺯ ﻧﮑﺎﻟﯽ ﺟﺎﺗﯽ ﮨﮯ )
ﺑﮍﮬﯿﺎ : ﻭَﺍﻗْﺼِﺪْ ﻓِﻲ ﻣَﺸْﻴِﻚَ ﻭَﺍﻏْﻀُﺾْ ﻣِﻦْ ﺻَﻮْﺗِﻚَ ۔
ﺍﭘﻨﯽ ﭼﺎﻝ ﻣﯿﮟ ﻣﯿﺎﻧﮧ ﺭﻭﯼ ﺍﺧﺘﯿﺎﺭ ﮐﺮﻭ ﺍﻭﺭ ﺍﭘﻨﯽ ﺍٓﻭﺍﺯ ﺩﮬﯿﻤﯽ ﺭﮐﮭﻮ۔

ﻋﺒﺪ ﺍﻟﻠﮧ ﺑﻦ ﻣﺒﺎﺭﮎ : ﻣﯿﮟ ﺍٓﮨﺴﺖ ﺍٓﮨﺴﺘﮧ ﭼﻠﻨﮯ ﻟﮕﺎ ﺍﻭﺭ ﺷﻌﺮ ﭘﮍﮬﻨﮯ ﺷﺮﻭﻉ ﮐﺌﮯ۔
ﺑﮍﮬﯿﺎ : ﻓَﺎﻗْﺮَﺀُﻭﺍ ﻣَﺎ ﺗَﻴَﺴَّﺮَ ﻣِﻦَ ﺍﻟْﻘُﺮْﺁﻥِ ۔ ﭘﺲ ﻗﺮﺍٓﻥ ﭘﮍﮬﻮ ﻗﺮﺍٓﻥ ﻣﯿﮟ ﺳﮯﺟﺘﻨﺎ ﺍٓﺳﺎﻥ ﮨﻮ
 
ﻋﺒﺪ ﺍﻟﻠﮧ ﺑﻦ ﻣﺒﺎﺭﮎ : ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﮐﮩﺎ ﺗﺠﮭﮯ ﺑﮩﺖ ﺯﯾﺎﺩﮦ ﺑﮭﻼﺋﯽ ﻋﻄﺎ ﮐﯽ ﮔﺌﯽ ﮨﮯ ۔
ﺑﮍﮬﯿﺎ : ﻭَﻣَﺎ ﻳَﺬَّﻛَّﺮُ ﺇِﻟَّﺎ ﺃُﻭﻟُﻮ ﺍﻟْﺄَﻟْﺒَﺎﺏِ۔ ﺍﻭﻥ ﻧﮩﯿﮟ ﻧﺼﯿﺤﺖ ﭘﮑﮍﺗﮯ ﻣﮕﺮ ﻋﻘﻞ ﻭﺍﻟﮯ
 
ﻋﺒﺪ ﺍﻟﻠﮧ ﺑﻦ ﻣﺒﺎﺭﮎ : ﻣﯿﮟ ﺗﮭﻮﮌﺍ ﺳﺎ ﺍٓﮔﮯ ﭼﻼ ﺗﻮ ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﺍﺱ ﺳﮯ ﭘﻮﭼﮭﺎ ﮐﯿﺎ ﺗﯿﺮﺍ ﺧﺎﻭﻧﺪ ﮨﮯ؟
ﺑﮍﮬﯿﺎ : ﻳَﺎ ﺃَﻳُّﻬَﺎ ﺍﻟَّﺬِﻳﻦَ ﺁﻣَﻨُﻮﺍْ ﻻَ ﺗَﺴْﺄَﻟُﻮﺍْ ﻋَﻦْ ﺃَﺷْﻴَﺎﺀ ﺇِﻥ ﺗُﺒْﺪَ ﻟَﻜُﻢْ ﺗَﺴُﺆْﻛُﻢْ۔
ﺍﮮ ﺍﯾﻤﺎﻥ ﻭﺍﻟﻮ ﺍﻥ ﺍﺷﯿﺎﺀ ﮐﮯ ﺑﺎﺭﮮ ﻣﯿﮟ ﺳﻮﺍﻝ ﻧﮧ ﮐﺮﻭ
ﮐﮧ ﺍﮔﺮ ﺗﻢ ﭘﺮ ﻇﺎﮨﺮ ﮐﺮﺩﯼ ﺟﺎﺋﯿﮟ ﺗﻮ ﺗﻤﮩﯿﮟ ﺗﮑﻠﯿﻒ ﮨﻮ
 
ﻋﺒﺪ ﺍﻟﻠﮧ ﺑﻦ ﻣﺒﺎﺭﮎ ﻓﺮﻣﺎﺗﮯ ﮨﯿﮟ ﮐﮧ ﭘﮭﺮ ﻣﯿﮟ ﺧﺎﻣﻮﺵ ﮨﻮ ﮔﯿﺎ ﯾﮩﺎﮞ ﺗﮏ ﮐﮧ ﻣﯿﮟ ﻗﺎﻓﻠﮧ ﮐﻮ ﭘﺎ ﻟﯿﺎ ﺗﻮ ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﺍﺱ ﻋﻮﺭﺕ ﺳﮯ ﮐﮩﺎ ،
"
ﯾﮧ ﻗﺎﻓﻠﮧ ﮨﮯ۔ ﺗﯿﺮﺍ ﻗﺎﻓﻠﮯ ﻣﯿﮟ ﮐﻮﺋﯽ ﮨﮯ؟
ﺑﮍﮬﯿﺎ : ﺍﻟْﻤَﺎﻝُ ﻭَﺍﻟْﺒَﻨُﻮﻥَ ﺯِﻳﻨَﺔُ ﺍﻟْﺤَﻴَﺎﺓِ ﺍﻟﺪُّﻧْﻴَﺎ
ﻣﺎﻝ ﺍﻭﺭ ﺍﻭﻻﺩ ﺩﻧﯿﺎﻭﯼ ﺯﻧﺪﮔﯽ ﮐﯽ ﺯﯾﻨﺖ ﮨﯿﮟ
ب
ﻋﺒﺪ ﺍﻟﻠﮧ ﺑﻦ ﻣﺒﺎﺭﮎ ﻓﺮﻣﺎﺗﮯ ﮨﯿﮟ
ﮐﮧ ﻣﺠﮭﮯ ﻣﻌﻠﻮﻡ ﮨﻮﮔﯿﺎ ﮐﮧ ﺍﺱ ﮐﮯ ﺑﯿﭩﮯ ﮨﯿﮟ ﺗﻮ ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﭘﻮﭼﮭﺎ ﮐﮧ ﺍﻥ ﮐﯽ ﭘﮩﭽﺎﻥ ﮐﯿﺎ ﮨﮯ؟
ﺑﮍﮬﯿﺎ : ﻭَﻋﻼﻣﺎﺕٍ ﻭَ ﺑﺎﻟﻨَّﺠﻢِ ﻫﻢ ﻳَﻬﺘﺪﻭﻥَ۔
ﺍﻭﺭ ﮐﭽﮫ ﺍﻭﺭ ﻧﺸﺎﻧﯿﺎﮞ ﺍﻭﺭ ﺳﺘﺎﺭﻭﮞ ﺳﮯ ﺑﮭﯽ ﺭﺍﺳﺘﮧ ﻣﻌﻠﻮﻡ ﮐﺮﮮ ﮨﯿﮟ
ب
ﻋﺒﺪ ﺍﻟﻠﮧ ﺑﻦ ﻣﺒﺎﺭﮎ ﻓﺮﻣﺎﺗﮯ ﮨﯿﮟ
ﮐﮧ ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﻋﻤﺎﺭﺍﺕ ﺍﻭﺭ ﺧﯿﻤﻮﮞ ﮐﺎ ﺍﺭﺍﺩﮦ ﮐﯿﺎ ﺍﻭﺭ ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﮐﮩﺎ،
" ﯾﮧ ﺧﯿﻤﮯ ﮨﯿﮟ ﺍﻥ ﻣﯿﮟ ﮐﻮﻥ ﮨﯿﮟ۔
( ﯾﻌﻨﯽ ﺗﯿﺮﮮ ﺑﯿﭩﻮﮞ ﮐﮯ ﻧﺎﻡ ﮐﯿﺎ ﮨﯿﮟ؟ ﺗﺎﮐﮧ ﻣﯿﮟ ﺍﻥ ﮐﻮ ﺑﻼﺅﮞ )
ﺑﮍﮬﯿﺎ : ﻭَﺍﺗّﺨﺬ ﺍﻟﻠﮧُ ﺍِﺑﺮﺍﮬﯿﻢَ ﺧﻠﯿﻼً۔ ﻭﮐﻠَّﻢ ﺍﻟﻠﮧ ﻣﻮﺳٰﯽ ﺗﮑﻠﯿﻤﺎً۔ ﯾﺎ ﯾﺤﯽٰ ﺧﺬِﺍﻟﮑﺘﺎﺏ ﺑﻘﻮۃٍ۔
ﺍﻟﻠﮧ ﻧﮯ ﺍﺑﺮﺍﮨﯿﻢ ﮐﻮ ﺩﻭﺳﺖ ﺑﻨﺎﯾﺎ ﺍﻭﺭ ﺍﻟﻠﮧ ﻧﮯ ﻣﻮﺳٰﯽؑ ﺳﮯﮐﻼﻡ ﮐﯿﺎ۔ ﺍﮮ ﯾﺤﯽٰ ﮐﺘﺎﺏ ﮐﻮ ﻗﻮﺕ ﺳﮯ ﭘﮑﮍ


 
ﻋﺒﺪ ﺍﻟﻠﮧ ﺑﻦ ﻣﺒﺎﺭﮎ ﻓﺮﻣﺎﺗﮯ ﮨﯿﮟ ﮐﮧ ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﺍٓﻭﺍﺯ ﺩﯼ،  ﺍﮮ ﺍﺑﺮﺍﮨﯿﻢ، ﺍﮮ ﻣﻮﺳﯽٰ، ﺍﮮ ﯾﺤﯽ،
ﭘﮭﺮ ﭼﺎﻧﺪ ﮐﯽ ﻃﺮﺡ ﮐﮯ ﻧﻮﺟﻮﺍﻥ ﺑﺮﺍٓﻣﺪ ﮨﻮﺋﮯ ﭘﮭﺮ ﺟﺐ ﺑﯿﭩﮭﮯ ﺗﻮ ۔۔
ﺑﮍﮬﯿﺎ ﻧﮯ ﮐﮩﺎ : ﻓَﺎﺑﻌﺜُﻮ ﺍَﺣَﺪَﮐُﻢ ﺑِﻮَﺭِﻗﮑﻢ ﮬٰﺬﮦٖ ﺍِﻟﯽ ﺍﻟﻤﺪِﯾﻨَۃِ ﻓَﻠﯿﻨﻈﺮ ﺍَﯾﮩﺎ ﺍِﺯﮐٰﯽ ﻃﻌﺎﻣﺎً ﻓﻠﯿﺄﺗﮑﻢ ﺑﺮﺯﻕٍ ﻣﻨﮧُ۔
ﺍﭘﻨﮯ ﻣﯿﮟ ﺍﯾﮏ ﮐﻮ ﺍﭘﻨﺎ ﺳﮑﮧ ﺩﮮ ﮐﺮ ﺍﺱ ﺷﮩﺮ ﺑﮭﯿﺠﻮ
ﺍﻭﺭ ﺍﺳﮯ ﭼﺎﮨﯿﮯ ﮐﮧ ﻭﮦ ﺩﯾﮑﮭﮯ ﮐﮧ ﮐﻮﻧﺴﺎ ﮐﮭﺎﻧﺎ ﺯﯾﺎﺩﮦ ﭘﺎﮐﯿﺰﮦ ﮨﮯ۔
 
ﺗﻮ ﺍﻥ ﻣﯿﮟ ﺳﮯ ﺍﯾﮏ ﻟﮍﮐﺎ ﮔﯿﺎ ﺍﺱ ﻧﮯ ﮐﮭﺎﻧﺎ ﺧﺮﯾﺪﺍ ﺍﻭﺭ ﻭﮦ ﺍﻧﮩﻮﮞ ﻧﮯ ﻣﯿﺮﮮ ﺳﺎﻣﻨﮯ ﭘﯿﺶ ﮐﯿﺎ۔
ﺑﮍﮬﯿﺎ : ﻛُﻠُﻮﺍ ﻭَﺍﺷْﺮَﺑُﻮﺍ ﻫَﻨِﻴﺌًﺎ ﺑِﻤَﺎ ﺃَﺳْﻠَﻔْﺘُﻢْ ﻓِﻲ ﺍﻷﻳَّﺎﻡِ ﺍﻟْﺨَﺎﻟِﻴَﺔِ۔
ﮨﻨﺴﯽ ﺧﻮﺷﯽ ﮐﮭﺎﺅ ﺍﺱ ﮐﮯ ﮐﺎﻡ ﺑﺪﻟﮯ ﻣﯿﮟ ﺟﻮ ﺗﻢ ﻧﮯ ﮔﺰﺷﺘﮧ ﺍﯾﺎﻡ ﻣﯿﮟ ﮐﯿﺎ
 
ﻋﺒﺪ ﺍﻟﻠﮧ ﺑﻦ ﻣﺒﺎﺭﮎ : ( ﺍﺱ ﺑﮍﮬﯿﺎ ﮐﮯ ﻟﮍﮐﻮﮞ ﺳﮯ ﻓﺮﻣﺎﯾﺎ )
ﻣﺠھ ﭘﺮ ﺗﻤﮩﺎﺭﺍ ﮐﮭﺎﻧﺎ ﺍﺱ ﻭﻗﺖ ﺗﮏ ﺣﺮﺍﻡ ﮨﮯ ﺟﺐ ﺗﮏ ﺗﻢ ﻣﺠﮭﮯ ﺍﭘﻨﮯ ﻣﻌﺎﻣﻠﮯ ﮐﯽ ﺧﺒﺮ ﻧﮧ ﺑﺘﺎﺅ
ﺗﻮ ﺍﺱ ﺑﮍﮬﯿﺎ ﮐﮯ ﻟﮍﮐﻮﮞ ﻧﮯ ﺑﺘﻼﯾﺎ
ﮐﮧ ﯾﮧ ﮨﻤﺎﺭﯼ ﻭﺍﻟﺪﮦ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﯾﮧ ﭼﺎﻟﯿﺲ ﺳﺎﻝ ﻗﺮﺍٓﻥ ﮐﯽ ﺯﺑﺎﻥ ﻣﯿﮟ ﮨﯽ ﮔﻔﺘﮕﻮ ﮐﺮﺗﯽ ﮨﯿﮟ
ﺍﺱ ﺧﻮﻑ ﮐﯽ ﻭﺟﮧ ﺳﮯ ﮐﮧ ﮐﮩﯿﮟ ﻣﺠھ ﺳﮯ ﮐﻮﺋﯽ ﻏﻠﻂ ﺑﺎﺕ ﻧﮧ ﻧﮑﻞ ﺟﺎﺋﮯ
ﺟﺲ ﺳﮯ ﺍﻟﻠﮧ ﺗﻌﺎﻟٰﯽ ﻧﺎﺭﺍﺽ ﮨﻮ ﺟﺎﺋﮯ ۔ ﭘﺲ ﭘﺎﮎ ﻭﮦ ﺫﺍﺕ ﺟﻮ ﻗﺎﺩﺭ ﮨﮯ ﮨﺮ ﭼﯿﺰ ﭘﺮ۔
 
ﻋﺒﺪ ﺍﻟﻠﮧ ﺑﻦ ﻣﺒﺎﺭﮎ : ﺫَﻟِﻚَ ﻓَﻀْﻞُ ﺍﻟﻠَّﻪِ ﻳُﺆْﺗِﻴﻪِ ﻣَﻦ ﻳَﺸَﺎﺀ ﻭَﺍﻟﻠَّﻪُ ﺫُﻭ  ﺍﻟْﻔَﻀْﻞِ ﺍﻟْﻌَﻈِﻴﻢِ۔
ﺍﻭﺭ ﯾﮧ ﺍﻟﻠﮧ ﺗﻌﺎﻟﯽٰ ﮐﺎ ﻓﻀﻞ ﮨﮯ ﻭﮦ ﺟﺲ ﮐﻮ ﭼﺎﮨﮯ ﻋﻄﺎ ﮐﺮﺗﺎ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﺍﻟﻠﮧ ﺗﻌﺎﻟﯽٰ ﺑﮍﮮ ﻓﻀﻞ ﻭﺍﻻ ﮨﮯ۔
 ۔
٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭8

خیال رہے کہ "اُفق کے پار" یا میرے دیگر بلاگ کے،جملہ حقوق محفوظ نہیں ۔ !

افق کے پار
دیکھنے والوں کو اگر میرا یہ مضمون پسند آئے تو دوستوں کو بھی بتائیے ۔ اگر آپ کو شوق ہے کہ زیادہ لوگ آپ کو پڑھیں تو اپنا بلاگ بنائیں ۔