میرے چاروں طرف افق ہے جو ایک پردہء سیمیں کی طرح فضائے بسیط میں پھیلا ہوا ہے،واقعات مستقبل کے افق سے نمودار ہو کر ماضی کے افق میں چلے جاتے ہیں،لیکن گم نہیں ہوتے،موقع محل،اسے واپس تحت الشعور سے شعور میں لے آتا ہے، شعور انسانی افق ہے،جس سے جھانک کر وہ مستقبل کےآئینہ ادراک میں دیکھتا ہے ۔
دوستو ! اُفق کے پار سب دیکھتے ہیں ۔ لیکن توجہ نہیں دیتے۔ آپ کی توجہ مبذول کروانے کے لئے "اُفق کے پار" یا میرے دیگر بلاگ کے،جملہ حقوق محفوظ نہیں ۔ پوسٹ ہونے کے بعد یہ آپ کے ہوئے ، آپ انہیں کہیں بھی کاپی پیسٹ کر سکتے ہیں ، کسی اجازت کی ضرورت نہیں !( مہاجرزادہ)

فیس بک کے دیوانے

جمعہ، 30 جون، 2017

ﻣﺪﺩ ﮐﺮﯾﮟ ﮈﺍﮐﻮ ﻧﺎ ﺑﻨﯿﮟ

ﮨﻢ ﺍﻭﺭ ﮨﻤﺎﺭﮮ ﻏﯿﺮ ﻣﮩﺬﺏ ﺭﻭﯾﮯ ..

ﻓﯿﺼﻞ ﺁﺑﺎﺩ ﻧﺰﺩ ﺍﻻ ﺋﯿﮉ ﮨﺴﭙﺘﺎﻝ ﻣﯿﮟ ﺍﯾﮏ ﺩﻓﻌﮧ ﺍﻧﮉﻭﮞ ﺳﮯ ﺑﮭﺮﺍ ﭨﺮﮎ ﺣﺎﺩﺛﮯ ﮐﺎ ﺷﮑﺎﺭ ﮨﻮﺍ ﮐﻮﺋﯽ ﺗﯿﻦ ﭼﺎﺭ ﻣﻨﭧ ﺑﻌﺪ ﻣﯿﮟ ﺑﮭﯽ ﺭﺵ ﻟﮕﺎ ﺩﯾﮑﮫ ﮐﺮ ﺍﭘﻨﯽ ﺑﺎﺋﯿﮏ ﺳﮯ ﺍﺗﺮ ﮐﺮ ﺩﯾﮑﮭﻨﮯ ﻟﮕﺎ ﻟﻮﮒ ﺷﺎﭘﺮ ﺑﺎﻟﭩﯿﺎﮞ ﺑﮭﺮ ﺑﮭﺮ ﮐﺮ ﺍﻧﮉﻭﮞ ﮐﻮ ﺟﻤﻊ ﮐﺮ ﺭﻫﮯ ﺗﮭﮯ ﺍﻭﺭ ﻟﮯ ﺟﺎ ﺭﻫﮯ ﺗﮭﮯ ﮐﺌﯽ ﻋﻮﺭﺗﻮﮞ ﮐﻮ ﺩﻭﭘﭩﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺑﮭﯽ ﺟﻠﺪﯼ ﺟﻠﺪﯼ ﻣﺎﻝ ﻣﻔﺖ ﺟﻤﻊ ﮐﺮﺗﮯ ﺩﯾﮑﮭﺎ ،
ﭼﻮﻧﮑﮧ ﻧﻤﺎﺯ ﻓﺠﺮ ﮐﮯ ﮐﭽﮫ ﺩﯾﺮ ﺑﻌﺪ ﮐﺎ ﻭﺍﻗﻌﮧ ﺗﮭﺎ ﺗﻮ ﮐﺌﯽ ﻣﺮﺩ ﺍﻭﺭ ﻧﻮﺟﻮﺍﻥ ﺑﻐﯿﺮ ﻗﻤﯿﺾ ﺑﮭﯽ ﻣﺎﻝ ﻏﻨﯿﻤﺖ ﻟﻮﭨﻨﮯ ﻣﯿﮟ ﺑﺰﯼ ﺗﮭﮯ
ﻣﯿﮟ ﯾﮧ ﺳﺐ ﺩﯾﮑﮭﺘﮯ ﮨﻮﮰ ﮐﭽﮫ ﻣﺤﻈﻮﻅ ﺑﮭﯽ ﺍﻭﺭ ﮐﭽﮫ ﺷﺮﻣﻨﺪﮦ ﺑﮭﯽ ﮨﻮ ﺭﮬﺎ ﺗﮭﺎ ﺍﭘﻨﯽ ﻗﻮﻡ ﮐﯽ ﺍﺱ ﺍﺧﻼﻗﯽ ﭘﺴﺘﯽ ﺍﻭﺭ ﻏﯿﺮ ﻣﮩﺬﺏ ﺭﻭﯾﮧ ﮐﻮ ﺩﯾﮑﮭﺘﮯ ﮨﻮﮰ ﺟﻠﺪ ﺑﺎﺯﯼ ﻣﯿﮟ ﻟﻮﮒ ﺟﻮﺍﺏ ﻧﮩﯽ ﺩﮮ ﭘﺎ ﺭﻫﮯ ﺗﮭﮯ ﻣﺎﻝ ﻣﻔﺖ ﮐﻮ ﺳﻤﯿﭩﻨﮯ ﮐﯽ ﻭﺟﮧ ﺳﮯ ،
ﺟﺐ ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﺍﯾﮏ ﺩﻭ ﺑﺎﺭ ﮐﭽﮫ ﻟﻮﮔﻮﮞ ﺳﮯ ﭨﺮﮎ ﻭﺍﻟﮯ ﮐﺎ ﺍﺣﻮﺍﻝ ﺟﺎﻧﻨﺎ ﭼﺎﮨﺎ ﺗﻮ ﭘﮭﺮ ﻣﯿﮟ ﺧﻮﺩ ﮨﯽ ﭨﺮﮎ ﮈﺭﺍﺋﯿﻮﺭ ﮐﻮ ﺩﯾﮑﮭﻨﮯ ﺍﻭﭘﺮ ﮐﻮ ﭼﮍﮬﺎ ،ﺟﻮ ﮐﮧ ﺣﺎﺩﺛﮯ ﮐﯽ ﻭﺟﮧ ﺳﮯ ﺯﻣﯿﮟ ﺳﮯ ﭼﮫ ﺳﺎﺕ ﻓﭧ ﺍﻭﭘﺮ ﮐﻮ ﺍﭨﮭﺎ ﮨﻮﺍ ﺗﮭﺎ ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﺩﯾﮑﮭﺎ ﮐﮧ ﮈﺭﺍﺋﯿﻮﺭ ﺳﺎﻧﺲ ﺗﻮ ﻟﮯ ﺭﮬﺎ ﮬﮯ ﻣﮕﺮ ﺑﯿﮩﻮﺵ ﺗﮭﺎ ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﻧﯿﭽﮯ ﻣﺮﺩﻭ ﺯﻥ ﮐﻮ ﺑﮩﺖ ﺁﻭﺍﺯﯾﮟ ﺩﯾﮟ ﻣﮕﺮ ﮐﺴﯽ ﻧﮯ ﻣﺎﻝ ﻟﻮﭨﺘﮯ ﮨﻮﮰ ﻣﺠﮭﮯ ﺭﺳﭙﺎﻧﺲ ﻧﺎ ﺩﯾﺎ ﻣﯿﮟ ﻧﯿﭽﮯ ﺍﺗﺮﺍ ﺍﻭﺭ ﮐﭽﮫ ﻟﻮﮔﻮﮞ ﮐﻮ ﺭﺍﺿﯽ ﮐﯿﺎ ﮈﺭﺍﺋﯿﻮﺭ ﮐﯽ ﻣﺪﺩ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ..
ﺍﺳﯽ ﻃﺮﺡ ﻻﮨﻮﺭ ﭼﻮﺑﺮﺟﯽ ﻣﯿﮟ ﺍﯾﮏ ﺑﺎﺭ ﺟﮩﺎﺯ ﻭﺍﻟﮯ ﭘﺎﺭﮎ ﮐﯽ ﺩﯾﻮﺍﺭ ﮐﮯ ﺳﺎﺗﮫ ﺍﯾﮏ ﭘﮏ ﺍﭖ ﮐﺎ ﺣﺎﺩﺛﮧ ﮨﻮﺍ ﺟﺲ ﻣﯿﮟ ﺗﺮﺑﻮﺯ ﺑﮭﺮﮮ ﺗﮭﮯ ﯾﻘﯿﻦ ﮐﺮﯾﮟ ﮈﺍﺭﺋﯿﻮﺭ ﮐﻮ ﻣﺪﺩ ﺩﯾﻨﮯ ﺳﮯ ﭘﮩﻠﮯ ﺩﺱ ﭘﻨﺪﺭﮦ ﻟﻮﮒ ﺗﺮﺑﻮﺯﻭﮞ ﮐﻮ ﺷﻔﭧ ﮐﺮ ﭼﮑﮯ ﺗﮭﮯ۔

ﺍﺳﯽ ﻃﺮﺡ ﺍﯾﮏ ﺩﻭﺳﺖ ﺳﺮﮔﻮﺩﮬﺎ ﻣﯿﮟ ﭘﮏ ﺍﭖ ﭘﺮ ﻗﺮﺑﺎﻧﯽ ﮐﺎ ﺟﺎﻧﻮﺭ ﻟﯿﻨﮯ ﺟﺎ ﺭﮬﺎ ﺗﮭﺎ ﮐﮧ ﺣﺎﺩﺛﮧ ﮨﻮﮔﯿﺎ ﮐﺴﯽ ﻧﮯ ﻣﯿﺮﮮ ﺩﻭﺳﺖ ﮐﯽ ﻣﺪﺩ ﻧﮩﯽ ﮐﯽ ﻣﮕﺮ ﺟﯿﺐ ﺻﺎﻑ ﺿﺮﻭﺭ ﮐﯿﺎ ۔

ﺑﺎﻻﮐﻮﭦ ﻣﯿﮟ ﺯﻟﺰﻟﮯ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ﻟﻮﮔﻮﮞ ﻧﮯ ﻣﺮﻧﮯ ﻭﺍﻟﯽ ﺧﻮﺍﺗﯿﻦ ﮐﮯ ﻧﺎﮎ ﮐﺎﻥ ﮐﺎﭦ ﻟﺌﯿﮯ ﺗﮭﮯ ﻓﻘﻂ ﭼﻨﺪ ﮨﺰﺍﺭ ﮐﮯ ﺯﯾﻮﺭﺍﺕ ﮐﯽ ﮐﯽ ﺧﺎﻃﺮ ﻣﯿﮟ ﮐﮩﻨﺎ ﯾﮧ ﭼﺎﮨﺘﺎ ﮨﻮﮞ ﮐﮧ ﺍﯾﺴﺎ ﺻﺮﻑ ﻏﺮﯾﺐ ﺍﻭﺭ ﻣﺤﺮﻭﻡ ﻟﻮﮒ ﮨﯽ ﻧﮩﯽ ﮐﺮﺗﮯ ،ﺑﻠﮑﮧ ﺍﻓﺴﻮﺱ ﮐﮯ ﺳﺎﺗﮫ ﮨﺮ ﺟﮕﮧ ﯾﮩﯽ ﺣﺎﻝ ﮬﮯ۔

ﺻﺮﻑ ﺑﮩﺎﻭﻟﭙﻮﺭ ﻭﺍﻟﮯ ﺍﯾﺴﮯ ﻧﮩﯽ ﺑﻠﮑﮧ ﻓﯿﺼﻞ ﺁﺑﺎﺩ ﻻﮨﻮﺭ ﺳﺮﮔﻮﺩﮬﺎ ﺑﻠﮑﮧ ﮨﺮ ﺟﮕﮧ ﯾﮩﯽ ﺣﺎﻝ ﮬﮯ ﺑﺪ ﻗﺴﻤﺘﯽ ﺳﮯ ﺍﺱ ﻗﻮﻡ ﮐﺎ-

ﺑﺲ ﯾﺎ ﭨﺮﯾﻦ ﮐﮯ ﺣﺎﺩﺛﮯ ﻣﯿﮟ ﺯﺧﻤﯽ ﺍﻭﺭ ﮨﻼﮎ ﮨﻮﻧﮯ ﻭﺍﻟﻮﮞ ﺍﻓﺮﺍﺩ ﮐﯽ ﻣﺪﺩ ﮐﺮﻧﮯ ﮐﮯ ﺑﺠﺎﺋﮯ ﺍﻥ ﮐﯽ ﺟﯿﺒﯿﮟ ﺍﻭﺭ ﺍﻥ ﮐﺎ ﻗﯿﻤﺘﯽ ﺳﺎﻣﺎﻥ ﻟﻮﭦ ﻟﯿﺎ ﺟﺎﺗﺎ ﮨﮯ ﺍﻥ ﮐﮯ ﺑﭩﻮﮮ ﮐﮯ ﺳﺎﺗﮫ ﺳﺎﺗﮫ ﺷﻨﺎﺧﺘﯽ ﮐﺎﺭﮈ ﺑﮭﯽ ﻟﮯ ﺟﺎﺗﮯ ﮨﯿﮟ ﺟﺲ ﮐﯽ ﻭﺟﮧ ﺳﮯ ﺍﻥ ﮐﯽ ﺷﻨﺎﺧﺖ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﻮ ﭘﺎﺗﯽ ﺍﻭﺭ ﺍﻥ ﮐﻮ ﻻﻭﺍﺭﺙ ﻗﺮﺍﺭ ﺩﯾﺘﮯ ﮨﻮﺋﮯ ﺩﻓﻨﺎ ﺩﯾﺎ ﺟﺎﺗﺎ ﮨﮯ۔

ﻏﻢ ﮨﻮ ﯾﺎ ﺧﻮﺷﯽ ،ﺍﺱ ﻗﻮﻡ ﮐﺎ ﯾﮩﯽ ﺍﻧﺪﺍﺯ ﮨﻮﺗﺎ ﮬﮯ ۔

ﺷﺎﺩﯼ ﮐﯽ ﺭﻭﭨﯽ ﮨﻮ ﯾﺎ ﺧﯿﺮﺍﺕ ﮐﯽ ﺩﯾﮓ ﺳﯿﺎﺳﯽ ﺟﻠﺴﮯ ﮐﯽ ﺍﻓﻄﺎﺭ ﭘﺎﺭﭨﯽ ﮨﻮ ﯾﺎ ﻗﺪﺭﺗﯽ ﺁﻓﺎﺕ ﭘﺮ ﺩﯼ ﺟﺎﻧﮯ ﻭﺍﻟﯽ ﺍﻣﺪﺍﺩ ﮨﻢ ﮨﺮ ﺟﮕﮧ ﺗﻘﺮﯾﺒﺎً ﺍﯾﺴﮯ ﮨﯽ ﮨﯿﮟ ﭼﺎﮨﮯ ﻏﺮﯾﺐ ﻋﻼﻗﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﮐﭽﮫ ﮨﻮ ﯾﺎ ﺍﻣﯿﺮ ﻋﻼﻗﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺑﮍﮮ ﺍﻓﺴﻮﺱ ﮐﮯ ﺳﺎﺗﮫ ﮐﮩﻨﺎ ﭘﮍ ﺭﮬﺎ ﮬﮯ ﮐﮧ ﮨﻢ ﺍﯾﮏ ﻏﯿﺮ ﻣﮩﺬﺏ ﺍﻭﺭ ﺑﮯ ﺷﻌﻮﺭ ﻗﻮﻡ ﺳﮯ ﮨﯿﮟ۔

ﻟﯿﮑﻦ ﮨﺮ ﺟﮕﮧ ﺍﭼﮭﮯ ﺍﻭﺭ ﺑﺎﺷﻌﻮﺭ ﺍﻭﺭ ﻣﮩﺬﺏ ﻟﻮﮒ ﺑﮭﯽ ﮨﯿﮟ ﮨﯿﮟ ﺟﻦ ﮐﯽ ﻣﻮﺟﻮﺩﮔﯽ ﺳﮯ ﺍﻧﮑﺎﺭ ﻣﻤﮑﻦ ﻧﮩﯽ، ﺍﻟﻠّﻪ ﭘﺎﮎ ﻣﺠﮭﮯ ﺁﭘﮑﻮ ، ﮨﻢ ﺳﺐ ﮐﻮ ﺳﻤﺠﮫ ﺷﻌﻮﺭ ﻧﺼﯿﺐ ﮐﺮﮮ ﺍﻭﺭ ﺣﺎﺩﺛﮯ ﮐﮯ ﺷﮑﺎﺭ ﻟﻮﮔﻮﮞ ﮐﯽ ﻣﻐﻔﺮﺕ ﻓﺮﻣﺎئے .
ﺍﻭﺭ ﭘﺴﻤﺎﻧﺪﮔﺎﻥ ﮐﻮ ﺻﺒﺮ ﺟﻤﯿﻞ ﻋﻄﺎ ﻓﺮﻣﺎﮮ .ﺁﻣﯿﻦ

ﻧﻮﭦ
ﯾﮧ ﺗﺤﺮﯾﺮ ﮨﻤﺎﺭﯼ ﻏﯿﺮ ﻣﮩﺬﺏ ﺭﻭﯾﮧ ﮐﯽ ﻧﺸﺎﻥ ﺩﮬﯽ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﮨﮯ ﮐﺴﯽ ﮐﯽ ﺩﻝ ﺁﺯﺍﺭﯼ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﻧﮩیں ...
( نامعلوم)

خیال رہے کہ "اُفق کے پار" یا میرے دیگر بلاگ کے،جملہ حقوق محفوظ نہیں ۔ !

افق کے پار
دیکھنے والوں کو اگر میرا یہ مضمون پسند آئے تو دوستوں کو بھی بتائیے ۔ آپ اِسے کہیں بھی کاپی اور پیسٹ کر سکتے ہیں ۔ ۔ اگر آپ کو شوق ہے کہ زیادہ لوگ آپ کو پڑھیں تو اپنا بلاگ بنائیں ۔