میرے چاروں طرف افق ہے جو ایک پردہء سیمیں کی طرح فضائے بسیط میں پھیلا ہوا ہے،واقعات مستقبل کے افق سے نمودار ہو کر ماضی کے افق میں چلے جاتے ہیں،لیکن گم نہیں ہوتے،موقع محل،اسے واپس تحت الشعور سے شعور میں لے آتا ہے، شعور انسانی افق ہے،جس سے جھانک کر وہ مستقبل کےآئینہ ادراک میں دیکھتا ہے ۔
دوستو ! اُفق کے پار سب دیکھتے ہیں ۔ لیکن توجہ نہیں دیتے۔ آپ کی توجہ مبذول کروانے کے لئے "اُفق کے پار" یا میرے دیگر بلاگ کے،جملہ حقوق محفوظ نہیں ۔ پوسٹ ہونے کے بعد یہ آپ کے ہوئے ، آپ انہیں کہیں بھی کاپی پیسٹ کر سکتے ہیں ، کسی اجازت کی ضرورت نہیں !( مہاجرزادہ)

پیر، 29 اپریل، 2019

براہ کرم خبر ضرور لگائیں

میرپورخاص  کے اسلام آباد میں مہاجر  قادر غوری نے ذیل کٹنگ فیس بُک پر ڈالی  ۔ جس میں ہاتھ سے لکھے ہوئے ، تحریری نوٹ کو کمپوزر نے مہارت سے  خبر کی  سرخی بنادیا :
اخباری دنیا میں غلطیاں جان بوجھ کر بھی کی جاتی ہیں ۔ 
کیوں ؟
یہ دیکھنے کے لئے کہ اخبار کون کون باریک بینی سے پڑھتا ہے ؟
جب ڈان نیا نیا آیا تو اُس کی ڈسٹریبیوشن کی ٹیم میں دو میرے آفس کے ممبر بھی تھے ۔
 کلاسیفائیڈ اشتہاروں کے لئے میری کمپنی DOSAMA Advertsers اسلام آباد کے لئے  کئی اخباروں  میں رجسٹر تھی۔
پراپرٹی ڈیلرز اشتہار دیتے مگر کوئی رسپانس نہیں ہوتا ، لہذا اشتہارات بک ہونا کم ہوگئے ۔ آفندی صاحب سے میٹنگ کے دوران طے پایا کہ کوئی طریقہ ڈھونڈھا جائے کہ جس سے رسپانس کا انڈیکیٹر جانچا جاسکے۔ چنانچہ میں نے ایک اشتہار لگانے کا سوچا ، اُن دنوں پینٹئم 1 اور 2 مارکیٹ میں آچکے تھے ، پینٹیئم 3 مہنگا تھا ۔ لہذا اشتہار تیار کیا ۔ پینٹیئم -3 صرف 4000 روپے میں ۔ اور ڈوساما کمپیوٹر  کے پینل  کی طرف سے اشتہار دیا ۔
 کیا آپ یقین مانیں گے کہ اُس اشتہار کے نتیجے میں چارسو سے زیادہ فون میرے موبائل پر آئے ؟
 اور پہلا فون ، آفندی کا تھا !
 اُسے بتایا کہ کمپوزر نے ایک صفر اُڑا دیا ہے چالیس ہزار کو چار ہزار کر دیا ہے ۔
 بعد میں اُسے بتایا کہ سب سے کم سرکولیشن والے اخبار کی ریڈرشپ کو جانچنے یہ ایک منفی طریقہ ہے ، مگر بہرحال معذرت چھاپنے سے منفیت کا تاثر زائل جاتا ہے۔
 دیگر کردار کشی کی خبروں میں ایسا نہیں ہوتا ،
 جس کی ہیڈلائنز   کی معذرت اشتہارات کے نیچے دو لائینوں میں شائع کی جاتی ہے ـ
٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭ 

کوئی تبصرے نہیں:

ایک تبصرہ شائع کریں

خیال رہے کہ "اُفق کے پار" یا میرے دیگر بلاگ کے،جملہ حقوق محفوظ نہیں ۔ !

افق کے پار
دیکھنے والوں کو اگر میرا یہ مضمون پسند آئے تو دوستوں کو بھی بتائیے ۔ آپ اِسے کہیں بھی کاپی اور پیسٹ کر سکتے ہیں ۔ ۔ اگر آپ کو شوق ہے کہ زیادہ لوگ آپ کو پڑھیں تو اپنا بلاگ بنائیں ۔