میرے چاروں طرف افق ہے جو ایک پردہء سیمیں کی طرح فضائے بسیط میں پھیلا ہوا ہے،واقعات مستقبل کے افق سے نمودار ہو کر ماضی کے افق میں چلے جاتے ہیں،لیکن گم نہیں ہوتے،موقع محل،اسے واپس تحت الشعور سے شعور میں لے آتا ہے، شعور انسانی افق ہے،جس سے جھانک کر وہ مستقبل کےآئینہ ادراک میں دیکھتا ہے ۔
دوستو ! اُفق کے پار سب دیکھتے ہیں ۔ لیکن توجہ نہیں دیتے۔ آپ کی توجہ مبذول کروانے کے لئے "اُفق کے پار" یا میرے دیگر بلاگ کے،جملہ حقوق محفوظ نہیں ۔ پوسٹ ہونے کے بعد یہ آپ کے ہوئے ، آپ انہیں کہیں بھی کاپی پیسٹ کر سکتے ہیں ، کسی اجازت کی ضرورت نہیں !( مہاجرزادہ)

اتوار، 29 ستمبر، 2019

یوتھیاپا کا بانی چانکیہ کوٹلہ

پاکستان تو کیا دنیا میں پائی جانے والی اِس بیماری "یوتھیاپا " کی دریافت زمانہ قدیم میں  برصغیر (پاک و ہند ) میں ہوئی ، جس کا سہرا چانکیہ کوٹلہ کے سر پر سجتا ہے  ۔ جس کی لکھی گئی یا لکھوائی گئی کتاب ، ’ارتھ شاستر‘نے برصغیر کے تمدّن اور اسلوُبِ سیاست پر گزشتہ دو ہزار سال کے دوران مسلسل بولے جانے والے جھوٹ ، جو اثرات مرتب کیے ہیں وہ اتنے گہرے ہوچکے ہیں کہ جن کے نقوش آئندہ کئی صدیوں تک  برصغیر (پاک و ہند ) میں  ، مسّوں کی بیماری ،  ہوائی جڑوں کی صورت میں نوجوانوں میں  پھوٹتے رہیں گے ۔ 
یوتھیاپے  ، کی  بنیاد  میں مذہب  کی پوتّرتا  استعمال کی جاتی ہے  اور اِس شدت سے استعمال کی جاتی ہے ،  کہ آفاقی سچ   اُس میں دب جاتا ہے ۔
 جس کے لئے یوٹوپیائی کہانیاں گھڑی جاتی ہیں ، ایسے محیر العقول واقعات بتائے جاتے ہیں ، کہ انسان یقینی اور بے یقینی کے گرداب میں پھنس جاتا ہے ۔
حقیقت کو جھوٹ اور مکاری سے ، وقتی سراب میں تبدیل  کرنے والی بیماری یوتھیاپا     کو سوشل میڈیا کی موجودہ دنیا نے  اور زیادہ پھیلا دیا ہے ۔ 
جس کی ابتداء اُن سب نے کی جو گھاٹ گھاٹ کا پانی پینے کے بعد  ، ایک ایسے سیاست دان کے حواری بنے ، جس نے یوتھیوپیوں کو اپنی بغل میں بٹھایا  ۔

آئیں باتصویر دیکھتے ہیں کہ حقیقت  کیسے  یوتھیاپا   ، میں تبدیل  کی جاتی ہے ۔ 
1-   یوتھیاپا اور فضل الرحمٰن 

2-   یوتھیاپا اور ملالہ یوسف زئی  

 3-   یوتھیاپا اور ملائیت 

4-   یوتھیاپا اور شریف فیملی   (یونائیٹڈ نیشن جنرل اسمبلی  69 واں اجلاس) 

یوتھیوں   کا یوتھیاپا ! جس میں اُنہوں نے بیگم نواز  اور مہرالنساء  کی تصویر   (یونائیٹڈ نیشن جنرل اسمبلی  69 واں اجلاس  جو   26 ستمبر 2014 کو ہوا ) کی خالی کرسیوں پر فوٹو شاپ کروا کر  مکاری اور جھوٹ کے بینر چھپوائے ۔ 

5-     ملیحہ لودھی   کی  یونائیٹڈ نیشن جنرل اسمبلی  میں اصل جگہ 

6-   یوتھیاپا اور یوتھیا اعظم 

یہ یاد رہے کہ یونائیٹڈ نیشن جنرل اسمبلی ، میں پہلی معرکہ خیز تقریر  پاکستان کے تیسرے سلیکٹڈ صد ر   جنرل محمد ضیاالحق نے کی تھی ۔
اور اب  پاکستان کے پہلے ، نہیں بلکہ جونیجو کے بعد دوسرے  سلیکٹڈ وزیر اعظم نے یونائیٹڈ نیشن جنرل اسمبلی  کے  74 ویں اجلاس میں شرکت  کی ۔ 
جس کے بعد سنا ہے ، کہ عقیل کریم ڈھیڈی نے  کراچی سٹاک ایکسچینج کے انڈیکس کو   پاکستان کی تاریخ  کی سب سے اونچی سطح پر اپنے یوتھیاپا (جھوٹ اور مکّاری) سے چڑھا دیا ۔ 
 یوتھیاپا ، کا آکٹوپس ۔ آپ کو پتا ہے 95 اور 92 کے درمیانی 7 سالوں میں شریف خاندان نے - 6 ہزار ارب روپیہ قرض کیا -

یوتھیاپا کا پاکستان میں آواگون

جیسا کہ پہلے عرض کیا ہے کہ یوتھیاپا ایک ایسی بیماری ہے کہ جس کا تعلق ایک ایسی یوٹوپیائی سلطنت سے ہے ۔ جِس کی بنیاد جھوٹ پر رکھی جاتی ہے ۔  اور وہ تمام جو ایسی  سلطنت کی بنیاد رکھتے ہیں اُن  کے قول و فعل میں تضاد ہوتا ہے ۔ 
یہ میرا نہیں اُس شخص کے تخلیق کرنے والے کا قول ہے جو آفاقی سچ ہے :
 یأَيُّهَا الَّذِينَ آَمَنُوا لِمَ تَقُولُونَ مَا لَا تَفْعَلُونَ 
[61:2]
مکّاری اُن کی گھٹی میں رچی بسی ہوتی ہے ، جس کی  ابتداء ماں سے ہوتی ہے اور باپ کی تربیت اُسے پروان چڑھاتی  ہے ۔ 
ایسا شخص بلا تکان جھوٹ ، سچ کی آڑ میں  قسم کھا کر بولتا ہے ۔ اِس منافقانہ جھوٹ پر وہ  نوجوان جو جھوٹ سننے کے عادی ہیں   ۔ وہ اِسے سچ سمجھ کر پھیلاتے ہیں ۔اور اور ہڈ حرام مُفت کی کمائی کھانے والے ، اِسے سن کر مارے حیرت کے گُنگ ہوجاتے ہیں کہ کیا ایسا بھی ممکن ہے ؟
 وَمِنَ النَّاسِ مَن يُعْجِبُكَ قَوْلُهُ فِي الْحَيَاةِ الدُّنْيَا وَيُشْهِدُ اللَّـهَ عَلَىٰ مَا فِي قَلْبِهِ وَهُوَ أَلَدُّ الْخِصَامِ ﴿2:204﴾
چلیں میری نہیں  ، لوگوں کی سنیئے !
کہتے ہیں کہ جھوٹ کے پیر نہیں ہوتے ،لیکن وہ ہوا کے دوش پر بدبو کی طرح پھیلتی رہتی ہے ۔ 
لیکن جھوٹ  بولنے ولا اتنا مکّار ہوتا ہے  ، کہ وہ   جھوٹ بولتے وقت  ، چند معذرت کے الفاظ بھی بولتا ہے ۔ 
وہ جن کو   جھوٹ سننے کی بیماری ہوتی ہے جسے  وہ مکّاری سے  معذرت نکال کر آگے اتنی شد و مد سے پھیلاتے ہیں کہ سچ،  یوتھیاپے کے غبار میں چھپ جاتا ہے ۔ اور جھوٹ حقیقت کا روپ دھار لیتا ہے ۔اور جھوٹ پسند کرنے والے    ، یوتھیاپے  کے مریض   اُسے اپنا میعار بنا لیتے ہیں ۔
بَلْ نَقْذِفُ بِالْحَقِّ عَلَى الْبَاطِلِ فَيَدْمَغُهُ فَإِذَا هُوَ زَاهِقٌ ۚ وَلَكُمُ الْوَيْلُ مِمَّا تَصِفُونَ ﴿21:18
لیکن حقیقت جاننے والے ، اللہ  کی مدد سے  حق  پر چڑھے  ، باطل کے ملبوسات کی پرتیں  اتارتے  رہتے ہیں ۔ 

باطل کے ملبوسات  پہننے والے میں ، یوتھیاپا جنم لیتا ہے ۔
آپ سمجھ رہے ہوں گے کہ یوتھیاپے کی ابتداء   پاکستان میں ہوئی ۔ 
نہیں!
جناب ، یہ مرض بہت پرانا ہے ۔
٭ ٭٭٭٭٭٭٭
٭-یوتھیاپا ۔ کا بانی کون ؟


ہفتہ، 28 ستمبر، 2019

عجیب بیماری ۔ مسّوں کا ہوائی جڑیں بن جانا

بنگلہ دیش کے اِس نوجوان جس کا نام ابو بجندر ہے ،  کو دونوں ہاتھوں پر عجیب بیماری ہے ۔
جس کی وجہ سے اُس کی انگلیوں سے  جڑ نما   سخت قسم کے مسّوں نما خلیے بن رہے ہیں اور وہ   بڑھ کر کسی درخت کی جڑوں سے مشابہ ہوتے ہیں ۔ 
یہ نہ صرف ہاتھوں پر ہے بلکہ پیروں پر بھی یہیں  خلیے نکل رہیں ہیں ۔


24 سرجری کے بعد بھی اِن خلیوں کر دوبارہ نمودار ہونا ختم نہیں ہوا ۔
ڈھاکا ہسپتال کے سرجن   سمنتا لعل سین  کے مطابق یہ ایک ایسا کیس ہے  ، جو بہت پیچیدہ ہے  ، جس کا ٹھیک ہونا ناممکن ہے ۔ 

جنوری 2016 میں ابو بجندر  جو پہلے رکشہ کھینچتا تھا اُسے 25 سال کی عمر میں یہ بیماری شروع ہوئی تو وہ ہسپتال آیا ۔ ڈاکٹروں کے لئے مسّوں بھرے ہاتھوں کا یہ انکھا کیس تھا جس میں ، مسّے  بڑھتے جا رہے تھے اور رُکنے کا نام نہیں لے رہے تھے ، سرجن   سمنتا لعل سین   نے ذاتی دلچسپی لے کر اِس نوجوان  کےآپریشن  کئے ۔ جن کی تعداد 24 ہے جو ایک سال میں کسی بھی انسان پر کئے جانے والے آپریشنز میں سب سے زیادہ ہے ۔ 
٭٭٭٭٭٭٭٭٭
مہاجرزادہ نے ،  اِس بیماری کو گوگل سے چیک کیا تو  معلوم ہوا کہ اِس بیماری کو  
 (Epidermodysplasia verruciformis ( EV  ، جسے ٹری مین سنڈروم بھی کہا جاتا ہے ، ایک انتہائی نایاب آٹومومل ریسیسییو  جلد کے کینسر کے اعلی خطرہ سے وابستہ جلد کی موروثی بیماری ہے ۔ اس کی خصوصیات جلد کے انسانی پیپیلوما وائرس (HPVs) کی غیر معمولی حساسیت کی ہوتی ہے۔   
نتیجے میں بے قابو HPV انفیکشن کے نتیجے میں اسکیلی میکولس اور پیپلوں کی نشوونما ہوتی ہے ، خاص طور پر ہاتھوں اور پیروں پر۔
 یہ عام طور پر HPV اقسام 5 اور 8 کے ساتھ منسلک ہوتا ہے ،  جو عام آبادی کے تقریبا 80٪ میں غیر تسلی بخش انفیکشن کے طور پر پائے جاتے ہیں ،  اگرچہ دوسری اقسام بھی اس میں حصہ ڈال سکتی ہیں۔ 
یہ حالت عام طور پر ایک سے 20 سال کی عمر کے درمیان ہوتی ہے ۔ مگر درمیانی عمر میں بھی موجود ہوسکتا ہے۔ 
 اس حالت کو لیونڈوسکی - لٹز ڈسپلیا کے نام سے بھی جانا جاتا ہے ، جس کا نام ڈاکٹروں فیلکس لیوینڈوسکی اور ولہیلم لٹز۔  کے نام پر رکھا گیا تھا ، جنھوں نے پہلے اسے دریافت کیا ،
٭-  جو 1973 میں لاس اینجلس کے  ایک نوجوان میں نمودار ہوئیں ۔ 

٭- مارچ 2007 میں ، ایون ٹوڈر نامی رومانیہ کے ایک شخص کو یہ مرض ہوا تھا۔ 
٭ - نومبر 2007 میں ، اسی طرح کی بیماری میں مبتلا 34 سالہ انڈونیشی شخص کی ڈیڈ کوسوارہ نامی ایک ویڈیو انٹرنیٹ پر سامنے آئی۔
26 اگست 2008 کو ، کوسوارا اپنے جسم سے 6 کلو (13 پونڈ) وارٹ کے 96 مسّے  نکالنے کے لئے سرجری کے بعد گھر واپس آیا ۔
  سرجری میں تین اقدامات شامل ہیں:
1-  اس کے ہاتھوں پر مسوں اور بڑے پیمانے پر سینگوں کے گھنے قالین کا خاتمہ۔ 
2- اس کے سر ، ٹورسو اور پیروں پر چھوٹے چھوٹے  مسّوں کو ہٹانا۔
 3- ہاتھوں کو چھپی ہوئی جلد سے ڈھکنا۔
٭- کوسوارا کے لئے ، ڈسکوری چینل نے خون کے تجزیے کے لئے مالی اعانت فراہم کی اور پتہ چلا کہ اس میں خمیر کے انفیکشن سے لڑنے کے لئے مدافعتی نظام کے اینٹیجن کی کمی ہے۔ اس کی پیش کش کی گئی تھی کہ وہ قابل علاج ہے یا نہیں اس بات کا تعین کرنے کے لئے مزید ٹیسٹ چلائے جائیں ، اور ڈاکٹر کافی حد تک پر امید تھے ، لیکن انہوں نے علاج سے انکار کردیا۔
٭- کوسوارا نے 2011 کے موسم بہار میں دوبارہ گنتی وارٹس کو ختم کرنے کے لئے جراحی کے نئے طریقہ کار کا ایک سلسلہ شروع کیا۔ تاہم ، سرجری کوسوواڑ کے لئے ایک عارضی حل ثابت ہوا تھا ۔اور 42 سال کی عمر می کوسوارا کا اِس بیماری کی وجہ سے انتقال ہوا ۔ 

٭ـ جنوری 2017 میں یہ اطلاع ملی تھی کہ بنگلہ دیش میں ایک 10 سالہ بچی ، سہانا خاتون ، کو یہ بیماری لاحق ہو گئی ۔
٭- اگست 2017 میں یہ اطلاع ملی تھی کہ غزہ سے تعلق رکھنے والا ایک 42 سالہ شخص ، محمد تولی ، کا یروشلم میں واقع حدساہ میڈیکل سنٹر میں کامیابی کے ساتھ آپریشن کیا گیا تھا۔
٭- اکتوبر 2018 میں ، ہونڈوراس میں پانچ سالہ بچی ، کرسٹل سویاپا مارٹنیز ، کی حالت تشخیص ہوئی۔


٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭

یوتھیاپا۔ ایک بیماری ، کن کو لگتی ہے ؟



یوتھیاپا ۔ ایک ایسی بیماری جِس کا توڑ ممکن نہیں ۔



٭ ٭٭٭ اگلی قسط  عنقریب  پیش خدمت !٭٭٭٭
یوتھیاپا ۔   کا بانی کون ؟
٭- یوتھیاپا ۔ کا پاکستان میں  آواگون 




منگل، 24 ستمبر، 2019

بیٹے اور بیٹی کا فرق

 آج روٹین کی گشت پر تقریباً 2:00 بجے رات یہ بابا جی جن کی عمر 80 برس تھی ہمارے پاس آئے ۔ اور بولے ،
" بیٹا میں لیہ سے شاہکوٹ آیا ہوں ۔میرا گاؤں تین چار کلومیٹر نظام پورہ دیواسنگھ ہے۔  میرے بیٹے سے ایک کال ملا دو وہ مجھے لے جائے کیونکہ اس وقت رات کا آخری پہر ہے اور میرے گاوْں کوئی سواری نہیں جائیگی میں سفر کا تھکا ہوا ہوں "

بابا جی کے کہنے پر میرے ساتھی  عامر علی عامر نے اپنے فون سے بابا جی بیٹے کو فون ملایا جس کا نمبر 03428801911 ہے ۔
 بیٹے نے فون پر جو بات کی اس کے بعد بابا جی کی آنکھوں میں پانی سا چمکنے لگا اور رنگ واضح طور پر فق ہو گیا اور ہمیں پتا چلا کہ اس نے بابا جی کو لینے آنے سے انکار یہ کہہ کر کر دیا کہ ،
" ایتھے بہہ جا کسے تھاں تے،  سویرے کسی چیز تے بہہ ھ   کہ آ جاویں "
 میری بات بابا جی کہ بیٹےسے ہوئی تو اس نے اپنا نمبر ہی بند کر دیا۔
 جس پر ہم نے بابا کو تسلی دی کہ ہم چھوڑ آتے ہیں تو بابا جی نے کہا،
"میں ایسے بیٹے کے گھر نہیں جاوْں گا میں واپس لیہ ہی جا رہا ہوں"

 جس کے بعد عامر نے بابا جی کی بیٹیوں کے بارے پوچھا تو معلوم ہوا کہ ایک بیٹی دس بارہ کلو میٹر اسلام نگر رہتی ہے جس کا نمبر لیکر اس سے بات کی تو بلا توقف اس نے کہا،
" میرے ابا جی کو کہیں اور نہ جانے دینا میں ابھی کچھ کرتی ہوں "

 ہم نے بابا جی ساتھ بٹھایا اور گاؤں کی طرف روانہ ہو گئے ، تو ایک نمبر سے 03423529226 کال ہمیں چک نمبر  82 کے قریب آئی، فون اٹھایا ، تو ایک آواز آئی ،
جی  میں بابا جی کا داماد ہوں اور میں ان کو لینے آرہا ہوں "

 نظام پورہ،  چیلیانوالہ سٹاپ جو کہ ہماری باؤنڈری تھی وہاں پر ہم رک گئے اور انتظار کرنے لگے تو بابا جی کا داماد آگیا۔
 بیٹی نے پتا نہیں کتنی منتوں کے ساتھ اپنے شوہر کو لینے بھیجا ہو گا اور وہ نیک انسان بھی آدھی رات کو ویران راہوں پر لینے آپہنچا ۔
 جب بابا جی کو اس کے حوالے کیا تو بابا جی نے مجھے کہا ،
 " بیٹا دکھ اِج ایہہ رہے گا کہ توھانوں کجھ کھلا پلا نیئں سکیا" 
ہائے بابا تیری خودداری ،
 انسان جن بیٹوں کے لیے کام کر کر کہ اپنی کمر توڑ لیتا ہے اور ان کے لیے جاگیریں بناتا ہے ان کی بے نیازی اور بے پرواہی اور بابا جی کی بے بسی کو دیکھ کر اور بیٹیاں جن کو وراثت میں سے یہ کہہ کر علیحدہ کر دیا جاتا ہے ، کہ سار پیسہ داما کھا جائے گا ۔
اُن کی تڑپ دیکھ کر ہمارا تو دل بھر آیا کہ اگر ایسے بیٹے ہوتے ہیں تو ان سے ہزار گنا بیٹیاں بہتر ہیں۔
 یہ بیٹیاں جو عمر کے کسی حصہ میں بھی ماں باپ کو لاوارث نہیں چھوڑ سکتیں!
بیٹیوں  کو سلام اور ،
بہوؤں کو بھی سلام، کیوں کہ بھائی  اُن کے بھی ہوتے ہیں ۔

٭٭٭٭٭٭

پیر، 23 ستمبر، 2019

لاہوریوں کا پُھدکنا

سوشل میڈیا نے پاکستان میں ہر طرف تھر تھلی مچائی ہوئی ہے ۔
اِس تھرتھلی کا سہرا، 2014 کے دھرنوں سے شروع ہوتا ہے ۔ جب اتنی کثرت سے جھوٹ بولا گیا کہ اب سچ خال خال سنائی دیتا ہے ۔
 دو یا تین دن پہلے ایک تصویر نے  پاکستان میں ریکارڈ توڑا  اور بہت اونچی ریٹنگ لے گئی ۔ اُس کے ساتھ جو خبر تھی اُس نے  ہوٹلنگ کے شوقین  کو یقیناً پریشان کیا ہوگا ۔ 
اور ہمیں بھی لاہوریوں کا پُھدکنا سمجھ  آیا ۔ 
ویسے ایک بات یاد آئی ، کہ ،
کھانے والے مینڈک صرف بنّوں میں 1978 میں پائے جاتے تھے  ۔  جب بارش ہوتی تو  بلاشبہ   باڈی بلڈر ٹائپ  مینڈک سڑکوں پر اچھلتے پھرتے اور بالآخر کسی کار کے نیچے آکر کچلے جاتے ۔ 
شائد اب بھی ہوتے ہوں ؟
 ٭٭٭٭٭٭٭

اتوار، 22 ستمبر، 2019

بھنگ ایک حیرت انگیز پودا

بھنگ پاکستان  میں راولپنڈی ، اسلام آباد اور کے پی ، میں پایا جانے والا ایک ایسا پودا ہے جو عموماً  نشے کے لئے استعمال کیا جاتا تھا ۔ حکیم اِسے  جسم کے درد کے مریضوں  کو  سکون آور ادویہ   کے طور پر استعمال کرواتے تھے ۔
بھنگ کے تازہ پتوں کو   خشخاش ، بادام اور  تَلوں   کو کُچل کر اُس کا  پانی   نکال کر  بطورِ شربت  پیا جاتا ہے ۔ 
بھنگ کے تازہ پتوں کو پکوڑوں میں ملا کر   بھی کھایا جاتا ہے ۔
 بھنگ کے خشک پتوں کا سفوف   سگریٹ اور حقے میں ڈال کر بھی پیا جاتا ہے ۔
بنیادی طور پر بھنگ نشہ آور پودا ہے ۔لیکن یہ نشے کے ساتھ ساتھ ایک معجزاتی پودا بھی ہے۔
اگر مناسب طریقے سے اور اعتدال میں استعمال کیا جائے تو یہ انسان کی عمر‘ جوانی اور خوبصورتی میں بھی اضافہ کرتا ہے، بھنگ پینے والوں میں یہ برداشت اور کام کی صلاحیت بھی بڑھا دیتا ہے۔ یہ اسے روز مرہ کی بیماریوں سے بھی بچاتا ہے۔
کہا جاتا ہے کہ ، بھنگ میں کینسر تک کا علاج موجود ہے۔
 امریکا میں ماہرین نباتات نے ، بھنگ پر ریسرچ شروع کی تو پتہ چلا بھنگ میں دو قسم کے اجزاء ہوتے ہیں۔
پہلا جزو سی بی ڈی ہے‘ یہ پینے والوں کو پرسکون بھی بناتا ہے اور بیماریوں کے خلاف ان کی قوت مدافعت میں بھی اضافہ کرتا ہے۔
 دوسرا جزو ٹی ایچ سی ہے اور یہ انسان کو نشے میں لے جاتا ہے‘ یہ اسے مدہوش کر دیتا ہے۔
 ماہرین نے ان اجزاء کی دریافت کے بعد بھنگ  پر تجربات شروع کئے اور  ایک ایسا پودا بنانا شروع کر دیا جس میں ٹی ایچ سی کا لیول کم اور سی بی ڈی زیادہ ہو۔ تاکہ   بھنگ کا نیا پودا پینے والوں کی قوت مدافعت اور سکون بھی بڑھا دے اور بطور دوا پینے والے نشے کا عادی بھی نہ بنیں ۔
 ماہرین ریسرچ کرتے کرتے ٹی ایچ سی کی سطح کو تین فی صد اور سی بی ڈی کو 97 فی صد تک لے آئے اور یہ بہت بڑا کمال تھا‘ اس کمال کے بعد امریکا کی فوڈ اینڈ ڈرگ ایڈمنسٹریشن نے نئی فصل کا معائنہ کیا‘ لیبارٹریوں میں ٹیسٹ کیا اور اسے انسانی صحت کیلئے مفید قرار دے دیا۔
 یہ رپورٹ امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ تک پہنچی اور ٹرمپ نے دسمبر2018ء میں جدید بھنگ(میری جوانا) امریکا میں لیگل قرار دے دی.
 بھنگ کا پودا ہیمپ بھی کہلاتا ہے۔
 حکومت کی اجازت کے بعد امریکا میں ہیمپ ایک نئی انڈسٹری بن کر ابھر رہی ہے۔ چنانچہ اب امریکہ میں :
ہیمپ کا منرل واٹر بھی بن رہا ہے، گولیاں بھی، چیونگم بھی، مرہم بھی، ان ہیلر بھی،شیمپو بھی، تیل بھی اور کریمیں بھی، مارکیٹ میں اب ہیمپ کے سگریٹ بھی دستیاب ہیں اور لوگ یہ تمام اشیاء کھلے عام بھی استعمال کر رہے ہیں۔

 ماہرین نے لوگوں پر ہیمپ کے دلچسپ اثرات دیکھے ہیں، یہ بلڈ پریشر‘ کولیسٹرول اور شوگر میں بھی معاون ثابت ہو رہی ہے اور یہ ڈپریشن کی ادویات کی جگہ بھی لے رہی ہے۔ یہ بڑی تیزی سے فارما سوٹیکل انڈسٹری کی ہیئت تبدیل کر رہی ہے۔
ماہرین کا خیال ہے ہیمپ چند برسوں میں کھانے اور پینے کی ہر چیز میں شامل ہو جائے گی، اس کی گیس بھی فضا میں چھوڑی جائے گی اور یہ تمام سگریٹوں میں بھی استعمال ہو گی۔ ہم آج سے دس سال پہلے اس کا تصور کر سکتے تھے؟ 
امریکا، افغانستان کے ”بھنگ ریجن“ میں ہیمپ کی کاشت کی پلاننگ کر رہا ہے، یہ پاکستان کو بھی مشورہ دے رہا ہے آپ کی زمین بھنگ کیلئے آئیڈیل ہے، افغانستان اور پاکستان کی چرس پوری دنیا کے نشئیوں میں مقبول ہے،کیوں؟ 
کیوں کہ یہ زیادہ نشیلی ہوتی ہے  ۔
 دنیا بھر کی خواتین خود کو سمارٹ رکھنے کیلئے افغانی چرس پیتی ہیں،  افغانی چرس (بھنگ)  میں ایسے اجزاء موجود ہیں۔جو انسان کی فالتو چربی پگھلا دیتے ہیں۔
اگر آپ کے گھر کے اردگرد خود رو بھنگ کے پودے پائے جاتے ہیں تو اُن کے بیج محفوظ کر لیں ۔ بھنگ کے بیجوں سے بننے والا تیل ، نہایت اہمیت کا حامل ہے ۔  

٭-  خلیات کو تباہ کرنے والے سیل کی ترقی کو مسدود کرتا ہے۔
٭- سرطانی ٹیومر کو خون کی سپلائی کم کرتا ہے ۔
٭- بڑی آنت کے کینسر میں انتہائی مفید ہے ۔ 

٭- جگر کے کینسر میں استعمال کیا تو بہترین نتائج ملے ۔
٭- پھیپھڑوں اور بریسٹ کینسر میں بھی انتہائی کار آمد ہے۔ 
یہ عام خلیات کو نقصان پہنچاۓ بغیر کینسر کے سیلز کی موت ثابت ہوا، یقیناً منفی اثرات تو نارمل سیل پر بھی آتے ہیں لیکن کینسر کے مقابلے میں ، بہت معمولی منفی اثرات سامنے آۓ ہیں ۔
 کیموتھیراپی کے ساتھ یہ بہت موثر کردار ادا کرتا ہے ۔
ایک اور بوٹی ہے  ، دھماسہ   ، یہ بھی کینسر  ، تھیلا سیمیا  اور ہیپا ٹائیٹس کے علاج میں معاون ثابت ہوتی ہے
 دھماسہ (فیگونیا اریبیکا، فیگونیا کریٹیکا) خاص طور بریسٹ کینسر کے لئے، پورے پودے کا رس نکال کر دیں ۔
٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭
 پڑھیں ۔ دھماسہ -کینسر تھیلاسیمیا اور ہیپاٹائٹس کا علاج


جمعہ، 20 ستمبر، 2019

قصبے کی بوڑھی گواہ

کیس بہت پرانا تھا ۔ گواہ کوئی نہیں !
لہذا  وکیلِ صفائی نے اِس امید پر کہ قصبے کے بوڑھے لوگوں کو شاید واقعہ یاد ہو ۔ تو ایک سب سے طویل العمر  ناکتخدا ، مائی   کا نام  بطور گواہ دے دیا   کیوں کہ وہ  قصبے کی  سب 
سے قدیمی مائی تھی۔ 
 وہ اِس واقعے  کو اِس طرح جانتی تھی جیسے یہ اُس کی آنکھوں کے سامنے کل ہوا ہو !
قصبے  کی عدالت  میں  آواز لگی !
 مائی  مارتھا ،   حاضر ہو و و و و و و و!
وکیل صفائی ِ مدعی  ، مائی مارتھا کا  ہاتھ پکڑ کر کٹہرے میں لایا   اور تعظیم سے کُرسی پر بٹھا دیا۔

وکیل استغاثہ  ، بھرپور اعتماد سے مائی کی طرف بڑھا اور  گواہ پر جرح شروع  کرتے ہوئے پہلا سوال پوچھا:وکیل استغاثہ  : مائی مارتھا ،  کیا تم مجھے جانتی ہو؟
مائی مارتھا : ہاں ڈیوڈ ۔ میں تمہیں اس وقت سے اچھِی طرح جانتی ہوں ،  جب تم ایک بچے تھے۔
 اور سچ پوچھو تو تم نے مجھے شدید مایوس کیا ہے۔ تم جھوٹ بولتے ہو۔ اپنی بیوی کو دھوکہ دیتے ہو۔ تم لوگوں کو استعمال کر کے پھینک دیتے ہو۔ اور پیٹھ پیچھے ان کی برائیاں کرتے نہیں تھکتے۔
 تمہارا خیال ہے کہ تم بہت ذہین ہو حالانکہ تمہاری کھوپڑی میں مینڈک جتنا دماغ بھی نہیں ہے۔

 ہاں میں تمہیں بہت اچھی طرح جانتی ہوں۔
وکیل ہکا بکا رہ گیا۔

 اس کی سمجھ میں نہیں آیا کہ اب کیا پوچھے۔ گھبراہٹ میں اس نے وکیل دفاع کی طرف اشارہ کیا اور پوچھا: 
وکیل استغاثہ    مائی مارتھا تم اس شخص کو جانتی ہو؟
مائی مارتھا :اوہ مسٹر اینڈریو  ، اینڈی  کو  میں ، اُس وقت سے جانتی ہوں جب یہ ڈائپر میں گھومتا تھا اور سارا محلہ ناک پر ہاتھ رکھ کر اس سے دور بھاگتا تھا۔ یہ یہاں کا سست ترین بندہ ہے اور ہر ایک کی برائی ہی کرتا ہے۔ اوپر سے یہ ہیروئنچی بھی ہے۔ کسی بندے سے یہ تعلقات نہیں بنا کر رکھ سکتا۔ اور شہر کا سب سے نکما اور ناکام وکیل یہی ہے۔
 چار بندیوں سے اس کا افئیر چل رہا ہے۔ جن میں سے ایک تمہاری بیوی بھی ہے۔
 ہاں اس بندے کو میں اچھی طرح جانتی ہوں!

جج نے دونوں وکیلوں کو اپنے پاس بلایا اور آہستہ سے بولا: 

اگر تم دونوں احمقوں میں سے کسی نے مائی بشیراں سے یہ پوچھا کہ،  وہ مجھے جانتی ہے ؟
 تو میں تم دونوں کو  پھانسی دے دوں گا ۔
(انگلش  سے ماخوذ )
٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭

اتوار، 15 ستمبر، 2019

آئن سٹائن کا خدا

ایک چالیس سال پرانا دوست ،  دو سالہ  اکیڈمی فیلو  ، اُس نے وٹس ایپ پر آئن سٹائن کے خدا کے نام سے انگلش میں ایک مضمون ڈالا   جو سپائینوزا    (Spinoza) کا  خود ساختہ  خدا ہے ۔  میرا دوست بھی جزاء و سزا اور آخرت کے بارے میں یقین نہیں  رکھتا ، اُس کا بھی کہنا ہے کہ سپائینوزا    (Spinoza) کے خدا   کی خاصیت ،  ہوبہو میرے خدا  سے ملتی  ہے ۔
 پہلے مضمون ، بعد میں میر ی رائے ۔
٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭
 کہا جاتا ہے کہ جب بھی ، آئن سٹائن نے مختلف یونیورسٹیوں میں لیکچر دیا تو طلباء اُس سے ایک سوال ضرور پوچھتے ۔ 
کیا آپ خدا پر یقین رکھتے ہو ؟
تو وہ ہمیشہ ایک ہی جواب دیتا ، 
" میں سپائینوزا    (Spinoza) کے خدا پر یقین رکھتا ہوں "۔
بہت سوں کو نہیں معلوم کہ،   سپائینوزا    (Spinoza) کے خدا کون تھا ؟
Baruch De Spinoza ، ایک  پرتگیز   یہودی النسل   سے تعلق رکھنے والا  ڈَ چ   فلاسفر تھا ۔ 
جو اپنے وقت کا ایک  حقیقت پرست فلاسفر  اور نقّاد  کے طور پر  مشہور تھا  ۔تالمود تورا  کا ماہر تھا ، لیکن 21 سال کی عمر میں اُسے  27 جولائی 1656  میں اُسے یہودیت سے خارج کردیا گیا ۔   اُس نے  فرینچ فلاسفر ،    Rene Descartes  ۔  ( 1596-1650)   ، سائینسدان، حساب دان اور فلاسفر  تھا ، کی فلاسفی پر ریسرچ کی اور اپنایا  ،     سپائینوزا ایمسٹرڈیم میں  24 نومبر 1932 میں پیدا ہوا اور  44 سال کی عمر میں  21 فروری 1677 میں  ہیگ میں فوت ہو ا ، والد ایک بزنس مین تھا ۔ 
اب ہم آتے ہیں  ،  فلاسفر سپائینوزا    (Spinoza) کے  اپنے خدا  کے اقوال پر، جو تالمو تورا سے منحرف ہونے کے بعد    اُس نے    اپنے لئے خود تخلیق کیئے  :
٭-  دعائیہ کلمات اور اپنے سینے پر دوہتڑ مارنا بند کرو ! میں چاہتا ہوں کہ تم دنیا میں باہر جاؤ اور مزے کرو !
٭-   میں چاہتا ہوں  تم گاؤ ، مزاح  کرو ،اور ہر اُس چیز کا  مزہ اُڑاؤ   جو میں نے تمھیں دی ہیں ۔
٭- اُن اداس ، تاریک  اور ٹھنڈے   مکانوں میں مت جاؤ جنہیں تم نے بنایا اور میرا گھر قرار دے دیا ۔
٭- میرا گھر تو پہاڑوں میں ہے ، جنگلوں میں ہے ، دریاؤں میں ہے ، جھیلوں میں ہے اور سمندر کے ساحل پر ہے ، جہاں میں رہتا ہوں اور اپنی محبت کا اظہار کرتا ہوں ۔ 
٭-  اپنی مصیبت زدہ زندگی پر مجھے الزام مت دو ، میں نے کب کہا کہ تم گناہ گار ہو ؟
خوفزدہ ہونا بند کرو ، میں نہ تمھیں   جج کرتا ہوں نہ تمھیں ٹوکتا ہوں اور نہ ہی غصہ ہوتا ہوں ، مجھے کسی کی پرواہ نہیں  اور نہ ہی میں نے تمھارے لئے سزائیں بنائیں ہیں ، میں صرف محبت ہوں ۔
٭- مجھ سے اپنے گناہوں کی معافی مت  مانگو !   کوئی ایسی وجہ  نہیں کہ تمھیں معاف کیا جائے ، اگر میں نے تمھیں تخلیق کیا ہے  ، تو میں نے ہی تم میں بردباری ، کمزوریاں ، خوشیاں ، ضروریات  اور خامیوں   کی خواہشات بھری ہیں ،
 - میں کیسے اُس بات پر تمھیں الزام   یا  سزا دوں  جو میں نے تم میں ڈالیں ہیں ؟
- جب میں نے تمھیں ایسا ہی بنایا ہے جیسے تم ہو تو میں تمھیں کیوں سزا دوں ؟
ـ کیا تم یہ سوچ سکتے ہو ۔ کہ میں اپنے تمام بچوں کو جلانے کے لئے ایسی جگہ بناؤں گا ۔جس میں نافرمانی کی وجہ سے تمام زندگی کے لئے ڈال دوں ؟
- کِس قسم کا خدا ایسا کر سکتا ہے؟
٭- اُن تما م احکامات اور قوانین  کو بھول جاؤ   ، جو تمھیں استعمال کرنے ،  قابو کرنے اور صرف  تمھارے اندر  شرمندگی پیدا کرنے کے لئے  بنائے گئے ہیں ۔
٭ ۔ اپنے  خیالات کی ہم آہنگی کی عزت کرو ، اور دوسروں کے لئے وہ مت چاہو جو اپنے لئے پسند نہیں کرتے ہو ۔
 ٭- میں تم سے صرف  یہ  چھتا ہوں کہ اپنی زندگی پر توجہ دو ،  جو تمھاری آگاہی  اور تمھاری ھادی ہے ۔
٭- یہاں اور وہاں صرف زندگی ایسی چیز ہے جس کی تمھیں ضرورت ہے۔
٭- میں نے تمھیں مکمل آزاد بنایا ہے ۔ کوئی انعام یا سزا نہیں ، کوئی  گناہ یا خوش نصیبی نہیں ،  کوئی بھی   (گناہوں کے ) نشانات  نہیں اٹھائے گا اور کوئی بھی اپنے (اعمال کا) حساب ساتھ نہیں لے جائے گا ۔
٭- تم اپنی زندگی میں جنت یا جہنم  بنانے کے لئے بالکل  آزاد پیدا کئے گئے ہو !
٭-  میں تمھیں یہ نہیں  کہہ سکتا کہ  اِس زندگی کے ختم ہونے کے بعد بھی کوئی زندگی   ، لیکن میں تمھیں ایک اشارہ ضرور دے سکتا ہوں  ، ایسے زندگی گذارو کہ بس  یہی زندگی ہے ۔
٭-  تمھارے لئے انجوائے اور محبت کرنے کے لئے بس صرف یہی زندگی ہے ۔
٭- اگر  ایسا کچھ نہیں تو جو موقع میں نے تمھیں دیا  ، کیا تم اُس سے لطف اندوز ہوئے ؟
٭- اور اگر ایسا ہوا بھی تو میں تم سے  یہ نہیں پوچھوں گا کہ تم نے اچھا کیا یا بُرا ؟
٭- میں تم سے یہ سوال ضرور کروں گا :
- کیا تم نے اِس  (دنیادی ) زندگی کو پسند کیا ؟
- کیا تم نے مزے اُڑائے ؟
ـ تمھیں سب سے زیادہ کیا پسند آیا ؟
ـ تم نے کیا سیکھا ؟
٭ ۔ بس اب مجھ پر آنکھیں بند کرکے ،ایمان لانا بند کرو ! یہ صرف اندازے  ، گمان اور قیاس ہیں  ، میں نہیں چاہتا کہ تم مجھ پر ایمان لاؤ،۔
٭- میں چاہتا ہوں کہ تم اُس وقت مجھے محسوس کرو جب:
- تم اپنی محبوبہ کو بوسہ دیتے ہو ۔ 
- جب تم اپنی  چھوٹی بیٹی  کے ساتھ کھیلتے ہو ۔
- جب تم اپنے کتّے کو پیار کرتے ہو ۔
- جب تم سمندر میں نہاتے ہو ۔
٭- میری تعریفیں کرنا بند کرو !
٭- تم مجھے کس قسم کا انا پرست خدا سمجھتے ہو ؟
٭ - میں تمھاری تعریفوں  سے بور ہو چکا ہوں اور تمھارے خیالات سے  تنگ آچکا ہوں ۔ 
٭- اگر تم میرے شکر گزار بننا چاھتے ہو  ، تو اپنا ، اپنی صحت ، رشتہ داریاں  اور اپنے ارد گرد کی دنیا کا  خیال رکھو۔
٭- جب تم خوشی سے بے قابو ہوجاؤ ، تو اِس  اظہار کرو ۔بس یہی میری تعریف کا طریقہ ہے ۔
٭- یہ بات یقینی ہے کہ تم   موجود ہو ، تم زندہ ہو  اور یہ دنیا عجائبات سے بھری ہوئی ہے ۔
٭ ۔تمھیں مزید معجزات کِس لئے چاھئیں ؟
٭- اتنی وضاحتیں  کِس لئے ؟
٭- تم مجھے باہر مت دیکھو ،  تلاش  نہیں کر سکو گے ، میں تو تمھارے اندر دھڑک رہا ہوں  ،

Baruch De Spinoza 

٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭

خیال رہے کہ "اُفق کے پار" یا میرے دیگر بلاگ کے،جملہ حقوق محفوظ نہیں ۔ !

افق کے پار
دیکھنے والوں کو اگر میرا یہ مضمون پسند آئے تو دوستوں کو بھی بتائیے ۔ آپ اِسے کہیں بھی کاپی اور پیسٹ کر سکتے ہیں ۔ ۔ اگر آپ کو شوق ہے کہ زیادہ لوگ آپ کو پڑھیں تو اپنا بلاگ بنائیں ۔