میرے چاروں طرف افق ہے جو ایک پردہء سیمیں کی طرح فضائے بسیط میں پھیلا ہوا ہے،واقعات مستقبل کے افق سے نمودار ہو کر ماضی کے افق میں چلے جاتے ہیں،لیکن گم نہیں ہوتے،موقع محل،اسے واپس تحت الشعور سے شعور میں لے آتا ہے، شعور انسانی افق ہے،جس سے جھانک کر وہ مستقبل کےآئینہ ادراک میں دیکھتا ہے ۔
دوستو ! اُفق کے پار سب دیکھتے ہیں ۔ لیکن توجہ نہیں دیتے۔ آپ کی توجہ مبذول کروانے کے لئے "اُفق کے پار" یا میرے دیگر بلاگ کے،جملہ حقوق محفوظ نہیں ۔ پوسٹ ہونے کے بعد یہ آپ کے ہوئے ، آپ انہیں کہیں بھی کاپی پیسٹ کر سکتے ہیں ، کسی اجازت کی ضرورت نہیں !( مہاجرزادہ)

اتوار، 15 ستمبر، 2019

آئن سٹائن کا خدا

ایک چالیس سال پرانا دوست ،  دو سالہ  اکیڈمی فیلو  ، اُس نے وٹس ایپ پر آئن سٹائن کے خدا کے نام سے انگلش میں ایک مضمون ڈالا   جو سپائینوزا    (Spinoza) کا  خود ساختہ  خدا ہے ۔  میرا دوست بھی جزاء و سزا اور آخرت کے بارے میں یقین نہیں  رکھتا ، اُس کا بھی کہنا ہے کہ سپائینوزا    (Spinoza) کے خدا   کی خاصیت ،  ہوبہو میرے خدا  سے ملتی  ہے ۔
 پہلے مضمون ، بعد میں میر ی رائے ۔
٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭
 کہا جاتا ہے کہ جب بھی ، آئن سٹائن نے مختلف یونیورسٹیوں میں لیکچر دیا تو طلباء اُس سے ایک سوال ضرور پوچھتے ۔ 
کیا آپ خدا پر یقین رکھتے ہو ؟
تو وہ ہمیشہ ایک ہی جواب دیتا ، 
" میں سپائینوزا    (Spinoza) کے خدا پر یقین رکھتا ہوں "۔
بہت سوں کو نہیں معلوم کہ،   سپائینوزا    (Spinoza) کے خدا کون تھا ؟
Baruch De Spinoza ، ایک  پرتگیز   یہودی النسل   سے تعلق رکھنے والا  ڈَ چ   فلاسفر تھا ۔ 
جو اپنے وقت کا ایک  حقیقت پرست فلاسفر  اور نقّاد  کے طور پر  مشہور تھا  ۔تالمود تورا  کا ماہر تھا ، لیکن 21 سال کی عمر میں اُسے  27 جولائی 1656  میں اُسے یہودیت سے خارج کردیا گیا ۔   اُس نے  فرینچ فلاسفر ،    Rene Descartes  ۔  ( 1596-1650)   ، سائینسدان، حساب دان اور فلاسفر  تھا ، کی فلاسفی پر ریسرچ کی اور اپنایا  ،     سپائینوزا ایمسٹرڈیم میں  24 نومبر 1932 میں پیدا ہوا اور  44 سال کی عمر میں  21 فروری 1677 میں  ہیگ میں فوت ہو ا ، والد ایک بزنس مین تھا ۔ 
اب ہم آتے ہیں  ،  فلاسفر سپائینوزا    (Spinoza) کے  اپنے خدا  کے اقوال پر، جو تالمو تورا سے منحرف ہونے کے بعد    اُس نے    اپنے لئے خود تخلیق کیئے  :
٭-  دعائیہ کلمات اور اپنے سینے پر دوہتڑ مارنا بند کرو ! میں چاہتا ہوں کہ تم دنیا میں باہر جاؤ اور مزے کرو !
٭-   میں چاہتا ہوں  تم گاؤ ، مزاح  کرو ،اور ہر اُس چیز کا  مزہ اُڑاؤ   جو میں نے تمھیں دی ہیں ۔
٭- اُن اداس ، تاریک  اور ٹھنڈے   مکانوں میں مت جاؤ جنہیں تم نے بنایا اور میرا گھر قرار دے دیا ۔
٭- میرا گھر تو پہاڑوں میں ہے ، جنگلوں میں ہے ، دریاؤں میں ہے ، جھیلوں میں ہے اور سمندر کے ساحل پر ہے ، جہاں میں رہتا ہوں اور اپنی محبت کا اظہار کرتا ہوں ۔ 
٭-  اپنی مصیبت زدہ زندگی پر مجھے الزام مت دو ، میں نے کب کہا کہ تم گناہ گار ہو ؟
خوفزدہ ہونا بند کرو ، میں نہ تمھیں   جج کرتا ہوں نہ تمھیں ٹوکتا ہوں اور نہ ہی غصہ ہوتا ہوں ، مجھے کسی کی پرواہ نہیں  اور نہ ہی میں نے تمھارے لئے سزائیں بنائیں ہیں ، میں صرف محبت ہوں ۔
٭- مجھ سے اپنے گناہوں کی معافی مت  مانگو !   کوئی ایسی وجہ  نہیں کہ تمھیں معاف کیا جائے ، اگر میں نے تمھیں تخلیق کیا ہے  ، تو میں نے ہی تم میں بردباری ، کمزوریاں ، خوشیاں ، ضروریات  اور خامیوں   کی خواہشات بھری ہیں ،
 - میں کیسے اُس بات پر تمھیں الزام   یا  سزا دوں  جو میں نے تم میں ڈالیں ہیں ؟
- جب میں نے تمھیں ایسا ہی بنایا ہے جیسے تم ہو تو میں تمھیں کیوں سزا دوں ؟
ـ کیا تم یہ سوچ سکتے ہو ۔ کہ میں اپنے تمام بچوں کو جلانے کے لئے ایسی جگہ بناؤں گا ۔جس میں نافرمانی کی وجہ سے تمام زندگی کے لئے ڈال دوں ؟
- کِس قسم کا خدا ایسا کر سکتا ہے؟
٭- اُن تما م احکامات اور قوانین  کو بھول جاؤ   ، جو تمھیں استعمال کرنے ،  قابو کرنے اور صرف  تمھارے اندر  شرمندگی پیدا کرنے کے لئے  بنائے گئے ہیں ۔
٭ ۔ اپنے  خیالات کی ہم آہنگی کی عزت کرو ، اور دوسروں کے لئے وہ مت چاہو جو اپنے لئے پسند نہیں کرتے ہو ۔
 ٭- میں تم سے صرف  یہ  چھتا ہوں کہ اپنی زندگی پر توجہ دو ،  جو تمھاری آگاہی  اور تمھاری ھادی ہے ۔
٭- یہاں اور وہاں صرف زندگی ایسی چیز ہے جس کی تمھیں ضرورت ہے۔
٭- میں نے تمھیں مکمل آزاد بنایا ہے ۔ کوئی انعام یا سزا نہیں ، کوئی  گناہ یا خوش نصیبی نہیں ،  کوئی بھی   (گناہوں کے ) نشانات  نہیں اٹھائے گا اور کوئی بھی اپنے (اعمال کا) حساب ساتھ نہیں لے جائے گا ۔
٭- تم اپنی زندگی میں جنت یا جہنم  بنانے کے لئے بالکل  آزاد پیدا کئے گئے ہو !
٭-  میں تمھیں یہ نہیں  کہہ سکتا کہ  اِس زندگی کے ختم ہونے کے بعد بھی کوئی زندگی   ، لیکن میں تمھیں ایک اشارہ ضرور دے سکتا ہوں  ، ایسے زندگی گذارو کہ بس  یہی زندگی ہے ۔
٭-  تمھارے لئے انجوائے اور محبت کرنے کے لئے بس صرف یہی زندگی ہے ۔
٭- اگر  ایسا کچھ نہیں تو جو موقع میں نے تمھیں دیا  ، کیا تم اُس سے لطف اندوز ہوئے ؟
٭- اور اگر ایسا ہوا بھی تو میں تم سے  یہ نہیں پوچھوں گا کہ تم نے اچھا کیا یا بُرا ؟
٭- میں تم سے یہ سوال ضرور کروں گا :
- کیا تم نے اِس  (دنیادی ) زندگی کو پسند کیا ؟
- کیا تم نے مزے اُڑائے ؟
ـ تمھیں سب سے زیادہ کیا پسند آیا ؟
ـ تم نے کیا سیکھا ؟
٭ ۔ بس اب مجھ پر آنکھیں بند کرکے ،ایمان لانا بند کرو ! یہ صرف اندازے  ، گمان اور قیاس ہیں  ، میں نہیں چاہتا کہ تم مجھ پر ایمان لاؤ،۔
٭- میں چاہتا ہوں کہ تم اُس وقت مجھے محسوس کرو جب:
- تم اپنی محبوبہ کو بوسہ دیتے ہو ۔ 
- جب تم اپنی  چھوٹی بیٹی  کے ساتھ کھیلتے ہو ۔
- جب تم اپنے کتّے کو پیار کرتے ہو ۔
- جب تم سمندر میں نہاتے ہو ۔
٭- میری تعریفیں کرنا بند کرو !
٭- تم مجھے کس قسم کا انا پرست خدا سمجھتے ہو ؟
٭ - میں تمھاری تعریفوں  سے بور ہو چکا ہوں اور تمھارے خیالات سے  تنگ آچکا ہوں ۔ 
٭- اگر تم میرے شکر گزار بننا چاھتے ہو  ، تو اپنا ، اپنی صحت ، رشتہ داریاں  اور اپنے ارد گرد کی دنیا کا  خیال رکھو۔
٭- جب تم خوشی سے بے قابو ہوجاؤ ، تو اِس  اظہار کرو ۔بس یہی میری تعریف کا طریقہ ہے ۔
٭- یہ بات یقینی ہے کہ تم   موجود ہو ، تم زندہ ہو  اور یہ دنیا عجائبات سے بھری ہوئی ہے ۔
٭ ۔تمھیں مزید معجزات کِس لئے چاھئیں ؟
٭- اتنی وضاحتیں  کِس لئے ؟
٭- تم مجھے باہر مت دیکھو ،  تلاش  نہیں کر سکو گے ، میں تو تمھارے اندر دھڑک رہا ہوں  ،

Baruch De Spinoza 

٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭

منگل، 10 ستمبر، 2019

یوتھیا نیوز نیٹ ورک ایجنسی

آج وٹس ایپ پر ، یوتھیا نیوز نیٹ ورک ایجنسی  کی طرف سے ،  نیازی کارناموں کی ایک  29 خبروں پر مشتمل  بریکنگ نیوز کی فہرست پھیلائی  گئی ۔ جس پر مہاجر زادہ  نے چاچا گوگل سے پوچھا ۔   تو حیرت نہ ہوئی  کیوں؟
کہ   نیازی  کا سلیکشن اُس کے جھوٹ پر ہوا  اور جھوٹ ، خلائی خلوق کا پسندیدہ ٹاپک ہے ۔
جو وہ  ہم وطنوں  سے 1958 سے بول رہی ہے ۔ آپ بھی پڑھئیے  اور  سر دھنئیے ۔
٭٭٭٭٭٭٭
UTHEAN NEWS NETWORK AGENCY(UNNA)
While we are so busy debating on 370 etc,  we miss to notice what's happening to India  !!!
Recent data & Situation of India. 31st Aug 2019.
1 - Jet Airways closed (Apr 17, 2019 )
2 - Air India in Rs 7600 crore loss (Jul 21, 2019 )
3 - BSNL 54,000 jobs in danger. (Apr 4, 2019 )
4 - No money to pay salary for HAL employees (Jan 5, 2019 )
5 - Postal department loss of Rs 15000 crores. (Apr 15, 2019 )
6 - 1 million to be laid off in Auto Industry.(Aug 15, 2019 )
7 - 12.76 lakhs houses unsold in 30 major cities. (Jun 12, 2019 )
8 - Aircel is dead. (Feb 25, 2018 )
9 - JP Group finished. (Apr 19, 2019 )
10 - Most profitable company in India - ONGC is now making losses. (Jun 3, 2018 )
11 - 36 largest debtors missing from country.(Mar 15, 2018 )
12 - Rs 2.4 lakh crores loan waive off to a few corporate. (Apr 4, 2018 )
13 - PNB continuous losses. (May 28, 2019 )
14 - All banks incurring huge losses. (Jan 2, 2019 )
15 - External debt on country 500+ Billion Dollars. (Jun 28, 2019 )
16 - Railways on sale. (Jul 11, 2019 )
17 - Rent Heritages including Red Fort. (Apr 28, 2018 )
18 - Largest car maker Maruti cuts production. (Jul 8, 2019 )
19 - Rs 55000 crores car inventory lying at factories, with no buyers. (Jun 19, 2019 )
20 - Builders all over stressed. Some committing Suicide, no buyers Construction Stopped due Mat cost rise (GST at 18% to 28%) (Jan 4, 2018 )
21 - OFB under corporatization affecting over 1.5 lac employee & families.( Jul 30, 2019 )
22 - Millions unemployed due to Demonetization. (Apr 17, 2019 )
23 - Highest unemployment in 45 years. (May 31, 2019 )
24 - 5 airports sold to Adani. (Feb 25, 2019 )
25 - Highest domestic stagflation.(12 Jun, 2019 )
26 - Record HNI individuals leaving India. (May 12, 2019 )
27 - Videocon bankrupt. (Jan 24, 2019 )
28 - Tata Docomo perished. (Jul 10, 2019 )
29 - CCD founder VG Siddhartha Suicide due to huge debt.(Jul 31, 2019 )

یوتھئے اپنے گھٹی میں پلائے گئے جھوٹ پر شرمندہ نہ ہوں ، بلکہ بغلیں بجائیں ۔کیوں کہ اُن کے یوتھیا اعظم کا قول ہے :

٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭


اتوار، 8 ستمبر، 2019

اپنےبچوں کو اور خود کو زہر مت کھلائیے














٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭

ناک کا سوال ہے بابا

ناک سے کون فرد نا آشنا ہے۔

 ہر وہ شخص جس کی دسترس میں ایک مُکّا ہے اس کی نظر دوسرے کی ناک پر رہتی ہے اور جس کی ملکیّت میں ایک چھوٹا یا بڑا آئینہ ہے اس کی نظر، وہ چاہے یا نہ چاہے، اپنی ناک پر رہتی ہے۔
 اسی لئے ہم سمجھتے ہیں اور جب موقع ملتا ہے تو سمجھاتے ہیں کہ آئینہ کو آئیناک کہنا چاہیے۔ بلکہ چونکہ آئینہ کا لفظ جب بولا سنا جائے تو آئین کی یاد دلاتا ہے، وہی آئین جو پیچھے پلٹ کر دیکھنے کی پاداش میں پتھرا کر رہ گیا، اس لیے آئینہ کا آ نکال دیا جانا چاہیے اور صرف ایناک کہا جائے تو اور بھی اچھا ہوگا۔ پھر تو کسی کو بھولے سے بھی آئین کا خیال نہیں آئے گا۔
اگر کسی دوست کو آئین کے پتّھرا جانے کے بارے میں کوئی شک ہو تو یہی دیکھ لیجیے کہ پچھلے دنوں (اگست 2019 کے پہلے ہفتے میں) انڈیا نے کشمیر کے بارے میں جو اندوہناک فیصلہ کیا، اس کا ہمارے یہاں کیا رد عمل ہوا؟ 

کوئی جمہوری ملک ہوتا تو سب سے پہلے پارلیمان کا اجلاس بلایا جاتا مگر ہمارے یہاں اجلاس کس کا ہوا؟
 فوج کی اعلیٰ قیادت کا۔ وہی اصل پارلیمان ہوئی نا؟

اگر یہ سوال پوچھا جائے کہ انسان شروع کہاں سے ہوتا ہے؟ تو اس کا جواب دینا شاید آسان نہ ہو۔ لیکن تجربہ کہتا ہے کہ کسی چیز کا جواب سمجھ میں نہ آئے تو اس کی مشابہ چیزوں میں تلاش کرنا چاہیے تو ہم کیوں نہ اس کا جواب شیر میں تلاش کریں۔ اب تو ایک بچہ بھی بتا دے گا کہ شیر ناک سے شروع ہوتا ہے اور دم پر ختم ہوتا ہے۔
تو ہمارا خیال ہے کہ ہر وہ شخص جو ایک وسیع و عریض توند کا مالک ہے ۔۔ادھر ادھر دیکھنے کی ضرورت نہیں، ایسا کوئی شخض ہماری محفل میں نہیں۔  ماشاء اللہ سب ہی اسمارٹ ہیں ۔ بہرحال ایسا شخص توند سے شروع ہوتا ہے اور کسی دروازے سے داخل ہو تو سب سے پہلے اسکی توند اندر جاتی یے۔ لیکن جو لوگ کسی ایسی توند سے محروم ہیں وہ بلا شبہ ناک سے شروع ہوتے ہیں اس لیے ہم ناک کو کسی بھی اسمارٹ انسان کا پہلا تعارف کہہ سکتے ہیں۔

اسی لیے تو زمانہ قدیم سے لوگ انسانوں کا ناک نقشہ ہی دیکھتے آئے ہیں۔ کبھی کسی کو آنکھ نقشہ، کان نقشہ یا ہونٹ نقشہ دیکھتے نہیں دیکھا۔
ناک وہ اہم ترین شے ہے جو کسی چہرے کی صورتی میں اہم کردار ادا کرتی ہے، صورتی خوب ہو یا بد۔ رنگ و نسل اور انفرادی کارستانیوں کے سبب ناکیں بھی بھانت بھانت کی پائی جاتی ہیں۔ ان میں خوابناک، حیرتناک، عبرتناک، وحشتناک، دہشتناک، حسرتناک، خطرناک، خوفناک، دردناک، کربناک، اندوہناک، تابناک اور ہولناک وغیرہ سبھی ناکیں شامل ہیں۔ خوابناک تو وہ ناک ہے جو خوابوں میں ہی ملے، سوکھے ہوئے پھولوں جیسی۔
حیرتناک وہ ناک ہوئی جو بہت خوبصورت ہو اور جس کو دیکھ کر انسان بے ساختہ کہہ اٹھے
ایسی فنکاری بھی یارب کیا ترے دفتر میں تھی
عبرتناک وہ ناک ہوتی ہے جو اتنی زیادہ ہو کہ انسان اپنی ناک کا ضمیمہ محسوس ہونے لگے۔

وحشتناک ایسی ناک جس پر عرصے سے نظرِ ثانی نہ کی گئی ہو۔ 
دہشتناک وہ ناک ہوتی ہے جو واقعی عجیب سی ہوتی ہے۔ اچھے بھلے شریف انسان کی ناک دیکھ کر ریڑھ کی ہڈی میں سنسناہٹ سی ہونے لگتی ہے۔ 
حسرتناک ایسی ناک جسے ہونے کی حسرت ہو۔ خطرناک وہ ناک ہے جسے دیکھ کر لگے کہ اس کا حامل، خواتین کے لیے بھی حامل کا لفظ ہی استعمال ہو گا، روزانہ دو چار قتل تو کرتا ہی ہوگا۔ اسی طرح خوفناک وہ ناک ہے جسے دیکھ کر عجیب سا خوف محسوس ہو کہ اب یہ شخص ٹشو پیپر مانگے گا۔جو ہمارے پاس نہ ہوا تو؟
دردناک وہ ناک ہے جس پر کسی بچے نے اپنا سر دے مارا ہو۔

کربناک وہ ناک ہے جس پر بینڈیج لگی ہو۔ سبب کچھ بھی ہو سکتا ہے۔ 
اندوہناک کسی بچے کی وہ ناک ہے جس کی آنکھوں کے ساتھ ساتھ ناک بھی مائع بہا رہی ہو۔ 
تابناک وہ ناک ہے جو سات گھنٹے پہلے ہی پاؤنڈز کے سات روزہ وظیفے سے فارغ ہو گر جگمگا رہی ہو۔۔۔۔اور 
 ہولناک آف کورس وہ ناک ہے جس میں کیل یا نکیل پہننے کے لیے ہول یعنی سوراخ ہو۔
کیا اب بھی ضرورت ہے کہ ہم ناک کی اقلیدسی تقسیم یعنی لمبوتری ناک۔۔۔ کھڑی ناک۔۔ موٹی ناک یا بالکل چپٹی ناک۔۔۔پکوڑہ ناک وغیرہ کا جنجال سامنے لائیں ۔۔۔نہیں نا!

بس اتنا جان لیجیے کہ جب کسی گھر میں ایک فرد کا اضافہ ہونے والا ہو تو ماں کہتی ہے اللہ نہ کرے منے/منی کی ناک اپنے باپ کی طرح ہو۔ 
جبکہ باپ کہتا ہے دیکھ لینا بیٹا ہو یا بیٹی ناک میری طرح ہی ہو گی۔ 
ہاں ایک طوطا ناک ایسی ناک ہے جس پر روشنی ڈالنے کو جی مچل رہا ہے۔ ہماری امّی کی ناک بالکل کھڑی سی تھی جو ان کے باریک فیچرز کے ساتھ ان کے حسن کی شان بڑھاتی تھی۔۔ ویسے تو ایسی ناک کو سَتواں ناک کہتے ہیں۔ مگر پتا نہیں کیوں امّی بتاتی تھیں کہ اس ناک کو طوطے کی چونچ سے مشابہت کے سبب طوطا ناک کہتے ہیں۔
کیا قسمت ہے طوطے کی بھی۔ کبھی کوئی طوطا چشم کہلائے!
کبھی کسی کی ناک کو طوطا ناک کہا جائے، کبھی کسی بچے کو رٹّو طوطا کہا جائے، 
کبھی کسی بڑے کو اپنے منہ میاں مٹھو، اور کچھ نہ ہو تو ایک انتہائی بدشکل آم کو طوطا پری کہہ دیا جائے۔ 
طوطوں کی تو خیر ہے لیکن سوچیئے، پری کے دل پر کیا گزرتی ہو گی؟
اور زیادہ پرانی بات بھی نہیں کہ وزیر خارجہ صاحب زادہ یعقوب خان کی ناک بھی طوطا ناک کہلاتی تھی۔۔۔ شاید اسی کی برکت سے ان کی پروقار شخصیت ماحول پر چھا جاتی تھی ۔۔۔اور شائد اس ناک کے باعث ہی ہم نے اپنے پڑوسی اور ان کے پڑوسیوں کو چھوڑ کر سات سمندر پار طوطا چشم امریکہ سے یاری گانٹھی ہوئی تھی ۔
نسیم حجازی سے کون نہیں واقف۔ سوائے بہت سے لوگوں کے۔ ان کے ایک کامیاب پیروکار اسلم راہی تھے جن کے اسلامی ہیروز کا حلیہ بہت دلچسپ ہوتا تھا اور ہمیں ایسے لگتا تھا کہ مفت میں چڑیا گھر کی سیر بھی ہو گئی ہے۔۔کیسے؟
ملاحظہ کیجیے اسلامی ہیرو کا حلیہ۔۔
اسکی کمر چیتے جیسی، نظریں عقاب کے جیسی اور ناک ہاں ناک ۔۔اس ناک کی خاطر ہی تو بیان جاری ہے جی ہیرو کی ناک طوطا ناک تھی۔

لیکن اب زمانہ بدل رہا ہے اورطوطا ناک کی جگہ چپٹی ناک کی اہمیت بڑھتی ہی جا رہی ہے۔ یہ کرشمہ ہے چین کے دنیا کی پہلی یا دوسری بڑی اقتصادی طاقت بننے کا۔ اسی کو تو کہتے ہیں، یا شاید اس کو نہیں کہتے، بہرحال
خدا جب حسن دیتا ہے، نزاکت آ ہی جاتی ہے
گو ایک زمانے تک یہ بات بڑے دھڑلے سے کہی جاتی رہی ہے چینی ہوں یا جاپانی ناک نقشہ سب کا ایک سا ہوتا ہے، مگر جب سے گراں خواب چینی سنبھلنے لگے، ہمیں بھی ان کی شکلوں کا تنوع محسوس ہونے لگا۔ بھلا کہاں ژو این لائی کا بیضوی چہرہ اور کھڑی ناک اور کہاں ماؤ زے تنگ کا گول چہرہ اور دبی دبی سی ناک۔
جاپانیوں کے ملک میں جھک جھک کر سلام کرنے کی تہذیب شائد اس لیے رائج ہو سکی ہو کہ ان کی ناک اونچی نہیں ہوتی۔ لیکن ہم میں سے اکثر کی ناک اس قدر لمبی ہوتی ہے کہ ہر بات ہر چیز میں آرام سے کسی سازش کی بُو سونگھ لیتے ہیں ۔۔۔

اور چونکہ ناک بھی لمبی ہی ہے اس لیے پہلی سازش کے بارے میں کچھ کرنے کرانے سے پہلے ہی کسی اور سازش کی بو آجاتی ہے۔ اور پھر جیسے ایک پالتو جانور اپنی دُم پکڑنے کی کوشش کرتا نظر آتا ہے یوں دائرے کا سفر چلتا رہتا ہے۔
-------------------
آپ نے وہ لطیفہ تو سنا ہی ہوگا کہ ماما نے بچوں کو سمجھایا اور پپّو کو خاص تاکید کی کہ شام کو ایک معزز مہمان آئیں گے خبردار کوئی ان کی ناک کی بابت کچھ نہ کہے، ورنہ بُرا حشر ہوگا۔۔۔ سب بچوں کے ساتھ ساتھ پپّو نے بھی سر ہلا دیا ۔
اب جناب شام ہوئی۔ مہمان پھلوں اور مٹھائی کے ساتھ تشریف لائے۔ مہمان کو تزک و احتشام سے ڈرائنگ روم میں بٹھایا گیا۔ پپّو نے بیتابی کے مارے ڈرائنگ روم میں جھانکا مارا تو چلا اٹھا 

"ماما آپ نے تو کہا تھا مہمان کی ناک پر کوئی بات نہ کرنا مگر اَنکل کی تو ناک ہے ہی نہیں۔"
ناک تو ناک ہی رہے گی اور ناک جیسے الفاظ کا مفہوم بدلتے وقت کے ساتھ نہ بھی بدلے تو بھی قومیں ضرور اپنے شرمناک ماضی پر ناک بھوں چڑھاتے ہوئے تاریخ تک بدل لیتی ہیں۔ پر ہم سا عبرت ناک بھی کون ہوگا؟

 ہم نے تو تاریخ کے ساتھ ساتھ اپنا جغرافیہ بھی بدل ڈالا ہے۔۔ ہاں احتیاطاً نصابی کتب میں جمہوریت کی شان اور افادیّت کا ذکر ڈال دیا ہےتاکہ پپّو جیسے شرارتی بچے سوال نہ کر بیٹھیں کہ ماما یہاں جمہوریت کہاں ہے؟؟؟
اس سے پہلے کہ ہم ناک کے محاوروں کی طرف آئیں، کیوں نہ بچارے پنوکیو کا حال چال پوچھ لیں۔ پنوکیو ایک کٹھ پتلی تھا جس میں جان پڑ گئی تھی۔ اور وہ گھر سے بھاگ کھڑا ہوا تھا۔ اس کی خاص بات یہ تھی کہ جب بھی وہ کوئی جھوٹ بولتا تھا تو اس کی ناک کچھ لمبی ہو جاتی تھی۔ اب کوئی بغیر جھوٹ کے کیسے جی سکتا ہے؟چاہے سقراط ہی کیوں نہ ہو۔ تو ہوتے ہوتے پنوکیو کی ناک اتنی لمبی ہو گئی کہ اس سے ندی کا پل بنایا جا سکتا تھا۔
سنا ہے کہ اب ہماری حکومت نے ثمر مبارک مند کو یہ ٹاسک دیا ہے کہ انسانوں میں پنوکیو کی ناک کے جینز ڈالنے کی کوشش کریں۔ اگر اس میں بھی کامیابی ہو گئی تو ہماری ناکیں لکڑی کی ہوں گی اور عمارتی لکڑی کی کمی کا کوئی مسئلہ ہی نہیں رہے گا۔
کہتے ہیں کہ کسی ملک کے لوگوں کو جب آزادی ملی تو جشن منایا گیا۔ اس جشن کے شور شرابے میں ایک لڑکے کا ہاتھ ایک باکسر کی ناک سے جا ٹکرایا۔ باکسر نے احتجاج کیا،  تو وہ بولا ہم آزاد ملک کے آزاد باشندے ہیں، جو چاہیں گے کریں گے۔ باکسر نے فی الفور اس کو آٹھ دس مکّوں کی خوراک دی اور پھر کہا، 

"جوان تم اپنے ہاتھ کو ہلانے میں پورے طور پر آزاد ہو، مگر جہاں سے میری ناک شروع ہوتی ہے وہاں یہ آزادی ختم ہو جاتی ہے۔"
ہماری پیاری حکومت نے بھی وحشتناک انداز میں خلائی مخلوق، دھاندلی اور سلیکٹڈ جیسے الفاظ لکھنے بولنے پر پابندی لگا دی ہے۔ گویا خبرناک دور میں بھی میری آزادی وہیں تک ہے جہاں سے حکومت کی ناک شروع ہوتی ہے۔ اور حکومت کی ناک تو پنوکیو کی ناک کی طرح ہر وقت بڑھتی جا رہی ہے اور ہمارے ہاتھ ہلانے کی گنجائش کم سے کمتر ہو رہی ہے۔۔
ہماری زبان میں بھی، دنیا کی دوسری زبانوں کی طرح، انسانی اعضاء کے بارے میں بہت سے محاورے رائج ہیں۔ ان میں سے ناک کے بارے میں چند دیکھتے ہیں۔
ناک بھوں چڑھانا ہمارا قومی کھیل ہے۔ یعنی کسی اپنے لیے ناپسندیدہ مگر دوسروں کی روزمرہ زندگی میں داخل چیز کو دیکھ کر چہرے کو ایسے بھینچنا کہ سامنے والے کو شرمندگی ہونے لگے۔ 

ناک کا یہ ایک استعمال دس ہزار الفاظ سے زیادہ کارگر ہوتا ہے۔ اس سے آپ کی اعلیٰ اور دوسروں کی ادنیٰ حیثیت کا بھی اظہار ہوتا ہے، فخر اور غرور بھی کماحقّہ ظاہر ہوتا ہے۔ جان بھی چھڑانے کے کام آتا ہے اور وقت کی بچت تو بونس میں۔ 
ایسے ہی ناک پر مکھی نہ بیٹھنے دینے کا معاملہ ہے۔ کہ کسی ناپسندیدہ بات کو مطلق برداشت نہ کرنا۔ جیسے ہماری افسرشاہی۔
ناک کٹ جانا ایک ایسا ہی محاورہ ہے۔ پرانے زمانے میں عموماً، اور آج بھی کبھی کبھی، لوگ اپنے دشمنوں کی اور مجرموں کی ناک کاٹ دیتے تھے۔ تو ناک کٹا شخص جسے نکٹا یا نکٹی کہا جاتا ہے اپنی سزا کا اشتہار خود ہوتا تھا۔ یہ کٹی ناک پھر خاندان کی ناک میں بدلی اور ذرا ذرا سی بات پر خاندان کی ناک کٹنے لگی۔ پھر اس سے بڑھ کر برادری، قبیلے، بستی اور ملک و قوم کی ناکیں بھی گھیرے میں آ گئیں۔ وہ تو شکر کی خاندان کی کٹی ناک اتنی آسانی سے دکھتی نہیں ورنہ کٹی دموں سے زیادہ کٹی ناکیں نظر آتیں۔
بانکوں پر عبد الحلیم شرر کا ایک بڑا معروف مضمون ہر ایک کی نظر سے ہی گزرا ہو گا۔ اس میں ایک بانکے میاں کی عجب داستان ہے جنہوں نے نواب صاحب کی ناک کٹوا دینے کی دھمکی سن کر خود اپنے خنجر سے اپنی ناک کاٹ کر اپنے والد کو پیش کر دی تھی۔
کہتے ہیں نواب سعادت علی خاں کے زمانے میں دہلی کے آئے ہوئے مشہور بانکوں میں ایک میرزا جہانگیر بیگ تھے۔ اُن کا نوعمری کا زمانہ تھا۔ باپ نواب صاحب کے درباریوں میں تھے۔ جہانگیر بیگ کی جھگڑا و فساد کی خبر کئی بار سُن کے نواب سعادت علی خاں خاموش ہورہے، مگر آخرکار ایک دن بہت برہم ہوئے اور اُن کے والد سے کہا

 ’’آپ کے صاحبزادے کی شورہ پشتیاں حد سے گزرتی جاتی ہیں اور انھوں نے سارے شہر میں اُدھم مچا رکھا ہے۔ اُن سے کہہ دیجیے گا کہ اپنے اس بانکپن پر نہ بھولیں۔ ناک نہ کٹوالی ہو تو میں سعادت علی خاں نہیں‘‘۔ 
 باپ خود ہی بیٹے کی حرکتوں سے عاجز تھے۔ عرض کیا ’’خداوند! اُس کی شرارتوں سے غلام کا ناک میں دم ہے۔ ہزار سمجھاتا ہوں نہیں مانتا۔ شاید حضور کی یہ دھمکی سُن کے سیدھا ہوجائے‘‘۔
 یہ کہہ کے گھر آئے اور بی بی سے کہا ،
’’تمھارے صاحبزادے کے ہاتھوں زندگی سے عاجز آگیا ہوں۔ دیکھیے اس نالائق کی حرکتوں سے ہماری کیا گت بنتی ہے؟ جی چاہتا ہے نوکری چھوڑ دوں اور کسی طرف منہ چھپا کے نکل جاؤں‘‘۔
 بی بی نے کہا،
 ’’اے تو کچھ کہو گے بھی؟ آخر ہوا کیا؟‘‘
 کہا ’’ہوا یہ کہ آج نواب صاحب بہت ہی برہم بیٹھے تھے۔ میری صورت دیکھتے ہی کہنے لگے اپنے بیٹے سے کہہ دینا کہ میں سعادت علی خاں نہیں جو ناک نہ کٹوالی ہو‘‘۔ 
اتنے میں مرزا جہانگیر بیگ جو کہیں باہر گئے ہوئے تھے، گھر میں آگئے۔ ماں نے کہا 
’’بیٹا خدا کے لیے اپنی یہ حرکتیں چھوڑدو، تمھارے ابا بہت ہی پریشان ہیں‘‘۔ 
مرزا صاحب نے کہا،
 ’’میرا کچھ قصور بھی بتائیے گا یا خالی الزام ہی دیجیے گا‘‘۔ باپ نے کہا،
 ’’کوئی ایک قصور ہو تو بتایا جائے؟ تم نے وہ سر اُٹھا رکھا ہے کہ سارے شہر میں آفت مچ گئی۔ آج نواب صاحب کہتے تھے کہ اپنے صاحبزادے سے کہہ دینا میں سعادت علی خاں نہیں جو ناک نہ کٹوالی ہو‘‘۔ 
 باپ کی زبان سے اتنا سنتے ہی مرزا صاحب کو جو طیش آیا تو کمر سے خنجر نکال لی اور خود ہی اپنی ناک کاٹ کے باپ کی طرف پھینک دی اور بولے،
 ’’بس اسی ناک کاٹنے کی نواب صاحب دھمکی دیتے ہیں؟ لیجیے یہ ناک لے جاکے انھیں دے دیجیے‘‘۔
 یہ دیکھتے ہی ماں باپ دونوں سناٹے میں آگئے اور جب باپ نے بیٹے کی ناک نذر کے طریقے سے نواب صاحب کے سامنے پیش کی اور واقعہ بیان کیا تو وہ بھی دم بخود رہ گئے اور معذرت کرنے لگے کہ ،
’’بھئی میرا یہ منشا نہ تھا، میں تو سمجھا تھا کہ اس دھمکی سے انھیں تنبیہ ہوجائے گی‘‘۔
 باپ نے کہا ، ’’خداوند! ایسا نالائق اور اپنی دُھن کا پکّا ہے کہ کسی کا زور ہی نہیں چلتا۔ جسے نہ جان کا خیال ہو نہ عزت آبرو کا، اُس کے منہ کون لگے؟‘‘
ایسے ہی ایک محاورہ، " نکّو بنانا ہے"۔ یعنی کسی کو بیوقوف بنانا۔ اس کا پس منظر یہ ہے کہ کئی بچے مل کر کسی ایک بچے کو کہتے ہیں کہ تمہارے چہرے پر ناک لگی ہوئی ہے۔ وہ سمجھتا ہے کہ ناک کے اندر کی رطوبت لگی ہے۔ بار بار صاف کرنے پر بھی یہی کہا جاتا ہے اب بھی لگی ہوئی ہے۔ اب جب وہ رونے کے قریب ہوجاتا ہے تو اس کی ناک پکڑ کر کہتے ہیں یہ ناک ہے جو لگی ہوئی ہے۔
"ناک سے لکیریں کھنچوانا"، بھی ایسی ہی ایک سزا ہے جس کا مقصد دوسرے کو بےحد ذلیل کرنا اور اس سے اس کی بے بسی اور عاجزی منوانا ہوتا ہے۔
"ناک میں دم کر دینا" بھی ایسی ہی ایک چیز ہے۔ اس کا مطلب ہے کسی کو اتنا تھکایا جائے کہ اس کی سانس بہت تیز تیز چلنے لگے، لیکن رفتہ رفتہ اس کا مفہوم ستانے اور عاجز کرنے کا ہو گیا۔ جیسے ہمارے دیس میں بھی مسائل کا انبار دیکھ کر نو زائدہ حکومت کی ناک میں دم آگیا ہے۔
پھر "ناک پر مکھی نہ بیٹھنے دینے" کی بات آتی ہے۔ یوں تو شاید ہی کوئی ہو جو کسی مکھی کو یہ اجازت دے مگر بڑے لوگ مکھی کا یہ استحقاق بہت شور شرابے کے ساتھ چھینتے ہیں۔ پھر جب کپتان کی حکومت میں کرکٹ کا ورلڈ کپ ہو رہا ہو تو ٹیم کے جانے سے پہلے تک تو ہم ناک پر مکھی تک بیٹھنے نہیں دیتے۔۔ 

پھر انتہائی عبرت ناک آغاز کے بعد ناک پر مکھی، مچھر، پسّو، جونکیں سب بٹھا کر بعید از امکان امیدوں اور دردناک دعاؤں پر گزارا کرتے رہے۔ بالآخر دشمنوں کے ہارنے پر خوشیاں منائیں مگر یہی رمز مسلمانی نہ پا سکے کہ اپنی جیت کی حقیقی خوشیاں ہی اور ہوتی ہیں۔۔
ایک چیز ، "ناک کا بال" بھی ہوتی ہے۔ یوں تو ہمیں یہ چیز بہت مکروہ لگتی ہے مگر بڑے لوگ اپنے ساتھ کم از کم ایک ناک کا بال ضرور رکھتے ہیں۔ یعنی وہ شخص جس کی وہ ہر بات مانتے ہوں۔ یہ ناک کا/کی بال بڑے صاحب/صاحبہ سے بھی زیادہ بڑا ہوتا ہے، جب تک صاحب/صاحبہ کو زور کی چھینک نہ آ جائے۔ پھر کوئی اس جگہ آجاتا ہے۔
"ناک کی سیدھ میں دیکھنا" بھی ایک دلچسپ محاورہ ہے لیکن اس پر عمل مشکل۔ یہ کام سیدھے لوگ ہی کر سکتے ہیں جو اب کم کم ہی پیدا ہوتے ہیں۔
اسی طرح "ناک کان دے کر جانے" کا محاورہ ہے جس کا مطلب وعدہ پورا نہ کر پانے کے سبب عزت گنوا کر جانا ہے۔
"ناک پر انگلی رکھ کر بات کرنا" بھی ایک بہت دلچسپ بات ہے۔ یہ عورتوں کا کام تھا کہ جب کسی کام کا دو ٹوک انکار کرنا ہو، خاص کر جس کے کرنے میں عزت گھٹنے کا اندیشہ ہو تو وہ ناک پر انگلی رکھ کر کہتی تھیں "نوج"۔ اور اکبر الٰہ آبادی شہید۔
ناک کے بارے میں آخری بات یہ کہ ، "اونچی ناک" والے ہمیشہ ایک دوسرے سے خار ہی کھاتے آئے ہیں۔ 

میر تقی میر کے ایک ہم عصر شاعر تھے بقا ۔ وہ بھی میر ہی رہے ہوں گے۔ ایک دفعہ خدائے سخن میر سے خفا ہوگئے کہ میر نے ان کے شعر کے مقابلے پر دوآبے پر شعر کیسے کہا ؟
اور کیوں کہا۔ سو بد دعا پر ہی اتر آئے اور یہ قطعہ کہا
'
میر نے گر ترا مضمون دوآبے کا لیا
اے بقا تو بھی دعا دے جو دعا دینی ہو
یا خدا میر کی آنکھوں کو دوآبہ کر دے
اور بینی کا یہ عالم ہو کہ تربینی ہو
'
واضح رہے کہ ناک کا مترادف فارسی زبان میں بینی ہے اور تربینی یوں تو گنگا جمنا کا سنگم ہے، جہاں گنگا، جمنا اور ایک تیسرا خیالی دریا ملتے ہیں، لیکن یہاں تربینی سے مراد بہتی ہوئی ناک یا گیلی ناک ہے، جسے انگریزی میں رننگ نوز کہتے ہیں۔
انگریزی کی بات آ گئی تو ہم بھی ایک اعتراف کرتے چلیں کہانگریزی تفہیم کی محدود قابلیت ک بل بوتے پر ، ایک مدت تک ہم ناک آؤٹ کا مطلب ناک سے آلائش باہر کر دینا ہی سمجھتے رہے۔


 از قلم : حبیبہ طلعت

٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭

24 اگست 2019 بزم زعفرانی مناثرہ کی بارہویں نشست میں پڑھا گیا شگفتہ انشائیہ  ۔

٭٭٭٭٭٭٭٭٭
نوٹ :

محمد بقاء اللہ خان بقاؔ :۔حافظ لطف اللہ خان خوش نویس اکبر آبادی کے بیٹے تھے ، فارسی میں مرزا محمد فاخر مکینؔ اور   حاتمؔ کے شاگرد تھے ، طبیعت میں شوخی اور ظرافت تھی قصیدہ گوئی میں سوداؔ کے حریف تھے ۔ میرؔ اور سوداؔ پر بھی چوٹیں کر جاتے تھے ۔
اسی عہد میں بقاء اللہ خاں بقا نے دو شعر کہے۔
ان آنکھوں کا نت گریہ دستور ہے
دو آبہ جہاں میں یہ مشہور ہے
سیلاب آنکھوں کے رہتے ہیں خرابے میں
ٹکڑے جو مرے دل کے بستے ہیں دو آبے میں

میر صاحب نے خدا جانے سن کر کہا یا توارد ہوا۔
 وہ دن گئے کہ آنکھیں دریا سی بہتیاں تھیں
سوکھا پڑا ہے اب تو مدت سے یہ دوآبہ

اس پر بقا نے بگڑ کر یہ قطعہ کہا۔
میر نے گر ترا مضمون دو آبے کا لیا
اے بقا تو بھی دعا دے جو دعا دینی ہو
یا خدا میر کی آنکھوں کو دوآبہ کر دے
اور بینی کا یہ عالم ہو کہ تربینی ہو



جمعہ، 6 ستمبر، 2019

غذا اور غذائیت

اللہ نے انسانی جسم کی نشونما کے لئے ، بطورِ خوراک  اَن گنت خوردنی اشیاء پیدا کی ہیں ، جن کو کھا کر وہ اپنی جسمانی غذائی ضرورت پوری کرتا ہے ۔مناسب اور متوازن غذا ہی انسان کی نشونما اور صحت   میں اہم کردار ادا کرتی ہے ۔ انسانی غذا میں  خالقِ کائینات کی تخلیق کردہ  چھ اشیا ء  انسانی غذائی ضروریات کے لئے نہایت اہم ہیں ۔ پانی ، کاروہائیڈریٹس ، پروٹین، چربی ، وٹامن اور نمکیات ۔ 
ہمیں یہ تو معلوم ہے کہ خوراک کے بغیر صرف پانی پر انسان تقریباً چالیس دن یا اِس سے زیادزندہ رہ سکتا ہے ۔ اور یہ بھی معلوم ہے کہ بالغ  انسان کا معدہ،   ایک کلوگرام /لٹر سے 4 کلوگرام /لٹر تک غذائی اشیاء  یا مائع  ، اپنے اندر رکھ سکتا ہے ۔  لیکن شاید  کئی لوگوں کو یہ نہ معلوم ہو کہ ، صرف 750 گرام معدے میں جانے والی غذا ، انسانی جسمانی ضرورت  کے لئے کافی ہے ۔ اُس سے زیادہ  خوراک  جسم کو فائدہ نہیں بلکہ نقصان پہنچاتی ہے ۔ 
لیکن اگر زیادہ غذا کھانے والا ، مشقت کے کام کرتا ہو  ، تو معدے میں جانے والی غذا تونائی کی صورت میں استعمال ہو جاتی ہے ۔ 
ہمیں اِس بات پر لازمی توجہ دینا چاھئیے  کہ ہمارے معدے میں پہنچنے والی غذا    ، ہمارے جسم کا حصہ بنتی ہے ، ضائع ہو جاتی ہے یا جسم میں ذخیرہ ہوجاتی ہے ۔
بچپن سے لے کر بڑھاپے تک انسانی غذائی ضروریات ایک سی نہیں رہتی ،ہمیں یہ بھی معلوم ہے کہ ایک متوازن غذا ،  نہ صرف انسانی جسم کو توانائی مہیا کرتی ہے بلکہ  بیماریوں سے بھی دور رکھتی ہے  ۔ 
ایک اوسط کام کرنے والی خاتون کو روزانہ  2000 اور مرد کو 2500 کیلوریز  کی ضرورت ہوتی ہے ۔  جبکہ ایک کلوگرام    سادہ خوراک میں 3500 کیلوریز ہوتی ہیں ۔ 
اب یہ فیصلہ آپ نے کرنا ہے کہ روزانہ آپ نے کتنی خوراک لینا ہے اور اُس میں غذائیت کتنی ہو ؟   پھر جتنی کیلوریز آپ  اپنے جسم کو مہیا کرتے ہیں کم و بیش اُتنی ہی کیلوریز آپ کو  استعمال کرنا ہوتی ہیں ۔  
یاد رہے ، کہ خوراک کا انتخاب ، آپ کے علاقے اور وسائل پر ہے ۔   لیکن آپ کی خوراک میں ،    کاروہائیڈریٹس ، پروٹین ، وٹامن ، چربی اور نمکیات  لازمی شامل ہوں ، بیماری کی صورت  یعنی  بلڈ پریشر  یا ذیابیطس میں  آپ کو  اِن میں سے کچھ اجزاء اپنے ڈاکٹر کے کہنے کے مطابق کم کرنا ہوں گے ۔
ڈاکٹر عائشہ بنتِ مشتاق
٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭

پیر، 2 ستمبر، 2019

شعلہ شاپ سے بولان مال اور شاپنگ بیگز


بوڑھا جب چم چم کے ساتھ ایسٹ تِمور گیا تو وہاں اُس نے ماحول دوست شاپر دیکھے ۔ 
جن پر لکھا تھا ، " میں پلاسٹک نہیں "
لہذا چم چم نے ایک  مضمون لکھا ،
PLANET or Plastic
بوڑھے نے ریسرچ کی اور مضمون لکھا !
میں پلاسٹک نہیں ۔
 ٭٭٭٭٭٭
بوڑھا اور بڑھیا برفی کے پاس آئے ، برفی نے بوڑھے اور بڑھیا کو  اپنے علاقے میں، داخل ہوتے وقت ، یہاں  رہنے کی ممنوعات بتائیں :
1- گاڑی میں بیٹھنے کے بعد سیٹ بیلٹ باندھنا ہے ۔

2- گاڑی کی رفتار 30 سے زیادہ نہ ہو !
3- گھر سے باہر ، گند نہیں پھیلانا ہے ۔

4- شاپر میں سامان نہیں لانا ، اگر کسی نے دیکھ لیا تو جرمانہ کرے گا ۔ 
کل شام  برفی اُس کی ماما  ، بوڑھا اور بڑھیا  نزدیک شاپنگ سنٹر گئے ، جس کی ابتداء ایک چھوٹی سی سبزی کی دُکان  شعلہ ڈویژن  ویجیٹیبل اور فروٹ  ویلفیئر شاپ    ،   6 کمروں کی ہٹ کے ایک کمرے سے ہوئی  یہ ایک گراونڈ تھا جس کے تین طرف بڑی بڑی  ، چھ چھ کمروں کی ہٹس تھیں
  1991 میں بوڑھے کو، جو اُس وقت شعلہ ڈویژنل آرٹلری کا  جی ایس او ٹو تھا   ۔
  انتظامی امور اورویجیٹیبل اور فروٹ  ویلفیئر شاپ کو  بہترین بنانے کے لئے دی گئی۔
  بوڑھے نے اپنے مددگاروں کی مدد سے  سبزی شاپ کے پہلے دو حصے بنائے ، ایک برائے جوانان اور فیملی اور دوسرا برائے آفیسران اور فیملی ، پھر اُس میں چکن شاپ کا اضافہ کیا  اور پھر مزید پیر پھیلائے  تو مٹن اور بیف شاپ کا اضافہ ہوا ۔  جِس نے کینٹ میں موجود دوسری ویلفئیر شاپ سے گاہک چھیننے شروع کئے ۔ یوں  لاگ ایریا ویلفیئر شاپ  ویران ہونے لگی ، بڑوں کا ہنگامی اجلاس بلایا گیا   ۔ 
تو جناب  ہماری شاپ سنٹر کے سامنے ،عین گراونڈ میں ایک دائرہ نما شاپنگ سنٹر کی تعمیر شروع ہو گئی ۔  تاکہ زمزم میں  مزید پانی ملا کر بہت لوگوں کو فیضیاب کروایا جاسکے ۔ 
لیکن اِس سے پہلے کہ وہ تعمیر ہوتا اور ہماری شاپ بند ہوتی بوڑھا ، سیاچین چلا گیا ۔ 

بوڑھا سیاچین سے واپس آیا ، تو اُس نے ایک خوبصورت پلازہ دیکھا ، اور   بوڑھے کی پھیلائی ہوئی شاپس بھی وہیں دیکھیں ۔ لیکن وہ بولان ویلفیئر شاپنگ کمپلیکس کا حصہ بن چکی تھیں ۔ چکن اور میٹ و بیف مہیا کرنے والا ٹھیکیداران وہیں تھے ۔   شعلہ ڈویژن  ویجیٹیبل اور فروٹ  ویلفیئر شاپ ، جو اپنی ترقی کا سفر کرتے کرتے  "  بولان مال" کے درجے پر پہنچ چکا ہے ، جہاں سے تمام گھریلو اشیاء کے علاوہ ، خواتین کی پسند کی تمام اشیاء ملتی ہیں ، جس کی وجہ سے  شہر کا رُخ نہیں کرنا پڑتا۔ 
لیکن   ہمارے بچپن کا  کینٹ ،  اب فصیل میں گھِر چکا  ہے ۔
دوستو ، بڑھیا اور برفی کی ماما تو اپنی خریداری میں مصروف ہوگئیں ، چنانچہ برفی کا ، "دادا بابا " اُسے لے کر اُس اُس کی پسندیدہ چیزوں کی شاپنگ کروانے سپر سٹور میں داخل ہوا ۔ برفی نے لُٹ تو مچانا تھی ، لہذا اُسے شاپنگ کروا کر بوڑھا جب بل کی ادائیگی کے لئے  ، کاونٹر پر پہنچا تو بہت سارے شاپر   پڑے منہ چڑا رہے تھے  ، بوڑھے کو بھی شاپر میں جب کاونٹر بوائے نے چیزیں دی تو بوڑھے نے سوال کیا ،
" کیا شاپرز پر حکومت نے بین نہیں لگایا ؟؟"
" سر ! وہ شہر میں  کچھ جگہ پر ہے ، یہاں نہیں " 
کاونٹر بوائے نے جواب دیا ۔
آج صبح بوڑھے نے ایک حکومتی دعووں کے جواب میں ایک وڈیو دیکھی ، آپ بھی دیکھیں ۔


تو بوڑھے کو ۔ میں پلاسٹک نہیں،  والا مضمون یاد آگیا ۔ 
پاکستان آنے کے بعد بوڑھے نے ، بائیو کیساوا بیگز پر کام کیا تو یہ جواب آیا ۔

سوائے ، سفری اخراجات کے تمام امپورٹ کی لاگت کے مطابق، اِس  کلّی انسان دوست, بائیو کیساوا بیگ  کی لاگت  ، بھی نکالی :
بوڑھے نے وہاں سے لانے والے ، کیساوا شابنگ بیگز  کے تمام نمونے ، مختلف سُپر سٹورز  میں اِس لیٹرز کے ساتھ بھیجے کہ شاید وہ انسان دوست ماحول بنانے میں بوڑھے کا ساتھ دیں ۔
لیکن ۔ ۔ ۔  ۔ ۔!

بدھ، 14 اگست، 2019

پاکستانی قومیت تبدیل کرنے کا حلف !






میں قسمیہ حلف پر یہ اعلان کرتا(کرتی) ہوں  کہ میں بقائم ہوش وحواس میں وفاداری کا اعلان کرتا ہوں اور اپنے پچھلی قومیت سے دستبرداری کا علان کرتا ہوں جس کا میں باشندہ تھا-
(
اس لائن کا حلف اُٹھانے سے میری وفاداری آئیندہ پاکستان کے بجائے امریکہ سے ہو گی)
   
میں اس کا بھی اعلان کرتا ہوں، کہ میں آئین اور قوانین ِ امریکہ کا تمام ملکی اور غیر ملکی دشمنوں سے دفاع کروں گا،
  (اس لائن کا حلف اُٹھانے سے میں نے پاکستان کا آئین اور قانون ردی کی ٹوکری میں پھینک دیا ہے اور مجھے حکم دیا گیا ہے کہ میں:
(ا) اگر امریکہ پاکستان کو دشمن قرار دیتا ہے تو میں پاکستان کے خلاف لڑوں گا -
(
۲)۔  اگر امریکہ یہ اعلان کرتا ہے کہ سارے مسلمان ہمارے دشمن ہیں تو میں امریکہ کی طرف سے مسلمانوں کے خلاف لڑوں گا)
    یہ کہ میں خلوص دل سے اس ایمان کی وفاداری کروں گا۔
(اس لائن کے مطابق میرا،ایمان وہ ہے جو آئین اور قانون امریکہ مجھے بتائے گا)

 اور میں یہ بغیر کسی ذہنی اور جسمانی دباؤ کے بغیر اِس کی ذمہ داری قبول کرتا ہوں۔
(اس لائن کے مطابق میں ہوش و حواس میں ہوں اور مجھ پر کوئی دباؤ نہیں)
    خدا میری مدد کرے ۔
(اس لائن کے مطابق،میں نے امریکی آئین اور قانون کے مطابق خدا سے مدد مانگی ہے۔ کیوں کہ میرا سابقہ اللہ مجھ سے یہ توقع رکھتا تھا کہ میں ”یہود اور نصاریٰ کو اپنا مدد گار نہ بناؤ اگر میں نے ایسا کیا تو میں بھی اُن جیسا ہو جاؤں گا۔ حالانکہ امریکہ یہودی اور نصرانیوں کا ملک ہے  جو فرزندِ زمین ہیں۔ لہذا میں اپنے سابقہ اللہ کے آئین اور قوانین جو پرانے اور فرسودہ ہیں دستبرداری کا حلف پر اعلان کرتا ہوں)
    ثبوت کے طورپر میں اپنے دستخط کرتا ہوں۔
(اس لائن کے مطابق، میں نے وہ تمام ماضی کے رابطے ختم کرتا ہوں اور امریکی تھرڈ کلاس شہری کے حقوق قبول کرتا ہوں۔ اس کے لئے مجھے، یہودیت، عیسائیت، کی طرح نژرادیت کی قومیت عطا کی گئی ہے)
--------------------------------------------------
یہ دستخط کرتے ہی ، محمد عبداللہ پاکستانی سے امریکن شہری بن جاتا ہے
 --------------------------------------------------


نوٹ: سرخ الفاظ میں تشریح کئے گئے الفاظ میرے نہیں لیکن میں اُن سے متفق ہوں۔ آپ کا متفق ہونا ضروری نہیں۔


کیا ا مریکی قوم سے حلف وفاداریاُٹھانے کے بعد اُن کے ملک میں موجیں اُڑانے کے بعد کوئی اُن سے غداری کا تصّور کر سکتا ہے؟


 ڈالروں، عیاش زندگی اور امریکی خدا کے زیر سایہ رہنے والی فری سوسائیٹی میں،”قومی وقار کا سودا“ کرنے کے بعد کیا یہ لوگ:
٭۔    ہماری رہبری کر سکتے ہیں؟
٭۔    ہم سے مخلص ہو سکتے ہیں؟


نوٹ :       مضمون پڑھنے کے بعد اگر پسند آئے تو نیچے خانے میں کمنٹ لازمی دیں
               اور باقی دوستوں کے ساتھ بھی شئیر کریں ۔ شکریہ
٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭
مزید پڑھیں :
٭- قومی وقار کا سودا  
٭- قومی وقار کا سودا کرنے والے   
 

٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭

خیال رہے کہ "اُفق کے پار" یا میرے دیگر بلاگ کے،جملہ حقوق محفوظ نہیں ۔ !

افق کے پار
دیکھنے والوں کو اگر میرا یہ مضمون پسند آئے تو دوستوں کو بھی بتائیے ۔ آپ اِسے کہیں بھی کاپی اور پیسٹ کر سکتے ہیں ۔ ۔ اگر آپ کو شوق ہے کہ زیادہ لوگ آپ کو پڑھیں تو اپنا بلاگ بنائیں ۔